12:36 pm
اپوزیشن!استعفے، انتخابات کا بائیکاٹ ختم!!

اپوزیشن!استعفے، انتخابات کا بائیکاٹ ختم!!

12:36 pm

٭تبدیلی، اپوزیشن استعفے نہیں دے گی، ضمنی اور سینٹ کے انتخابات میں حصہ لے گی، البتہ لانگ مارچ ضرور ہو گاO نوازشریف نے اسمبلیوں کے حلف کی غلطی مان لی:فضل الرحمانO بے نظیر بھٹو کی برسی پر مریم نواز کی خوشی، تالیاںO بھارتی فوج نے سرحدپر 35 بنگلہ دیشی ہلاک، 25 زخمی کر دیئےO دہلی: کسانوں کا محاصرہ جاری، بھوک ہڑتالO نوازشریف کی دوسری بیٹی اسما نواز بھی نیب کی زد میں، غیر قانونی اثاثوں کی تحقیقاتO فوج کے مخالف بیانات، کارروائی شروع، جے یو آئی کے مفتی کفائت اللہ پہلے ملزم!O گڑھی خدا بخش، اپوزیشن اتحاد کو بلاول زرداری کا کھانا: سندھ کی مشہور کڑاہی، دم پخت مچھلی، سندھی بریانی، تِکے، شیش کباب، بھنا قیمہ، چھوٹا گوشت، سجی، روغنی نان، کھیر، گجریلاO وفاقی وزیراسد عمر کا بھنگڑاO بُشریٰ انصاری، 36 سال بعد طلاق O پنجاب اسمبلی، نئی عمارت 15 برسوں میں بھی نامکمل! اربوں خرچ ہو چکے ہیںO مولانا شیرانی، اسلام آباد میں اجلاسO استعفے نہ دیئے جائیں، سید خورشید شاہ۔
٭اپوزیشن اتحاد ’پی ڈی ایم‘ نے بالآخر راستہ بدل لیا۔ استعفے دینے اور ضمنی و سینٹ کے انتخابات نہ لڑنے کا فیصلہ واپس لے لیا۔ اب صرف لانگ مارچ ہو گا جسے شیخ رشید نے ’لونگ گواچا‘ مارچ کا نام دیا ہے۔ یوں مولانا کے استعفوں اور انتخابات کے بائیکاٹ کے گرم مطالبے ختم ہو گئے اور صرف لانگ مارچ باقی رہ گیا ہے، اس کا فیصلہ بھی یکم فروری کو پی ڈی ایم کے اجلاس میں کیا جائے گا۔ اس سے مولانا کی مایوسی اور بددلی کا اندازہ لگایا جا سکتا ہے۔ گزشتہ برس مولانا نے اسلام آباد میں آل پارٹیز کانفرنس بلائی۔ اس میں بلاول زرداری اور شہباز شریف نے عمران خاں کے خلاف زوردار تقریریں کیں مگر جلسے میں آخر تک نہیں ٹھہرے، تقریریں کیں اور چلے گئے۔ دو ہفتے پہلے، 13 دسمبر کو بلاول زرداری جلسہ میں دیر سے آئے۔ تقریر کی اور مولانا کی تقریر شروع ہوتے ہی جلسہ سے چلے گئے، ان کے ساتھ ہی پیپلزپارٹی کے سارے ارکان بھی چلے گئے۔ مریم نواز کی تقریر کے بعد بھی ن لیگ کے لوگ چلے گئے۔ مولانا کے سامنے دو تہائی کرسیاں خالی ہو چکی تھیں۔ مولانا سخت ناراضی کے عالم میں بے نظیر بھٹو کی برسی میں نہیں آئے۔ اس دوران پیپلزپارٹی کے اصل قائدآصف زرداری نے پارٹی کو استعفے دینے اور انتخابات کا بائیکاٹ کرنے سے روک دیا۔ سید خورشید شاہ (سخت بیمار ہیں) نے بھی مشورہ دے دیا ہے کہ استعفوں کی حماقت نہ کرنا، تحریک انصاف خالی نشستوں پر قبضہ کر لے گی۔ ویسے استعفوں کا معاملہ اس لئے مضحکہ خیز رہا کہ جس اسمبلی کو جعلی کہا جا رہا ہے اس کا سپیکر بھی جعلی قرار پائے گا! اس ’جعلی‘ سپیکر کو استعفوں کی قانونی حیثیت کیا ہو گی؟ پھر یہ کہ اسی جعلی اسمبلی کے ذریعے مولانا فضل الرحمان نے صدارتی الیکشن لڑا! جیت جاتے تو جعلی اسمبلی کو درست مان لیتے! اور پھر بیٹا اور اس کے ساتھی بدستور اسی ’جعلی‘ اسمبلی سے روزی روٹی کما رہے ہیں۔ یعنی غلط ہو یا درست، ہر حالت میں اپنا فائدہ! پروین شاکر کا شعر یاد آگیا کہ ’’اس شرط پر کھیلوں گی میں پیا پیار کی بازی! جیتوں تو میں تجھ کو پائوں، ہاری تو تمہاری!‘‘ آیئے دوسری باتیں کریں، مولانا کو تو اس وقت اپنی پارٹی میں ٹوٹ پھوٹ پریشان کر رہی ہے۔  بوقت تحریر جے یو آئی کے چار سینئر باقی ارکان مولانا شیرانی، حافظ حسین احمد، مولانا گل نصیب اور مولانا شجاع الملک کی زیر قیادت پارٹی کے باغی ارکان کا اجلاس ہونے والا تھا اب تک کوئی فیصلہ آ گیا ہو گا!
٭اہم سنجیدہ باتیں چھوڑ کر اچانک ایک ہلکی پھلکی بات! میرا ایک سال پہلے کا 28 دسمبر 2019ء کا کالم راوی نامہ! لکھا ہے کہ ’’گزشتہ روز وفاقی وزیر اسد عمر نے بیٹے آصف عمر کی شادی کی تقریب میں زوردار بھنگڑا ڈالا‘‘ پتہ نہیں اب بھی بھنگڑا ڈالتے ہیں یا نہیں، ویسے تو سرکاری بھان متی کا کنبہ ڈھائی سال سے مسلسل بھنگڑا ہی ڈال رہا ہے، (ادرک 1000 روپے، لہسن 400 روپے کلو، انڈے 300 روپے درجن!) اسی کالم میں بھنگڑے کی ایک دلچسپ روداد بھی ہے۔ بہت عرصہ پہلے ایک بھارتی پنجابی فلم ’بھنگڑا‘ آئی تھی اس کی ہیروئن نے مسلسل 40، 45 منٹ تک زبردست بھنگڑا ڈالا۔ اس نے ساتھ بھنگڑا ڈالنے والے ہیرو کو مخاطب ہو کر کہا، ’’وے میں پندرہ مربعیاں والی، کچہری وِچ ملے کرسی!‘‘ اور ہیرو جواب میں کہتا ہے کہ ’’نِی! مینوں بِن تنخْواہوں کُڑیے! مربعیاں تے رکھ مُنشی!!‘‘ اسی کالم میں وفاقی معاون خصوصی، فردوس عاشق اعوان، کا ایک ’فرمان‘ بھی درج ہے۔ کہ عمران خاں نے دنیا کو پاکستان کا ’’روشن درخشاں‘‘ چہرہ دکھا دیا ہے (موصوف ایسی تعریف پر جھومنے لگتے ہیں) کالم میں خاتون کو مشورہ دیا گیا کہ بی بی ’درخشاں‘ کے معنی بھی ’روشن‘ کے ہی ہیں۔ اس رائے کا اثر یہ ہوا کہ اس سال فرمایا کہ ’’ماں رمضان کا مہینہ‘‘ بہت متبرک ہے۔ میں نے مزید رائے دینی چھوڑ دی!
٭ایک اور اہم بات بلکہ بھرپور معذرت! گزشتہ کالم میں لکھا کہ تحریک انصاف میں دو فردوس جمع ہو گئی ہیں، فردوس عاشق اعوان اور فردوس شمیم نقوی!! معذرت، معذرت! فردوس شمیم نقوی خاتون نہیں اچھے خاصے زبردست قسم کے مرد ہیں، سندھ اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر ہیں۔ بس بے خیالی میں انہیں خاتون بنا دیا۔ یہ معاملہ میرے ساتھ بھی پیش آتا رہا ہے۔ بعض خواتین کا نام سرفراز بھی ہوتا ہے۔ بچپن میں نارووال میں ہمارے ہمسایہ میں ایک لڑکی کا نام سرفراز تھا۔ وہ صبح دیر سے سو کر اٹھتی تھی تو اس کی ماں اونچی اونچی اس کا نام لے کر گالیاں دیا کرتی تھی! میں بہت جلا کرتا تھا۔ مجھے اسلام آباد کی مرحومہ سرفراز اقبال یادآ گئیں! کیا عظیم خاتون تھی! اسلام آباد میں اپنے شاندار گھر کو ملک بھر سے آنے والے ادیبوں شاعروں کے لئے مہمان خانہ بنا دیا۔ (فریدہ حفیظ کی پکی سہیلی تھیں) مجھے بھی اس مہمان خانے میں احمد فراز کے ساتھ قیام کا شرف حاصل ہوا! کیسے کیسے لوگ چلے گئے! اب ڈھونڈ انہیں چراغ رُخِ زیبا لے کر!
٭قارئین کرام! بات کہیں کی کہیں نکل گئی۔ ایک کسان کھیت میں ہل چلا رہا تھا۔ اس کے ہم سایہ نے کہا کہ ہوش کر! کیسا ٹیڑھا ہل چلا رہا ہے! کسان بولا کہ ’تم نے کون سا بیٹی کی شادی پر مجھے بلایا تھا؟‘ وہ شخص بولا کہ سوال کچھ تھا، یہ کیا جواب ہوا؟ کسان بولا کہ اسی طرح بات میں سے بات نکلا کرتی ہے!
٭پھر بوجھل سیاسی باتیں! کسی کی برسی کی فضا بہت سوگوار ہوتی ہے۔ اس میں صرف مرحومین کے لئے قرآن خوانی، نعت خوانی، مغفرت کی دعائیں اور مرحومین کی صفات بیان کی جاتی ہیں۔ پنجاب کی ہر وقت ہر موقع پر بولتے رہنے والی اطلاعات کی معاون خصوصی محترمہ فردوس عاشق اعوان نے اعلان کیا کہ گڑھی خدا بخش میں بے نظیر بھٹو کی برسی پر سیاسی تھیٹر لگایا جا رہا ہے۔ میں نے ان الفاظ پر سخت گرفت کی مگر…مگر! برسی کی تقریب تو واقعی ’سیاسی تھیٹر‘ نکلی! مریم نواز نے تقریر کا آغاز ان الفاظ سے کیا کہ ’’مجھے برسی کی تقریب میں آ کر بہت خوشی ہوئی ہے‘‘ برسی پر خوشی اور پرجوش تالیاں! خدا پناہ!! کیا لوگ تھے نوابزادہ نصراللہ خاں، ولی خاں، غوث بخش بزنجو! شاہ احمد نورانی اور مفتی محمود! ذومعنی شعروں میں بہت کچھ کہہ جاتے! نواب زادہ نصراللہ خاں جلسے میں کلیم عاجز کا ایک شعر ضرور پڑھا کرتے کہ ’’دامن پہ کوئی چھینٹ، نہ خنجر پہ کوئی داغ! تم قتل کرو ہو کہ کرامات کرو ہو!‘‘ اس شعر کی سنسنی خیز تاریخ بھی ہے۔ 1975ء میں بھارت کی وزیراعظم نے ایمرجنسی لگا دی۔ 21 ماہ کے دوران اپوزیشن کے سارے رہنما جیلوں میںٹھونس دیئے۔ پریس پر سخت پابندیاں لگا دیں۔ بہت سے اخبارات بند کر دیئے۔ اسی دوران 15 اگست کو یوم آزادی کا مشاعرہ ہوا۔ اندرا گاندھی مہمان خصوصی تھیں۔ مشاعرہ میں بزرگ شاعر کلیم عاجز نے غزل پڑھ دی کہ:
میرے ہی لہو پر گزر اوقات کرو ہو!
مجھ سے ہی امیروں کی طرح بات کرو ہو
دن ایک ستم، ایک ستم رات کرو ہو
وہ دوست ہو، دشمن کو بھی تم مات کرو ہو
یوں تو کبھی منہ پھیر کے دیکھو بھی نہیں ہو
جب وقت پڑے ہے تو مدارات کرو ہو!
کلیم عاجز نے اچانک اندراگاندھی کی طرف اشارہ کر کے پڑھا کہ:
دامن پر کوئی چھینٹ نہ خنجر پر کوئی داغ
تم قتل کرو ہو کہ کرامات کرو ہو!
اس پر زبردست تالیوں سے مشاعرہ کی چھت اڑ گئی۔  منتظمین کا خون خشک ہو گیا۔ آئندہ کے لئے مشاعروں پر پابندی لگ گئی۔
 

