01:05 pm
بعداز بسیار خرابی، وزیراعظم کوئٹہ میں

بعداز بسیار خرابی، وزیراعظم کوئٹہ میں

01:05 pm

٭بعد از بسیار خرابی و رسوائی وزیراعظم کوئٹہ میں مَچھ سانحہ کے شہدا کی تدفین، کوئٹہ اور ملک بھر میں دھرنے ختم… کراچی میں موٹر سائیکلیں جلا دی گئیںO امریکہ: ٹرمپ کا جوبائیڈن کی حلف برداری میں شرکت سے انکار، کانگریس پر حملہ کرانے کے الزام میں مواخذہ کی تیاریاں، استعفا مانگ لیا گیا، ایٹمی حملے کے اختیار پر پابندی O کراچی: مریم نواز کے عمران خاں کے لئے گالیاں، صحافیوں کے سخت سوالات پر برہم جواب دینے سے انکارO شیعہ سنی فسادات کی سازش، 14 گروپ گرفتار، وزیرداخلہO کرونا، مزید 47 ہلاک، 2435 نئے کیس، 2100 حالت تشویشناک Oامریکہ: کرونا 2247 ہلاک، کل تعداد تین لاکھ 76 ہزارO یوٹیلیٹی سٹور، آٹا، موٹی چینی غائب O کرک، مندر مسماری، مرکزی ملزم مولوی فیض اللہ گرفتارO واشنگٹن کانگریس پر پر حملہ، مرنے والوں کی تعداد5 ہو گئیO کوئٹہ:11 نہیں، 10 شہید ہوئے… نماز جنازہ کا دلدوز منظر، وفاقی و صوبائی وزرا بھی شریک!!

