02:49 pm
بھا رت کی مذہبی منافرت

بھا رت کی مذہبی منافرت

02:49 pm

  اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے 75ویں اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے دنیا میں اسلاموفوبیا کے بڑھتے ہوئے رجحان اور مذہب کے حوالے سے عدم برداشت پر روشنی ڈالتے ہوئے اقوام متحدہ سے مطالبہ کیا کہ دنیا سے اسلاموفوبیا کو ختم کرنے کیلئے ایک عالمی دن مختص کیا جائے ۔ حال ہی میں نا ئیجرمیں ہونے والی وزرائے خارجہ کی کا نفرنس کے 47ویں اجلاس میں او آئی سی ممالک نے بھی بھا رت کی حکومت سے مطالبہ کیا تھاکہ بابری مسجد کی اصل جگہ پر دوبارہ مسجد بنانے کے اپنے وعدے کو پورا کرے۔ او آئی سی ممالک نے بھارت سے یہ مطالبہ کیا کہ بابری مسجد شہید کرنے والوں کو قرار وا قعی سزادی جائے اور وہاں مندر کی تعمیر کو فوری طور پر روکا جائے ۔
اس کے علاوہ بھا رت میں مختلف مقامات پر تین ہزار سے زیادہ تاریخی مساجد کی حفاظت کا معقول انتظام کیا جائے اور پورے بھا رت میں مسلمانوں کو تحفظ مہیا کرنے کے لئے ضروری اقدامات کئے جائیں ۔ پاکستا ن نے بین الاقوامی برادری ، اقوام متحدہ اور دیگر اداروں سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ ہندوتوا سے متاثر بھا رت کے انتہا پسند ہندوئو ں سے اقلیتو ں کو بچانے کیلئے اقدامات کریں۔ یہ قرارداد دراصل پاکستا ن کی مذہبی انتہا پسندی اور تشدد کے خلاف انتھک کوششوں کا نتیجہ ہے۔ یہ قرادادپاکستان کی اسلاموفوبیا کے متعلق دنیا کو آگاہ کرنے کی مہم کا بھی حصہ  ہے جس میں مسلمانوں کے مذہبی مقاما ت اور شخصیا ت کے خلاف نفرت کو اجاگر کیا گیا ہے۔ اس طرح کی مذہبی منافرت اور منفی رویے میں بھا رت دنیا میں ایک ممتاز اور الگ مقام رکھتا ہے۔ با بری مسجد ایکشن کمیٹی نے ایودھیا سے 25کلومیڑ دور بھا رتی حکو مت کی طرف سے الاٹ کی جانے والی زمین پر بابری مسجد بنانے کے فیصلے کو شر یعت کے خلاف قرار دیا ہے۔ با بری مسجد ایکشن کمیٹی کے مطابق بھارت کا وقف ایکٹ  اس با ت کی  اجا زت نہیں دیتا کہ کسی مسجد کو شہید کر کے کسی دوسری جگہ پر اسے دوبارہ  تعمیر کر دیا جائے ۔ یا د رہے کہ اتر پردیش کی حکومت با بری مسجد کی دوبا رہ تعمیر کے لئے پا نچ ایکٹر زمین ایودھیا سے 25 کلومیٹر دور الاٹ کر چکی ہے جبکہ بھا رتی سپریم کورٹ بابری مسجد کی جگہ پر رام مندر بنانے کا متنازعہ فیصلہ دے چکی ہے ۔  نومبر 2019 ء میں دیا جانے  والا بھا رتی  سپریم کورٹ کا یہ متنازعہ فیصلہ نہ صرف مذہبی انتہا پسندی  کی  طرف اشا رہ دیتا ہے بلکہ   ـ’’ جس کی لاٹھی اس کی بھینس ‘‘   کے مصداق بھا رت میں اقلیتوں خصوصاً مسلمانوں کی حالت زار کی کہانی بھی بیا ن کرتا  ہے جہا ں مسلمانوں کی عبادت گاہیں بھی محفوظ نہیں ہیں ۔ مسلمانوں کی طرف سے فیصلے کے خلاف دائر کردہ لا تعداد درخواستوں کو بھی در پردہ نمٹا دیا گیاہے اور تمام درخواستوں کو میرٹ پر نہ ہونے کی بنیاد پر خارج کر دیا گیاہے ۔ بھا رتی عدالتوں کے فیصلوںپر نظر دوڑائی جائے تو یہ با ت سامنے آتی ہے کہ اقلیتوں اور خا ص طور پر مسلمانوں سے متعلق فیصلے دینے میں ان کا ریکارڈ انتہائی افسوس نا ک رہا ہے۔انتہا پسند ہندوئوں نے 6  دسمبر 1992 ء کو بابری مسجد شہید کر کے اس کے زیا دہ تر حصوں کو نذر آتش کر دیا تھا ۔با بری مسجد 16ویں صدی میں مغل با دشاہ ظہیر الدین بابر نے تعمیر کی تھی ۔ ہزاروں کی تعداد میں ہندو تخر یب کار  علاقے کی پولیس کی معاونت سے با بری مسجد پر حملہ آور ہوئے اور پوری مسجد کو منہدم کر دیا جو کہ ہندوئو ں کی مسلمانوں کے خلاف نفرت اور ہندوئوں کے ہا تھوں بین الاقوامی قوانین کی دھجیاں اڑانے کی ایک مثال ہے۔مسجد کے انہدام کے بعد علاقے میں ہندوئوں اور مسلمانوں کے درمیا ن جھڑپیں اور فسادات شروع ہو گئے جس کے نتیجے میں ہزاروں مسلمان شہید کر دیئے گئے ۔حا ل ہی میں کئے جا نے والے سپریم کورٹ کے فیصلے میں  بی جے پی کے تمام رہنماؤں کو رہا کر دیا گیا ہے۔ سپریم کورٹ کے فیصلے کے مطابق بابری مسجد کی شہادت باقاعدہ منصوبہ بندی کے تحت عمل میں نہیں آئی تھی بلکہ اچانک ہی ایسا ہو گیا حالانکہ اس بات کے ہزاروں عینی شاہد موجود ہیں جنکی آنکھوں کے سامنے بابری مسجد کی شہادت باقاعدہ منصوبہ بندی کے ساتھ کی گئی تھی۔ انتہا پسند ہندو اپنے ساتھ ہتھوڑے ، لوہے کی سلاخیں اور عمارتیں توڑنے کے اوزار لے کر آئے تھے۔مجرموں کی رہائی بھارتی سپریم کورٹ کی انصاف اور قانون سے لاپروائی کا منہ بولتا ثبوت ہے۔ بابری مسجد کی شہادت کے اندوہناک مناظر صرف مسلمانوں کے ہی نہیں بلکہ پوری دنیا کے باضمیر انسانوں کے دلوں پر آج بھی نقش ہیں۔ بابری مسجد کی جگہ پر رام مندر کی تعمیر یہ بات ثابت کرنے کیلئے کافی ہے کہ بھارت صرف ہندوؤں کا ہے جہاں پر اقلیتوں کی کوئی گنجا ئش نہیں۔رام مندر کی تعمیر دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت کے ماتھے پر ایک بد نما داغ ہے۔ مسجد کی شہادت کے 28سال بعداقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی نے پاکستان اور فلپائن کی طرف سے پیش کی جانے والی قرارداد کو منظور کیا ہے جس میں یہ مطالبہ کیا گیا تھا کہ مذہبی مقامات کی حفاظت کو یقینی بنایا جائے ۔ اس قرارداد کو منظور کرنے میں بہت وقت لگ گیا بہرحال دیر آید درست آید۔ کچھ ممالک نے ووٹنگ میں حصہ نہیں لیا لیکن اچھی بات یہ ہے کہ اسکی مخالفت میں کوئی ووٹ نہیں ڈالا گیا۔ قرارداد میں باہمی احترام کے جذبے کو سراہا گیا اور یہ کہا گیا کہ مذہبی مقدس مقامات کی توہین سے نفرت اور انتہا پسند ی جنم لیتی ہے جس سے معاشرے میں انتشارپیدا ہوتا ہے۔ اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ نفرت اور انتہا پسندی کو کسی صورت قبول نہیں کیا جانا چاہیئے قرارداد میں کہا گیا کہ نفرت کے جذبات کو کسی خاص مذہب ، قوم یا سوسائٹی سے منسوب نہیں کیا جاسکتا ۔ 2دسمبر2020ء کو قرارداد منظور کی گئی جس کے حق میں90ووٹ اور مخالفت میںکوئی ووٹ نہیں پڑاجبکہ 52ممبران نے ووٹ ڈالنے سے اجتناب کیا۔ ووٹ نہ ڈالنے والوں میں پورپین یونین کے ممالک اور بھارت شامل تھے۔اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی نے قرارداد منظور کر لی جس میں بین المذاہب ہم آہنگی او ر باہمی احترام کے جذبات کو اجاگر کیا گیا تھا۔بھارت نے نہ صرف اس قرارداد کی مخالفت کی بلکہ پاکستان کی طرف سے کرتا رپور  کاریڈور کھولنے کا فیصلے کی بھی شدید مخالفت کی لیکن اسے اس میں ناکامی کا سامنا کرنا پڑا۔قرارداد میں پاکستان کی طرف سے کرتارپور کا ریڈور کھولنے کے فیصلے کو سراہا گیا ۔ یہ کاریڈور 9نومبر2018ء  کوسکھ زائرین کے ایک بڑے اجتماع کے سامنے بابا کرونانک کے 550ویں جنم دن کے موقع پر کھول دیا گیا تھا۔قرارداد پر مذاکرات کے دوران پورپین یونین، مغربی ممالک اور بھارت نے مسلسل قرارداد کی مخالفت کی جسے انہوں نے آزادی اظہار رائے یا فریڈم آف ایکسپریشن کے مخالف قرار دیا۔ مغربی ممالک کی شدید مخالفت کی وجہ سے اقوام متحدہ میں پاکستانی مشن کو قرارداد پاس کرانے میں بہت محنت کرنا پڑی جس کے لئے انہیں او آئی سی اور ترقی پذیر ممالک کو ساتھ لے کر چلنا پڑا۔ قرارداد میں دنیا کے تمام ممالک پر زور دیا گیا کہ باہمی احترام کو ملحوظ خاطررکھا جائے جس پر اقوام متحدہ کے چارٹر اور انسانی حقوق پر یونیورسل ڈیکلریشن میں بھی زور دیا گیا ہے۔قرارداد میں مذہبی منافرت کی شدید مخالفت کی گئی جس سے شدت پسندی کے جذبات پیدا ہوتے ہیں ۔ قرارداد میں بین المذاہب مذاکرات کی اہمیت پر زور دیا گیا جس سے معاشرے میں امن اور ترقی کے راستے کھلتے ہیں۔بڑھتے ہوئے کرونا وائرس ، سٹیزن شپ امینڈمنٹ ایکٹ(CAA)نیشنل رجسٹریشن آف سٹیزن (NRC)اور دہلی میں کسانوں کے قتل عام کے ساتھ ساتھ بابری مسجد کی جگہ پر رام مندر کی تعمیر میں عجلت سے پتہ چلتا ہے کہ بھارت میں مسلمانوں کو ایک سوچے سمجھے منصوبے کے تحت نشانہ بنا یا جا رہا ہے ۔ بین الاقوامی برادری کا فرض بنتا ہے کہ بھارت میں اقلیتوں کی حالت زار پر توجہ دے اور حالات کو بہتر بنائے۔

