11:31 am
محترمہ جیسنڈا آرڈرن کو خراج تحسین

محترمہ جیسنڈا آرڈرن کو خراج تحسین

11:31 am

نیوزی لینڈ کی38 سالہ وزیر اعظم محترمہ جیسنڈا آرڈرن کو دنیا بھر کے امن پسند زبردست خراج تحسین پیش کر رہے ہیں۔  منافرت اور تعصب پھیلانے والوں کی دھمکیوںکے باوجود  خاتون وزیراعظم نے 50 مسلمانوں کے قتل کی عدالتی نہیں بلکہ پبلک انکوائری کا اعلان کیا ہے کہ یہ پتہ لگایا جائے کہ آیا مسلمانوں پر حملوں سے بچا بھی جا سکتا تھا۔ دوبئی کے برج الخلیفہ پر ان کی تصویر بھی لگائی گئی۔جس میں وزیراعظم کو سیاہ لباس اور چادر میں ایک متاثرہ خاتون  کو گلے لگاتے دکھایا گیا۔ اس تصویر کو دوبئی کے حکمران شیخ محمد بن راشد المختوم نے سوشل میڈیا پر شیئر کیا۔محترمہ جیسنڈا کو رول ماڈل اور دنیا بھر کے حکمرانوں کے لئے ایک مثال کے طور پر پیش کیا جا رہا ہے۔جب کہ امن کے نوبل انعام کا بھی مستحق ٹھہرایا جا رہا ہے۔گو کہ وزیراعظم عمران خان نے بھی نیوزی لینڈ کی وزیراعظم کو ٹیلیفون کیا اور ان کے اقدامات کی تعریف کی مگر ابھی تک عمران خان کی حکومت نے بھی اظہار یک جہتی کے طور پر ملک میں آٹو میٹک اسلحہ پر پابندی کا کوئی عندیہ نہیں دیا ہے، اعلان یا قانون سازی بعد کی بات ہے۔جبکہ ملک میں لائسنس یافتہ اور غیر قانونی اسلحہ کے خلاف کریک ڈائون کی فوری ضرورت ہے۔  دنیا بھر میں پھیلنے والی اسلامو فوبیا کی خونی  لہروں کے درمیان اُمید، اتحاد، تشکر ومہربانی اور بہتری کا ایک استعارہ بن کر اُبھرچکی ہیں۔ وہ مسلم کمیونٹی کے زخموں پر مرہم رکھنے کی اپنی سی ہر تدابیر کر گزررہی ہیں۔ان کی باڈی لینگویج بھی درد مندی سے بھری تھی۔جس شخصیت نے نیوزی لینڈ کی واردات کو دُرست تناظر میں سمجھا اور سمجھایا وہ یہی عظیم خاتون ہیں۔
 
