04:40 pm
فاروق عبداللہ‘ مقبوضہ کشمیر اور چین

فاروق عبداللہ‘ مقبوضہ کشمیر اور چین

04:40 pm

مقبوضہ کشمیر کے سابق وزیراعلیٰ فاروق عبداللہ آخر کارپھٹ پڑے۔ انہیں مقبوضہ کشمیر میں نریندر مودی کی حکومت کشمیری عوام کے ساتھ جو سفاکانہ رویے اختیار کئے ہوئے ہے‘ اس کی وجہ سے وہ نہ صرف دل گرفتہ ہیں‘ بلکہ موصوف نے یہاںتک کہہ دیاہے کہ مقبوضہ کشمیر کے عوام اور وہ خود چین کے ساتھ رہنا پسند کریں گے نہ کہ بھارت کے ساتھ فاروق عبداللہ کا یہ بیانیہ بالکل صحیح ہے کہ مقبوضہ کشمیر کے عوام اب کسی بھی طور پر بھارت کے ساتھ نہیں رہناچاہتے ہیں۔ مقبوضہ کشمیر کے عوام سے پوچھا جائے کہ آیاوہ بھارت کے ساتھ رہناپسند کریں گے ان کا جواب ہے ’’ ہم بھارت کے ساتھ نہیں رہناچاہتے ہیں‘‘ اس ہی قسم کی ایک رپورٹ امریکہ کے تھنک ٹینک کی جانب سے گزشتہ ماہ جاری کی گئی ہے  جس میں مقبوضہ کشمیر کے عوام نے بغیر کسی لگی پٹی کہا ہے کہ ’’اب ہمارا بھارت کے ساتھ الحاق تقریباً ختم ہوچکاہے۔‘‘ یقینا فاروق عبداللہ یا پھر مقبوضہ کشمیر کے عوام کی یہ سوچ صرف ایک دن میں پیدا نہیں ہوئی ہے بلکہ اس کے پیچھے بھارت کی ماضی کی حکومتوں کاظالمانہ رویہ رہاہے خصوصیت کے ساتھ بھارت کی موجودہ حکومت کا جس نے اس وقت 10لاکھ فوج مقبوضہ کشمیر میں بھیج رکھی ہیں‘ جوآئے دن کشمیری نوجوانوں کو قتل کررہی ہے۔ اب تک ایک سال میں300 سے زائد نوجوانوں ‘ بزرگوں اور بچوں کو بڑی بے دردی سے قتل کیا گیاہے‘ بھارت کے علاوہ دنیا بھر کے اخبارات میں کشمیری عوام کے قتل سے متعلق خبریں شائع ہوچکی ہیں‘ لیکن عالمی کمیونٹی بھارت کی حکومت کے اس ظلم کودیکھ رہی ہے‘ ٹی وی پرپولیس اور بھارتی فوج کے بھیانک رویے کو بھی دیکھ رہی ہے لیکن خاموش ہے۔یہاں تک اس سلسلے میںاقوام متحدہ کو بھارتی فوج اور پولیس کی عوام پر بربریت کو روکنے کیلئے کچھ اقدامات اٹھانے چاہیے تھے‘ لیکن ایسا ہوتا ہوا نظر نہیں آرہاہے‘ محض بیان بازی کے علاوہ اور کچھ نہیں ہے۔
 یہی وجہ ہے کہ مقبوضہ کشمیر کے سابق وزیراعلیٰ فاروق عبداللہ نے بی جے پی حکومت کے ظلم وبربریت کے خلاف بیانات دینا شروع کردیئے ہیں جوایک بڑی تبدیلی کامظہر ہے۔ واضح رہے کہ فاروق عبداللہ طویل عرصے تک بھارت کے ساتھ دوستی پر فخر کیا کرتے تھے ‘ یہی حال محبوبہ مفتی کابھی تھا‘بلکہ محبوبہ مفتی نے تو باقاعدہ بی جے پی کے ساتھ انتخابی الحاق  بھی کرلیاتھا اور کچھ عرصہ تک مقبوضہ کشمیر میں محبوبہ مفتی کی پارٹی اور بی جے پی کی مخلوط حکومت کام کرتی رہی تھی‘ اب یہ دونوں مقبوضہ کشمیر کے اہم رہنما بی جے پی کی حکومت سے نہ صرف بدظن ہوگئے ہیں بلکہ وہ نوجوانوں کی بھارت کے خلاف پرامن احتجاج کی حمایت بھی کررہے ہیں ‘ فی الحال نریندر مودی نے ان دونوں کو گھر میں قید کررکھاہے‘ تاکہ وہ باہر نہ آسکیں اور نہ ہی نوجوانوں کے ساتھ شامل ہو کر بھارت کی حکومت کے خلاف احتجاج کوتقویت دے سکیں۔ 
