10:55 am
   کشمیر  اور شرار  بو لہبی  !

کشمیر اور شرار بو لہبی !

10:55 am

   بھارتی  فوج  کی مشرقی  کمان  کے سابق سربراہ  جنرل  دیپندر سنگھ ہوڈا  نے  طاقت  کے نشے  میں بد مست  دلی  سرکار  کو   یہ  بتا  کے  خبردار  کرنے  کی کوشش  کی ہے  کہ  مقبوضہ کشمیر  میں  عوامی  سطح  پر  بھارت  کے  خلاف  نفرت  میں  اضافہ  غیر معمولی  حد تک  خطرناک  سطح  کو  جا  پہنچا  ہے۔  ایسا  ہر گز    نہیں کہ سابق  جنرل کشمیریوں  کے  غم  میں  ہلکان  ہو کے  انصاف  کی  بات  کرنے  چلے  ہیں ۔  اس  بظاہر  مدبرانہ دکھائی  دینے  والی   گفتگو  کا  پس  منظر  یہ ہے  کہ کشمیر  پر ناجائز  بھارتی  قبضے کو  بر قرار  رکھنے  کے  لیے  منعقد  کیے  گئے  ایک سیمینار  میں  جنرل  ہوڈا  نے  قاتل  بھارتی  حکومت کو کچھ  ایسے مشورے دیئے ہیںجو درحقیقت  اعتراف ِ  جرم  سے کم  نہیں ۔  جنرل  ہوڈا   کے  بقول   ریاستی طاقت  کے  وحشیانہ    استعمال  کے نتیجے  میں  بھارتی  افواج  حالات  پر قابو  پانے  کے  جو  بلند  بانگ  دعوے  کرتی  ہیں  وہ   نقش  بر آب  ثابت  ہوتے ہیں۔  زمین  کے ٹکڑے  پر  بندوقوں  اور  سنگینوں  سے  قبضہ  کیا  جا سکتا  ہے  !  انسانی  سوچ  اور  جذبوں  پر  نہیں  ۔