 

تازہ ترین خبریں

ملک بھر میں سخت پابندی ۔۔۔ وفاقی حکومت نے صوبوں کو ہدایت جاری کردیں۔کیاہونےوالاہے؟پوری قوم کیلئے بڑی خبر

ملک بھر میں سخت پابندی ۔۔۔ وفاقی حکومت نے صوبوں کو ہدایت جاری کردیں۔کیاہونےوالاہے؟پوری قوم کیلئے بڑی خبر

 امریکامیں 2روزہ ماحولیاتی کانفرنس 2021کاآغازہوگیا ۔۔پاکستان کی بھی شرکت 

 امریکامیں 2روزہ ماحولیاتی کانفرنس 2021کاآغازہوگیا ۔۔پاکستان کی بھی شرکت 

پی ڈی ایم جماعتوں کی عیدالفطر کے بعد لانگ مارچ کی تیاری شروع

پی ڈی ایم جماعتوں کی عیدالفطر کے بعد لانگ مارچ کی تیاری شروع

دیر لگی مگر آخر کار ! وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار خوشی سے نہال ، پاکستانیوں کو زبردست خوشخبری سنا دی گئی

دیر لگی مگر آخر کار ! وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار خوشی سے نہال ، پاکستانیوں کو زبردست خوشخبری سنا دی گئی

کراچی میں لاک ڈاؤن۔۔ ٹرانسپورٹ پربھی پابندی۔۔۔ وزیرصحت سندھ کے اعلان نے عوام پر بجلیاں گرادیں

کراچی میں لاک ڈاؤن۔۔ ٹرانسپورٹ پربھی پابندی۔۔۔ وزیرصحت سندھ کے اعلان نے عوام پر بجلیاں گرادیں

گواد ر انٹرنیشنل ائیرپورٹ سے ترقی کے نئے دور کی شروعات ہوگی ۔۔۔ جام کمال کی اہم شخصیت سے ملاقات کے وقت بیان 

گواد ر انٹرنیشنل ائیرپورٹ سے ترقی کے نئے دور کی شروعات ہوگی ۔۔۔ جام کمال کی اہم شخصیت سے ملاقات کے وقت بیان 

صحافی نے تحریک انصاف کے وزیر سے سوال کیا تو انہوںنے ایسا جواب دیا کہ تمام پاکستانی ارتھ ہو کر  رہ گئے

صحافی نے تحریک انصاف کے وزیر سے سوال کیا تو انہوںنے ایسا جواب دیا کہ تمام پاکستانی ارتھ ہو کر رہ گئے

پارٹی ورکر ہوں کسی لوٹے کی بیٹی نہیں ، ن لیگ کو زبردست جھٹکا ، اہم ترین خاتون رہنما نے ن لیگ سے استعفیٰ دیدیا

پارٹی ورکر ہوں کسی لوٹے کی بیٹی نہیں ، ن لیگ کو زبردست جھٹکا ، اہم ترین خاتون رہنما نے ن لیگ سے استعفیٰ دیدیا

اسلام آباد پولیس کی ایک اور ذبردست کاروائی ۔۔۔۔ کار چوری میں ملوث منظم گینگ کے 5 کارچور گرفتارکرلئے گئے 

اسلام آباد پولیس کی ایک اور ذبردست کاروائی ۔۔۔۔ کار چوری میں ملوث منظم گینگ کے 5 کارچور گرفتارکرلئے گئے 

خیبر پختونخوا میں مزید 39 افراد جاں بحق ہوگئے ۔۔ انتہائی افسوس ناک خبر 

خیبر پختونخوا میں مزید 39 افراد جاں بحق ہوگئے ۔۔ انتہائی افسوس ناک خبر 

56 بچے متاثر ۔۔۔۔ شہراقتدار سے انتہائی بری خبر آگئی

56 بچے متاثر ۔۔۔۔ شہراقتدار سے انتہائی بری خبر آگئی

کورونا ڈیوٹی کرنے والے ڈاکٹر نے خود کشی کی ۔۔۔ وجہ کیا بنی ؟؟ انتہائی  ہوشربا انکشاف

کورونا ڈیوٹی کرنے والے ڈاکٹر نے خود کشی کی ۔۔۔ وجہ کیا بنی ؟؟ انتہائی ہوشربا انکشاف

اب عوام کو یہ چیز ہر صورت میں ملے گی ۔۔۔ وزیراعظم نے اہم اعلان کردیا

اب عوام کو یہ چیز ہر صورت میں ملے گی ۔۔۔ وزیراعظم نے اہم اعلان کردیا

خاتون کا ٹیکسی ڈرائیور پر وحشیانہ تشدد ۔۔۔۔ ویڈیو وائرل ہوگئی ۔۔۔۔ وجہ کیا بنی ؟؟ْ۔۔۔انتہائی دلچسپ خبر

خاتون کا ٹیکسی ڈرائیور پر وحشیانہ تشدد ۔۔۔۔ ویڈیو وائرل ہوگئی ۔۔۔۔ وجہ کیا بنی ؟؟ْ۔۔۔انتہائی دلچسپ خبر