فاروق عبداللہ کو اس بات کا بھی بڑا دکھ ہے کہ جب سے نریندر مودی نے بھارت کے آئین سے 370 اور35-A کو ختم کیاہے‘ اس کی وجہ سے مقبوضہ کشمیر کے عوام کی معاشی سیاسی اور ثقافتی صورتحال بد سے بدتر ہوگئی ہے‘ نیز نریندر مودی کی حکومت کے مقبوضہ کشمیر سے متعلق غیر آئینی اقدامات کی وجہ سے کشمیر کا مسئلہ مزید الجھ گیاہے۔ حالانکہ اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق یہ علاقہ پاکستان اور بھارت کے درمیان متنازعہ ہے اور اب بھی ہے‘ اب تو چین بھی مقبوضہ کشمیر کے بعض حصوں پر اپنی ملکیت کا دعویٰ کررہاہے۔ ایک اور سنگین مسئلہ جس نے فاروق عبداللہ اور محبوبہ مفتی کو بولنے پر مجبور کیاہے‘ وہ بھارت کی جانب سے بھارت کے لوگوں کو جعلی ڈومیسائل کا بڑی تعداد میں اجرا ہے۔ یہ ڈومیسائل جموں اور سرینگر کے لئے دیئے جارہے ہیں‘ جہاں یہ آباد ہوسکیں گے‘ (اس سلسلے میں پہلے ہی ایک تفصیلی کالم لکھ چکاہوں) اس طرح مقبوضہ کشمیر میں آبادی کاتناسب بدل جائے گا اور مسلمانوں کی اکثریت اقلیت میں بدل جائے گی ۔ یہی بی جے پی اور آر ایس ایس کی مقبوضہ کشمیر سے متعلق خطرناک حکمت عملی ہے جس پر بڑی سرعت کے ساتھ عملدرآمد کیاجارہاہے ۔ پاکستان کی حکومت بھارت کی اس غیر آئینی طریقہ کار کے خلاف مسلسل آواز بلند کررہاہے۔ اقوام متحدہ کو بھی اس سلسلے میں آگاہ کیاجارہاہے لیکن بھارت اپنی چال بازیوں سے باز نہیں آرہاہے‘ وہ مسلسل جعلی ڈومیسائل جاری کررہاہے تاکہ جلد سے جلد آبادی کے تناسب کو تبدیل کرکے وہاں ریفرنڈم کراکر دنیا کو یہ دھوکہ دینے کی کوشش کی جائے کہ مقبوضہ کشمیر کے عوام بھارت کے ساتھ رہناچاہتے ہیں‘ حالانکہ اگر خدانخواستہ ایسا ہوگیا تو پھر بھی مقبوضہ کشمیر کے عوام بھارت کے ساتھ رہنا پسند نہیں کریں گے‘ بلکہ آزادی اور اپنے حقوق کی بازیابی کی تحریک جاری رہے گی‘ بلکہ زیادہ تیز ہوجائے گی۔
دراصل فاروق عبداللہ کے والد مرحوم شیخ عبداللہ اگر آنجہانی نہرو کے بہکائے میں نہیں آتے توکشمیر کا مسئلہ کبھی کا حل ہوگیاہوتا اور کشمیر کے عوام پاکستان کے ساتھ الحاق کرلیتے۔ لیکن مرحوم شیخ عبداللہ کو نہرو کی دوستی زیادہ عزیز تھی اس لئے انہوں نے کشمیری عوام کاسودا کرکے پاکستان اور کشمیر کے عوام کو زبردست دھوکہ دیاتھا۔ لیکن بعد میںکشمیر کے عوام نے یہ بھی منظر دیکھا کہ نہرو نے شیخ عبداللہ کو ایک طویل عرصے کیلئے جیل میں قیدکردیا اور اس طرح کشمیری عوام کو ان کے حق خود ارادیت سے بھی محروم کرنے کی کوشش کی۔ اب ان کا بیٹا فاروق عبداللہ بی جے پی کی حکومت کے ظلم وبربریت کے خلاف آواز بلند کررہاہے جس کا یقینا مقبوضہ کشمیر کے عوام پر اثر ہورہاہے اور عالمی سطح پر بھی‘ لیکن یہی فاروق عبداللہ ایک زمانے میں بھارت کے زبردست حامی تھے‘ جیساکہ میں نے بالائی سطور میں لکھا ہے بلکہ ہرمعاملہ پر بھارتی حکومت کی ہاں میں ہاں ملاتے تھے جس کی وجہ سے کشمیرکاز کو بہت زیادہ نقصان پہنچا ہے‘ تاہم دیر آید درست آید کے مصداق ‘ اب وہ اور محبوبہ مفتی نریندر مودی کی مکارانہ چالوں کو سمجھ گئے ہیں اور اس کی سفاکانہ پالیسیوں کے خلاف آواز بلند کررہے ہیں تاکہ عالمی کمیونٹی پر اس کا اثر ہوسکے اور مقبوضہ کشمیر کے عوام کو ان کاحق مل سکے۔یہ ایک طویل جدوجہد ہے لیکن اب بھارت نواز عناصر بھی نوجوانوں کے پرامن جدوجہدمیں شامل ہوکر آزادی کی تحریک کو آگے بڑھارہے ہیں‘ اگر عالمی کمیونٹی خصوصیت کے ساتھ امریکہ بہادر نے اس سنگین مسئلہ کو حل کرنے میں اپناکردارادا نہیں کیا‘ تو آئندہ اس مسئلہ پر پاکستان اور بھارت کے درمیان جنگ کو کون روک سکے گا‘ چین بھی اس جنگ میں شامل ہوسکتاہے‘ ذرا سوچیئے۔


