01:02 pm
آزاد کشمیر کے انتخابات، شکوک و شبہات

آزاد کشمیر کے انتخابات، شکوک و شبہات

01:02 pm

 آزاد کشمیر کے انتخابات وقت پر ہوں گے یانہیں ہوں گے، اس بارے میں ابھی تک کوئی مستند بات منظر عام پر نہیں آئی ہے۔ بر سر اقتدار مسلم لیگ (ن) اور پیپلز پارٹی وقت پر انتخابات کا انعقاد چاہتے ہیں۔ پاکستان تحریک انصاف وفاق میں حکومت کے دم پر انتخابات ملتوی کرنے کی تجویز پر غور کر رہی ہے۔ مسلم لیگ انتخابات میں تاخیر کو دھاندلی کی کوشش قرار دیتی ہے۔ 21  جولائی 2016 ء کو آزاد کشمیر میں انتخابات میں کامیابی کے بعد مسلم لیگ ن نے حکومت تشکیل دی۔قانون ساز اسمبلی کی مدت 29جولائی 2021ء کو پوری ہو رہی ہے۔ اس کے بعدسے 60دن تک کسی بھی وقت نئے انتخابات کا انعقاد ضروری ہے۔ سیاسی پارٹیاں سب جوڑ توڑ میں لگی ہوئی ہیں۔ اپنے امیدواروں کے ناموں کو حتمی شکل دے رہی ہیں۔ اس دوران نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر (این سی او سی) نے انتخابات کو دو ماہ کے لیے ملتوی کرنے کی تجویز  پیش کر دی جسے آزاد خطے میں برسر اقتدار ن لیگ اور پیپلز پارٹی سمیت تمام پارٹیاں مسترد کر رہی ہیں۔  وہ اسے وفاقی حکومت اورپی ٹی آئی کی انتخابات چرانے کی مشترکہ کوشش قرار دیتی ہیں۔پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کا کہنا ہے کہ وزیراعظم عمران خان کو اپنی شکست واضح نظر آنے لگی ہے اس لئے وہ انتخابات ملتوی کرنا چاہتے ہیں۔ وفاقی وزیر اسد عمر نے آزاد کشمیر حکومت پر زور دیا ہے کہ وہ انتخابات کے انعقاد کے فیصلے پر نظر ثانی کرے کیوں کہ جلسے جلوس اور انتخابی سرگرمیوں سے کورونا پھیلنے کا خدشہ ہے۔ انسانی زندگی کو درپیش خطرے کے باعث انتخابی شیڈول ترتیب دیا جائے۔ کورونا کی وجہ سے آزاد کشمیر میں دوسرے سال بھی اول تا ششم جماعت تک کواگلے کلاسوں میں پروموٹ کر دیا گیا ہے۔ بلیک فنگس کی شکل میں کورونا کی ایک نئی قسم نے پڑوسی بھارت اور مقبوضہ کشمیر میں سینکڑوں افراد کو اپنا شکار بنا ڈالا ہے۔ پاکستان میں بھی کئی مریض بلیک فنگس کی لپیٹ میں آ چکے ہیں۔ 
 این سی او سی کا آزاد کشمیر کے انتخابات سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ اس کا آزاد کشمیر کے الیکشن کمیشن کو دو ماہ تک الیکشن ملتوی کرنا کے لئے خط لکھنا الیکشن سے قبل دھاندلی اور الیکشن چوری کی کوشش ہے۔ اس خط کو الیکشن دھاندلی کی سازش قرار دیا جا رہا ہے۔ مسلم لیگ ن کا خیال ہے کہ پی ٹی آئی گلگت بلتستان کی الیکشن حکمت عملی آزاد کشمیر میں دہرانا چاہتی ہے۔ یہ سوال بھی کیا جا رہا ہے کہ این سی او سی کے 31مئی 2021ء کو لکھے اس خط کی آئینی حیثیت کیا ہے جس میں الیکشن جولائی کے بجائے ستمبر میں کرانے کی تجویز دی گئی ہے۔  انتخابات ملتوی کرنے کی تجویز پر یہ خیال کیا جا رہا ہے کہ پی ٹی آئی سیاسی وفاداریاں تبدیل کرانے کی خاطر ایسا کر رہی ہے۔ اس سلسلے میں نیب کو بھی ہتھیار کے طور پر استعمال کرنے کے الزامات عائد ہو رہے ہیں۔ 
