04:06 pm
فطرت کی تعزیر یں!

فطرت کی تعزیر یں!

04:06 pm

شریف خاندان کا ہر فرد عدالت میں، شہباز شریف خاندان کے 16 بینکوں میں150 اکاونٹس منجمد…٭مقبوضہ کشمیر: دو برسوں میں سات ہزار خواتین کے ساتھ زیادتیاں، سرکاری رپورٹ…٭ فاٹا کے اضلاع میں صوبائی اسمبلی کا الیکشن،16 نشستیں297 امیدوار…٭ بھارتی سپریم کورٹ: بابری مسجد کیس کا فیصلہ9 ماہ میں کرنے کا حکم …٭ پنجاب کابینہ میں ایک اور ’کلائوڈ برمٹ‘5 وزراء تبدیل…٭ نئی ٹرین میانوالی ایکسپریس کا اجرا…٭ بلاول کی اردو سے انیل مسرت کی اردو بہتر ہے۔ عمران خان…٭
 
خبروں کی سونامی کے باعث کالم بے ترتیب  ہو رہا ہے۔ احتساب عدالت نے مریم نواز کے خلاف جعلی ٹرسٹ ڈیڈ پر کارروائی کے لئے درخواست اس بنا پر خارج کر دی کہ اسے دائر کرنے کی قانونی مدت ختم ہوچکی ہے۔ نواز شریف اور شہباز شریف کے بھائی عباس شریف مرحوم کے بیٹے یوسف عباس کو بھی طلب کرلیا گیا ہے ان سے ’’چوہدری ملز‘‘ کا حساب طلب کیا گیا ہے۔ اس وقت شریف خاندان کے تمام افراد کرپشن اور دوسری بے ضابطگیوں کے الزامات کے سلسلے میں ملوث ہیں۔ ان میں نواز شریف، حسین نواز، حسن نواز، مریم نواز، مہر النساء، کیپٹن صفدر، شہباز شریف، اہلیہ نصرت شہباز، دوسری اہلیہ تہمینہ، بیٹے حمزہ،سلمان، رابعہ عمران، عائشہ ہارون، عمران یوسف، علی عمران شامل ہیں۔ پاکستان بلکہ شائد کسی بھی ملک کی تاریخ میں ایک بڑے خاندان کے تمام افراد کو عدالتوں میں پیش نہیں کیا گیا۔ خونریز انقلابات کی مثال اور بات ہے۔ اس وقت شریف خاندان کے تمام اکائونٹس بند ہیں۔ شہباز شریف خاندان! 16 بنکوں میں150 اکائونٹس؟ اس تعداد کی بھی کوئی مثال نہیں ملتی۔ جائیدادیں الگ منجمد ہیں۔ کسی بینک سے رقم نہیں نکلوا سکتے، کسی جائیداد کو فروخت یا کسی کو منتقل نہیں کرسکتے! الامان! یہ وقت بھی آنا تھا!
پنجاب کابینہ کے اجلاس کی صدارت جب بھی وزیراعظم خود کرتے ہیں ، کشتوں کے پشتے لگ جاتے ہیں۔ موصوف لاہور آئے، حسب معمول کابینہ کو الٹ پلٹ کرکے چلے گئے۔ اطلاعات کی وزارت وفاقی ہو یا صوبائی، وزیراعظم کسی پر مطمئن نہیں ہوتے۔ وفاقی کابینہ میں منتخب وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے وزیراعظم کی شان میں زمین آسمان کے قلابے ملا دیئے، اپوزیشن کی ہر ممکن ایسی تیسی پھیر دی مگر  ’’پیا‘‘ مطمئن نہ ہوئے، فواد چوہدری ایک روز سو کر اٹھے، اطلاعات کی وزارت ہاتھ سے پھسل چکی تھی۔ پنجاب میں فیاض الحسن چوہان کو ’بلی کے بھاگوں چھینکا ٹوٹا‘‘ کے مصداق اچانک وزارت اطلاعات ہاتھ میں آگئی۔ صبح شام پریس کانفرنسیں، الحمرا ثقافتی سنٹر کے بار بار دورے! بہت مزہ آتا تھا جب الحمرا کے مین گیٹ پر22 سکیل کے ڈائریکٹر مودب کھڑے استقبال کرتے تھے۔ اخبارات میں بڑی بڑی تصویریں چھپتی تھیں مگر نصیب دشمناں پھر ایک روز منادی پھر گئی کہ فیاض الحسن چوہان کو اطلاعات سے فارغ کرکے جنگلات، مچھلیوں اور مویشیوں کی وزارت میں بھیج دیا گیا ہے۔ وہاں ابھی چار دن بھی نہ گزار سکے تھے کہ یہ وزارت بھی ہاتھ سے گئی اور ایک گم نام قسم کی ’کالونیز‘ کی وزارت تھما دی گئی ہے کہ محکمہ مال کے ساتھ مل کر اراضی کے ریکارڈ کو کمپیوٹروں پر منتقل کر دیا ان کے بعد صمصام  بخاری کو وزیر اطلاعات بنا دیا گیا۔ سید زادے نے سب سے پہلے الحمرا سنٹر کے گیٹ پر اپنا استقبال کرایا پھر اپوزیشن کی منصبی پیڑھی (چارپائی)  ٹھونکنے میں  مصروف ہوگئے۔ اپوزیشن کا مضحکہ اڑانے کے لئے نئی نئی اصطلاحیں ایجاد کیں، بہت سے ’سبق آموز‘‘ بیانات اور دھمکیاں  دیں مگر ایک روز سو کر اٹھے تو نہ ہست تھا، نہ بود تھا۔ ’کسفالیڈیشن ہولڈنگ‘ نام کی ایک وزارت ہاتھ میں تھما دی گئی۔ میں نے یہ نام پہلی بار سنا تھا (شائد وزیراعلیٰ نے بھی پہلی بار سنا ہو!) ادھر ادھر سے پتہ کیا‘ معلوم ہوا کہ فیاض چوہان والی وزارت جیسی ہے کہ زمینوں کے ریکارڈ کو درست کرائو۔ اب اسلم اقبال صاحب کو تعلیم کے ساتھ اطلاعات کا بھی اضافی چارج دیا گیا ہے۔ ویسے یہ ایسی حکومت کا ہی طرز عمل نہیں۔ کسی بھی دور میں کسی بھی حکمران کو وزرارت اطلاعات کی کارکردگی پسند نہیں آتی۔
ایک واقعہ یاد آگیا ہے جنرل ضیاء الحق نے مارشل لاء لگایا تو ایک موثر اور جاندار وزیر اطلاعات کی ضرورت پیش آئی۔ حنیف رامے بھٹو کے دست راست تھے۔ پنجاب  کے وزیراعلیٰ  رہ چکے تھے۔ مزاج بہت نرم‘ ہر کسی کی فائدہ مند خدمت کے لئے بروقت تیار ! ضیاء الحق کے پاس اپنا نام پہنچایا۔ ضیاء الحق نے بلا کر کہا رامے صاحب! میں اطلاعات کی وزارت کے کام سے مطمئن نہیں‘ اسے ٹھیک کرنا چاہتا ہوں۔ رامے صاحب بولے کہ جناب! میں بھی مطمئن نہیں‘ اسے ٹھیک کردونگا! ضیاء الحق نے کہا کہ ٹھیک ہے آپ جائیں۔ آپ کو اطلاع دی جائے گی۔ رامے صاحب لاہور میں گھر آکر ٹیلی فون کے پاس بیٹھ گئے۔ دن رات گھنٹی بجنے کا انتظار رہتا مگر گھنٹی نہ بجی ۔میں مشرق اخبار میں تھا۔ رامے نے اخبار نے ایڈیٹر کو فون کیا کہ اسلام آباد سے کچھ پتہ کیا جائے۔ ایڈیٹر نے مجھے رامے صاحب کے پاس بھیج دیا کہ ان کی مدد کروں۔ میں گلبرگ میں ان کے گھر گیا تو ایک صوفے پر ٹیلی فون پر نظریں جمائے ہوئے بیٹھے تھے۔ میں صورتحال سے نابلد تھا۔ منہ سے نکل گیا کہ رامے صاحب! کل ٹیلی ویژن پر ضیاء الحق کی آنکھوں میں مگرمچھ والے آنسو دیکھے۔ فوراً بات کاٹ دی کہ  نہیں سرفراز صاحب! جنرل صاحب کی آنسو سچے اور حقیقی تھے۔ میں چوکنا ہوگیا۔ اصل کہانی معلوم ہوئی کہا کہ سات دن سے جنرل صاحب کی کال کا انتظار کر رہا ہوں‘ آپ ذرا اپنے ذرائع سے پتہ کرائیں کہ بات کہاں پہنچی ہے؟ میں نے کہا کہ رامے صاحب! آپ کو کوئی کال نہیں آئے گی۔ ضیاء الحق نے کہا تھا کہ وزارت کو ٹھیک کرنا ہے۔ تو آپ کو کہنا چاہیے تھا کہ حضور‘ جیسا ارشاد فرمائیں گے‘ تعمیل ہو جائے گی۔ آپ نے کہا کہ میں ٹھیک کردونگا! ایک ’’میں‘‘ تو خود ہی دوسری ’’میں‘‘ کیسے  قبول ہوسکتی ہے؟ رامے صاحب بہت مایوس ہوئے۔ بعد کی مختصر بات کہ ضیاء الحق کو خوش کرانے کے لئے پیپلزپارٹی کے مقابلے میں ’’مساوات‘‘ پارٹی بنائی۔ مگر یہ پارٹی بنتے ہی ضیاء الحق طیارہ کے حادثہ کی نذر ہوگیا۔ رامے صاحب پھر پیپلزپارٹی میں لوٹ آئے۔  پیپلزپارٹی نے انہیں پنجاب اسمبلی کا سپیکر بنا دیا وزارت اطلاعات کی باتیں کچھ زیادتی ہوگئیں۔ اب کچھ دوسری باتیں
مریم نواز گزشتہ روز احتساب عدالت میں خاص طور پر سلوایا ہوا ایک غیر معمولی سیاہ لباس پہن کر گئیں۔ سیاہ قمیض کے نیچے نواز شریف کی تصویر اور ساتھ تحریر کہ ’’نواز شریف کو رہا کرو‘‘ وہ اسی لباس کے ساتھ عدالت کے اندر گئیں۔ عدالت نے یہ بات نظرانداز کر دی  مگر بعض قانونی حلقوں نے اس حرکت پر سخت اعتراض کیا ہے کہ یہ حرکت عدالت کے سامنے نواز شریف کی رہائی کے مطالبہ والا بینر لہرانے کی توہین عدالت کی بات ہے اور یہ کہ ایک خاتون نے ایسا لباس پہن کر اخلاقی اقدار کی نفی کی ہے عدالت کے اندر اور باہر اس لباس کے ساتھ اس خاتون کی جو نمائش اور تشہیر ہوئی اسے نہایت افسوسناک بات قرار دیا جارہا ہے۔ ایک قانون دان نے تو توہین عدالت کا کیس دائر کرنے کا بھی اعلان کیا ہے۔ اس پر کیا لکھا جائے؟ ایک اعلان یہ بھی ہوا ہے کہ ن لیگ کی بہت سی خواتین بھی اسی ڈیزائن کے لباس تیار کرا رہی ہیں۔ اپنے جسم کو باپردہ رکھنے کی بجائے اس کی سرعام نمائش! استغفار۔
وزیراعظم عمران خان نے گزشتہ روز میانوالی میں نئی میانوالی ایکسپریس کا افتتاح کیا۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ وزیر ریلوے شیخ رشید نے ایک بار پہلے راولپنڈی تک ایک  میانوالی ایکسپریس کا افتتاح کر چکے ہیں۔ یہ ٹرین لاہور جائے گی۔ دوسری بات کہ شیخ رشید اس ٹرین کا نام اپنے باس عمران خان کے نام پر ’’نیازی ایکسپریس‘‘ رکھنا چاہتے تھے۔ بات نہ بن سکی تو باس کو خوش کرنے کا ایک طریقہ ڈھونڈ لیا۔ عمران خان کے نام سے لاہور تک 400روپے کی ایک عام مسافروں والی ٹکٹ خریدی (ائیرکنڈیشن بوگی ٹکٹ بہت مہنگی تھی) اور عمران خان کو پیش کر دی۔ عمران خان نے دستخط کرکے واپس کر دی۔ ٹرین سے  سفر نہیں کیا۔ مجھے ایک سردار کی کہانی یاد آگئی۔ ٹرین کا ٹکٹ خریدا مگر ٹرین میں نہیں بیٹھا۔ ٹرین چلی گئی تو ہنسنے لگا کہ ریلوے والوں کو کہنا دھوکا دیا ہے‘ ٹرین کا ٹکٹ میری جیب میں ہے مگر گیا ہی نہیں!
ایک مختصر بات: میانوالی میں عمران خان نے کہا کہ بلاول کی اردو سے انیل مسرت کی اردو بہتر ہے۔ انیل مسرت مانچسٹر میں برطانیہ کے پیدائش شہری ہیں۔ عالمی سطح کے پراپرٹی ارب پتی پراپرٹی ڈیلر ہیں۔ عمران خان کے 50ہزار مکانوں کی تعمیر کے منصوبہ میں مدد کے لئے آئے ہیں۔

