12:59 pm
پاکستان میں امریکی فوجی اڈے!

پاکستان میں امریکی فوجی اڈے!

12:59 pm

٭بھارت، یورینیم کی برآمد، پاکستان کا سخت بیانO ایران ایٹم بم کی تیاری کے نزدیک پہنچ گیاOپاکستان میں امریکی اڈے، پاکستان کا انکار، امریکی میڈیا کا اصرارO سٹیٹ بنک، وزارت شماریات: ایک سال میں مہنگائی میں بھاری اضافہ O مولانا فضل الرحمان، پھر استعفوں کا مطالبہ، وزرا کس باغ کی گاجریں ہیں، پیپلزپارٹی پر سخت نکتہ چینیO اسلام آباد: داسو ڈیم، کام شروع ہونے سے پہلے ٹھیکیدار کو ساڑھے چار ارب کی ادائیگیO بھارت 12 نئی آبدوزوں کی تیاریO سندھ: تنخواہ سے پہلے ویکسین انجکشن کا حکمO ایم کیو ایم پھر اکڑ گئی، مزید وزارتوں کا مطالبہ، وزیراعظم سے ملاقات، نئی دھمکیاںO افغانستان سے جانے سے پہلے امریکی افواج کا اربوں کا سامان نذر آتشO نجی کمپنیوں کے سکیورٹی گارڈوں کی حالت زار!O اسرائیل، دو ہزار فلسطینی گرفتار، اسرائیلی اخبار ’ہاریز‘۔
٭کالم کے آغاز پر سیاسی خرافات سے پہلے ایک نہائت مظلوم طبقے کی حالت زارکا ذکر! ملک بھر میں اس وقت تقریباً ہر شہر میں نجی کمپنیوں کے ہزاروں سکیورٹی گارڈز بے شمار اداروں پر حفاظتی پہرے دے رہے ہیں۔ مظفر آباد ایک سکیورٹی گارڈ صابر دین نے ایک مراسلہ بھیجا ہے۔ اس میں بتایا گیا ہے کہ ملک بھر میں ہزاروں اداروں پر نجی سکیورٹی گارڈز روزانہ بارہ گھنٹے ڈیوٹی دیتے ہیں۔ (24 گھنٹوں میں صرف دو گارڈز) انہیں معمولی تنخواہ دی جاتی ہے کوئی چھٹی نہیں۔ ڈیوٹی کے دوران چند منٹ بھی ادھر اُدھر نہیں ہو سکتے، طویل ڈیوٹی میں کوئی کھانا، علاج معالجہ، کچھ نہیں، گھر سے ڈیوٹی کے مقام پر آنے جانے کی کوئی سفری سہولت نہیں، کسی مجبوری کے تحت ایک دن کی چھٹی پر بھی تنخواہ کاٹ لی جاتی ہے۔ بیماری میں تنخواہ کٹ جاتی ہے۔ ملازمت کی کوئی رجسٹریشن نہیں۔ عام سرکاری ملازمین 6 سے آٹھ گھنٹے کام کرتے ہیں، بے شمار الائونس، گھر کا علاج معالجہ مفت اور دوسری بے شمار سہولتیں، ریٹائرمنٹ پر پنشن اور ان غریب سکیورٹی گارڈوں کو مسلسل 12 گھنٹے سیدھا کھڑا رہنے کی ڈیوٹی پر کسی قسم کی کوئی سہولت نہیں۔ صابر دین کے مراسلے میں وفاقی و صوبائی حکومتوں اور خزانے کے وزیروں سے اپیل کی گئی ہے کہ ان ہزاروں غریب گارڈز کی حالت زار پر توجہ دی جائے۔ میں نے ذاتی طور پر اب باتوں بلکہ مظالم کی تصدیق کی ہے۔ واقعی اس طبقے کے ساتھ نہائت غیر انسانی سلوک کیا جا رہا ہے۔ یہ مسئلہ فوری توجہ کا متقاضی ہے۔
٭اب آیئے دوسری باتوں کی طرف! پاکستان میں دوبارہ امریکی فوجی اڈوں کے قیام یا عدم قیام کی بحث چھڑ گئی ہے۔ امریکہ کا میڈیا ’’یقینی اور باوثوق‘‘ خبریں دے رہا ہے کہ یہ اجازت مل چکی ہے۔ پاکستان کی وزارت خارجہ نے دوسری بار تردید کی ہے کہ ایسی کوئی اجازت نہیں دی گئی البتہ یہ اعتراف کہ 2001ء کے معاہدہ کے تحت امریکی فوجی و فضائی بم بار طیاروں کو پاکستان کی فضا سے گزرنے کی اجازت ہے۔ گویا کان کو سیدھے ہاتھ کی بجائے الٹے ہاتھ سے پکڑنے کی اجازت ہے۔ یہی اجازت سعودی عرب نے بھارت آنے جانے والے اسرائیلی بم بار طیاروں اور دوسرا اہم فوجی اسلحہ گزارنے کی اجازت دی گئی تو بہت شور مچا تھا۔ ملک کے اندر فوجی اڈا ہو یا باہر سے اسلحہ سے لیس بم بار طیارے گزارے جائیں، بات ایک ہی ہے۔ بحیرہ عرب اور خلیج فارس میں امریکہ کے دو طیارہ بردار جنگی جہاز ہر وقت موجود رہتے ہیں پاکستان میں اڈے نہ بھی ملیں تو کوئی فرق نہیں پڑتا، پاکستان کی فضا پر امریکہ کے قبضہ کا معاہدہ موجود ہے۔
٭یہاں ایک اہم بات کہ اس وقت دنیا بھر کے 70 ممالک میں امریکہ تقریباً 800 فوجی اڈے اور تنصیبات قائم ہیں۔ سعودی عرب، قطر، کویت، اومان وغیرہ میں فوجی اڈے کام کر رہے ہیں۔ 2013ء میں امریکی وزارت دفاع کیمطابق امریکی افواج کی تقریباً 5000 چھائونیاں (اڈے) موجود تھیں ان میں سے 600 چھائونیاں امریکہ سے باہر مختلف ممالک میں تھیں، اب یہ تعداد800 ہو چکی ہے۔ ان میں سے بیشتر چھائونیاں ’متحرک‘ ہیں جب کہ 1000 چھائونیاں یا اڈے غیر متحرک مگر ہر وقت ’’جاگ‘‘ رہے ہیں۔ یہ اڈے کسی بھی وقت متحرک ہو سکتے ہیں۔ 9/11 کے بعدپاکستان میں جنرل مشرف نے امریکہ کی صرف ایک دھمکی پر سندھ میں جیکب آباد اور بلوچستان میں پسنی کے بڑے بڑے اڈے امریکہ کے حوالے کر دیئے تھے۔ ان اڈوں سے افغانستان میں طالبان پر وسیع ہولناک بم باری کی گئی۔ ایسے ایسے بم گرائے گئے جنہیں ’بموں کی ماں‘ کہا جاتا ہے۔ یہ اڈے امریکہ کو دیئے گئے تو موجودہ وزیرداخلہ شیخ رشید جنرل پرویز مشرف کے سب سے زیادہ چہیتے اور اہم وزیراطلاعات تھے۔ امریکی صدر کی صرف ایک ٹیلی فون کال اور انتباہ پر جنرل مشرف کی حکومت امریکہ کے قدموں پر بیٹھ گئی۔ اس پر بعض حلقوں نے احتجاج کیا تو شیخ رشید نے بطور وزیراطلاعات ایک پریس کانفرنس میں بلند آواز سے کہا کہ ہم امریکہ کے آگے سر نہ جھکاتے تو وہ ہمارا آملیٹ اور ’تورا بورا‘ بنا دیتا!! (امریکی بم باری سے تباہ ہونے والا افغانستان کاشہر) قارئین کرام! یہ باتیں چلتی رہیں گی۔ صرف ایک سطر میں ان باتوں کا خلاصہ کہ ’’امریکی دھمکی، جنرل مشرف و شیخ رشید کی عاجزانہ تعمیل، دو امریکی ہوائی اڈے، افغانستان پر بم باری… ’تورا بورا‘ اور آملیٹ!! اب پھر امریکی اڈوں کا مسئلہ اور شیخ رشید وزیر داخلہ!!
٭کالم روزانہ کسی ایک موضوع کی نذر ہو جاتا ہے۔ بہت سی چیزیں رہ جاتی ہیں۔ ایک خبر: بھارت نے اپنی آبدوزیں بنانے کے کھربوں کے ایک منصوبے پر عمل شروع کر دیا ہے۔ اس کے تحت 2030 تک بھارت میں 12 آبدوزیں بننا شروع ہو جائیں گی۔ ان میں چھ ایٹمی میزائلوں سے مسلح ہوں گی۔ ڈیزل الیکٹرک والی چھ آبدوزوں پرپانچ کھرب روپے (پاکستان کے 10 کھرب 20 ارب روپے) خرچ ہوں گے۔ پہلی آبدوز 2030 کے بعد باہر آ جائے گی۔ اس کے بعد ایٹمی آبدوزیں بننا شروع ہوں گی، ان پر لاگت 5 کھرب سے کئی گنا زیادہ ہو گی۔ بھارت کے پاس اس وقت بارہ آبدوزیں ہیں۔ ان میں سے بیشتر بہت پرانی اور فرسودہ ہو گئی ہیں۔ انہیں خطرناک قرار دیا جا رہا ہے۔ ایک آبدوز ستمبر میں سکریپ بن جائے گی۔
