08:16 am
 پاک فوج کو سلام

 پاک فوج کو سلام

08:16 am


دشمن سے  خیر کی توقع کرنا دانشمندی نہیں اور یہی ہماری پاک فوج کا موقف ہے۔ جنگی جنون میں مبتلا مودی سرکار نے پاکستان کی سرحدوں میں چوروں کی طرح آدھی رات کے بعد گھس کر درختوں کو نقصان پہنچایا۔ پہلے روز تو بھارت میں خوشیاں منائی گئیں اور مودی سرکار بھی خوش تھی۔ سیاسی گراف کو بلندی پر دیکھ کر مودی پاگل پن کا شکار ہوگیا۔ جنگ کا بھوت سوار ہوگیا۔ وہ پاک فوج کی مصلحت کو  سمجھ نہ سکا اور اگلے روز پھر سے چھیڑ خانی کے ارادے سے پاکستانی سرحد کی خلا ف ورزی کر بیٹھا۔ بھلا پاک فضائیہ اپنے دشمن سے غافل رہ سکتی تھی۔ ذلت و رسوائی مودی کے مقدر میں لکھی جاچکی تھی۔ دو بھارتی لڑاکا طیارے مار گرالیے گئے۔ ایک پائلٹ پروقت چھلانگ لگانے کے باعث بچ گیا مگر پاکستانیوں کے ہتھے چڑھ گیا۔ باقی پائلٹ واصل جہنم ہوگئے۔ اس تماشے کو پوری دنیا نے دیکھا۔ پاک فضائیہ اور پاک فوج کے بہادر جوانوں کے چرچے ہوگئے۔ دوست خوش ہوئے دشمن رنجیدہ۔ بالاکوٹ کے علاقے میں بھارتی جارحیت کے باعث مایوس قوم کے چہرے خوشی سے کھل اٹھے۔ پاکستانیوں کے سرفخر سے بلند ہوگئے۔ سوشل میڈیا پر بظاہر ہاری ہوئی جنگ پاکستانی قوم جیت گئی۔
بھارتی پائلٹ ’ابھی نندن ‘کی گرفتاری کو محض دو روز ہی گزرے تھے کہ پاکستان کے بااعتماد اور پرعزم وزیراعظم عمران خان نے اس کی رہائی کا اعلان کر دیا۔ ظاہری طور پر یہ ایسا فیصلہ تھا کہ جو پوری قوم کے لئے ناپسندیدہ تھا کیونکہ سوشل میڈیا پر ایک بحث چھڑ گئی کہ عمران خان کو عجلت میں یہ فیصلہ نہیں کرنا چاہیے تھا۔ بھارت منت ترلے کرتا‘ اس کی ناک رگڑی جاتی۔ اپنے قیدی بدلے میں چھڑوائے جاتے‘ وغیرہ وغیرہ خاص طور پر وزیراعظم کے سیاسی مخالفین نے اس  بات کو بہت اچھالا مگر بہت جلد انہیں بھی احساس ہوگیا کہ عمران خان کا بھارتی پائلٹ کو بلامشروط رہا کرنے کا فیصلہ درست تھا کہ جب پوری دنیا سے پاکستان کے وزیراعظم اور پاک فوج کی اس اقدام پر تعریفیں کی جانے لگیں۔ ہر طر ف سے خیرمقدمی کلمات پیش کیے جانے لگے۔ اگرچہ ’ابھی نندن‘ کی رہائی کے فوراً بعد بھارتی جارحیت اور بربریت میں اضافہ ہوگیا۔ بے گناہ کشمیریوں کو قتل کیا جانے لگا۔ دو پاک فوج کے جوان شہید ہوگئے۔ بھارتی میڈیا پائلٹ کو چھوڑنے کے اقدام کو بھارتی دبائو کانتیجہ قرار دینے لگا مگر عالمی برادری نے اس فیصلے کو خوب سراہا اور وزیراعظم کا قدکاٹھ اونچا  ہوگیا جبکہ مودی کے چہرے پر کالک پھر گئی۔
دوسری طرف بھارت کے اندر مودی سرکار کے خلاف ایک لہر چل پڑی۔ پلوامہ حملے سے بالاکوٹ حملے تک مودی کی ہر حرکت کے پیچھے اس کے سیاسی عزائم کو ظاہر کیا گیا۔ ایک ایسی آڈیو منظر عام پر آئی ہے جس سے ثابت ہوتا ہے کہ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج پر حملہ خود حکومت نے کرایا ہے۔ دراصل مودی اگلے انتخابات میں جیتنے کا خواہشمند تھا۔ اس کے خیال میں بھارتی فوج بھارتی عوام کی کمزوری ہے۔ ایک فوجی کا قتل بھی بھارتی عوام برداشت نہیں کرسکتی چنانچہ پلوامہ میںخودکش حملہ کرایا گیا جس میں50 کے لگ بھگ نچلی ذات کے بھارتی فوجی مارے گئے۔