کورونا کے باوجود پاکستان میں ضمنی انتخابات کا انعقاد کیا گیا۔ پھر آزاد کشمیر کے انتخابات سے کیا ڈر محسوس کیا جا رہا ہے۔ این سی او سی نے ان ضمنی انتخابات میں کوئی ایڈوائزری جاری نہ کی۔ اگر عمران خان اور ان کے رفقاء آزاد کشمیر میں اپنی پوزیشن کو کمزور سمجھ کر الیکشن دو ماہ کے لئے ملتوی کرانا چاہتے ہیں تو دو ماہ بعد ان کے ووٹ بینک میں کیسے اضافہ ہو سکتا ہے۔ آزاد کشمیر کا آئین بھی وقت پر انتخابات کرانے کے لئے واضح اشارے دیتا ہے۔ اس میں الیکشن ملتوی کرنے کی کوئی گنجائش نہیں۔ اسمبلی کی میعاد 29جولائی کو پوری ہونے کے بعد دو ماہ تک انتخابات کا انعقادآئینی ضرورت ہے۔ پیپلز پارٹی آزاد کشمیر کے صدر چوہدری لطیف اکبر چاہتے ہیں کہ الیکشن کمیشن فوری طور پر شیڈول کا اعلان کرے۔ این سی او سی نے چیف الیکشن کمشنر کو الیکشن ملتوی کرنے کا خط لکھتے ہوئے کہا کہ ستمبر تک آزاد کشمیر میں دس لاکھ افراد کو وبا سے بچائو کی ویکسین لگ جائے گی۔ این سی او سی کا خیال ہے کہ ستمبر کے بعد انتخابی جلسے جلوس لوگوں کو زیادہ متاثر نہیں کریں گے مگر وزیراعظم آزاد کشمیر راجہ محمد فاروق حیدر خان نے کہا کہ عمران خان حکومت الیکشن ملتوی کرانے سے مطلوبہ نتائج حاصل کرنا چاہتی ہے مگر آزاد کشمیر میں الیکشن صرف بیرونی حملے کی صورت ہی میں ملتوی ہو سکتے ہیں۔ ان کا خیال ہے کہ این سی او سی کا خط یہاں کے عوام کی توہین ہے۔ الیکشن ملتوی کرنے کا اختیار اسمبلی کے پاس ہے۔ ن لیگ کے حلقوں کا خیال ہے کہ وفاق کے رویہ سے یہاں سیاسی تنائو پیدا ہو گا۔ 
وفاقی وزیرکشمیر و گلگت بلتستان علی امین خان گنڈا پور آزاد کشمیر میں انتخابات کے التوا سے اظہار لا تعلقی کر رہے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ ای سی او سی ایک آزاد ادارہ ہے جو وبا سے متعلق زمینی حقائق کے تناظر میں فیصلے کرتا ہے۔ اس خط سے ان کی وزارت یا وفاق کا کوئی تعلق نہیں ہے۔عمران خان کے وزیرمشیر سمجھتے ہیں کہ اپوزیشن صرف پروپیگنڈہ کرتی ہے جس طرح وفاق میں 2018ء کے الیکشن پی ٹی آئی نے جیتے اور گلگت بلتستان میں بھی حکومت تشکیل دی ، اسی طرح اب آزاد کشمیر میں بھی پی ٹی آئی کی حکومت بنے گی۔ اپوزیشن اسی وجہ سے مایوس ہے۔ آج سب پارٹیاں ایک دوسرے پر امیدوار بھی پورے نہ ہونے کا الزام لگا رہی ہیں۔ آزاد کشمیر میں اس وقت پیپلز پارٹی،پی ٹی آئی، مسلم کانفرنس،جماعت اسلامی،لبریشن لیگ سمیت 12سیاسی پارٹیاں رجسٹرڈ ہیں،مسلم لیگ ن خطے کے الیکشن کمیشن کے ساتھ اپریل2021ء تک رجسٹر نہیں ہوئی تھی۔ آزاد کشمیر کی موجودہ اسمبلی کی آئینی مدت 29 جولائی کو پوری ہوگی۔ 53 رکنی نئی اسمبلی کی 45 نشستوں پر براہ راست انتخابات ہوں گے۔ انتخابات کا حتمی شیڈول ابھی تک جاری نہیں ہواہے۔ انتخابات میں حصہ لینے والی بڑی پارٹیاں  اپنے امیدوار نامزد کر چکی ہیں مگر این سی او سی کے چیف الیکشن کمشنر کے نام خط نے انتخابات کا انعقاد مشکوک بنا دیا ہے۔
(جاری ہے)

