08:36 am
صحت وصفائی کی چھوٹی چھوٹی باتیں یاد رکھیں

صحت وصفائی کی چھوٹی چھوٹی باتیں یاد رکھیں

08:36 am

اسلام آباد(نیو زڈیسک)صحت مند عادات بچوں کو جراثیم سے پھیلنے والی بیماریوں سے محفوظ رکھتی ہیں۔بچوں کو جراثیم سے محفوظ رکھنے کے لیے والدین کو چند بنیادی باتوں کا علم ہونا بے حد ضروری ہے تاکہ وہ اپنے بچوں کو بیماریوں سے محفوظ رکھ سکیں۔بیماریوں
کے ڈر سے بچوں کو مٹی میں کھیلنے،پارک جانے ،یا سائیکل چلانے سے منع نہیں کرنا چاہیے بلکہ انہیں حفظان صحت کے اہم اصول بتانے چاہئیں ایسا کرنے سے بچے اپنی صحت کا خود خیال رکھ سکیں گے ،اس طرح ان کی بھر پور نشوونما ہو سکے گی۔صحت مند عادات بچوں کو بیمار نہیں ہونے دیتیں اور انہیں جراثیم سے پھیلنے والی بیماریوں سے محفوظ رکھتی ہیں ۔معالج حضرات بچوں کے مٹی میں کھیلنے کو اچھا سمجھتے ہیں کیونکہ مٹی میں کھیلنے سے کئی قسم کے جراثیم کے خلاف بچوں کا مدافعتی نظام فعال ہوجاتا ہے ۔ہم جراثیم کو بچوں پر حملہ کرنے سے روک بھی نہیں سکتے لیکن بچوں کو جراثیم سے محفوظ رکھنے کی حتیٰ الامکان کوشش ضرور کر سکتے ہیں ۔چند باتوں کا خیال رکھ کر بچوں کو امراض پھیلانے والے جراثیم سے محفوظ رکھا جا سکتا ہے ۔ہاتھوں کی صفائینزلے سے متاثرہ شخص سے محض ہاتھ ملانے سے ہی نزلے کے 71فیصد جراثیم ایک شخص سے دوسرے شخص میں منتقل ہوجاتے ہیں ۔بچوں کو صحت زندگی گزارنے کے اصول بتاتے وقت سب سے پہلے جو بات ذہن نشین کرائی جائے اس میں ہاتھ دھونے کی اہمیت بتانا ضروری ہے ۔ہاتھوں کو صاف رکھنے کی عادت ڈالیں۔بحیثیت ماں بچے کو دودھ پلانے سے قبل،کھانا پکانے اور کھلانے سے پہلے،ہر مرتبہ واش روم استعمال کرنے کے بعد ہاتھ ضرور دھوئیں۔ہاتھ کب دھوئیںہرمرتبہ واش روم استعمال کرنے کے بعد۔کھانسی ،چھینکنے یا ناک صاف کرنے کے بعد۔پالتو جانوروں سے کھیلنے کے بعد۔ڈسٹ بن یا جھاڑو کو ہاتھ لگانے کے بعد۔پارک سے واپس آکر۔کھلونوں سے کھیلنے کے بعد۔پودوں کی کاٹ چھانٹ کے بعد۔جب گھر کا کوئی فرد بیمار ہوتو دن میں جتنی مرتبہ اس کے پاس بیٹھیں ہر بار بعد میں ضرور ہاتھ دھوئیں۔ہاتھ دھونے کا صحیح طریقہبہتے ہوئے پانی میں ہاتھوں کو پہلے گیلا کریں ۔معیاری جراثیم کش صابن سے ہاتھوں میں جھاگ بنائیں ۔انگلیوں کی درمیانی جلد کو ر گڑ کر صاف کریں ۔ہاتھوں کو دونوں طرف سے صاف کریں ۔بہتے ہوئے پانی سے ہاتھ دھولیں ۔صاف تولیہ سے ہاتھوں کو خشک کرلیں۔نہاناعام دنوں میں ایک بار اور گرمیوں میں دن میں دو بار نہایت صحت مند زندگی کے لیے مفید ہے ۔نہانے کے لیے معیاری شیمپو اور جراثیم کش صابن کا انتخاب کریں ۔