01:36 pm
مشرقی بحیرہ روم۔۔۔۔۔۔نیامیدان جنگ 

مشرقی بحیرہ روم۔۔۔۔۔۔نیامیدان جنگ 

01:36 pm

مشرقی بحیرہ روم میں بڑھتی ہوئی کشیدگی اس امرکی متقاضی ہے کہ معاملات کوخوش اسلوبی سے نمٹانے کی کوششوں کاآغازکیاجائے مگراب تک ایسی کوئی
 (آخری حصہ)
مشرقی بحیرہ روم میں بڑھتی ہوئی کشیدگی اس امرکی متقاضی ہے کہ معاملات کوخوش اسلوبی سے نمٹانے کی کوششوں کاآغازکیاجائے مگراب تک ایسی کوئی بھی کوشش دکھائی نہیں دی ہے۔خطے میں تیل اورگیس کی تلاش کے کام کانئے سِرے سے جائزہ لیناہوگا۔ لیبیاایک اہم ملک ہے کیونکہ اس کے تیل اورگیس کے ذخائرسب سے بڑھ کرہیں۔ اس کی سیاسی اور معاشی حالت نے خطے کے بہت سے ممالک کوپریشان کررکھاہے۔ لیبیااب تک افریقہ کیلئے سب سے بڑے گیٹ وے کادرجہ رکھتاہے۔وہ بحیرہ روم کے ایسے حصے میں واقع ہے جہاں سمندرمیں تیل اورگیس کے وسیع ذخائراس کی دسترس میں ہیں اورسب سے بڑھ کریہ کہ خودلیبیائی سرزمین پربھی تیل اورگیس کے وسیع ذخائر موجود ہیں۔ جسے بھی لیبیاپر تصرف حاصل ہے وہ پورے خطے پرنظررکھ سکتاہے اور سب سے بڑھ کریہ کہ تیل اورگیس کے وسیع ذخائر اس کی دسترس میں ہیں۔ خطے کی اورخطے سے باہرکی تمام طاقتیں اچھی طرح جانتی ہیں کہ وہ پورے بحیرہ روم پراپناتصرف قائم کرنے میں کامیاب نہیں ہوسکتیں مگروہ اس خطے میں موجوداورمتحرک رہ کراس بات کویقینی بنانے کی کوشش ضرورکر رہی ہیں کہ خطے کا کوئی بھی ملک تمام وسائل پرتنہاقابض ومتصرف ہوکراجارہ داری قائم نہ کرلے۔
لیبیاکس قدراہم ہے اس کااندازہ اس امرسے لگایاجاسکتاہے کہ اس کی داخلی صورتِ حال اورقضیے میںامریکہ،روس،یورپ، سعودی عرب،متحدہ عرب امارات، مصر،قطر،یونان، الجزائراوریونان کے زیرا نتظام قبرص بھی ملوث رہے ہیں۔روس، سعودی عرب، یونان،متحدہ عرب امارات اورمغربی ممالک لیبیاکے قضیے میں جنرل خلیفہ ہفتارکے حامی ہیں۔
ترکی اورقطرنے اقوام متحدہ کے متعین کیے ہوئے وزیراعظم فیض سراج کی بھرپورحمایت کی ہے۔لیبیاکی صورتحال سے واضح ہے کہ خطے میں تیل اورگیس کے وسیع ذخائرکی موجودگی نے کل کے دشمنوں کوایک کردیاہے اورجوابھی کل تک اتحادی تھے وہ اب ایک دوسرے کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کربات کررہے ہیں۔یہ سب کچھ وسائل کی بندربانٹ کیلئے ہے ۔ہرفریق چاہتاہے کہ قدرتی وسائل سے مالامال علاقے کے سب سے بڑے حصے پراس کاتصرف قائم ہوجائے۔ جنرل خلیفہ ہفتارکی سربراہی میں کئی ملیشیازباضابطہ اورجائز حکومت کاتختہ الٹنے کی تیاری کررہی ہیں۔کئی طاقتیں اس کام میں خلیفہ ہفتارکی مدد کررہی ہیں۔یہ سب کچھ بالکل غلط ہے مگرہور ہا ہے۔ ایک طرف توکئی علاقائی اوریورپی ممالک لیبیامیں خلیفہ ہفتارکی مالی اورعسکری امدادکررہی ہیں اوردوسری طرف ترکی نے لیبیاکی باضابطہ حکومت سے دوبڑے معاہدے کیے ہیں۔
