01:15 pm
ملکی سرحدات اور اسلامی نظریات کی حفاظت لازم

ملکی سرحدات اور اسلامی نظریات کی حفاظت لازم

01:15 pm

جس طرح اسلامی جمہوریہ پاکستان کی سرحدات کی حفاظت ضروری ہے … بالکل اسی طرح یہاں بسنے والے مسلمانوں کے اسلامی نظریات کی حفاظت بھی ضروری اور لازمی ہے …  سوشل میڈیا پر پی ٹی ایم کے محسن داو ڑ سے سوال کیا جارہا ہے کہ انہوں ے پشاور میں مارے جانے والے ایک قادیانی کو شہید کیسے قرار دیا؟ اور منظور پشتین نے مارے جانے والے قادیانی پروفیسر کے گھر جاکر فاتحہ خوانی کیونکر کی؟
دلچسپ بات یہ ہے کہ سوشل میڈیا پر یہ سوال اٹھانے والے اکثر وہ لوگ ہیں کہ جو کسی نہ کسی طرح پی ٹی ایم کے حمایتی تصور ہوتے تھے … ان سوال اٹھانے والوں میںایسے کارکن بھی ہیں کہ جو پشتون تحفظ موومنٹ کو مظلوموں کی حامی قرار دیتے تھے اور ان کی حمایت میں اداروں پر کھل کر تنقید کرنے سے بھی نہیں گھبراتے تھے۔
قارئین اس بات کے شاہد ہیں کہ اس خاکسار نے پی ٹی ایم کے حوالے سے آج تک اپنے کالموں میں جتنے سوالات بھی اٹھائے وہ سارے کے سارے ان کی ریاستی اداروں کے خلاف کی جانے والی حرکتوں کے حوالے سے تھے … اس عاجز نے اپنے ہر کالم میں منظور پشتین، محسن داوڑ، علی وزیر اینڈ کمپنی سے سوال پوچھا کہ ’’میرا جسم، میری مرضی‘‘… ’’لال، لال لہرائے گا‘‘… وہ لادینیت کے ان استعاروں اور ملحدانہ سوچ کا تعلق پختون حقوق سے ثابت کریں؟ عورتوں کو گھروں سے نکال کر جلسے اور جلوسوں میں لانے کی دعوت دینا، پاکستانی فوج کے خلاف خوفناک انداز میں گھٹیا پروپیگنڈا کرنا … ان کا پختونوں کے حقوق سے کیا تعلق اور واسطہ ہے؟
 اور اب تو سوشل میڈیا پر بڑی شدت سے پوچھا جانے والا یہ سوال میرا بھی ہے کہ کسی ’’قادیانی‘‘ کو شہید قرار دے کر اس کی فاتحہ خوانی کرنا کون سا اسلام ہے؟ اور پی ٹی ایم کے لیڈروں کے اس عمل کا پختون حقوق سے کیا تعلق ہے؟ کہا جاتا ہے کہ اپنے گستاخانہ خیالات کی وجہ سے پشاور میں اپنے ہی ساتھی پروفیسر کے ہاتھوں قتل  ہوئے نعیم الدین ، پشتون تحفظ موومنٹ کے بانی راہنما شہاب خٹک کے بھائی تھے۔
مقتول پروفیسر کے قتل کا مقدمہ درج ہوچکا، اس کے قاتل بھی پکڑے جائیں گئے … اس بات کی غیر جانبدارانہ اور شفاف انکوائری ہونی چاہیے کہ کیا واقعی وہ کالج میں اپنے گستاخانہ خیالات کا اظہار کرتا تھا؟ اور اس کے قتل کے محرکات یہی بنے یا پھر اس کی آڑ میں کوئی دوسری دشمنی نکالنے کی کوشش کی گئی ہے؟ میں پاکستان میں قانون کی حکمرانی کا قائل ہوں اور یہاں بھی قانون ہی کی حکمرانی دیکھنا چاہتا ہوں … لیکن پی ٹی ایم سے سوال تو بنتاہے کہ آخر قادیانیوں سے پختون حقوق کا کیا تعلق اور واسطہ ہے؟ اگر پاکستان کے مسلمان نواز شریف سے پوچھ سکتے ہیں کہ انہوں نے قادیانیوں کو اپنا بھائی کیوں قرار دیا تھا؟ تو پھر منظور پشتین سے بھی پوچھا جانا چاہیے کہ ایک قادیانی شہاب خٹک کو پختون تحفظ کا بانی راہنما کیوں قرار دیا جارہا؟ اور عوام یہ بھی پوچھ  رہے ہیں کہ کہیں پاک فوج اور اسلامی نظریات کے خلاف پی ٹی ایم، قادیانی گٹھ جوڑ تو نہیں ہوچکا؟ سن لیجئے ’’شہید‘‘ اسلامی اصطلاح ہے … اور فاتحہ خوانی کے لئے ضروری ہے کہ مرنے والا مسلمان ہو، اسلامی اصطلاحات کو چرا کر قادیانیوں کو نوازنے والوں کو مسلمانوں کے اسلامی حقوق پر ڈاکہ مارنے کی اجازت نہیں دی جاسکتی … سنا ہے کہ اول اول یہ کہا گیا کہ قتل ہونے والا پروفیسر قادیانی نہیں ہے ، لیکن چناب نگر سے جماعت قادیانیہ کے ترجمان اخبار ربوہ ٹائمز نے مقتول پروفیسر نعیم الدین  کو ’’اون‘‘ کرتے ہوئے اس واقعہ کو مذہبی منافرت کا نتیجہ قرار دے کر پی ٹی ایم کو مسلمانوں کی عدالت میں لاکھڑا کیا۔