کسی مبصر نے کیا خوب لکھا کہ ہم  مغرب کی کج ادائی پر تنقید کرنے میں دیر نہیں کرتے مگر اچھائی کو سراہنے اور اعتراف کرنے میں تاخیر بھی دیانت کے خلاف ہے۔ خاتون وزیر اعظم اب سوشل میڈیا پر بھی سفید فام نسل پرستی کی حوصلہ شکنی کی مہم چلارہی ہیں۔نائن الیون کے چند ہی دن بعد ’’نیویارک ٹائمز‘‘ نے مصری نژاد یورپی خاتون کا ایک مضمون شائع کیا تھا۔ اس میں یہودی خاتون دانش ور نے اہل مغرب کو مسلمانوں کی آبادی میں غیر معمولی اضافے اور ان کے یورپ اور مغربی ملکوں کی طرف تیزی سے نقل مکانی کے رجحان کو خطرے کی گھنٹی قرار دیتے ہوئے لکھا تھا کہ جلد ہی یورپ میں آبادی کا تناسب تبدیل ہوجائے گا۔ پورے یورپ کو بتایا گیا تھا کہ مسلمان اگر اپنی عددی قوت کے بل پر یورپ میں غالب آگئے تو یورپی باشندوں کو غلامی اور اپنے کلچر اور روایات سے دستبرداری کے لیے ذہنی طور پر تیار رہنا چاہیے۔ نائن الیون کے بعد یہودی دانش وروں نے منظم منصوبہ بندی سے عیسائی اور مسلمان دنیا کے درمیان خلیج کو بڑھانے میں اہم کردار ادا کیا۔ عیسائی دنیا کو مسلمانوں سے خوف دلا کر اپنے طویل المیعاد مقاصد کی آبیاری کے لیے استعمال کیا۔ اس کا نتیجہ یہ نکلا کہ عیسائی دنیا میں مسلمانوں کے خلاف نفرت وعداوت کے جذبات تازہ ہونے لگے۔ نفرت کی چنگاریاں تاریخ کی راکھ میں تو موجود تھیں ہی، بس انہیں برینٹن ٹرنٹ جیسی ہوائوں کی ضرورت تھی۔ برینٹن ٹرنٹ اپنی شخصیت اور فکری سوچ وساخت اور نفرتوں بھری فضاء میں مغربی نوجوانوں کا رول ماڈل بننے کی پوری صلاحیت رکھتا ہے اور ٹرمپ جیسی ہم خیال شخصیات کے مخمصوں بھرے ٹویٹس ایسے کرداروں کو معاشروں اور تہذیبوں کا رول ماڈل بناتے ہیں۔ ایسے کرداروں کو بالادست طبقات اور حکمرانوں کی معمولی سی ہمدردی کی چھتر ی مل جائے تو وہ اتھل پتھل کرنے کی بھرپور صلاحیت رکھتے ہیں۔ 
ایسا ہوجائے تو مغرب کی جنت صرف باہر سے جانے والوں کے لیے ہی نہیں خود اپنے باشندوں کے جہنم زار بن سکتی ہیں۔ مغرب کی فلاحی ریاستیں دوبارہ اپنی سلامتی کے تحفظ کی فکر میں غلطاں وپیچاں ہو کر سیکورٹی اسٹیٹس بننے کی طرف لوٹ سکتی ہیں۔ جس خانہ جنگی اور بدامنی کے نظارے اہل مغرب دور بیٹھ کر کیا کرتے تھے،وہ شعلے ان کے گھروں کو بھی اپنی لپیٹ میں لے سکتے ہیں۔
جیسنڈا نے مسلمانوں کا پہلا کام یہ کیا وہ سوگوار مسلمانوں کے لباس میں سامنے آئیں۔ جس لباس کا آسٹریلوی پارلیمنٹ میں ایک خاتون رُکن پارلیمان نے مذاق اُڑایا تھا جیسنڈا وہی لباس پہن کر سامنے آئیں۔ وہ مسلمان خواتین سے لپٹ کر روتی رہیں اور ان کی حفاظت نہ کر سکنے پر بار بار ندامت اور معذرت کا اظہا ر کرتی رہیں۔ یہ آنکھوں کے نہیں دل کے آنسو معلوم ہوتے دکھائی دے رہے تھے اور ان مناظر سے یوں لگ رہا تھا کہ ایک ماں کو اپنے بچوں کے چھن جانے اور ان کی حفاظت کی ذمہ داری پر پورا نہ اُترنے کا دکھ ہے۔ یہ وہ ریاست ہوتی ہے جسے ماں جیسا کہلانے کا حق ہوتا ہے۔ جیسنڈا آرڈرن صرف مغرب کے لیے ہی نہیں مسلمان حکمرانوں کے لیے بھی ایک رول ماڈل کی صورت میں سامنے آئی ہیں۔ وہ ان اقدار کی علامت بن کر اُبھری ہیں جن پر کاربند رہنے نے مغرب کو عروج عطا کیا تھا۔
وزیراعظم عمران خان نے  انہیں دورہ پاکستان کی دعوت دی ہے۔ نیوزی لینڈ کی پارلیمنٹ میں کارروائی کا آغاز تاریخ میں پہلی بار تلاوتِ قرآن پاک سے ہوا اور وزیر اعظم نے اپنے خطاب کا آغاز ’’السلام وعلیکم‘‘ سے کیا۔محترمہ جیسنڈا نے دہشت گرد ٹرنٹ کو قتل عام سے روکنے کی کوشش کرنے والے بہادر پاکستانی نعیم رشیدکا ذکر نہ صرف عقیدت بھرے الفاظ میں کیا بلکہ ان کی ملکی شناخت کو بھی واشگاف لفظوں میں بیان کیا۔ جیسنڈا نے اپنے قول وفعل سے ٹرنٹ کو مغربی اور عیسائی دنیا کا ’’ولن‘‘ اور نعیم رشید کو ’’ہیرو‘‘ بنانے کی کوشش کر کے آنے والے زمانوں میں فساد کے طوفان کے آگے بندھ باندھنے کی اپنی سی کوشش کی ہے۔ ان کی اس انسان  دوستی مہم میں گزشتہ جمعہ کو سرکاری ٹی وی اور ریڈیو سے اذان نشر کی گئی۔ 
یوں جیسنڈا آرڈرن مغربی دنیا اور تہذیب کے ایک حقیقی اور مہربان کردار اور روپ میں سامنے آئی ہیں۔ دنیا میں تیزی سے بڑھتی ہوئی شدت پسندی اور عدم رواداری کے ماحول میں جیسنڈا اُمید کی کرن ہیں۔ ایسے کردار رول ماڈل بن جائیں تو مغرب اور اسلام کے درمیان بڑھتی ہوئی دوری میں غیر معمولی کمی واقع ہو سکتی ہے۔ جزیروں پر مشتمل چھوٹے سے ملک کی بظاہر ایک کمزور دکھائی دینے والی خاتون اپنے قول وفعل سے تہذیبوں کے درمیان ایک مضبوط پُل اور حسین بندھن کی علامت بن کر سامنے آئی ہیں۔ نائن الیون کے بعد کی نفرتوں بھری دنیا کو ایسے ہی مسیحا نفس کرداروں کی ضرورت ہے۔

 

تازہ ترین خبریں