09:13 am
یوم پاکستان

یوم پاکستان

09:13 am

تحریک تکمیل پاکستان کا ایک اور خونی سال گذر گیا ۔  ایک سال میں 450سے زائد کشمیریوں کو جن میں معصوم بچیاں اور بچے شامل ہیں ، کو شہید کردیا گیا۔ صرف ماہ نومبر میں 48سے زائدکشمیری شہید ہوئے ،جدوجہد آزادی کشمیر میں کشمیری عوام کاجذبہ لازوال اور قربانیاں بے مثا ل  ہیں ۔ قابض بھارتی اس جذبے کے خلاف ریاستی دہشتگردی کی انتہا کررہے ہیں۔  قرار داد لاہور پاکستان کی تاریخ میں عظیم سنگ میل ہے جسے قرار داد پاکستان کہا جاتا ہے جس میں  دوقومی نظریہ کی بنیاد پر مسلمانوں کیلئے ایک الگ ریاست قائم کرنے کا مطالبہ کیا گیا ۔ قائد اعظم  کی قیادت میں مسلمانوں میں ایک نیا جذبہ پیدا ہوا جس کے نتیجے میں پاکستان قائم ہوا ۔ کشمیری عوام کی جدوجہد بھی تحریک پاکستان کا تسلسل ہے ۔ کشمیری مسلمانوں نے نہ صرف قائد اعظم کی  بھر پور مدد اور حمایت کی ،بلکہ اس تحریک میں بڑھ چڑھ کر حصہ بھی لیا ۔ یہی وجہ ہے کہ تحریک آزادی کشمیر کو تحریک  تکمیل پاکستان بھی کہا جاتا ہے ۔
 
