10:22 am
شدید مہنگائی، صنعت کاروںکا انتباہ اور ٹائیگرفورس!

شدید مہنگائی، صنعت کاروںکا انتباہ اور ٹائیگرفورس!

10:22 am

٭مہنگائی روکنے کے لئے وزیراعظم کا 11 واں نوٹس،مہنگائی میں اضافہ!O کراچی:300 سے زیادہ بڑے صنعت کاروں کا صنعتیں بند کرنے، ملک چھوڑنے کا انتباہO ملٹری اکیڈمی میں جنرل قمر جاوید باجوہ کی تقریر!O جماعت اسلامی کا الگ جلسوں کا اعلانO آصف زرداری ہسپتال میں O بہاول نگر: محکمہ مال کا ملازم، گھر سے چھ کلو سونا، دو بوری کرنسی نوٹ، ایک بوری پرائز بانڈ برآمد O ن لیگ ناقابل اعتبار! اپوزیشن کی تحریک کیسے چلے گی؟ چودھری اعتزاز احسن O نوازشریف، گھروں کے باہر طلبی کے نوٹس O سندھ، ڈبل سواری پر پابندی کا اعلان چار گھنٹے بعد واپس! O کراچی، بجلی بند، پانی بند O لاہور انڈے 160 روپے درجن، مزید اضافہ کا امکان! سبزیوں کے سرکاری نرخ بڑھا دیئے گئے، لہسن 350 روپے، ادرک 550 روپے (بازار میں 700 روپے) پیاز و آلو 90 روپے، مٹر 300 روپے، ٹماٹر 150 روپے کلو!
٭ملک میںمہنگائی روکنے کے لئے وزیراعظم پاکستان نے اپنے دو سالہ عہد کا 11 واں نوٹس جاری کر دیا اور اس سے مہنگائی مزید بڑھ گئی اور اپنی نوجوانوں کی ذاتی ٹائیگر فورس کو چینی، آٹا، گھی اوردالوں کی قیمتیں چیک کرنے (چھاپے!!) کا حکم دے دیا۔ ٹائیگر فورس بے حد خوش! چھاپوں کے نتیجے میں گھروں میں مفت گھی، سبزیوں، دالوں اور چینی کے ڈھیر لگیں گے! دکانداروں کو دھمکیاں دے کر عام بلیک میلنگ!! یہ کام 1972ء کے آغاز میں بھی ہوا تھا جب ذوالفقار علی بھٹو نے چیف مارشل لا ایڈمنسٹریٹر کے طور پر ہفتہ کی رات کو ملک کی تقریباً تمام اہم صنعتوںکو سرکاری تحویل میں لینے کا مارشل لا آرڈر جاری کیا اور پیپلزپارٹی کے ارکان نے بے شمار ملوں اور فیکٹریوں کی انتظامیہ کو بے دخل کر کے خود انتظام سنبھال لیا۔ میرا ایک دوست محمود حسین لاہہور سے 15 کلو میٹر دور ’کالا شاہ کاکو‘ کے مقام پر کیمیکل کی بہت بڑی فیکٹری کا منیجر تھا۔ اس نے مجھے بتایا کہ وہ بھٹو کا مارشل لا کا حکم جاری ہوتے ہی رات کے وقت ’کالا شاہ کاکو‘ کی پیپلزپارٹی کا صدر کارکنوں کی بڑی تعداد کے ساتھ فیکٹری پر آ دھمکا، چوکیدار کو بھگا دیا اور فیکٹری پر قبضہ کر کے خود جنرل منیجر بن گیا، دوسرے دفتروں اور عہدوں پر بھی پارٹی کے کارکن بٹھا دیئے اورحکم جاری کر دیا کہ ساری انتظامیہ کو فارغ کر دیا گیا ہے۔ فیکٹری میں آنے کی ضرورت نہیں! ملک بھر میں تمام ’مقبوضہ‘ فیکٹریوں میں یہی کچھ ہوا…اور اس واقعہ کے 49 سال بعد ایک وزیراعظم کی ذاتی تیار کردہ ٹائیگر فورس کو سبزیوں، آٹا، گھی، دالوں، چینی کے نرخ چیک کرنے اور وزیراعظم کو براہ راست رپورٹ کا حکم! صریح بلیک میلنگ دکانداروں کو دھمکیاں دینے، ہراساں کرنے اور ’معاوضہ‘ وصول کرنے کے کھلے مواقع!! اس ملک کے کاروبار میں جو انتشار اور افراتفری پھیلے گی، اس کا وزیراعظم کو کوئی احساس نہیں۔ عمران خان صاحب! یہ ملک، اس کا کاروبار آپ کی ذاتی جاگیر نہیں کہ جاگیرداروں کی طرح جو جی میں آئے حکم جاری کر دیا جائے! آخر ملک میں وفاقی حکومت (51 وزیر مشیر، معاونین) چار صوبائی حکومتیں (150 وزیرمشیر) بے شمار کمشنر، ڈپٹی کمشنر، پرائس کمیٹیاں، پولیس، ایف آئی اے، ایف بی آر، اینٹی کرپشن کا محکمہ اور اسمبلیوں کے 100 ارکان کس مرض کی دوا ہیں؟ یہ سب مہنگائی روکنے میں فیل ہو گئے تو اپنی ذاتی فورس کو ملک کے کاروبار پر چڑھائی کا حکم دے دیا! اوریہ ٹائیگر فورس کیا ہے؟ نوجوانوں کا ایک لشکر! کوئی تعلیم، تجربہ، تربیت کچھ نہیں صرف تحریک انصاف کا بیج سینے پر لگا ہونا چاہئے۔ دکانداروں کو ہراساں کرنے کا نتیجہ محض افراتفری، لڑائی جھگڑے! ملک بھر کو پہلے اپوزیشن نے جلسے جلوسوں کے اعلانات نے ہراساں کر رکھا ہے، اس عمل میں ناعاقبت اندیش حکومت بھی شامل!! کس کس بات پر نوحے لکھے جائیں؟ عمران خاں صاحب! گزشتہ روز کاکول اکیڈمی میں چیف آف سٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ کی تقریر کو بار بار پڑھیں، اور ان الفاظ پر بار بار غور کریں کہ ’’سب اچھا ہو جائے گا!!‘‘
٭قارئین کرام! ایک بہت اہم بلکہ انتہائی اہم بات!پتہ نہیں یہ بات عام کیوں نہ ہوئی! میں نے کسی اخبار، کسی ٹیلی ویژن پر نہ دیکھی نہ سنی۔ چلئے، مجھ سے سن لیجئے! کراچی سے ایک نہائت ذمہ دار معتبر ذریعے نے بتائی ہے۔ معاملہ یہ ہے کہ کراچی میں تقریباً 300 سے زیادہ بڑے (بہت بڑے) صنعت کار اور بڑی تجارتی شخصیات ہر ماہ کی پہلی اتوار کو ایک کلب میں صبح دس گیارہ بجے ’برنچ‘ (ناشتہ جمع کھانا) کے لئے جمع ہوتے ہیں۔ ایک دوسرے سے ملاقاتیں اور باروباری معاملات اور مسائل پر بات چیت ہوتی ہے۔ اس ماہ اکتوبر کی پہلی اتوار کو اس اجتماع میں تقریباً 300 سے زیادہ ان نہائت اہم افراد نے جس بات پر مکمل اتفاق رائے کا اظہار اور انتباہ کیا ہے اس نے مجھے سخت پریشان کر دیا ہے۔ اس اجتماع میں ہر مقرر نے ایک دوسرے کے ساتھ اس بات پر اتفاق کا اظہار کیا کہ ’’موجودہ حکومت کی نااہلی، ناتجربہ کاری اور غلط سلط اقدامات سے ملک بھر میں شدید مہنگائی، بے روزگاری، اور سیاسی افراتفری پھیل گئی ہے، اس پر اضافہ یہ کہ مخصوص مقاصد کے تحت مختلف سیاسی سطحوں پر باآواز بلند فوج کے خلاف منافرت انگیز پراپیگنڈا شروع کر دیا گیا ہے۔ مقررین نے کہا کہ فوج اس ملک کی سلامتی کا واحد ادارہ رہ گیا ہے، اسے سرعام گالیاں تک دی جا رہی ہیں، ان  باتوں کا حکومت کوئی نوٹس نہیںلے رہی مگر خود فوج بھی خاموش ہے۔ مقررین کی تقریروں نے اس اجتماع نے مکمل اتفاق کیا کہ سیاستدان ملک کو تباہی کی طرف لے جا رہے ہیں، اس صورت حال میں ملک میں تمام غیر ملکی سرمایہ کاری بند ہو چکی ہے، غیر ملکی سرمایہ دار اپنا پہلے والا سرمایہ بھی تیزی کے ساتھ واپس لے جا رہے ہیں۔ یہ صورت حال جاری رہی تو (قابل توجہ!) خود ملک کے تمام صنعت کار اور سرمایہ دار بھی تمام صنعتیں بند کرنے پر مجبور ہو جائیں گے، پھر بھی حالات بہتر نہ ہوئے تو تمام سرمایہ دار اپنے سرمائے کے ساتھ ملک بھی چھوڑ سکتے ہیں۔‘‘ بڑے صنعتی اور کاروباری افراد کے اس انتباہ کو ’اوپر‘ تک پہنچا دیا گیا ہے۔ اخباری حلقوں تک یہ بات اس لئے نہ پہنچ سکی کہ یہ  دوستوں کا ہر ماہ ہونے والا معمول کا اجتماع تھا۔ اس کا کوئی ایجنڈا وغیرہ جاری نہیں کیا گیا تھا! قارئین کرام! اس تشویش ناک صورت حال کا خود تجزیہ کر سکتے ہیں!
