03:31 pm
چیک چی پبلک میں دماغی مردہ خاتون کے ہاں بچے کی پیدائش

چیک چی پبلک میں دماغی مردہ خاتون کے ہاں بچے کی پیدائش

03:31 pm

پیرا گوئے(آئی این پی)چیک ریپبلک میں دماغی طور پر مردہ خاتون کے ہاں لگ بھگ 4 ماہ بعد بچی کی پیدائش ہوئی ہے۔خبررساں ادارے رائٹرز کے مطابق رواں سال اپریل میں اس نامعلوم چیک خاتون کو دماغی شریان پھٹنے کے بعد ہسپتال منتقل کیا گیا تو اس کے بچنے کے امکانات نہ ہونے کے برابر تھے جبکہ پیٹ میں موجود بچے کی بقا کو بھی خطرہ لاحق تھا۔مگر تمام تر مشکلات کے باوجود 15 اگست کو آپریشن کے ذریعے ایک صحت مند بچی کی پیدائش ہوئی جس کا وزن 2.13 کلوگرام تھا۔برنو یونیورسٹی ہاسپٹل کے مطابق بچی کی پیدائش سے اس کی دماغی طور پر مردہ ماں نے ایک نیا ریکارڈ بنادیا۔
ہاسپٹل کے مطابق دماغی طور پر مردہ خاتون کے جسم میں بچی کو 117 دن تک زندہ رکھا گیا جو کہ دماغی طور پر مردہ ماں کے حمل کو برقرار رکھنے کا طویل ترین دورانیہ بھی قرار دیا جارہا ہے۔اس خاتون کی شناخت سامنے نہیں آئی، مگر یہ بتایا گیا ہے کہ اپریل میں ہسپتال پہنچنے کے کچھ دیر بعد اسے دماغی طور پر مردہ قرار دے دیا گیا تھا، جس کے بعد ڈاکٹروں نے بچے کو بچانے کے لیے جدوجہد شروع کردی تھی۔27 سالہ خاتون کو مصنوعی لائف سپورٹ پر رکھا گیا تاکہ حمل برقرار رہے اور طبی عملہ ان کی ٹانگوں کو اس طرح حرکت دیتا جیسے چہل قدمی کررہی ہوں تاکہ بچے کی نشوونما میں مدد مل سکے۔حمل کے 34 ویں ہفتے میں بچی کی پیدائش ہوئی اور اس موقع پر خاتون کے شوہر اور خاندان کے دیگر افراد بھی موجود تھے، جس کے بعد طبی عملے نے ماں کے لائف سپورٹ سسٹم کو منقطع کردیا تاکہ جسم بھی مرجائے۔ہسپتال کے گائنالوجی ڈیپارٹمنٹ کے سربراہ ڈاکٹر پال وینتروبا کے مطابق 'یہ انتہائی حیرت انگیز کیس تھا جب ایک خاندان ایک مقصد کے لیے اکٹھا ہوگیا، ان کے تعاون کے بغیر ہم بچی کی پیدائش میں کامیاب نہ ہوپاتے۔

تازہ ترین خبریں