وقتی طور پر تو واقعی بھارت میں مسلمان بالخصوص پاکستان کے خلاف جذبات میں اُبال آیا۔ پاکستان اور پاک فوج کے خلاف نعرے بازی ہوئی۔ مسلمانوں کو نقصان پہنچایا گیا۔ بھارتی جیل میں قید پاکستانی شاکر اللہ کو اذیتیں دے کر شہید کیا گیا مگر اب اصل حقائق سامنے آرہے ہیں۔ بھارتی قوم کئی حصوں میں تقسیم ہوچکی ہے‘ مودی کا مکروہ چہرہ عیاں ہوچکا ہے۔ بھارتی دانشور طبقہ مودی کو جنگ اور فساد کا نمائندہ قرار دے رہے ہیں۔ مودی کے جنگی جنون کے خلاف اتحاد بن رہے ہیں۔ اب تو بھارتیوں نے مودی  سے بالا کوٹ حملے میں ا ن کے دعوے کے مطابق ہلاک ہونے والے تین سو دہشت گردوں کا ثبوت بھی طلب کرلیا ہے ۔ مودی منہ چھپاتا پھرتاہے۔ اب دنیا جان چکی ہے کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان جھگڑے کی اصل وجہ کشمیر ہے۔ اس لئے اب پوری دنیا اس طرف متوجہ ہوگئی ہے۔ مسئلہ کشمیر ابھر کر سامنے آیا ہے۔
پاکستان اور بھارت دونوں نیو کلیئر طاقتیں ہیں۔ دونوں کے پاس جدید میزائل ٹیکنالوجی ہے۔ اب بھارت کو معلوم ہوچکا ہے کہ پاکستان کو چھیڑنے کے نقصانات کیا ہیں۔ حالیہ کشیدگی کے دوران  بھارت کو اس سے کہیں زیادہ نقصان پہنچا ہے جتنا بتایا جارہا ہے۔ بھارت چھپانے کی کوشش کررہا ہے اور پاکستان بھی مصلحتاً صرف2 جنگی لڑاکا طیاروں کی تباہی کا ذکر کرتا ہے حالانکہ دو پاکستانی فوج کے جوانوں کی شہادت کے بعد جو بھارت کو جواب دیا گیا ہے پاکستان نے اس کا چرچا ہی نہیں کیا۔ خود مقبوضہ کشمیر کے ڈاکٹر نے پول کھول دیا ہے کہ میرے ہسپتال میں چھ بھارتی فوجیوں کی لاشیں لائی گئی ہیں اس کے بعد اس ڈاکٹر کا ٹویٹر اکائونٹ بند کر دیا گیا ہے ۔ گوکہ دونوں ممالک کے مابین کشیدگی ابھی جاری ہے ۔ پاک فوج بھی دشمن کی طر ف سے غافل نہیں ہے مگر امید ہے کہ حالات اب بہتری کی طرف جائیںگے۔ بھارتی عوام مودی کے ناپاک عزائم سے واقف ہوچکی ہے۔ عوام کی طرف سے شدید دبائو کے پیش نظر بھارتی فوج کسی بھی ایسے اقدام سے پہلے سوچار سوچے گی۔
الحمد للہ یہ بیان کرتے ہوئے خوشی ہو رہی ہے کہ بہت عرصے بعد پہلی بار یہ دیکھنے کو مل رہا ہے کہ عوام پاک فوج کے ساتھ مکمل ہم آہنگی کا مظاہرہ کررہی ہے جو چند مخالف عناصر تھے و ہ بھی پاک فوج زندہ باد کے نعرے بلند کرنے پر مجبور ہوگئے ہیں۔ اس کے ساتھ ساتھ سیاستدانوں  نے سیاسی پختگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے بھارتی جارحیت کی کھل کر مذمت کی ہے۔ یہ بات خوش آئند ہے کہ پاک فوج اور حکومت ایک صفحے پر ہیں اور خارجہ و  داخلہ پالیسیوں میں اتفاق ہے۔ بین السطور میں یہ عرض کرتا چلوں کہ حالات کا فائدہ اٹھاتے ہوئے حکومت نے تیل کی قیمتوں میں ناجائز اضافہ کیا ہے جو کہ مہنگائی کا سبب بنا ہے یہ کسی بھی طور قابل تعریف نہیں۔ حکومت کو اس طرف توجہ کرنے کی ضرورت ہے۔ اللہ تعالیٰ ہم سب کا حامی و ناصر ہو‘ پاک فوج ہمارا فخر ہے اس کے لئے دل سے دعا نکلتی ہے کیونکہ جب تک پاک فوج کے بہادر جوان جاگ رہے ہیں پاکستانی عوام میٹھی نیند سوسکتی ہے۔ سرحدوں کا دفاع انشاء اللہ محفوظ ہاتھوں میں ہے۔

 

تازہ ترین خبریں