تازہ ترین خبریں

آرمی چیف کی مدت ملازمت ،ایک ہی جماعت کے دوبیانات  مسلم لیگ ن میں پالیسی اور قومی معاملات پر اختلافات کھل کر سامنے آ گئے

آرمی چیف کی مدت ملازمت ،ایک ہی جماعت کے دوبیانات مسلم لیگ ن میں پالیسی اور قومی معاملات پر اختلافات کھل کر سامنے آ گئے

نئی کاروں کی قیمتوں میں ہوشربا اضافے کے باعث استعمال شدہ کاروں کی طلب بڑھ گئی

نئی کاروں کی قیمتوں میں ہوشربا اضافے کے باعث استعمال شدہ کاروں کی طلب بڑھ گئی

پارٹی میں جھگڑے کارکنوں کے نہیں قیادت کے ہیں، خواجہ آصف کا اعتراف

پارٹی میں جھگڑے کارکنوں کے نہیں قیادت کے ہیں، خواجہ آصف کا اعتراف

پی ٹی آئی کی حکومت کسی بھی وقت ختم ہو سکتی ہے اورعام انتخابات کسی بھی وقت ہو سکتے ہیں۔خواجہ آصف

پی ٹی آئی کی حکومت کسی بھی وقت ختم ہو سکتی ہے اورعام انتخابات کسی بھی وقت ہو سکتے ہیں۔خواجہ آصف

کھلاڑی محنت اور دیانتداری سے دنیا میں پاکستان کا نام روشن کریں۔ڈاکٹر عارف علوی 

کھلاڑی محنت اور دیانتداری سے دنیا میں پاکستان کا نام روشن کریں۔ڈاکٹر عارف علوی 

 پولیس کو ویکسین کارڈ نہ رکھنے والوں کی گرفتاری سے روک دیا گیا

پولیس کو ویکسین کارڈ نہ رکھنے والوں کی گرفتاری سے روک دیا گیا

وزیراعظم  نے قوم کا تیل نکال دیا اور کہتے ہیں کہ گھبرانا نہیں: شہبازشریف

وزیراعظم نے قوم کا تیل نکال دیا اور کہتے ہیں کہ گھبرانا نہیں: شہبازشریف

خطرناک ترین سمندری طوفان گلاب کب تک ساحل سے ٹکرائے گا،پاکستان کو کتنا خطرہ ہے۔محکمہ موسمیات نے الرٹ جاری کردیا، پاکستانیوں کیلئے بڑی خبر

خطرناک ترین سمندری طوفان گلاب کب تک ساحل سے ٹکرائے گا،پاکستان کو کتنا خطرہ ہے۔محکمہ موسمیات نے الرٹ جاری کردیا، پاکستانیوں کیلئے بڑی خبر

امارات عرب ممالک میں سب سے آگے، بڑے اعزاز کے قریب پہنچ گیا

امارات عرب ممالک میں سب سے آگے، بڑے اعزاز کے قریب پہنچ گیا

جھگڑے کارکنوں میں نہیں بلکہ پارٹی قیادت میں ہیں، خواجہ آصف

جھگڑے کارکنوں میں نہیں بلکہ پارٹی قیادت میں ہیں، خواجہ آصف

مسلم لیگ (ن) نے موجودہ صورتحال میں اسمبلیوں سے استعفوں کی مخالفت کر دی

مسلم لیگ (ن) نے موجودہ صورتحال میں اسمبلیوں سے استعفوں کی مخالفت کر دی

وزیر اعلیٰ بلوچستان جام کمال کی کرسی خطرے میں پڑگئی

وزیر اعلیٰ بلوچستان جام کمال کی کرسی خطرے میں پڑگئی

کراچی کے ساحلی زون پر ہزارو ں رہائشی یونٹس بنائیں گے، وزیر اعظم

کراچی کے ساحلی زون پر ہزارو ں رہائشی یونٹس بنائیں گے، وزیر اعظم

حکومت کا بوریا بستر کبھی بھی گول ہو سکتا ہے، خواجہ آصف

حکومت کا بوریا بستر کبھی بھی گول ہو سکتا ہے، خواجہ آصف