01:12 pm
نشاطِ ثانیہ کے خواب

نشاطِ ثانیہ کے خواب

01:12 pm

یہ25جنوری1993ء کی سردصبح تھی،سات بجکرسات منٹ پرورجینیامیں مکلین کی123نمبر سڑک کے ایک سگنل پرایک گاڑی رکی،اس میں سے ایک درمیانے قدکاخوبصورت نوجوان نکلا،اس کے ہاتھ میں چینی ساخت کی اے کے 47 کلاشنکوف تھی،نوجوان نے اترتے ہی فائرکھول دیا، اس کاہدف سی آئی اے کے5اہلکارتھے۔تین اہلکاربچ گئے لیکن66سالہ ڈاکٹرلاسنگ پینٹ اور انجینئرڈارمنگ مارے گئے۔نوجوان فائرنگ کے بعدبڑے اطمینان کے ساتھ فرارہوگیا۔یہ نوجوان ایمل کانسی تھا۔ایمل کانسی31مارچ 1990 ء کوامریکہ گیا،سیاسی پناہ لی،سی آئی اے کے ایک اعلیٰ آفیسرکے بیٹے کرس مارسنی کی کوریئرکمپنی ’’اکسل‘‘میں ملازم ہوا۔یہ کمپنی دیگرحکومتی اداروں کے علاوہ سی آئی اے کے ہیڈکوارٹرمیں بھی حساس دستاویزات پہنچاتی تھی۔ایمل یہ حساس دستاویزات اکثر سی آئی اے کے ہیڈ کوارٹرپہنچانے جایاکرتا تھا۔ ایک اطلاع کے مطابق ایمل کانسی نے کام کے دوران سی آئی اے کے کچھ خط کھول کرپڑھ لیے تھے جس سے اس کوایک ایسی سازش کاپتہ چلاجس میں پانچ مسلمان مارے گئے تھے جس کے بعد وہ سی آئی اے کے ایک موجودہ اورسابق ڈائریکٹر کو نشانہ بناناچاہتاتھاجوان حملوں کے ذمہ دارتھے۔
ایمل کانسی کے اس حملے میں دونوں بچ گئے لیکن لاسنگ پینٹ اورفرینک ڈارمن مارے گئے۔ ایمل اگلے روزپی آئی اے کی فلائٹ سے پاکستان آگیا۔ امریکی پولیس نے اس کے فلیٹ پر چھاپہ مارا،اوراس کے دوست زاہدمیرسے کلاشنکوف برآمدکر لی، کلاشنکوف پر ایمل کانسی کے فنگر پرنٹس موجود تھے،مزید ڈی این اے ٹیسٹ نے ایمل کانسی کو مجرم ثابت کر دیا ۔اس وقت کے امریکی صدربل کلنٹن اوروزیرخارجہ میڈلین البرائٹ نے ذاتی طورپراس وقت کے صدر پاکستان فاروق لغاری اور وزیراعظم نوازشریف سے رابطہ کرکے کاسی کی گرفتاری کے آپریشن کی منظوری حاصل کی تھی۔اس آپریشن کیلئے ایف بی آئی اورسی آئی اے کی مشترکہ ٹیم تشکیل دے دی گئی جس کاسربراہ اسلام آبادمیں سی آئی اے کااسٹیشن چیف گیری شیرون تھااورآپریشن کی منصوبہ بندی ایف بی آئی کے براڈ گیرٹ نے کی تھی۔ 
امریکہ  ایمل کانسی کوتلاش کرنے کیلئے پاکستان پہنچ گیا،کوئٹہ میں اس کے گھرکی نگرانی شروع ہوگئی، اس کے خاندان کے ٹیلیفون ٹیپ ہونے لگے،اس کے دوست احباب کا تعاقب شروع ہوگیا،اس کی تصویریں پوری دنیامیں چھپوادی گئیں،اطلاع دینے والے کیلئے بھاری انعام کالالچ بھی مقررکردیا گیا۔امریکی جاسوس انتہائی جدیدآلات کے ساتھ ایمل کانسی کی تلاش میں پاکستان آگئے، ایمل کی تلاش کیلئے سیٹلائٹ کی مددمخصوص کردی گئی،یوں ایمل آگے آگے تھااورامریکی جاسوس ادارے اس کی بوسونگھتے ہوئے اس کے تعاقب میں ہرکونہ کھدراچھان رہے تھے۔