قادیانی ترجمان اخبار میں چھپنے والے بیان کے مطابق ’’پاکستان میں عموماً اور پشاور میں بالخصوص عقیدے کے اختلاف کی بنیاد پر قادیانیوں کو ہراساں کیا جارہا ہے اور ان کی زندگیوں کو  نشانہ بنایا جارہا ہے‘‘ میرے خیال میں یہ بات درست نہیں ہے ، پاکستان میں ہندو، عیسائی، سکھ، بہائی، ذکری حتیٰ کہ یہودی بھی رہتے ہیں … لیکن انہیں توعقید ے کے اختلاف کی بنیاد پر نہ ہراساں کیا جارہا ہے اور نہ قتل، ہاں اگر ملک کے کسی حصے میں اکا دکا واقعات ہو بھی جائیں تو نہ صرف قانون بلکہ مسلم راہنما بھی اقلیتوں کے شانہ بشانہ کھڑے ہوتے ہیں۔
قادیانی ترجمان کی ذمہ داری ہے کہ وہ پاک سرزمین پر رہنے  والے قادیانیوں کو سختی سے ہدایت کریں کہ وہ مسلمانوں والے نہ تو اسلامی شعائر استعمال کریں اور نہ ہی مسلمانوں کے عقیدے پر حملہ آور ہوں … یاد رکھیئے، اظہار رائے  کی آزادی کی بھی ایک حد ہوتی ہے … قادیانی ہوں یا کوئی اور  ، سب کو آئین پاکستان کو تسلیم کرکے اپنے آپ کو اس کے تابع کرنا چاہیے ، ملک میں کہیں بھی کسی ’’اقلیت‘‘ کو بھی نہ تو کوئی گروہ ہراساں کرسکتا ہے اور نہ کوئی جماعت اور نہ آئین پاکستان یا ملکی قانون ایسا کرنے کی کسی کو اجازت دیتا ہے … مسلمان اکثریت  کے مذہبی عقائد پر حملہ آور ہوکر انہیں مشتعل کرنا دانشمندی نہیں  بلکہ بیوقوفی کہلائے  گا… پاکستان کے ریاستی اداروں نے اس کی نہ پہلے کسی کو اجازت دی ہے اور نہ آئندہ دیں گے، پشاور کی بھری عدالت میں جس قادیانی کو قتل کیا گیا وہ جھوٹا مدعی نبوت تھا … کیا مسلمانوں کے سامنے مدعی نبوت ہونا توہین رسالت کے زمرے میں نہیں آتا؟ اور اس بات کے متعدد ثبوت موجود ہیں کہ مارا جانے والا گستاخ متعدد مرتبہ دعویٰ نبوت کرکے مسلمانوں کو مشتعل کرچکا تھا، سوال یہ ہے کہ جس وقت وہ یہ مردود حرکتیں کرکے مسلمانوں کو اشتعال دلا رہا تھا تب قادیانی جماعت نے اس کے خلاف ایکشن کیوں نہ لیا؟ آپ کو اپنی اور اپنی جماعت کے لوگوں کی ادائوں پر بھی غور کرنا چاہیے، جس نے عدالت میں مدعی نبوت کو قتل کیا وہ نہ تو لندن میں پناہ گزین ہوا، نہ فرانس میں اور نہ ہی سرگودھا کے عبد الشکور قادیانی کی طرح  فرار ہوکر امریکہ ٹرمپ کے دربار میں گیا، بلکہ وہ قانون کی گرفت میں اور پشاور جیل میں ہے … ’’قانون‘‘ دجال مدعی نبوت کو سالہا سال تک سزا دینے میں ناکام رہا ، لیکن اس کے قاتل خالد کو ضرور سزا دے گا، قادیانی ترجمان اور کیا چاہتے ہیں کہ … کیا’’دجال‘‘ کے قتل میں پشاور کے سارے مسلمانوں کو پھانسی دے دی جائے؟ قادیانی ترجمان ملک کو بدنام مت کریں… ’’قانون‘ ‘ تو ان کے ساتھ کھڑا ہے … پی ٹی ایم کے لیڈروں کو بھی چاہیے کہ وہ غیرت مند پختونوں کے سامنے وضاحت پیش کریں کہ ان کا قادیانیوں سے کیا تعلق ہے؟ اور ایک قادیانی کو شہید قرار دینے ، اس کی فاتحہ خوانی پر بھی مسلمانوں سے معافی مانگیں۔