٭وزیراعظم (گھر کی ہدایت پر) چھ روز تک کوئٹہ میں 10 شہید افراد کے لواحقین کے دھرنے میں نہ گئے۔ ملک بھر میں ہنگامے دھرنے، سینکڑوں سڑکیں بند، کراچی میں چھ موٹر سائیکلیں جلا دی گئیں، آنسو گیس، لاٹھی چارج، گرفتاریاں، ملک معاشی طور پر ٹھپ ہو گیا۔ ٹرینیں، طیارے، بسیں بند، شدید ہنگامی حالت اور بقول عبدالقادر پٹیل، وزیراعظم ’گھر‘ کی ہدائت پر اڑے رہے کہ کسی میت پر نہیں جانا! ادھر دھرنے والے بھی اڑ گئے کہ وزیراعظم کے آنے پر ہی شہدا کی تدفین ہو گی۔ بالآخر بلوچستان کے وزیراعلیٰ جام کمال اور وفاقی وزراء کی حاضری اور منت سماجت پر دھرنے والے شہدا کی تدفین پر رضا مند ہو گئے۔ ہفتہ کے روز 10 بجے صبح تدفین کا وقت طے پایا اور وزیراعظم نے بصد خرابی و رسوائی کے بعد کوئٹہ جانے کا اعلان کر دیا۔ چھ دن وہاں نہ جانے پر کوئی معذرت نہیں، اُلٹا بار بار یہ بیان دے کر جلتی پر تیل ڈالا گیا کہ ’’مجھے لاشوں کی آڑ میں بلیک میل کیا جا رہا ہے۔‘‘ اس پر نہ صرف اپوزیشن اور عام عوام کی سخت برہمی سامنے آئی۔ تو سرکاری چوبداروں نے اس بداحتیاطی کی شدت کم کرنے کی کوشش میں وضاحت دی کہ دھرنے والوں کو نہیں بلکہ اپوزیشن والوں کو بلیک میلرکہا تھا! یہ وضاحت بے کار تھی۔ وزیراعظم نے ایک سے زیادہ بار کھلے الفاظ میں دھرنے والوں کو مخاطب کیا تھا۔ بہرحال ملک بھر میں انتہائی اذیت ناک صورت حال ختم ہوئی۔ وزیراعظم کا لاہور کا دورہ ملتوی کر دیا گیا اوراب وزیراعظم کے شہدا کے ساتھ محبت و عقیدت کے بیانات شروع ہو گئے ہیں! وزیراعظم کے واضح ضِد سے پورا ملک چھ روز تک جس اذیت ناک صورت حال اور بھاری نقصانات سے دوچار ہوا، اسکا ازالہ کیا اورکیسے ہو گا؟ حکومتی بزرجمہروں کا اس سے کوئی تعلق نہیں! ملک کی بدنصیبی! کیا کیا الم ناک حالات دیکھنے میں آ رہے ہیں!!
٭کچھ باتیں امریکہ کے تاحال (20 جنوری تک) ٹرمپ نام کے ایک پاگل اور دیوانے صدر کی۔ چار سال تک صدرکے عہدہ پر نہ صرف امریکہ بلکہ دنیا بھر میں جو ہڑبونگ مچائی اور جنونی حرکتیں کیں، صدارتی انتخابات کے نتائج اور اپنی شکست تسلیم کرنے سے انکار کر دیا اور آخری دنوں میں امریکی کانگریس کے اجلاس پر حملہ کرا کے جو عالمی رسوائی اور بدنامی حاصل کی، اس کا بالآخر نتیجہ بھگتنا پڑ رہا ہے۔ واشنگٹن میں کانگریس پر حملے میں 5 افراد ہلاک 110 گرفتار ہوئے، مزید گرفتاریاں جاری ہیں، کانگریس کے ایوان میں شدید توڑ پھوڑ ہوئی، حملہ آور مظاہرین بہت سے چیزیں اٹھا کر لے گئے، سپیکر نینسی پلوسی کا دفتر تباہ کر دیا گیا، ان سب جرائم کا منبع ٹرمپ کو قرار دے دیا گیا ہے اور اس کے فوری مواخذہ کی تیاری شروع ہوگئی ہے۔ اس کے متعدد ساتھی وزراء، وائٹ ہائوس کا عملہ اور سرکاری اٹارنی جنرل وغیرہ ساتھ چھوڑ گئے ہیں۔ سپیکر نینسی پلوسی نے وزارت دفاع کے مرکزی سنیٹر ’پینٹا گون‘ کو حکم دیا ہے کہ فی الحال صدر ٹرمپ شدید مایوسی اور پاگل پن کی حالت میں کسی بھی مخالف ملک پر حملے کا حکم دے سکتا ہے، ایسے بلکہ کسی دوسرے حکم پر بھی عمل نہ کیا جائے۔ ٹرمپ کی صدارت 20 جنوری کو بائیڈن کی حلف برداری کے ساتھ ختم ہو جائے گی۔ اس میں 9 دن باقی رہ گئے ہیں۔ ان 9 دنوں میں اس کے سخت مواخذے کی تیاریاں کی جا رہی ہیں۔ اس عہدے سے استعفا لیا جا سکتا ہے، اس کے خلاف سنگین جرائم کے تحت مقدمہ چلایا جا سکتا ہے اور اسے تمام صدارتی اختیارات و سہولتوں سے محروم کر کے اس کی گرفتاری اور ساری جائیداد کی ضبطی بھی ممکن ہے۔ تاہم ایسی سزائوں پر عمل 20 جنوری کے بعد ہی ممکن ہو گا۔ دریں اثناء ٹرمپ نے 20 جنوری کو بائیڈن کی حلف برداری کی تقریب میں شرکت سے انکار کر دیا ہے۔ یہ بھی آئین کی خلاف ورزی ہے۔ اس کی فی الحال خاتون اول بیوی ملانیا نے 20 جنوری سے پہلے وائٹ ہائوس چھوڑ دینے کا بیان دے دیا ہے۔ یہ سب باتیں اوران تمام افرادکے لئے عبرت ناک ہیںجنہیں آنے والے کل کی اذیتیں دکھائی نہیں دیتیں!