اسے پکڑنے کیلئے امریکی سی آئی اے کے انتہائی تجربہ کارلوگوں نے پاکستان میں تقریبا ًتیرہ آپریشن کئے اس کے گھرکو مسلسل دن رات کوئی لمحہ ضائع کئے بغیرسخت نگرانی میں رکھاگیا ۔ ایمل کئی برس اکبربگٹی کی پناہ میں رہالیکن جب آصف علی زرداری اورنصیراللہ بابرکے ذریعے ایمل کی گرفتاری کیلئے اکبربگٹی پرشدید دباؤڈالاگیا تووہ خودہی چلاگیا۔ مبینہ مخبروں کی اطلاع کے مطابق ایمل کانسی اس وقت پاک افغان قبائلی پٹی پررہائش پذیرتھا۔امریکی ایجنٹوں نے مخبروں کووہ تمام وسائل مہیاکئے کہ کسی طریقے سے ایمل کوپاکستانی حدودمیں لایاجائے جہاں اس وقت کے پاکستانی حکمرانوں سے ڈیل ہوچکی تھی۔
چمن اورسبی میں امریکن کمانڈوز نے اپنی ایجنٹ کی مخبری پردھاوابول دیا،افغان بارڈرپر ایک سردارکے ڈیرے کوگھیرے میں لے لیاگیا لیکن ایمل کانسی پھر بھی ان کے قابونہ آسکا۔ایک پٹھان دوست نے ایمل کاسی کوپرکشش کاروباری پیشکش کی کہ وہ افغانستان کے راستہ روسی الیکٹرانک اشیاء پاکستان اسمگل کرکے بھاری رقم حاصل کرسکتاہے اوریہی پیشکش اس کوڈیرہ غازی خان لے آئی جہاں اس کومخبری کرکے پکڑوادیا گیا۔15جون1997ء کوجب وہ ڈیرہ غازی خان کے شالیمارہوٹل کے کمرہ نمبر312میں سیف اللہ کے نام سے ٹھہراہوا تھاتوصبح چاربجے اسے پاکستانی کمانڈونے انتہائی مہارت اورچابک دستی سے گرفتارکرلیا۔اتفاق سے مجھے اس کمانڈوٹیم کے آپریشن کمانڈرنے بتایاکہ اگر گرفتاری کے وقت چندسیکنڈکی تاخیر ہوجاتی تو ایک بہت بڑی تباہی سے ہمیں دوچارہونا پڑتا کیونکہ ایمل کانسی ہروقت ایک خطرناک قسم کے بارودسے بھراہوا بریف کیس اپنے ساتھ رکھتاتھا اور زندہ گرفتارہونے کی بجائے وہ مرناکہیں زیادہ پسند کرتا تھا۔یہی وجہ ہے کہ جب ایمل کانسی نے اپنی جیب سے ایک چھوٹاسا خوبصورت حمائل شریف نکال کراس کمانڈرکوخوددے دیاکہ اسے تم اپنے پاس رکھ لو، کیونکہ مجھے پتہ ہے کہ تم مجھے اب امریکیوں کے حوالے کردوگے اورمجھے یہ کسی طور گوارہ نہیں کہ اس حمائل شریف کی توہین ہو!بقول اس کمانڈرکہ ’’میں نے زندگی میں کسی شخص کواتنی بڑی مصیبت کے گزر جانے کے باوجوداس قدر مطمئن نہیں دیکھا اور اس نے مسکراتے ہوئے کہا کہ میں توکامیاب ہوگیا ہوں لیکن تم سب اس قدر بدنصیب ہوکہ تم اور تمہارا ادارہ ساری عمر اپنے اس کارنامے اور بہادری کانہ توکہیں ذکرکرسکوگے اورنہ ہی اس پرفخر کرسکوگے تاہم جن کوخوش کرنے کیلئے یہ کیاہے، وہ خوداس کوتمہارے نامہ اعمال میں بطورگالی کے استعمال ضرورکریں گے۔‘‘      (جاری ہے )