بچے کو شروع سے ہی نہانے کی عادت ڈالیں تاکہ بڑا ہونے کے بعد بھی اس عادت پر عمل پیرارہے ۔نہانے کے بعد صاف تولیہ اور دھلے ہوئے کپڑے استعمال کریں۔جن بچوں کو روزانہ نہانے کی عادت نہیں ہوتی ان کے سر میں خشکی ،لیکھ اور جوؤں کی افزائش ہونے لگتی ہے جو ناصرف اس بچے کے لیے بلکہ اس کے ساتھ رہنے والے دوسرے لوگوں کے لیے بھی کوفت کا باعث بنتی ہے۔منہ کی صفائی چھوٹے بچوں کو کھانا کھانے کے بعد عموماً کُلی کرنے یا برش کرنے کی عادت نہیں ہوتی۔اس کے باعث جراثیم دانتوں پر حملہ آور ہو جاتے ہیں اور دانتوں کے گلنے سڑنے کا باعث بنتے ہیں ۔بچوں میں ہر روز دن میں دو بار برش کرنے کی عادت ڈالیں ۔اس کے علاوہ ہر غذا کھانے کے بعد اچھی طرح کلی کرنے اور کبھی کبھی غرارہ کرنے کی تربیت بھی دیں تاکہ ان کے دانت صاف رہیں اور ان کا منہ جراثیم کا گھر نہ بننے پائے ۔بچوں کا ٹوتھ برش الگ رکھیں اور انہیں دوسروں کا ٹوتھ برش استعمال نہ کر نے دیں۔ناخن کاٹنابڑھے ہوئے ناخنوں کے اندر جراثیم جگہ بنالیتے ہیں اور ہر غذا کے ساتھ بچوں کے پیٹ میں جا کر مختلف بیماریوں کو دعوت دیتے ہیں ۔اکثر بڑوں اور بچوں کو دانتوں سے ناخن کترنے کی عادت ہوتی ہے اس عادت بد سے جلد از جلد چھٹکارہ حاصل کیا جائے کیونکہ اس سے پیٹ کی بیماریاں جنم لیتی ہیں ۔دانتوں سے ناخن کاٹنے سے دانت بھی خراب ہو جاتے ہیں اور ناخن بھی کمزور پڑجاتے ہیں ان بچوں پر سختی کی جائے جو ناخن منہ میں ڈالتے ہیں یا انگوٹھا اور انگلیاں چوسنے کے عادی ہوتے ہیں ۔ہر بار باقاعدگی کے ساتھ ہاتھوں اور پیروں کے ناخن کاٹنے سے بچہ کئی بیماریوں میں مبتلا ہونے سے محفوظ رہ سکتا ہے ۔صاف ستھرا لباسبچوں کا لباس روزانہ تبدیل کریں ۔بچوں کو تلقین کریں کہ وہ اپنا لباس صاف ستھرارکھیں ۔اکثر بچے کھانا کھا کر دستر خوان یا اپنے ہی کپڑوں سے ہاتھ پوچھ لیتے ہیں ۔یہ غلط عادت ہے ۔ایسے بچوں کو پیار ومحبت سے سمجھایا جائے اور اپنا جسم ولباس صاف رکھنے کا درس دیا جائے۔اسکول سے واپسی کے بعد یونیفارم اُتار پھینکنے کے بجائے ایک مخصوص جگہ پر رکھا جائے․․․․استعمال شدہ جوتوں کو چند گھنٹے دھوپ میں رکھیں تاکہ ان کی بد بو دور ہو جائے۔اس کے علاوہ ہر روز دھلا موزہ استعمال کرائیں۔اسکول سے آنے کے بعد ہاتھ منہ دھونے کے ساتھ پاؤں دھونے کی عادت بھی ڈالیں ۔خصوصی طور پر پیر کی انگلیاں اور انگوٹھے کے درمیان والا حصہ دھونا نہ بھولیں تاکہ پیرجراثیم سے پاک ہو جائیں۔یاد رہے کہ صحت مند عادات ہی صحت مند زندگی کی ضامن ہیں ۔صفائی کے آسان طریقے اپنا کر آپ کی فیملی صحت مند اور خوشگوار زندگی گزار سکتی ہے۔

تازہ ترین خبریں