تازہ ترین خبریں

یا اللہ رحم۔۔کراچی میں شدید بارشیں اور آندھی۔۔کتنے افراد جاں کی بازی ہار گئے۔۔ خبر نے دل چیر دیئے

یا اللہ رحم۔۔کراچی میں شدید بارشیں اور آندھی۔۔کتنے افراد جاں کی بازی ہار گئے۔۔ خبر نے دل چیر دیئے

نفیسہ شاہ اور شیریں مزاری آمنے سامنے۔۔۔۔  ایک دوسرے پر نقل کرنے کا الزام لگادیا

نفیسہ شاہ اور شیریں مزاری آمنے سامنے۔۔۔۔  ایک دوسرے پر نقل کرنے کا الزام لگادیا

عمران خان نے ریحام خان سے جان چھڑوانے کےلئے جہانگیر ترین سے مدد مانگی تھی

عمران خان نے ریحام خان سے جان چھڑوانے کےلئے جہانگیر ترین سے مدد مانگی تھی

 سندھ سے انتہائی بری خبر ۔۔۔۔۔ 11 افراد جاں بحق ہوگئے 

 سندھ سے انتہائی بری خبر ۔۔۔۔۔ 11 افراد جاں بحق ہوگئے 

امتحانات دینے والے طلبا کیلئے خوشخبری ۔۔۔۔ تعلیمی بورڈز کا اہم فیصلہ

امتحانات دینے والے طلبا کیلئے خوشخبری ۔۔۔۔ تعلیمی بورڈز کا اہم فیصلہ

جہانگیر ترین ایک مرتبہ پھر سرگرم ۔۔۔۔۔ہم خیال اراکین پارلیمنٹ کیلئے عشائیہ کا اہتمام ۔۔ پی ٹی آئی اراکین کی آمد کا سلسلہ جاری

جہانگیر ترین ایک مرتبہ پھر سرگرم ۔۔۔۔۔ہم خیال اراکین پارلیمنٹ کیلئے عشائیہ کا اہتمام ۔۔ پی ٹی آئی اراکین کی آمد کا سلسلہ جاری

ذاتی رنجش پر مخالفین نے زمیندار کی بھینس کر زہردے کر مار ڈالا

ذاتی رنجش پر مخالفین نے زمیندار کی بھینس کر زہردے کر مار ڈالا

ماروی سرمد کے حیران کن ماضی سے پردہ اٹھا دینے والی تحریر

ماروی سرمد کے حیران کن ماضی سے پردہ اٹھا دینے والی تحریر

پی ڈی ایم کو دوبارہ فعال کرنے کی تیاریاں

پی ڈی ایم کو دوبارہ فعال کرنے کی تیاریاں

پاکستانیوں کیلئے ایک اوربڑی خوشخبری۔۔صوبہ بلوچستان میں گیس کے نئے ذخائر دریافت کرلیے گئے۔

پاکستانیوں کیلئے ایک اوربڑی خوشخبری۔۔صوبہ بلوچستان میں گیس کے نئے ذخائر دریافت کرلیے گئے۔

امتحانات دینے والے طلبا کیلئے خوشخبری ۔۔۔۔ تعلیمی بورڈز کا اہم فیصلہ 

امتحانات دینے والے طلبا کیلئے خوشخبری ۔۔۔۔ تعلیمی بورڈز کا اہم فیصلہ 

رنگ روڈ میگا سیکنڈل پر پیپلزپارٹی نے وزیراعظم سمیت اسکینڈل میں ملوث وزراء سے مستعفی ہونے کا مطالبہ کر دیا

رنگ روڈ میگا سیکنڈل پر پیپلزپارٹی نے وزیراعظم سمیت اسکینڈل میں ملوث وزراء سے مستعفی ہونے کا مطالبہ کر دیا

جہانگیر ترین ایک مرتبہ پھر سرگرم ۔۔۔۔۔ہم خیال اراکین پارلیمنٹ کیلئے عشائیہ کا اہتمام ۔۔ پی ٹی آئی اراکین کی آمد کا سلسلہ جاری

جہانگیر ترین ایک مرتبہ پھر سرگرم ۔۔۔۔۔ہم خیال اراکین پارلیمنٹ کیلئے عشائیہ کا اہتمام ۔۔ پی ٹی آئی اراکین کی آمد کا سلسلہ جاری

سابق وزیراعظم نواز شریف کی ضبط شدہ جائیدادوں کو نیلام کرنے کا فیصلہ۔۔۔بولی کی تاریخ بھی مقر ر 

سابق وزیراعظم نواز شریف کی ضبط شدہ جائیدادوں کو نیلام کرنے کا فیصلہ۔۔۔بولی کی تاریخ بھی مقر ر