٭پاکستان کی وزارت خارجہ نے بھارت کی طرف سے اعلانیہ ایٹم بم کی تیاری میں استعمال ہونے والے یورینیم کی بھاری مقدار، بعض ملکوں کو فروخت کئے جانے پر سخت تشویش کا اظہار کیا ہے۔ بین الاقوامی قوانین کے تحت یورینیم کی خریدوفروخت پر سخت پابندیاں عائد ہیں۔ بھارت میں کچھ عرصہ قبل ایک ایٹمی مرکز سے ایٹمی لہریں لیک ہونے پر عالمی میڈیا پر بہت شور مچا تھا۔ امریکہ نے بھارت کو ایٹمی تحفظات کا نااہل قرار دے دیا تھا۔ بھارت اس وقت انتہائی مالی بدحالی کا شکار ہے، اس نے 91 ملکوں کو اپنی تیارکردہ کرونا ویکسین کی مفت برآمد بند کر دی ہے، اس سے ان ممالک میں کرونا پھر تیز ہو گیا ہے۔ ایک اور اطلاع کے مطابق ایران نے یورینیم کی 70 فیصد افزودگی مکمل کر لی ہے۔ مغربی سیاروں کی اطلاع کے مطابق ایران اب کسی وقت بھی ایٹمی دھماکہ کر سکتا ہے۔ 
٭مولانا فضل الرحمن نے پھر کہا ہے کہ اسمبلیوں سے سے مشترکہ استعفوں کے بغیر عمران خاں کی حکومت نہیں جائے گی۔ اس کے ساتھ ہی پیپلزپارٹی پر سخت تنقید کی ہے کہ اس نے ملک میں جمہوریت کو سخت نقصان پہنچایا ہے مگر اس کی اپوزیشن اتحاد میں واپسی کے لئے دروازے اب بھی کھلے ہیں۔ ادھر پیپلزپارٹی ماش کے آٹے کی طرح مزید اکڑ گئی ہے۔ بلاول کا صاف کھرا جواب کہ ’’کیسی واپسی؟ کہاں واپسی؟ کیوں واپسی؟ اپوزیشن اتحاد تو ہم نے ہی بنایا تھا اس کی بِلی ہمیں ہی میائوں؟‘‘ مولانا کو عمران خاں کے خلاف سرگرمیوں سے فرصت نہیں ملتی تھی، اب پیپلزپارٹی شعلہ بدست سامنے آ کھڑی ہوئی ہے! کیا جشن تھے! گوجرانوالہ، ملتان اور کراچی و لاہور کے بھرپور جلسے! اور اب!! ن لیگ اور پیپلزپارٹی اسمبلی کے اندراور مولانا باہر کھڑے وفاداریاں اور بے وفائیاں گن رہے ہیں! شائد انہیں یاد آ گیا ہو کہ ملتان کے جلسہ میں مریم نواز نے بار بار ’میری عزیز بہن صَنم بھٹو‘‘ کے الفاظ دہرائے اور صَنَم بھٹو نے ایک بار بھی مریم کا نام تک نہ لیا!
٭اسلام آباد میں دودہشت گردوں نے تعاقب کرنے والے دو پولیس اہلکاروں پر فائرنگ کر کے انہیں شہید کر دیا۔ اِنا للہ و انا الیہ راجعون! ملک بھر میںپولیس ملک کے عوام کے تحفظ کے لئے بے شمار قربانیاں دے چکی ہے۔ ہر نئی خبر پر دل دکھ سے بھر جاتا ہے۔! دو تین روز سے وزیر ستان سے بھی ہر روز فوجی جوانوں کی شہادتوں کی خبریں آ رہی ہیں۔ خدا تعالیٰ تمام شہدا پر رحمت کی بارش برسائے! میں ڈھونڈ رہا ہوں عوام کے ان ’سرپرستوں‘ کو جو ایک صحافی کے مبینہ زدوکوب کئے جانے پر پاک فوج کو سرعام ننگی گالیاں دے رہے تھے!! اور پولیس و فوج کے ان شہیدوں کی قربانیوں پر چند حرف افسوس کے بھی نہ اُگل سکے! ویسے رنج کا کیا اظہار؟ ملک اور اس کے عوام کے ساتھ ان کا کوئی تعلق؟