سابق  جنرل  نے  یہ  شکوہ  کرتے  ہوئے  منافقانہ  ڈنڈی  بھی  ماری  ہے کہ    بھارتی  فوج  اور  سیاسی  قیادت  کے طرز عمل میں یکسانیت نہیں  ہے  ۔ جب   بھارتی  افواج  تشدد  کا ہتھیار آزما  کے کشمیر کو  بھارتی  پنجے  میں رکھنے  کے  لیے  فضا  ساز گار  بناتی  ہے  تو  سیاسی  قیادت  مراعات  اور مذاکرت  کا  دانہ   پھینک  کے کشمیری عوام کو   زیرِ دام  لانے  کی کوئی کو شش نہیں کرتی  ۔  جنرل  ہوڈا  کے  جعلی  شکوے  کے  بر عکس  بھارتی  سیاسی  اور  فوجی  قیادت  کی  سوچ  میں  کشمیر  پر قبضے کے  معاملے  پر   کوئی  اختلاف  رائے  نہیں  !  دلی  سرکار کی  پٹاری  میں کشمیر کے  لیے  سیاسی  حل  نام  کی  کوئی شے نہیں۔  تشدد  ‘  نسل کشی‘  عصمت  دری  سمیت  بنیادی  انسانی  حقوق  کی  بد ترین  پامالی  کی حکمت  عملی  پر  بھارت  کی سیاسی  اور  فوجی  قیادت  کا  مکمل  اتفاق  ہے  ۔   دلی  سرکار  کے  نزدیک کشمیر   کا  ایک  بہت  بڑا  جرم    اُس  کی  مسلم  اکثریت  ہے  ۔   سیکیولر ازم  کی  باریک  نقاب  کے  پیچھے  متعصب  ہندو  شدت  پسند  سوچ   بھارت  پر  حکمران  رہی  ہے  ۔ مسلمانوں  سے  صدیوں  پرانی  نفرت  کے اظہار  کے لیے کشمیر کو مقتل  گاہ  میں  بدل  دیا  گیا  ہے۔    ریاستی  طاقت  کے  اندھے  استعمال  کا  نتیجہ  یہ  نکلا  ہے  کہ  مقبوضہ کشمیر  میں  قریہ  قریہ کوچہ کوچہ آزادی  کے  نعرے  بلند  ہو رہے  ہیں  ۔   شہداء  کے  جنازے  پاکستانی  پرچم  میں  لپیٹ  کے    جب  تدفین  کے  لیے  لائے  جاتے  ہیں  تو  فضا  پاکستان زندہ  باد  کے  نعروں  سے گونجتی  ہے  ۔  یہ  نعرہ    نئی  دلی  کے  راج  سنگھاسن  پر  براجمان   ہندوتوا  کے  فتنہ ساز دہشت  گردوں  کے  حواس  پر  بری  طرح  چھایا  ہوا  ہے  ۔  
اپنے  پیاروں  کے  پاکستانی  پرچم  میں  لپٹے   جنازے  کاندھوں  پر  اُٹھائے  جب کشمیری  پیر  و جواں  اﷲ اکبر  کا  نعرہ  بلند کرتے  ہیں  تو  دلی  سرکار  کو  اپنا  راج  سنگھاسن  ڈولتا  محسوس  ہوتا  ہے  ۔  بھارت  کے  شہہ  دماغ  اس  پریشانی  میں  مبتلا  ہیں کہ عشروں  سے  جاری  بد ترین  غیر انسانی  تشدد  کے  باوجود کشمیری  عوام کا  جذبہ حریت  سرد  کیوں  نہیں ہوا  ؟  سیمینارز  اور  مذاکرے منعقد  کیے  جا رہے  ہیں  !  ریٹائرڈ  جنرل  ،  دانشور ،  صحافی  اور گھاگ  سیاستدان  سر جوڑ  کے  بیٹھے  ہیں کہ آخر  بندوقیں  اور  سنگینیں  نہتے کشمیریوں کو  زیر کیوں نہیں کر پارہی  ہیں ؟  جنرل  دیپندر سنگھ  ہوڈا  اور  ان  جیسے  بہت  سے  بھارتی  شہہ دماغ کشمیریوں کے درد کو محسوس کر کے  بھارتی  حکومت  کو  پرامن  طریقوں اور  سیاسی  حل کے مشورے پیش  نہیں کر رہے۔  ان  کی  پریشانی  کا  محور  و مرکز  یہ  خیال  ہے  کہ کہیں کشمیر  بھارت  کے  پنجہٗ  خونیں  سے  نکل  نہ  جائے۔ کہیں  قیام  پاکستان  کے بعد اب کشمیر کی آزادی   کے  صدمے  سے  دو چار  نہ ہونا  پڑے !  اگر  تشدد  ،  دھونس  اور دھاندلی کا ہتھیار کامیاب  نہیں ہو رہا  تو  پھر  چانکیائی  منافقت  کی  میٹھی  چھری  استعمال کر  لی  جائے۔
کشمیریوں کو  مذاکرات  اور سیاسی حل کی  زہریلی گولی  نگلنے کے لیے بہلایاپھسلایاجائے۔ مسلمانوں  سے نفرت  کی انتہا  کا عالم  یہ ہے کہ  بی جے پی  کی ہندو شدت پسند  قیادت  برائے  نام  دکھاوے  کے لیے  بھی  پرامن  اطوار  اپنانے کو  تیار  نہیں ۔  حالیہ  الیکشن  جیتنے  کے لیے  مسلمانوں  سے  نفرت  اور  پاکستان  سے  جنگ  کے  نعرے کو  بھارت  کے گلی کوچوں  میں  پھیلایا  جا  رہا  ہے۔  سفارت کاری  ،  حکمت  و مصلحت  کا  تقاضہ  یہی  ہے  کہ کشمیر کا مقدمہ  بنیادی  انسانی  حقوق کی  پامالی  کے  عنوان  سے  دنیا  میں  اجاگر  کیا  جائے  لیکن  یہ  حقیقت  بھی  دنیا  کے سامنے    اجا گر کرنے  میں کوئی  کوتاہی  نہ برتی  جائے   کہ  دلی  سرکار  کی  مسلم  دشمنی کی  بدولت کشمیر ی  عوام  بد ترین  مظالم کا نشانہ  بن رہے  ہیں ۔ بھارت  سرکار کی ہٹ دھرمی  اور  نفرت  اس  انتہا  کو  آن پہنچی  ہے کہ فاروق عبداﷲ  اور محبوبہ مفتی  جیسے  حلیف بھی  حریفوں کی صف میں کھڑے  دکھائی  دے  رہے ہیں۔ آرٹیکل  تین سو ستر  کے  خاتمے  کے لیے  بی جے پی  کی  کاوشوں  پر  فاروق  عبداﷲ نے  یہ کہہ کے بڑا  خوب تبصرہ کیا  ہے کہ اس  آرٹیکل  کے  خاتمے  کے  بعد آئینی  اعتبار  سے کشمیر خود بخود  بھارت  کے تسلط سے آزاد  ہو جائے  گا  ۔
  فاروق  عبداﷲ کا  طنز  اپنے  دامن  میں ایک  طویل  بحث  کا  مواد  چھپائے  ہوئے  ہے  ۔ سمجھنے  کی بات  یہ  ہے  کہ  آئین  اور  قانون   کی  بات  تو  دنیا  دکھاوے  کے  لیے کی  جاتی  ہے  ۔ کشمیر  پر  بھارتی  تسلط  روز  اول  سے  بندوق  اور  سنگین کی  طاقت  سے  برقرار  ہے ۔  اخلاق  ، آئین  ، قانون  اور  انسانیت  جیسے  الفاظ  بھارت  کی لغت  میں  ہیں  ہی  نہیں ۔ کشمیری  مسلمانوں  کے  دلوں  میں  پاکستان  کی محبت  اور  زبانوں  پر  اﷲ اکبر  کے  نعرے  دلی  سرکار  کے  سر  کا  درد  بنے   رہیں  گے  ۔
ستیزہ کار رہا  ہے  ازل  سے  تا  امروز  
چراغ مصطفویؐ  سے  شرار بو لہبی

 

تازہ ترین خبریں