تقسیم ہند کے وقت ہندوستان میں موجود تمام ریاستوں کو یہ حق دیا گیا کہ وہ جغرافیائی محل وقوع  اور آبادی کے تناسب کی بنیاد پر بھارت یا پاکستان میںشامل ہوجائیں۔ تقسیم ہند فارمولے ،تمام تراصولوں اور قوانین کے مطابق کشمیر فطری طورپر پاکستان کا حصہ ہے کیونکہ ریاست کشمیر بھاری مسلم اکثریت اور جغرافیائی طور پر پاکستان سے منسلک ہے ۔ 
 سید علی شاہ گیلانی سربراہ کل جماعتی کانفرنس ،مقبوضہ جموں وکشمیرکا بین الاقوامی خطاب پوری دنیا میں سند رکھتا ہے ۔ ان کا کہنا ہے کہ ’’ کشمیر کی 85فیصد آبادی مسلمانوں کی ہے ۔ساڑھے سات سو میل سرحدیں پاکستان کے ساتھ ملتی ہیں ۔جتنے دریا یہاں سے نکلتے ہیں ان کا رخ پاکستان کی طرف ہے ۔یہاں جب ہوائیں چلتی ہیں وہ راولپنڈی سے آتی ہیں ۔ چاند کا جو مطلع ہے وہ بھی الگ نہیں ہے ۔یہ اتنے مضبوط رشتے ہیں ۔یہ تاریخ کی حقیقتیں ہیں جن حقیقتوں کی بنیاد پر میں کہتا ہوں ۔ جموں وکشمیر پاکستان کا قدرتی حصہ ہے ۔ ‘‘
  ٹھوس حقائق کو مد نظر رکھتے ہوئے کشمیری عوام کی نمائندہ تنظیم ، جموں وکشمیر مسلم کانفرنس نے 19جولائی  1947ء کو سر ی نگر میں ایک متفقہ قرار داد کے ذریعے پاکستان کے ساتھ الحاق کا فیصلہ کیا  مگر بھارت نے تقسیم بھارت کے تمام اصولوں کا پامال کرتے ہوئے فوج کشی کرکے ریاست پر قبضہ کرلیا ۔ کشمیری عوام نے بھارتی قبضے کے پہلے دن سے ہی بھرپور مزاہمت شروع کی ،جوکہ تاحال  جاری ہے کہ کشمیری عوام کے بنیادی انسانی حقوق کو غصب کرنے اور منصفانہ جدوجہد کو کچلنے کیلئے بھارت  تاریخ کی بدترین ریاستی دہشت گردی کررہا ہے ۔ 1947ء میں سانحہ جموں سے لے کر آج تک  چھ لاکھ سے زائد نہتے اور معصوم  کشمیریوں کو شہید کیا گیا ۔ صرف 1989ء کے بعد  سے  اب تک بھارتی فوج نے ایک لاکھ سے زائد کشمیریوں کو شہید کیا گیا ۔ قابض استعماری قوت کی حیثیت سے بھارت تسلسل سے کشمیریوں کی نسل کشی کررہا ہے ۔ بھارتی جبر تسلسل سے کشمیریوں کے جذبہ حریت اور پاکستان سے محبت میں بے پناہ اضافہ ہوا ۔ کشمیری بندوقوں کے سائے میں بے خوفی سے پاکستانی پرچم لہراتے  اور پاکستان کے حق میں نعرے بلند کرکے  اپنی محبت کا اظہار کرتے ہیں ۔
 وہ پاکستان کی تمام کامیابیوں پر خوشی کاجشن مناتے ہیں ۔ جب بھارت نے رات کے اندھیرے میں اپنے ننھے آقا اسرائیل کے ساتھ ، پاکستان میں بھارتی فضائیہ  کے ذریعے سرجیکل سٹرائیک کا ڈھونگ رچایا تو کشمیریوں میں دکھ کی لہر دوڑ گئی لیکن جب پاکستان نے بھارتی جھوٹ کا دن کی روشنی میں جواب   دینے کا نہ صرف اعلان کیابلکہ اس پر عمل کرتے ہوئے 26فروری کی رات کا دن کی روشنی میں جواب دیتے ہوئے نہ صرف فوجی اہداف کو نشانہ بنایا بلکہ بھارتی اور اس کی اتحادی فضائیہ کے دوجدید جنگی جہاز تباہ کئے تو کشمیر ی قوم نے خوشی کے شادیانے بجائے اور ان کا اعتماد مزید بڑھا۔ 
قابض بھارتی نہ صرف کشمیریوں کا ہولو کاسٹ کررہا ہے بلکہ پاکستان کو کشمیری بھائیوں کی حمائت کرنے پر کئی بار جارحیت کا نشانہ بنایا ۔ بھارت پاکستان کو عدم استحکام کا شکار کرنے کی مکروہ  کوششیںجاری رکھے ہوئے ہے ۔ تمام تر سازشوں اور گھٹیا بھارتی حربوں کے باوجود پاکستانی عوام  اور حکومت کشمیری بھائیوں کی اخلاقی ،سیاسی اور سفارتی سطح پر بھرپور مدد کررہا ہے ۔
پاکستان کشمیری بھائیوں کے بنیاد ی حقوق کیلئے تمام بین الاقوامی فورم پر آواز بلند کررہا ہے جس کے نتیجے میں پوری دنیا میں مسئلہ کشمیراور کشمیریوں پر بھارتی مظالم کی آوازگونج رہی ہے ۔اس بین الاقوامی کامیابی میں کشمیری عوام کی بے مثال جدوجہد اور پاکستان کی سفارتی  کوششوں کا عمل دخل ہے۔ جس طرح پاکستان کشمیر کو اپنی شہہ رگ قرار دیتا ہے اسی طرح کشمیری  اور پاکستانی عوام کے دل بھی ایک ساتھ دھڑکتے ہیں اور ایک ہی آواز بلند ہوتی ہے ۔’’ہم پاکستانی ہیں پاکستان ہمارا ہے‘‘ پاکستان کبھی بھی کشمیری بھائیوں کے مصائب سے لاتعلق نہیںہو سکتا ۔کشمیر کے اسیر رہنما نعیم احمد خان پاکستان سے اظہار محبت کرتے ہوئے کہتے ہیں ۔ ’’پاکستان نے  مسئلہ کشمیر کو بین الاقوامی سطح پر اجاگر کرنے کیلئے انتہائی اہم کردارادا کیا ہے ۔پوری کشمیری قوم پاکستان  کے ساتھ ہے ۔ اوراس کی شکر گذار ہے جس طرح پاکستانی قوم کشمیری بھائیوں کیلئے قربانیاں دے رہی ہے ۔اسی طرح کشمیری بھی پاکستان کا پرچم بلند کررہے ہیں اور اس کیلئے کسی بھی قسم کی قربانی  دینے کو تیار ہیں ۔‘‘
بھارتی پابندیوں اور مظالم کے باوجود ، مقبوضہ جموں وکشمیر میں ہر سال کی طرح اس سال بھی یوم پاکستان بھر پور جذبے اور شان وشوکت سے منانے کی تیاریاں جاری ہیں ۔ کشمیر ی قوم اس سال یوم پاکستان  بھر پور جذبے سے مناکر تحریک تکمیل پاکستان کے عہد کی تجدید کرے گی ۔ قربانیوں اور سرخ خون سے کے رنگ سے رنگین کشمیر میں نعرہ دیوانہ اور پاکستانی پرچم بلند کرکے۔ ’’ہم چھین کے لیں گے آزادی ‘ہے حق ہمار ا آزادی‘‘ان کے ان نعروں سے خوفزدہ بھارتی حکومت شکست کی راہ پر گامزن ہے ۔بھارت ٹکڑے ٹکڑے ہونے کو ہے ۔ کشمیری قوم کی جدوجہد نے سکھ بھائیوں کو بھی ایک نئی جہت دی ہے ۔سکھ بھائی بھی کشمیریوں کے ساتھ یوم پاکستان کی تقریب میں شامل ہوکرپاکستان زندہ باد، کشمیر اور خالصتان کی آزادی کے نعرے بلند کرتے ہیں ۔

تازہ ترین خبریں