تازہ ترین خبریں

پاک فضائیہ کاطیارہ گرکرتباہ

پاک فضائیہ کاطیارہ گرکرتباہ

امدادی ٹرک سے پاکستانی پرچم اتارنے والاپکڑاگیا،افغان حکومت کاسخت سزادینے کافیصلہ،پاکستانیوں کے دل خوش کردئیے

امدادی ٹرک سے پاکستانی پرچم اتارنے والاپکڑاگیا،افغان حکومت کاسخت سزادینے کافیصلہ،پاکستانیوں کے دل خوش کردئیے

پانی سے لبا لب بھرے بادلوں کی زبردست انٹری ، مسلسل کتنے دن تک خوب موسلا دھار بارشیں ہونگی ، پاکستانی تیاری کر لیں 

پانی سے لبا لب بھرے بادلوں کی زبردست انٹری ، مسلسل کتنے دن تک خوب موسلا دھار بارشیں ہونگی ، پاکستانی تیاری کر لیں 

وفاقی دارالحکومت کے سیکٹر جی ایٹ میں ڈکیتی کی واردات،ملزمان60لاکھ مالیت کا سامان ونقدی لوٹ کر فرار

وفاقی دارالحکومت کے سیکٹر جی ایٹ میں ڈکیتی کی واردات،ملزمان60لاکھ مالیت کا سامان ونقدی لوٹ کر فرار

حافظ تو تھے ہی لیکن یہ اعزاز بھی مل گیا، معذوری کے باوجود  محمد سنان نے ایسا کیا کیا جو پورے پاکستان میں واہ واہ ہو گئی

حافظ تو تھے ہی لیکن یہ اعزاز بھی مل گیا، معذوری کے باوجود محمد سنان نے ایسا کیا کیا جو پورے پاکستان میں واہ واہ ہو گئی

تعلیم مکمل ۔۔ عمران خان کے بیٹے اب کیا کریں گے۔ ۔۔؟سیاست ، کاروبار یاپھر کھیل ۔۔ ؟پاکستانیوں کیلئے بڑی خبر

تعلیم مکمل ۔۔ عمران خان کے بیٹے اب کیا کریں گے۔ ۔۔؟سیاست ، کاروبار یاپھر کھیل ۔۔ ؟پاکستانیوں کیلئے بڑی خبر

قیامت صغریٰ کا منظر۔ 6.0شدت کے زلزلے نے تباہی پھیر دی۔۔متعددعمارتیں تباہ، امدادی کارروائیوں کیلئے ٹیمیں روانہ

قیامت صغریٰ کا منظر۔ 6.0شدت کے زلزلے نے تباہی پھیر دی۔۔متعددعمارتیں تباہ، امدادی کارروائیوں کیلئے ٹیمیں روانہ

محکمہ موسمیات نے آج گرج چمک کے ساتھ طوفانی بارشوں کی پیش گوئی کردی

محکمہ موسمیات نے آج گرج چمک کے ساتھ طوفانی بارشوں کی پیش گوئی کردی

بارشوں کی دھواں دار اننگز ۔اگلے تین دن کہاں کہاں بادل برسنے والے ہیں ؟شاندار خوشخبری

بارشوں کی دھواں دار اننگز ۔اگلے تین دن کہاں کہاں بادل برسنے والے ہیں ؟شاندار خوشخبری

بہت چھٹیاں کر لیں ، اب موجیں ختم۔۔ ہفتے میں دو کے بجائے اب صرف ایک دن چھٹی ۔۔۔ حکومت نے اعلان کر دیا،پاکستانیوں پر بجلیاں گرا دی گئیں

بہت چھٹیاں کر لیں ، اب موجیں ختم۔۔ ہفتے میں دو کے بجائے اب صرف ایک دن چھٹی ۔۔۔ حکومت نے اعلان کر دیا،پاکستانیوں پر بجلیاں گرا دی گئیں

وزیر اعظم نے اساتذہ کی تنخواہوں میں اضافہ کی منظوری دیدی

وزیر اعظم نے اساتذہ کی تنخواہوں میں اضافہ کی منظوری دیدی

 پورا ملک ووٹ کو عزت دو کے بیانیے پر چل رہا ہے،مریم نواز

پورا ملک ووٹ کو عزت دو کے بیانیے پر چل رہا ہے،مریم نواز

پاکستان میں نابینا افراد کیلئے اسمارٹ جوتا تیار

پاکستان میں نابینا افراد کیلئے اسمارٹ جوتا تیار

 شجرکاری مہم کے تحت 60 لاکھ پودے لگائے جائیں گے۔عثمان بزدار

شجرکاری مہم کے تحت 60 لاکھ پودے لگائے جائیں گے۔عثمان بزدار