تازہ ترین خبریں

کچھ بیرونی قوتیں پاکستان کو غیر مستحکم کرنے اور انتشار پھیلانے کی کوششیں کررہی ہیں، شاہ محمود قریشی

کچھ بیرونی قوتیں پاکستان کو غیر مستحکم کرنے اور انتشار پھیلانے کی کوششیں کررہی ہیں، شاہ محمود قریشی

پی ڈی ایم کا لانگ مارچ سے قبل نئی حکمت عملی ۔۔۔۔۔ تحریک عدم اعتماد لانے پر اتفاق ہوگیا

پی ڈی ایم کا لانگ مارچ سے قبل نئی حکمت عملی ۔۔۔۔۔ تحریک عدم اعتماد لانے پر اتفاق ہوگیا

پاک سرزمین پارٹی خیبر سے کراچی تک ظلم کا نظام ختم کرے گی ۔ مصطفی کمال

پاک سرزمین پارٹی خیبر سے کراچی تک ظلم کا نظام ختم کرے گی ۔ مصطفی کمال

 پی ڈی ایم سینیٹ الیکشن میں اختلافات کا شکار ہوگی لیکن چاروں صوبوں اور مرکز میں پی ڈی ایم کا ‏اتحاد قوم کیلئے خوشخبری ہے۔مولانا فضل الرحمان

پی ڈی ایم سینیٹ الیکشن میں اختلافات کا شکار ہوگی لیکن چاروں صوبوں اور مرکز میں پی ڈی ایم کا ‏اتحاد قوم کیلئے خوشخبری ہے۔مولانا فضل الرحمان

سینیٹ اجلاس سے قبل سندھ میں پی ٹی آئی اتحادیوں کی بیٹھک ۔۔۔۔ ایم کیو ایم نے ظہرانے میں شرکت سے آخری لمحات میں معذرت کر لی

سینیٹ اجلاس سے قبل سندھ میں پی ٹی آئی اتحادیوں کی بیٹھک ۔۔۔۔ ایم کیو ایم نے ظہرانے میں شرکت سے آخری لمحات میں معذرت کر لی

پاکستان تحریک انصاف وہ جماعت ہے جس نے نظام میں شفافیت اور ملک میں کرپشن کے خاتمے کو ایک تحریک کی شکل دی۔شبلی فراز

پاکستان تحریک انصاف وہ جماعت ہے جس نے نظام میں شفافیت اور ملک میں کرپشن کے خاتمے کو ایک تحریک کی شکل دی۔شبلی فراز

ہم بھارت کیساتھ اچھے تعلقات چاہتےہیںضروری ہےکہ کشمیرکی پرانی حیثیت بحال کی جائے۔ شیخ رشید احمد

ہم بھارت کیساتھ اچھے تعلقات چاہتےہیںضروری ہےکہ کشمیرکی پرانی حیثیت بحال کی جائے۔ شیخ رشید احمد

فنون لطیفہ زندگی میں خوشیاں بھرنے کا اہم ذریعہ ہے۔فوزیہ سعید

فنون لطیفہ زندگی میں خوشیاں بھرنے کا اہم ذریعہ ہے۔فوزیہ سعید

اسکولز کھولنے کا معاملہ ۔۔ سندھ حکومت اور وفاق ایک مرتبہ پھر آمنے سامنے ۔۔۔ والدین پریشان

اسکولز کھولنے کا معاملہ ۔۔ سندھ حکومت اور وفاق ایک مرتبہ پھر آمنے سامنے ۔۔۔ والدین پریشان

مسافروں کیلئے خوشخبری ۔۔۔ پی آئی اے نے کرایوں میں کمی کا اعلان کردیا

مسافروں کیلئے خوشخبری ۔۔۔ پی آئی اے نے کرایوں میں کمی کا اعلان کردیا

سینٹ انتخابات کا معاملہ۔۔۔۔ اپوزیشن جماعتوں کے رابطے تیز پیپلزپارٹی اور جےیوآئی کے درمیان رابطہ

سینٹ انتخابات کا معاملہ۔۔۔۔ اپوزیشن جماعتوں کے رابطے تیز پیپلزپارٹی اور جےیوآئی کے درمیان رابطہ

کورونا وائرس کے بعد ایک اور وائرس کی انٹری ۔۔۔ کراچی کےشہریوں میں تشویش کی لہر ڈور گئی

کورونا وائرس کے بعد ایک اور وائرس کی انٹری ۔۔۔ کراچی کےشہریوں میں تشویش کی لہر ڈور گئی

  نیا پاکستان محض نیا ہی نہیں مہنگا بھی ہے، شازیہ مری

نیا پاکستان محض نیا ہی نہیں مہنگا بھی ہے، شازیہ مری

مہنگائی کے ستائے عوام کیلئے خوشخبری۔۔۔ حکومت نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ نہ کرنے کا اعلان کر دیا

مہنگائی کے ستائے عوام کیلئے خوشخبری۔۔۔ حکومت نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ نہ کرنے کا اعلان کر دیا