تازہ ترین خبریں

مہنگائی کانیاطوفان آنے کو۔۔۔ڈالر نےاگلے پچھلے تمام ریکارڈ توڑ دیئے،امریکی کرنسی کی قدرمیں کتنااضافہ ہوگیا؟جان کرپریشان ہوجائیں گے

مہنگائی کانیاطوفان آنے کو۔۔۔ڈالر نےاگلے پچھلے تمام ریکارڈ توڑ دیئے،امریکی کرنسی کی قدرمیں کتنااضافہ ہوگیا؟جان کرپریشان ہوجائیں گے

یوٹیوب نے عوام سے کیاگیااپناوعدہ پوراکردیا۔۔۔شاندارسہولت متعارف کر ادی

یوٹیوب نے عوام سے کیاگیااپناوعدہ پوراکردیا۔۔۔شاندارسہولت متعارف کر ادی

 ملک کے بیشتربالائی وسطی علاقوں میں موسم خشک رہے گا

ملک کے بیشتربالائی وسطی علاقوں میں موسم خشک رہے گا

سردیوں کا آغاز ہو گیا۔۔موسم سرما کی پہلی برفباری ۔۔پاکستان کا کون سے اہم ترین علاقے نے برف کی چادر اوڑھ لی ؟جانیے تفصیل

سردیوں کا آغاز ہو گیا۔۔موسم سرما کی پہلی برفباری ۔۔پاکستان کا کون سے اہم ترین علاقے نے برف کی چادر اوڑھ لی ؟جانیے تفصیل

ملک آج بھی کرپشن کے سرطان کی جکڑ میں ہے۔سراج الحق 

ملک آج بھی کرپشن کے سرطان کی جکڑ میں ہے۔سراج الحق 

تحریک انصاف نے قوم پرست جماعتوں سے انتخابی اتحاد کا فیصلہ کرلیا 

تحریک انصاف نے قوم پرست جماعتوں سے انتخابی اتحاد کا فیصلہ کرلیا 

 شہباز شریف اورسلمان شہباز کی بریت کی خبر غلط اور مس رپورٹنگ ہے۔شہزاد اکبر

شہباز شریف اورسلمان شہباز کی بریت کی خبر غلط اور مس رپورٹنگ ہے۔شہزاد اکبر

ایف آئی اے شہباز خاندان کیخلاف ثبوتوں کے 5تھیلے سامنے لے آیا

ایف آئی اے شہباز خاندان کیخلاف ثبوتوں کے 5تھیلے سامنے لے آیا

ربیع الاول کا چاند7اکتوبر بروز جمعرات کو نظرآنے کا امکان ہے ، محکمہ موسمیات 

ربیع الاول کا چاند7اکتوبر بروز جمعرات کو نظرآنے کا امکان ہے ، محکمہ موسمیات 

 میرے دادا کہتے تھے بیٹا عوام کی خدمت ایسے کرو کہ عوام آپ کو یادرکھے۔حمزہ شہباز

میرے دادا کہتے تھے بیٹا عوام کی خدمت ایسے کرو کہ عوام آپ کو یادرکھے۔حمزہ شہباز

 ہم نے خدمت کے ریکارڈ قائم کیے اس لیے قوم نے ہم پر بار بار اعتماد کیا،رانا ثنا اللہ

ہم نے خدمت کے ریکارڈ قائم کیے اس لیے قوم نے ہم پر بار بار اعتماد کیا،رانا ثنا اللہ

چیئرمین پاکستان پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری ہنگامی دورے پر امریکہ روانہ 

چیئرمین پاکستان پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری ہنگامی دورے پر امریکہ روانہ 

کورونا کے بعد ڈینگی کے وار جاری ۔۔۔ سندھ اور پنجاب میں سینکڑوں کیسز رپورٹ 

کورونا کے بعد ڈینگی کے وار جاری ۔۔۔ سندھ اور پنجاب میں سینکڑوں کیسز رپورٹ 

مہنگی چینی کی درآمدگی قومی خزانے کو لوٹنے کی بڑی واردات ہے  ،شازیہ مری

مہنگی چینی کی درآمدگی قومی خزانے کو لوٹنے کی بڑی واردات ہے ،شازیہ مری