٭ آیئے کراچی چلیں۔ مریم نواز اور بلاول زرداری بلوچستان میں مچھ کے سانحہ کے مظاہرین کے دھرنے میں شریک ہوئے۔ بلاول صرف تعزیت کی باتوں تک محدود رہا۔ مریم نے پہلے تو بڑی اپنائیت کے ساتھ وزیراعظم عمران خاں کو آواز دی کہ ’’آیئے، سیاست چھوڑ کر مل جل کر صورت حال سنبھالنے کی کوشش کرتے ہیں!‘‘ پھر اچانک خیال آیا کہ ان باتوں سے مولانا فضل الرحمان کو سخت دکھ اور صدمہ ہو گا، اس پر مریم عمران خاں کے خلاف اُبل پڑیں۔ کوئٹہ نہ آنے پر سخت ایسی تیسی کی۔ کچھ سخت باتیں اس وقت یاد نہ آ سکیں تو کراچی پہنچ کر فوری پریس کانفرنس بلائی۔ اس کا آغاز ہی اس بات سے کیا کہ جناب محترم عمران خاں صاحب! ’’آپ بزدل، ڈرپوک، بے حس اور تابعدار شخص ہیں۔ ملک کا بیڑا غرق کردیا ہے، کوئٹہ جانے کی ہمت نہیں پڑ رہی۔ اتنا بڑا واقعہ ہو گیا اور آپ کو اسلام آباد میں فلمی اداکاروں سے ملاقاتوں سے فرصت نہ مل سکی‘‘ وغیرہ، وغیرہ۔ بی بی کا غصہ بڑھتا گیا۔ اچانک ایک صحافی نے سوال ٹھونک دیا کہ بی بی  یہ بتائیں کہ جب شہباز شریف کے دور اقتدار میں ماڈل ٹائون لاہور میں پولیس نے سیدھی فائرنگ کر کے ڈاکٹر طاہر القادری کی پارٹی کے 14 افراد (ایک خاتون) شہید کر دیئے تھے، اس وقت کیا آپ ماڈل ٹائون میں ان کے لواحقین کے دھرنے میں گئی تھیں! بی بی کے بولنے سے پہلے ایک دوسرے صحافی نے سوال داغ دیا کہ نوازشریف کے دور اقتدار میں بلوچستان میں ہزاروں قبیلے کے تقریباً چار سو (400) افراد شہیدہوئے تھے، کیا آپ ان دنوں کوئٹہ گئی تھیں؟ اس پر بی بی برہم ہوکر بولی کہ میں آج کوئی سیاسی بات نہیں کروں گی، مریم نے پرویز رشید کو بات کرنے کو کہا، پرویز رشید کو سمجھ میں نہ آیا کہ کیا بات کی جائے۔ موصوف نے احسن اقبال کو آگے کر دیا۔ انہوں نے دوسری بات شروع کر دیں! اس پر کیا تبصرہ کیا جائے!
٭پاکستان کی ایک عدالت نے بھارت میں پارلیمنٹ پر حملے کے ایک ملزم مولانا لکھوی کو 15 سال قید سخت و جرمانہ وغیرہ کی سزا سنائی۔ بھارتی وزارت خارجہ نے اس سزا کو محض ’ڈراما‘ قرار دیا ہے اور کہا ہے کہ پاکستان ایف اے ٹی ایف کے فروری میں ہونے والے اجلاس میں گرے لسٹ سے نکلنے کے لئے ایسے ’فرضی‘ اعلانات کر رہا ہے!
٭سرکاری اعداد و شمار کے مطابق رواں ہفتے کے دوران 22 ضروری اشیائے صرف مزید مہنگی ہو گئیں، ان میں گھی، گیس، بجلی، پٹرول، چینی، دال مونگ، کیلا، دہی، خشک دودھ، لکڑی، دال چنا، صابن، لہسن، دال ماش، چاول، گڑ، دال مسور وغیرہ شامل ہیں۔ 23 اشیا کی قیمتیں برقرار رہیں، صرف چھ اشیا کی قیمتیں کچھ کم ہوئیں ان میں مرغی کا گوشت، پیاز، ٹماٹر، آلو، آٹا، فارمی انڈے اور سبزیاں وغیرہ شامل ہیں۔ یہاںایک بات کا ذکر اہم ہے کہ اچانک بعض ضروری سبزیوں کی قیمتیں اتنی کم ہو گئی ہیں کہ کسانوں کو سخت بدحالی کا سامنا کرناپڑ رہا ہے۔ مثلاً گوبھی اک دم 120 روپے سے صرف 20 روپے کلو بلکہ ریڑھیوں پر 10 روپے کلو تک بک رہی ہے۔ شلجم پیاز اور آلو 30 سے 40 روپے تک فروخت ہو رہے ہیں۔ ادرک 1000 روپے کلو تک پہنچ گیا تھا اب 320 روپے کلو تک آ گیا ہے۔ اس صورت حال پر عام لوگوں کو تو اطمینان ہو رہا ہے مگر کسانوں کو سخت بدحالی کا سامنا کرناپڑا ہے۔ آڑھتی لوگ کسان سے جو چیز چار پانچ روپے کلو خریدتے ہیں، اسے بارہ پندرہ روپے تک منڈی میں فروحت کرتے ہیں۔ عام دکاندار کم از کم 20 روپے کلو پر فروخت کرتے ہیں۔ یوں کسانو ںکا بری طرح استحصال ہو رہا ہے۔ اس وقت کسانوں سے گوبھی دو تین روپے کلو خریدی جا رہی ہے اس سے کسانوںکو شدید نقصان پہنچ رہا ہے۔ کچھ عرصہ پہلے آلو دو روپے کلو خریدا گیا تو کسانوں نے لاہور کی مرکزی مال روڈ پر آلوئوں کی سینکڑوں بوریاں الٹا کر ٹریفک بند کر دی! کوئی حکومت، کوئی محکمہ زراعت، کوئی وزیر!!
٭دوبڑی سیاسی خواتین کا مکالمہ سرفراز سید کی زبان میں۔ ایک نے کہا میرے باپ کی حویلی اتنی بڑی تھی کہ تیز رفتار گھڑ سوار ایک دیوار سے سامنے کی دیوار تک بمشکل شام کے وقت پہنچتا تھا۔‘‘ دوسری بولی ’’میرے باپ کے پاس بے حد لمبا بانس تھا، جب چاہتا، بادلوں میں سوراخ کر کے بارش برسا لیتا تھا‘‘ پہلی بولی ’’وہ اتنا لمبا بانس کہاں رکھتا تھا؟‘‘ دوسری نے جواب دیا ’’تمہارے باپ کی حویلی میں!‘‘
 