ایک طرف تولیبیا میں طاقت کاخلاء موجود ہے۔ساتھ ہی ساتھ خطے میں طاقت کاتوازن بھی بگڑ چکاہے۔رہی سہی کسرتیل اورگیس کے وسیع ذخائر کی موجودگی نے پوری کردی ہے ۔ دسترخوان تیارہے توسب کی رال ٹپک رہی ہے۔ایک عشرے سے بھی زائدمدت سے مشرقی بحیرہ روم کاخطہ بیرونی قوتوں کی توجہ اورکشمکش کامرکزرہاہے۔یہ صورتِ حال اب شدید ترنوعیت کی ہوگئی ہے۔ بڑی طاقتوں کی موجودگی سے خطے کے کسی ایک ملک کوتمام معاملات اپنے ہاتھ میں لینے سے گریزپارہنے کی تحریک ملے گی مگردوسری طرف یہ خدشہ بھی تو ہے کہ یہ خطہ بڑی طاقتوں کے درمیان زورآزمائی کامیدان بنارہے گا۔ 
اب ان حالات کے بعداس خطے کی اہمیت کااندازہ اس بات سے لگایاجاسکتاہے کہ لیبیا سے شام تک جنگ کا گورکھ دھندا ایک سازش ہے، مفادات کیلئے رچایا جانے والا ڈرامہ ہے ۔جنگ کوگورکھ دھندا،1930ء کے عشرے میں مشہورامریکی میرین میجرجنرل اسمیڈلے بٹلر نے کہاتھا۔وہ اس امرکی تحقیق کررہے تھے کہ دنیا بھر میں وہ کون سے گروہ ہیں جو اپنے مفادات کوتحفظ فراہم کرنے کیلئے امریکی عسکری قوت کواستعمال کرتے ہیں۔ ہیٹی میں نیشنل سٹی بینک کے مفادات سے ہونڈراس کے یونائٹیڈ فروٹ پلانٹیشنز تک، چین کے اسٹینڈرڈ آئل ایکسیس سے نکاراگوا کے بران برادرزتک بیشترامورکاجائزہ لے کرمیجر جنرل اسمیڈلے بٹلرنے یہ ثابت کرنے کی کوشش کی کہ امریکی فوج چندبڑے کاروباری اداروں کے مفادات کوتحفظ فراہم کرنے کی غرض سے کام کرتی ہے اورجس قدربھی نقصان ہوتاہے اس کاازالہ امریکی عوام کی جیب سے کیاجاتاہے۔ان کی محنت کی کمائی پربڑے کاروباری ادارے سیاسی سیٹ اپ کے ساتھ مل کرڈاکے ڈالتے ہیں۔ وقت اورحالات بدل چکے ہیں مگرپرانی کہاوت اب بھی مؤثرہے کہ چیزیں جتنی زیادہ بدلتی ہیں اسی قدروہ یکساں رہتی ہیں۔
یادرہے کہ معمرقذافی کے آخری برسوں میں چین اورلیبیاکے تعلقات غیرمعمولی حد تک پروان چڑھ گئے تھے۔2010 ء میں دونوں ممالک کے درمیان تجارت کا حجم 6`6ارب ڈالر سے زائدرہا تھا۔ 2007ء میں جب امریکہ نے افریقہ پرتوجہ دیناشروع کی تب معمر قذافی نے آکسفورڈیونیورسٹی میں طلبہ سے خطاب کرتے ہوئے بتایاکہ چین سے تعلقات بہتر رکھنا بہت سودمند ثابت ہواہے۔ انہوں نے افریقہ میں چین کی سرمایہ کاری کوکھل کر سراہا۔ساتھ ہی ساتھ انہوں نے یہ بھی کہاکہ علاقائی سیاست سے دوررہ کر چینیوں نے افریقہ میں کروڑوں افرادکے دل جیت لیے ہیں۔اب صورت حال بدل چکی ہے۔عبوری سیٹ اپ نے اپنے ابتدائی دورمیں چین سے تعلقات کو سردخانے میں رکھ دیاتھا جس کی وجہ قومی عبوری کونسل کے عہدیداروں نے یہ بتائی تھی کہ لیبیامیں تعمیر نوکے ٹھیکوں کی تقسیم میں چین کواس بات کی سزادی گئی تھی کہ اس نے انقلابی قوتوں کوتسلیم کرنے میں دیرلگائی۔بعدمیں اس بیان کی تردیدبھی کی گئی مگرساتھ ہی یہ بات بھی سامنے آئی کہ بہت سی چینی کمپنیاں لیبیامیں منجمداورپھنسے ہوئے8.18ارب ڈالرسے زائدکے اثاثوں کی بحالی اوروصولی کا انتظار کررہی تھیں مگرخیرایسانہیں ہے،اب عبوری قومی کونسل نے چینی کمپنیوں سے بات چیت کے کئی کامیاب دورمکمل کرنے کے بعدکافی حدتک معاملات کو درست سمت کی طرف موڑدیاہے جس سے یہ بات پایہ یقین تک پہنچ گئی ہے کہ بحیرہ روم کے ممکنہ میدان جنگ میں چین خاموش نہیں بیٹھے گا۔