٭حکومتوں میں کیسے کیسے بوجھ بجھکڑ جمع ہو گئے ہیں! ایک خبر! کراچی میں ایک معروف عالم دین کو شہید کر دیا گیا۔ حکومت سندھ نے بلا سوچے سمجھے فوراً ایک ماہ کے لئے موٹر سائیکلوں پر دو افراد کی سواری پر پابندی کا حکم جاری کر دیا۔ کسی سمجھ دار نے حکومتی بزر جمہروں کو سمجھایا کہ کراچی میں پیپلزپارٹی اور اپوزیشن اتحاد کے جلسے جلوس ہونے والے ہیں۔ ڈبل سواری پر پابندی سے عوام کو تو جو تکلیف ہو گی، ان جلسے جلوسوں کی تعداد نصف سے بھی کم ہو جائے گی۔ جلسوں اور جلوسوں میں شرکت کے لئے دور دراز سے شرکاء ڈبل سواریوں کے ذریعے آتے ہیں۔ یہ بات حکومت کی سمجھ میں آ گئی۔ صرف تین چار گھنٹے بعد ہی یہ پابندی واپس لے لی، فرقہ واریت کی روک تھام اور صوبے کی سلامتی وہیں رہ گئی!!
٭آصف زرداری کی طبیعت خراب ہو گئی۔ انہیں بیٹے بلاول نے ایک نجی ہسپتال میں داخل کرا دیا ہے۔ 65 سال سے زیادہ عمر ہو چکی ہے (پیدائش 26 جولائی 1955ء) دل، جگر، شوگر، سانس کے مختلف امراض لاحق ہیں۔ کچھ کھا پی نہیں سکتے، امرودوں اور دوسرے پھلوں کے چھلکوں اور کالے خشک چنوںپر گزارا ہے۔ چلنا پھرنا مشکل ہو رہا ہے، اوپر سے یہ دبائو کہ اسلام آباد کی احتساب عدالتوں سے اربوں کھربوں کے تین بڑے مقدمات میں فرد جرم عائد ہوچکی ہے، ان میں حاضری کے لئے بار بار اسلام آباد میں جانا ہو گا! خدا تعالیٰ رحم فرمائے! صورت حال یہ ہے کہ والد صاحب کی یہ تشویش ناک حالت ہے اور بیٹے کو اپوزیشن کے جلوس زیادہ عزیز اور اہم دکھائی دے رہے ہیں۔ پچھلی غیر معمولی بارشوں کے دوران بھی زرداری صاحب کی حالت خراب ہوئی تو بیٹا انہیں اسی حال میں چھوڑ کر لاہور میں پارٹی کے اجلاسوں میں چلا گیا تھا۔ اب بھی یہی عالم ہے!! میں زرداری صاحب کی جلد صحت یابی کے لئے دعا گو ہیں۔ خدا تعالیٰ انہیں مکمل صحت یاب کرے، وہ اپنے ہاتھوں بیٹے کی شادی اور بیٹیوں کی رخصتی کے فرائض انجام دیں!
٭لاہور:پاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن (پی ایم اے) نہ صرف پنجاب بلکہ پورے ملک کے ہزاروں ڈاکٹروں کی نمائندہ تنظیم ہے۔ گزشتہ روز اس کے اجلاس میں حکومت پاکستان پر زور دیا گیا کہ ملک بھر میں کرونا کی وبا پھر سے ابھر آئی ہے، اس کی روک تھام کے لئے فوری طور پر ’ہیلتھ ایمرجنسی‘ نافذ کی جائے۔ اس کے معنی ہیں کہ سماجی میل جول پر سخت پابندی لگائی جائے، ہر شخص کے لئے ماسک لازمی قرار دیا جائے اور ہر شخص کا فوری طبی معائنہ و علاج کیا جائے۔ اس اعلامیہ میں عام عوامی اجتماعات، کھلے شادیوں کے ہجوم وغیرہ پر پابندی پر زور دیا گیا ہے!! یہ ایمرجنسی ناگزیر لگتی ہے مگر پھر اپوزیشن کے پے درپے (17 دنوں میں 12 جلسے) جلسے جلوسوں کا کیا بنے گا؟ فی الحال تو یوں لگ رہا ہے کہ عوام کے ساتھ جو ہونا ہے، ہوتا رہے، سیاسی ضد باری جاری رہے گی!!