تازہ ترین خبریں

چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کا جیل بھرو تحریک کا اعلان

چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کا جیل بھرو تحریک کا اعلان

عمران خان کی نااہلی متوقع،پی ڈی ایم ضمنی الیکشن میں حصہ نہ لے، فضل الرحمن کا شہباز شریف کو مشورہ

عمران خان کی نااہلی متوقع،پی ڈی ایم ضمنی الیکشن میں حصہ نہ لے، فضل الرحمن کا شہباز شریف کو مشورہ

قتل  ہوا  تو  ذمہ دار آصف زرداری، بلاول، شہباز اور رانا ثنا اللہ ہوں گے، شیخ رشید   کا دعویٰ

قتل ہوا تو ذمہ دار آصف زرداری، بلاول، شہباز اور رانا ثنا اللہ ہوں گے، شیخ رشید کا دعویٰ

وزیرخزانہ اسحاق ڈار اپنے معاشی اعداد وشمار درست کریں، شوکت ترین کی تنقید

وزیرخزانہ اسحاق ڈار اپنے معاشی اعداد وشمار درست کریں، شوکت ترین کی تنقید

ہرجانہ کیس ، افتخار چوہدری کے اعتراض پر عمران خان کیخلاف بینچ تبدیل

ہرجانہ کیس ، افتخار چوہدری کے اعتراض پر عمران خان کیخلاف بینچ تبدیل

انتقامی کارروائیوں سے معیشت بہتر نہیں ہوگی،حکومت الیکشن کا اعلان کرے مذاکرات  کیلئے تیار ہیں، فیصل جاوید

انتقامی کارروائیوں سے معیشت بہتر نہیں ہوگی،حکومت الیکشن کا اعلان کرے مذاکرات کیلئے تیار ہیں، فیصل جاوید

تحریک انصاف کے سابق ارکان قومی اسمبلی سے پارلیمنٹ لاجز کے کمرے خالی کروالئے گئے

تحریک انصاف کے سابق ارکان قومی اسمبلی سے پارلیمنٹ لاجز کے کمرے خالی کروالئے گئے

شیخ رشید  اسلام آباد کے کسی تھانے میں موجود نہیں، راشد شفیق کا دعویٰ

شیخ رشید اسلام آباد کے کسی تھانے میں موجود نہیں، راشد شفیق کا دعویٰ

حکومتی ترجیحات امن نہیں، مقدمات ہیں، ہمیں کسی اور کی جنگ کاایندھن بنایا جارہا ہے، مراد سعیدکا انکشاف

حکومتی ترجیحات امن نہیں، مقدمات ہیں، ہمیں کسی اور کی جنگ کاایندھن بنایا جارہا ہے، مراد سعیدکا انکشاف

مہنگائی میں اضافے سے عوام کو تکلیف پہنچی ،ہم سب جانتے ہیں، وزیرخزانہ اسحاق ڈار

مہنگائی میں اضافے سے عوام کو تکلیف پہنچی ،ہم سب جانتے ہیں، وزیرخزانہ اسحاق ڈار

سابق وفاقی وزیر شیخ رشید کیخلاف کراچی میں مقدمہ درج ، پولیس گرفتاری کیلئے اسلام آباد پہنچ گئی

سابق وفاقی وزیر شیخ رشید کیخلاف کراچی میں مقدمہ درج ، پولیس گرفتاری کیلئے اسلام آباد پہنچ گئی

کوہاٹ تاندہ  ڈیم خادثہ ، آخری طالب علم  کی لاش 6 روز بعد  نکال لی گئی،جاں بحق ہونیوالوں کی تعداد 53 ہو گئی

کوہاٹ تاندہ ڈیم خادثہ ، آخری طالب علم کی لاش 6 روز بعد نکال لی گئی،جاں بحق ہونیوالوں کی تعداد 53 ہو گئی

معروف اینکر عمران ریاض خان کیخلاف مقدمہ خارج ، عدالت کا فوری رہا کرنے کا حکم

معروف اینکر عمران ریاض خان کیخلاف مقدمہ خارج ، عدالت کا فوری رہا کرنے کا حکم

شیخ رشید کی مشکلات میں مزید اضافہ، مری میں بھی مقدمہ درج

شیخ رشید کی مشکلات میں مزید اضافہ، مری میں بھی مقدمہ درج