03:25 am
حمل کے دوران زیادہ میٹھا کھانے والی خواتین کے بچے پر اس کا کیا اثر پڑتا ہے؟ ماہرین نے خبردار کردیا

حمل کے دوران زیادہ میٹھا کھانے والی خواتین کے بچے پر اس کا کیا اثر پڑتا ہے؟ ماہرین نے خبردار کردیا

03:25 am

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) حاملہ خواتین کی خوراک ان کے پیٹ میں پرورش پانے والے بچے پر انتہائی اثرات مرتب کرتی ہے چنانچہ ڈاکٹر انہیں ہمیشہ متناسب اور صحت مندانہ غذا کھانے کی ہدایت کرتے ہیں۔ جو خواتین حمل کے دوران زیادہ میٹھا کھاتی ہیں اب ماہرین نے اس کے ان کے پیٹ میں موجود بچے پر انتہائی خوفناک اثرات کا انکشاف کر دیا ہے۔ میل آن لائن کے مطابق ماہرین کا کہنا ہے کہ جو خواتین دوران حمل چکنائی اور میٹھے والی چیزیں زیادہ کھاتی ہیں ان کے بچے کو دل اور نظام دوران خون کے سنگین مسائل لاحق ہونے کا خطرہ بہت زیادہ ہوتا ہے۔
اس تحقیق میں سینٹ لوئس کے واشنگٹن یونیورسٹی سکول آف میڈیسن کے ماہرین نے حاملہ مادہ چوہوں پر تجربات کیے۔ انہوں نے ایک گروپ کو کم چکنائی اور میٹھے والی خوراک دی اور دوسرے کو میٹھے اور چکنائی سے بھرپور چیزیں کھلاتے رہے۔ اس کا نتیجہ یہ نکلا کہ پہلے گروپ کے چوہوں میں پیدا ہونے والے بچوں کے دل بالکل صحت مند تھے لیکن دوسرے گروپ میں پیداہونے والے بچوں کے دل پیدائشی طور پر ہی انتہائی کمزور تھے۔تحقیقاتی ٹیم کے سربراہ ڈاکٹر ابھینو دیوان کا کہنا تھا کہ ”جن چوہوں کو میٹھے اور چکنائی سے بھرپور خوراک دی جاتی رہی تھی، ان کے بچوں کے دل کے پٹھے بہت کمزور تھے اور ان کو ہارٹ اٹیک آنے کے امکانات بھی دوسرے گروپ کے بچوں سے کئی گنا زیادہ تھے۔ اس تحقیق میں پیداہونے والے نراور مادہ بچوں کے دلوں میں بھی بہت فرق تھا تاہم ہم اس کی وضاحت کرنے سے قاصر ہیں۔ “واضح رہے کہ اس سے قبل ایک تحقیق میں بھی ایسے ہی کچھ نتائج سامنے آ چکے ہیں جن میں بتایا گیا تھا کہ حمل کے دوران اگر ماں موٹاپے کا شکار ہو تو اس کے ہاں پیدا ہونے والے بچوں کے دل کمزور ہوتے ہیں اور انہیں ہارٹ اٹیک کا خطرہ زیادہ ہوتا ہے۔ اس تحقیق میں یہ بھی بتایا گیا تھا کہ اگر بچے کا باپ موٹاپے کا شکار ہو تو اس کے بھی بچے کے دل کی صحت پر منفی اثرات مرتب ہوتے ہیں۔