 

تازہ ترین خبریں

وزیر اعظم کی ان تھک کوششوں سے ہر شعبے میں نمایاں بہتری آنے لگی ہے،شہبازگل

وزیر اعظم کی ان تھک کوششوں سے ہر شعبے میں نمایاں بہتری آنے لگی ہے،شہبازگل

ارشدملک جیسے جج کون تیار کرتاہے۔۔ مسلم لیگ نے ایک بار پھر الزامات کی پوچھاڑ کردی،

ارشدملک جیسے جج کون تیار کرتاہے۔۔ مسلم لیگ نے ایک بار پھر الزامات کی پوچھاڑ کردی،

اب ہم عمران خان کوجیل بھیجیں گے،سوائے ایک چیز کے !تمام سہولتیں دیں گے،رانا ثنا اللہ

اب ہم عمران خان کوجیل بھیجیں گے،سوائے ایک چیز کے !تمام سہولتیں دیں گے،رانا ثنا اللہ

پشاور،گھر میں گیس سلنڈر پھٹنے سے بچہ جاں بحق ،5 افراد شدید زخمی

پشاور،گھر میں گیس سلنڈر پھٹنے سے بچہ جاں بحق ،5 افراد شدید زخمی

وزیراعلیٰ پنجاب سے عثمان ڈار کی ملاقات،وزیراعظم کے دورہ سیالکوٹ کیلئے انتظامات پر تبادلہ خیال

وزیراعلیٰ پنجاب سے عثمان ڈار کی ملاقات،وزیراعظم کے دورہ سیالکوٹ کیلئے انتظامات پر تبادلہ خیال

 سابق حکمرانوں نے معیشت،اداروں اور سیاسی نظام کو معذور کیا،فردوس عاشق اعوان

سابق حکمرانوں نے معیشت،اداروں اور سیاسی نظام کو معذور کیا،فردوس عاشق اعوان

شادی کی تقریب غم میں تبدیل ہو گئی ، کرنٹ لگنے سے 3 مزدورجاں بحق

شادی کی تقریب غم میں تبدیل ہو گئی ، کرنٹ لگنے سے 3 مزدورجاں بحق

شادی کی تقریب غم میں تبدیل ہو گئی ، کرنٹ لگنے سے 3 مزدورجاں بحق

شادی کی تقریب غم میں تبدیل ہو گئی ، کرنٹ لگنے سے 3 مزدورجاں بحق

اسمبلیوں سے استعفوں پر اپوزیشن اتحاد میں اتفاق۔۔۔۔ نوازشریف اور مریم نواز کے ترجمان نے بڑا اعلان کردیا

اسمبلیوں سے استعفوں پر اپوزیشن اتحاد میں اتفاق۔۔۔۔ نوازشریف اور مریم نواز کے ترجمان نے بڑا اعلان کردیا

 کے ایم سی ملازم شہزاد کو بوسہ مہنگا پڑ گیا، شوکاز نوٹس جاری کرکے 7 دنوں کے اندر جواب طلب

کے ایم سی ملازم شہزاد کو بوسہ مہنگا پڑ گیا، شوکاز نوٹس جاری کرکے 7 دنوں کے اندر جواب طلب

 جمہوریت کے نام پر نام نہاد سیاسی پارٹیاں سماج اور جمہور کا مذاق اڑا رہی ہیں۔سینیٹر سراج الحق

جمہوریت کے نام پر نام نہاد سیاسی پارٹیاں سماج اور جمہور کا مذاق اڑا رہی ہیں۔سینیٹر سراج الحق

ملتان جلسہ سے قبل کارکنان کی گرفتاریوں اور تشدد کے خلاف جےیوآئی سمیت پی ڈی ایم کےملک بھر میں مظاہرے

ملتان جلسہ سے قبل کارکنان کی گرفتاریوں اور تشدد کے خلاف جےیوآئی سمیت پی ڈی ایم کےملک بھر میں مظاہرے

 موجودہ نااہل، سلیکٹیڈ اور مسلط کردہ حکمرانوں سے چھٹکارے کا وقت آگیا ہے،8 اکتوبر کوبڑے فیصلے متوقع ہیں ، ترجمان پی ڈی ایم میاں افتخار حسین

موجودہ نااہل، سلیکٹیڈ اور مسلط کردہ حکمرانوں سے چھٹکارے کا وقت آگیا ہے،8 اکتوبر کوبڑے فیصلے متوقع ہیں ، ترجمان پی ڈی ایم میاں افتخار حسین

کلبھوشن کیس۔ پاکستان نے بھارتی دعویٰ بے بنیاد قرار دے دیا

کلبھوشن کیس۔ پاکستان نے بھارتی دعویٰ بے بنیاد قرار دے دیا