 

تازہ ترین خبریں

نئے پاکستان کے بجٹ  میںفائدہ صرف خان کی اے ٹی ایمز مشینوں کو  ہوگا،شاہد خاقان عباسی

نئے پاکستان کے بجٹ میںفائدہ صرف خان کی اے ٹی ایمز مشینوں کو ہوگا،شاہد خاقان عباسی

پیٹرول کی قیمتوں میں اضافے کی تیاریاں ہیں، نیربخاری

پیٹرول کی قیمتوں میں اضافے کی تیاریاں ہیں، نیربخاری

کیا واقعی بجٹ کا 80فیصد حصہ فوج کو ملتا ہے؟

کیا واقعی بجٹ کا 80فیصد حصہ فوج کو ملتا ہے؟

ڈکیتی کا ملزم ضمانت پر رہا ہوکر دوبارہ بینک لوٹنے پہنچ گیا

ڈکیتی کا ملزم ضمانت پر رہا ہوکر دوبارہ بینک لوٹنے پہنچ گیا

وفاقی بجٹ کے بعد پنجاب کا بجٹ کب پیش کیا جائیگا؟تاریخ بارے پتا چل گیا

وفاقی بجٹ کے بعد پنجاب کا بجٹ کب پیش کیا جائیگا؟تاریخ بارے پتا چل گیا

بے سہارا، بیروز گار  افراد کیلئے اچھی خبر۔۔حکومت نے بڑااقدام اٹھالیا

بے سہارا، بیروز گار افراد کیلئے اچھی خبر۔۔حکومت نے بڑااقدام اٹھالیا

عازمین حج اس ویب سائٹ پر اپنی رجسٹریشن کراسکتے ہیں، رجسٹریشن کا آغاز آج سے ہوگیا

عازمین حج اس ویب سائٹ پر اپنی رجسٹریشن کراسکتے ہیں، رجسٹریشن کا آغاز آج سے ہوگیا

گیس پائپ لائن زوردار دھماکے سے پھٹ گئی ، متعدد افراد ہ ل ا ک

گیس پائپ لائن زوردار دھماکے سے پھٹ گئی ، متعدد افراد ہ ل ا ک

سرکاری ادارے کی نجکاری پر ملازمین کی تنخواہ میں کوئی ردوبدل نہیں ہوگا، سعودی عرب

سرکاری ادارے کی نجکاری پر ملازمین کی تنخواہ میں کوئی ردوبدل نہیں ہوگا، سعودی عرب

یکم جولائی سے کیا کیا سستا ہو گا؟اچانک خبر نے شہریوں کے دل جیت لیے

یکم جولائی سے کیا کیا سستا ہو گا؟اچانک خبر نے شہریوں کے دل جیت لیے

حکومتی انتخابی ترامیم آئین اور الیکشن کمیشن پرسنگین حملہ ہے ،مریم اورنگزیب

حکومتی انتخابی ترامیم آئین اور الیکشن کمیشن پرسنگین حملہ ہے ،مریم اورنگزیب

سرکاری ملازمین بارے اہم ہدایات جاری ،وزارت افرادی قوت نے حتمی فیصلہ کرلیا

سرکاری ملازمین بارے اہم ہدایات جاری ،وزارت افرادی قوت نے حتمی فیصلہ کرلیا

بجٹ میں وزیراعظم ہائوس اوروزیراعظم سیکرٹریٹ کے اخراجات  میں اضافہ کیے جانے کاانکشاف مگرکتنا؟قوم کے لیے یقین کرنامشکل

بجٹ میں وزیراعظم ہائوس اوروزیراعظم سیکرٹریٹ کے اخراجات میں اضافہ کیے جانے کاانکشاف مگرکتنا؟قوم کے لیے یقین کرنامشکل

اداروں کی نجکاری ۔۔۔!!! میاں منشا نے حکومت کوانتہائی اہم مشورہ دیدیا

اداروں کی نجکاری ۔۔۔!!! میاں منشا نے حکومت کوانتہائی اہم مشورہ دیدیا