تازہ ترین خبریں

وطن عزیز کے دفاع کیلئے ہر لمحہ تیار ہیں،سربراہ پاک فضائیہ

وطن عزیز کے دفاع کیلئے ہر لمحہ تیار ہیں،سربراہ پاک فضائیہ

ہمارے شاہینوں نے 27فروری کو دشمن کو دن میں تارے دکھائے،شبلی فراز

ہمارے شاہینوں نے 27فروری کو دشمن کو دن میں تارے دکھائے،شبلی فراز

سینیٹ الیکشن: شہباز شریف کو لاہور میں ووٹ کاسٹ کرنےکی سہولت نہ دینے کا فیصلہ

سینیٹ الیکشن: شہباز شریف کو لاہور میں ووٹ کاسٹ کرنےکی سہولت نہ دینے کا فیصلہ

2سال مکمل ہونے پر وزیراعظم کا اہم ترین بیان سامنے آگیا

2سال مکمل ہونے پر وزیراعظم کا اہم ترین بیان سامنے آگیا

حکومت کا 103سال پرانے ایئر پورٹ کو ختم کرنے کا فیصلہ۔۔وجہ کیا بنی ہے؟جانیے تفصیل

حکومت کا 103سال پرانے ایئر پورٹ کو ختم کرنے کا فیصلہ۔۔وجہ کیا بنی ہے؟جانیے تفصیل

اسسٹنٹ کمشنر ڈسکہ کو معطل کر دیا گیا

اسسٹنٹ کمشنر ڈسکہ کو معطل کر دیا گیا

جاتی سردی پھر لوٹ آئی ۔۔۔۔ بارشیں ہی بارشیں !محکمہ موسمیات نے ٹھنڈی ٹھنڈی خوشخبری سنادی

جاتی سردی پھر لوٹ آئی ۔۔۔۔ بارشیں ہی بارشیں !محکمہ موسمیات نے ٹھنڈی ٹھنڈی خوشخبری سنادی

جوبزدل ہے وہ ہٹ جائے ،جو شیر ہے وہ ڈٹ جائے۔۔۔ مریم نواز کہاں جارہی ہیں ،ن لیگیوں کیلئے بڑی خبر آگئی

جوبزدل ہے وہ ہٹ جائے ،جو شیر ہے وہ ڈٹ جائے۔۔۔ مریم نواز کہاں جارہی ہیں ،ن لیگیوں کیلئے بڑی خبر آگئی

انگین آلتان کے ساتھ فراڈ کرنیوالا ملزم کاشف ضمیر نئی مشکل میں پھنس گیا

انگین آلتان کے ساتھ فراڈ کرنیوالا ملزم کاشف ضمیر نئی مشکل میں پھنس گیا

بزدار حکومت کاغربت کے خاتمے کی جانب ایک اور اہم قدم

بزدار حکومت کاغربت کے خاتمے کی جانب ایک اور اہم قدم

پاک فوج کی دلیری سے بہت متاثر ہوا،ابھی نندن

پاک فوج کی دلیری سے بہت متاثر ہوا،ابھی نندن

’’آپریشن سوئفٹ ریٹارٹ‘‘ کو دوسال مکمل:وقت آیا تو ہر چیلنج کا جواب بھرپور طریقے سے دیا جائیگا،پاک فوج

’’آپریشن سوئفٹ ریٹارٹ‘‘ کو دوسال مکمل:وقت آیا تو ہر چیلنج کا جواب بھرپور طریقے سے دیا جائیگا،پاک فوج

پاکستان: کوروناوائرس سے مزید33افراد جاں بحق

پاکستان: کوروناوائرس سے مزید33افراد جاں بحق

 پلوشہ خان کے گھرپرنامعلوم افرادکاحملہ

پلوشہ خان کے گھرپرنامعلوم افرادکاحملہ