تازہ ترین خبریں

پاکستانیوں کیلئے خوشخبری ۔۔۔ چین سے کورونا ویکسین کی مزید دو کھیپس پاکستان پہنچ گئیں۔

پاکستانیوں کیلئے خوشخبری ۔۔۔ چین سے کورونا ویکسین کی مزید دو کھیپس پاکستان پہنچ گئیں۔

عید کے بعد سرکاری ملازمین کی ایک اور عید ۔۔۔۔ تنخواہوں و پنشن میں اضافے کی تجویز

عید کے بعد سرکاری ملازمین کی ایک اور عید ۔۔۔۔ تنخواہوں و پنشن میں اضافے کی تجویز

غداروہ ہےجوکشمیربھارت کی جھولی میں ڈال دے،مریم نواز 

غداروہ ہےجوکشمیربھارت کی جھولی میں ڈال دے،مریم نواز 

چُلبلے اور نت نئے بیانات دینے والی وفاقی وزیر زرتاج گل کا عید الفطر پر خصوصی انٹرویو

چُلبلے اور نت نئے بیانات دینے والی وفاقی وزیر زرتاج گل کا عید الفطر پر خصوصی انٹرویو

لرزہ خیز حادثہ بڑی تعداد میں جانی نقصان ہوگیا ، ایمبولینسیں روانہ ، ہر طرف چیخ وپکار

لرزہ خیز حادثہ بڑی تعداد میں جانی نقصان ہوگیا ، ایمبولینسیں روانہ ، ہر طرف چیخ وپکار

لاک ڈاؤن کے حوالے سے نیا نوٹیفکیشن جاری،عید کے بعد شہریوں کیلئے بڑی خبر آگئی

لاک ڈاؤن کے حوالے سے نیا نوٹیفکیشن جاری،عید کے بعد شہریوں کیلئے بڑی خبر آگئی

سمندری طوفان کے پاکستانی ساحل سے ٹکرانے کا خطرہ ٹل گیا

سمندری طوفان کے پاکستانی ساحل سے ٹکرانے کا خطرہ ٹل گیا

شہر قائد میں کے پیسوں عوض قبر توڑ کر دوسری میت کی تدفین کا انکشاف

شہر قائد میں کے پیسوں عوض قبر توڑ کر دوسری میت کی تدفین کا انکشاف

تعلیمی اداروں کی بندش سے متعلق طلبا کیلئے ایک اور بڑی خبر،حکومت نے چھٹی کے دن اہم فیصلہ کرلیا

تعلیمی اداروں کی بندش سے متعلق طلبا کیلئے ایک اور بڑی خبر،حکومت نے چھٹی کے دن اہم فیصلہ کرلیا

پاکستان کیلئے شاندار اعلان ،شہریوں میں خوشی کی لہر دوڑ گئی

پاکستان کیلئے شاندار اعلان ،شہریوں میں خوشی کی لہر دوڑ گئی

اسرائیل کے غزہ پر بدترین حملے ،41 بچوں سمیت 154افراد شہید

اسرائیل کے غزہ پر بدترین حملے ،41 بچوں سمیت 154افراد شہید

 ’’فلسطینی بچی ننھی منی مچھلیاں بچا کر خوش،خبر پڑھ کر آپ کی آنکھیں نم ہوجائینگی

’’فلسطینی بچی ننھی منی مچھلیاں بچا کر خوش،خبر پڑھ کر آپ کی آنکھیں نم ہوجائینگی

پی ٹی اے نے گمشدہ اور چھینے گئے فون بلاک کروانے کا آسان طریقہ متعارف کرا دیا

پی ٹی اے نے گمشدہ اور چھینے گئے فون بلاک کروانے کا آسان طریقہ متعارف کرا دیا

نہری پانی میں کمی پر پیپلزپارٹی کا سندھ پنجاب سرحد پر دھرنے کا اعلان

نہری پانی میں کمی پر پیپلزپارٹی کا سندھ پنجاب سرحد پر دھرنے کا اعلان