12:47 pm
معراج شریف کے اہم واقعات

معراج شریف کے اہم واقعات

12:47 pm

معراج شریف ،آقائے دوجہاں ، سرورمرسلاں علیہ الصلوٰۃ والسلام کا عظیم معجزہ ہے ۔آپ ﷺ نے اپنی ظاہری حیا ت طیّبہ کے پہلے حصہ یعنی قیام مکۃ المکرمہ میں ہجر ت سے قبل ،اعلان نبوت فرمانے کے بارہویں سال ،حالت بید اری میں ،مسجد حرام شریف سے بیت المقدس تک ،پھر مسجد اقصیٰ سے فضائی وخلائی حصوں کو طے کرکے ساتوں آسمانوں تک، پھر ساتو ں آسمان سے سدر ۃ المنتہیٰ تک، پھر حجابات عظمت سے گزر کر عر ش معلی تک پھر لا مکاں تک جہاں نہ مشرق ہے نہ مغرب ہے ،نہ شمال ہے نہ جنوب ہے ،نہ کوئی پستی ہے نہ کوئی بلندی ہے، جس کا کوئی حدودِار بعہ نہیں ،وہاں نہ مکان نہ زمان ہے ،بس اﷲتبارک وتعالیٰ جلّ مجدہ کے جمال الوہیت ،جلال قدّوسیت اور حسن ربوبیت کی خاص جلوہ گاہ ہے، وہاں جاکر سر کی آنکھوں سے آیات کبریا کوبھی ملاحظہ فرمایا اور ذات کبریا عزوجل کے دیدا ر سے بھی مشرف ہوئے ۔
 
غزالی زماں حضر ت سید احمد سعید شاہ کاظمی قدس سر ہ ‘ لکھتے ہیں ۔حضور نبی اکرم نور مجسم سید عالم ﷺکے اخص خصائص اور اشرف فضائل وکمالا ت اور روشن ترین معجزات وکرامات سے یہ امر ہے کہ اﷲتعالیٰ نے حضور ﷺ کو فضیلت اسراء ومعراج سے وہ خصوصیت و شر افت عطا فرمائی جس کے ساتھ کسی نبی اور رسول کو مشرف ومکرم نہیں فرمایااور جہا ں اپنے محبوب ﷺ کو پہنچایا کسی کو وہاں تک پہچنے کا شر ف نہیں بخشا اور اﷲتعالیٰ نے اس عظیم وجلیل واقعہ کے بیان کو لفظ ’’سبحان‘‘ سے شروع فرمایاجس کا مفا د اﷲکی تنزیہ اور ذات باری کا ہر عیب ونقص سے پاک ہونا ہے ۔اس میںیہ حکمت ہے کہ واقعات معراج جسمانی کی بنا ء پر منکرین کی طرف جس قدر اعتراضات ہوسکتے تھے ان سب کا جواب ہوجائے ۔مثلاً حضور نبی کریم ﷺ کا جسم اقدس کے ساتھ بیت المقدس یا آسمانوں پر تشریف لے جانا اور وہاں سے ’’ثم دنی فتدلیٰ ‘‘ کی منزل تک پہنچ کر تھوڑی دیر میں واپس تشریف لے آنا منکرین کے نزدیک ناممکن اور محال تھا اﷲتعالیٰ نے لفظ سبحان فرماکر یہ ظاہر فرمایا کہ یہ تمام کام میرے لئے ناممکن اور محال ہوں تو یہ میری عاجزی اور کمزوری ہوگی اور عجزوضعف عیب ہے اور میں عیب سے پاک ہوں ،اسی حکمت کی بنا ء پراﷲتعالیٰ نے ’’اسریٰ ‘‘فرمایاجسکا فاعل اﷲتعالیٰ ہے ۔حضور ﷺ کو جانے والا نہیں فرمایا ،بلکہ اپنی ذات کو لے جانے والا فرمایا جس سے صاف ظاہر ہے کہ اﷲتعالیٰ نے لفظ ’’سبحان ‘‘ فرماکر معراج جسمانی پر ہر اعتراض کا جوا ب دیا ہے اورا س سے معلوم ہو ا،آیت اسریٰ کا پہلا لفظ ہی معراج جسمانی کی روشن دلیل ہے ۔
صحیح روایت میں ہے کہ نبی ﷺکے پاس براق ایسے عالم میں لایاگیا کہ اس کی زِیْن بھی کسی تھی اور لگام بھی پڑی تھی،جب رسول اﷲ ﷺنے اس پر سواری کا ارادہ کیا تو براق نے سر کشی کاانداز اختیار کیا،اسپر حضرت جبریل علیہ السلام نے اس سے کہا کہ تم سیّدنا محمد ﷺ کے ساتھ ایسا کررہے ہو؟تمہارے اوپر ان سے برگزیدہ ہستی کوئی سوار نہ ہو گی ،اس کے بعد وہ پسینہ پسینہ ہوگیا،ابن منیر اس کی وضاحت کرتے ہیں کہ براق کایہ نخرہ حضور ﷺکی سواری کے فخر واعزازمیں تھا ورنہ اس کی کیا مجال تھی کہ سر تابی کرتا ،جس طرح پہاڑ جھوم اُٹھا تھا ۔جب رسول اﷲﷺاُس پر چڑھے تھے ظاہر ہے یہ پہاڑ غصہ سے نہ ہلاتھا بلکہ عالمِ طرب میں جھوم اٹھا تھا۔ 
پھر آپ نے اپنے رفیق سیرحضرت جبریلں کے ساتھ مسجد اقصیٰ (بیت المقدس )کی سیر پر روانہ ہوئے ،جب آپ وہاں پہنچے تو حضرت جبریل ںنے اپنی اُنگلی سے پتھر میں سوراخ کیا اور براق کو اس سے باندھ دیا اور ایلیا ء (بیت المقدس )کے پادری نے بھی اس حقیقت کا اعتراف کرتے ہوئے بتایا کہ مسجد کے زاویہ میں موجود پتھر میں اس نے سوراخ دیکھا (جسے حضرت جبرائیل ںنے براق کو باندھنے کیلئے کیا تھا)اور یہ بھی بتایا کہ جانوروں کو باندھے جانے کا نشان بھی موجود تھا ،مزید اس نے اپنے ساتھیوں کو بتایا کہ دروازہ بند رکھا گیا تھا اور یہ اس رات اس مسجدمیں وہ (امام الانبیاء )نماز پڑھا کر چلے گئے جو عظیم الشان والے تھے اور وہی دروازے کے کھولے جانے کے حقدار تھے۔
براق گدھے سے چھوٹا اور خچر کے برا بر ایک سفید رنگ کا چوپایہ اس کی رفتا ر کا عالم یہ تھا کہ تاحدِ نظر اس کا ایک قدم ہو تا جب وہ کسی پہاڑ پر پہنچتا تو اس کے دونوںپاؤں بلند ہوجاتے اور جب نیچے کوآتا تو ا سکے دونوں ہاتھ بلند ہوجاتے ۔غرض نبی کریم ﷺ اس پر سوار ہوکر بیت المقدس پہنچے اور مسجد اقصیٰ میں دورکعت نماز ادا فرمائی پھر آپ باہر تشریف لائے ،اس وقت حضرت جبریل ؑ آپ کی خدمت میں ایک برتن شراب کا اور دسرا برتن دودھ کا لائے ،نبی ﷺنے دودھ کا برتن منتخب کیا ،حضرت جبریل ؑ نے عرض کیا آپ نے فطرت کا انتخاب کیا۔    ( جاری ہے)

تازہ ترین خبریں