03:55 pm
کوہلی ورلڈ کپ کے بڑے میچز میں ناکام ترین کھلاڑی کے طور پر سامنے آگئے

کوہلی ورلڈ کپ کے بڑے میچز میں ناکام ترین کھلاڑی کے طور پر سامنے آگئے

03:55 pm

لندن (مانیٹرنگ ڈیسک) ورلڈ کپ سیمی فائنل میں جہاں نیوزی لینڈ کے ہاتھوں عبرتنا ک شکست پر بھارت میں صف ماتم بچھ گئی ہے وہیں پر بھارتی کپتان ویرات کوہلی کی بڑے میچوں میں کارکردگی کا بھی پول کھل گیا ہے۔ورلڈ کپ سیمی فائنلز میں کوہلی صرف 3.67کی اوسط سے 11رنز بناسکے ہیں۔ انہوں نے 2011ء کے ورلڈ کپ سیمی فائنل میں پاکستان کے خلاف وہاب ریاض کا شکار بننے سے قبل 9رنز بنا ئے تھے،
ورلڈ کپ2015ء کے سیمی فائنل میں وہ محض ایک ر ن بنا کرمچل جونسن کا شکار بنے جب کہ رواں ورلڈ کپ کے سیمی فائنل میں وہ ایک بارپھر صرف1رنز بنا کر ٹرینٹ بولٹ کی گیند پر پوویلین لوٹے ہیں۔دلچسپ بات یہ ہے کہ تینوں ورلڈ کپ سیمی فائنل مقابلوں میں انہیں لیفٹ آرم فاسٹ باؤلر نے ہی آؤٹ کیا ہے۔ واضح رہے کہ سیمی فائنل میں ہارنے کے بعد بھارتیوں کا غرور خاک میں مل گیا ہے، دوسری جانب بھارت میں ٹیم کی شکست پر صف ماتم بچھ گئی ہے۔واضح رہے کہ آئی سی سی کرکٹ ورلڈکپ کے پہلے سیمی فائنل میں کیویز نے بھارتی سورماؤں کا غرور خاک میں ملا دیا۔ 240 کے ہدف کے تعاقب میں کوہلی الیون 221 رنز پر ڈھیر ہو گئی۔ کوہلی، روہت شرما، راہول سمیت دیگر بڑے بیٹسمین ریت کی دیوار ثابت ہوئے۔ جدیجا نے 77 رنز کی مزاحمتی اننگز کھیلی، اپنے کیریئر کا آخری ورلڈ کپ کھیلنے والے مہندر سنگھ دھونی 50رنز بنا کر رن آؤٹ ہوکر ٹیم کو بیچ منجدھار میں چھوڑ کر چلے گئے۔ میٹ ہینری نے تین شکار کیے اور میچ کے بہترین کھلاڑی قرار پائے کیویز ٹیم نے مقررہ اوورز میں 239 رنز بنائے تھے۔ ٹیلر74، ولیمسن نے 67 رنز کی شاندار باری کھیلی تھی۔ بھونیشور کمار نے تین وکٹیں حاصل کی تھیں۔ کیویز ٹیم مسلسل دوسری مرتبہ میگا ایونٹ کے فائنل میں پہنچی جبکہ 2015ء کی طرح انڈین ٹیم اس بار بھی سیمی فائنل میں شکست کھا بیٹھی۔ مانچسٹر میں کھیلے گئے میچ میں نیوزی لینڈ کے کپتان کین ولیمسن نے ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کا فیصلہ کیا۔ مارٹن گپٹل اور نکولس نے اننگز کا آغاز کیا تاہم کیویز ٹیم نے محتاط انداز میں بیٹنگ کرتے ہوئے سکور کو آگیبڑھانے کی کوشش کی، تاہم اوپنر گپٹل پورے ایونٹ کی طرح اس بار بھی سیمی فائنل مرحلے میں ناکام رہے اور 14 گیندوں پر ایک رن بنا کر فاسٹ باؤلر بمرا کا شکار بن گئے، کوہلی نے ان کا سلپ میں شاندار کیچ تھاما۔کپتان ولیمسن اور نکولس نے سکور آگے بڑھانے کی کوشش کی تاہم دونوں نے بھی کچھوے کی چال کی طرح بیٹنگ کی، 68 رنز کی پارٹنر شپ بنائی جس کا اختتام سپنر جڈیجا نے کیا۔ نکولس 51 گیندوں پر 28 سکور بنا کر سپنر کی شاندار گیند پر بولڈ ہو گئے۔ کپتان کین ولیمسن نے 95 گیندوں پر 67 سکور کی باری کھیلی اور چاہل کی گیند پر جڈیجا کو کیچ دے بیٹھے۔ جیمی نیشام 12 سکور بنا کر پویلین لوٹ گئے۔ بیٹسمین کو پانڈیا نے آؤٹ کیا۔ کولن ڈی گرینڈ ہوم کی مزاحمت 16 رنز پر دم توڑ گئی۔ بھونیشور کمار کی گیند پر دھونی نے کیچ پکڑا۔روز ٹیلر 74 سکور کی شاندار باری کھیل کر رویندرا جڈیجا کی گیند پر رن آؤٹ ہو گئے۔ ٹام لیتھم نے 10 سکور بنائے۔ ہینری ایک رن بنا کر پویلین چلتے بنے۔ بھونیشور کمار نے ان کی وکٹ حاصل کی۔ کیویز کی ٹیم نے مقررہ اوورز میں 239 رنزبنائے۔ بھونیشور کمار نے تین، بمرا، پانڈیا، جڈیجا،چاہل نے ایک ایک وکٹ حاصل کی۔ ہدف کے تعاقب میں بھارت کی طرف سے روہت شرما اور لوکیش راہول نے اننگز کا آغازکیا، کیویز باؤلر میٹ ہینری نے دوسرے ہی اوور میں میگا ایونٹ میں رنز کے انبار لگانے والے روہت شرما کو پویلین بھیج دیا۔ انہوں نے ایک رن بنائے۔ تیسرے اوور میں ٹرینٹ بولٹ نے ویرات کوہلی کو ایل بی ڈبلیو کر دیا۔ چوتھے اوورز کی پہلی گیند پر ایک مرتبہ پھر میٹ ہینری نے شاندار گیند کر کے لوکیش راہول کی وکٹ حاصل کی، وکٹ کیپر ٹام لیتھم نے کیچ تھاما۔ بیٹسمین صرف ایک رن بنا سکے۔ وکٹ گنوانے کے بعد بھارتی ٹیم نے محتاط انداز میں بیٹنگ کرنے کی کوشش کی تاہم حریف باؤلرزکی شاندار باؤلنگ کے سامنے بیٹسمین کچھوے کی چال کی طرح بیٹنگ کرتے رہے، 10 اوورز کی آخری گیند پر میٹ ہینری نے دنیش کارتک کی وکٹ حاصل کی، انہوں نے 25 گیندوں پر 6 رنز بنائے۔ جیمی نیشام نے بیٹسمین کا کیچ تھاما۔اس دوران رشب پانٹھ نے مزاحمتی اننگز کھیلنے کی کوشش کی اور ہردیک پانڈیا کیساتھ مل کر ٹیم کے سکور کو آگے بڑھایا، دونوں نے 47 رنز کی پارٹنر شپ بنائی جو سپنر مچل سینٹر نے توڑی، لیفٹ ہینڈ بیٹسمین رشب پانٹھ جلد بازی میں وکٹ گنوا بیٹھے، انہوں نے 56 گیندوں پر 32 رنز بنائے۔ ہر دیک پانڈیا 62 گیندوں پر 32 رنز بنا کر غیر ذمہ دارانہ شاٹ کھیل کر پویلین لوٹ گئے۔ مچل سینٹر کی گیند پر کپتان ولیمسن نے شاندار کیچ تھاما۔ آل راؤنڈر روینڈرا جڈیجا نے جارحانہ بیٹنگ کی۔ 208 کے مجموعی سکور پر 59 گیندوں پر 77 رنز کی باری کھیل کر بولٹ کو وکٹ دے بیٹھے۔ وکٹ کیپر دھونی 71 گیندوں پر 50 سکور بنا کر جلد بازی میں رن آؤٹ ہو گئے۔بھارت کی ٹیم 221 رنز بنا سکی۔ میٹ ہینری نے تین کھلاڑیوں کو پویلین واپس بھیجا۔ میٹ ہنری کو میچ کا بہترین کھلاڑی قرار دیا گیا، ورلڈ کپ کا دوسرا سیمی فائنل آج روایتی حریف آسٹریلیا اور انگلینڈ کے درمیان کھیلا جائیگا۔

تازہ ترین خبریں