12:50 pm
ریلوے او  ریلوے، تجھے کتنا خون چاہیے؟

ریلوے او  ریلوے، تجھے کتنا خون چاہیے؟

12:50 pm

وفاقی وزیر اطلاعات فواد چودھری نے اگر یہ کہا کہ ’’وزیر ریلوے اعظم سواتی سے استعفیٰ مانگنا بے تکی بات ہے‘‘ تو بالکل ٹھیک کہا کیونکہ استعفیٰ صرف وزیر ریلوے ہی نہیں بلکہ وزیراعظم عمران خان سے بھی مانگنا چاہیے، حد ہوگئی اس حکومت کی نااہلی اور نکمے پن کی، تین سال تک حکومت کے مزے لوٹنے کے بعد بھی ٹرین حادثے کی ذمہ داری خواجہ سعد رفیق اور پچھلی حکومتوں پر ڈال رہے ہیں۔ اسے کم سے کم لفظوں میں اپنی ذمہ داریوں سے فرار ہی قرار دیا جاسکتا ہے۔
صوبہ سندھ میں ڈہرکی کے قریب دو ٹرینوں  ملت ایکسپریس اور سرسیدایکسپریس کے درمیان ہونے والے ٹکرائو کے نتیجے میں 60مسافر شہید جبکہ سو سے زائد زخمی ہوگئے، اس خبر نے پوری قوم کو تڑپا کر رکھ دیا، عوام سمجھتے ہیں کہ اس خونی حادثے کی ذمہ داری وزیر ریلوے کے ساتھ ساتھ، ریلوے حکام پر بھی عائد ہوتی ہے، بجائے اس کے کہ حکومتی وزیر اس حادثے کی ذمہ داری قبول کرکے خود بخود مستعفی ہو جاتے، الٹا انہیں اٹھکیلیاں سوجھ رہی ہیں اور وہ 7جون پیر کی علی الصبح ہونے والے  ٹرین حادثے میں 3 سال پہلے کے حکمرانوں کو ملوث قرار دے رہے ہیں، یہ اٹھکیلیاں اور مذاق نہیں تو پھر کیا ہے؟اس خوفناک حادثے میں مسافروں اور ان کے لواحقین کو کس درد ناک کیفیت سے گزرنا پڑ رہا ہوگا، اس کا سوچ کر ہی رونگھٹے کھڑے ہو جاتے ہیں۔
سرسید ایکسپریس کا ڈرائیور اعجاز احمد جس کی جان حادثے میں بچ گئی نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ’’ٹرین حادثہ پیر کی صبح 3بج کر 45منٹ پرہوا، میں اور میرا اسسٹنٹ ڈارئیور ڈائون ٹریک پر اپنے سامنے بوگیاں گری دیکھ کر گھبرا گئے، لیکن ہم نے خود پر قابو پا کر ہنگامی بریک لگائی تاہم اس کے باوجود حادثہ ہوگیا، ٹرین ڈرائیور کا مزید کہنا تھا کہ سرسید ایکسپریس کی دو ائیرکنڈیشنڈ بزنس کلاس بوگیاں اور ایک ڈائینگ کار حادثے میں متاثر ہوئی، جبکہ حادثے کا شکار دوسری ٹرین ملت ایکسپریس کی 3اے سی بزنس،8اکانومی کلاس بوگیاں ڈائون ٹریک پر گری ہیں۔‘‘ حادثے کے مقام پر موجود ایک دوست نے ٹرین حادثے کے بعد جو وہاں کے دلخراش واقعات فون پر بتائے، انہیں سن کر بے اختیار آنسو چھلک پڑے، کہا جاتا ہے کہ حادثے کے مقام پر پاک فوج اور رینجرز کے ساتھ ساتھ جمعیت علماء اسلام کی ذیلی رضا کار تنظیم انصار الاسلام اور ٹی ایل پی کے کارکنوں نے بروقت پہنچ کر امدادی کاموں میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیا، پاکستان ریلوے کی تاریخ اس قسم کے خونی حادثات سے بھری پڑی ہے، شیخ رشید جب وزیر ریلوے تھے تب تو ریلوے حادثہ معمول کی بات سمجھا جاتا تھا لیکن ذمہ داری اس وقت بھی کوئی وزیر قبول کرنے کے لئے تیار نہ تھا۔ میں یہ نہیں لکھ رہا کہ اس ریلوے حادثہ کا ذمہ دار صرف تنہا وزیر ریلوے ہی ہوتا ہے نہیں، نہیں، اس میں یقینا ریلوے ملازمین اور ریلوے حکام کی غفلت بھی شامل ہوتی ہے، لیکن اس قسم کے حادثات کی انکوائری کے لئے جو سرکاری کمیٹیاں یا کمیشن تشکیل دئیے جاتے ہیں۔ ان کی رپورٹیں یا تو آتی ہی نہیں، اور اگر آتی ہیں تو پھر ان پر عمل درآمد ہی نہیں ہو پاتا، جن کو ہم ترقی یافتہ ممالک کہتے ہیں اس قسم کے حادثات وہاں بھی اگر ہو جائیں تو وہاں کوئی نہ کوئی ذمہ داری قبول کرتا ہے، اپنے پچھلوں کو کوسنے کی بجائے خود اپنے عہدے سے مستعفی ہو جاتا ہے۔ 
یقین مان لیں اگر یہ عمل ہمارے ہاں بھی شروع ہو جائے تو اس کے بھی اچھے نتائج  برآمد ہوسکتے ہیں، لیکن ہمارے ہاں چونکہ فواد چودھری ، شیخ رشید اور اعظم سواتی جیسے ’’اعلیٰ‘‘ ذہنیت کے حامل وزراء کی فوج ظفر موج ہے۔ اس لئے یہاں ہونے والے حادثات کی ذمہ داری پچھلی حکومتوں  پر ڈال کر مرنے والے مسافروں کے خون کا مذاق اڑایا جاتا ہے۔ ان وزیر وںکی باتیں سنو تو وہاں سے ’’تبدیلی‘‘ کے بھبھکے‘‘ اٹھتے ہوئے محسوس ہوتے ہیں، ان وزیروں کے دعوے عوام کے لئے آسمان کے تارے توڑ کر لانے کے ہوتے ہیں لیکن اخلاقی پستی کی انتہا یہ کہ ساٹھ لاشیں اور سو زخمیوں کے تڑپتے وجود دیکھ کر بھی یہ ان کی ذمہ ذاری قبول کرنے کے لئے تیار نہیں ہوتے۔ ریلوے میں اگر کوئی بہتری ہو جائے تو اس کا کریڈٹ وزیر ریلوے اور حکومت کے لئے، لیکن اگر کوئی سانحہ پیش آجائے تو حکومت کے تین سال بعد بھی اس کی ذمہ داری یہ خواجہ سعد رفیق پر ڈالتے ہوئے نہیں شرماتے، یہ ’’وزراء‘‘ ہیں یا پھر کسی کمپنی کے کھانا بنانے والے کاریگر، عوام کے زخموں پر نمک چھڑکنا نجانے یہ ہر حادثے کے بعد لازم کیوں سمجھتے ہیں۔ 
قارئین کو اگر یاد ہو تو 31اکتوبر2019ء کو کراچی سے راولپنڈی جانے والی تیز گام ایکسپریس کی  تین بوگیوں کو لیاقت پور کے قریب  آگ لگی تھی اور اس آگ میں 80 کے لگ بھگ جیتے جاگتے انسان جل مرے تھے ۔ تب شیخ رشید وزیر ریلوے تھے۔ سانحہ تیز گام کی تحقیقات کے بعد جن 15افراد کو ذمہ دار ٹھہرایا گیا۔ انہیں فقط ’’معطلی‘‘ کی سزا تک ہی محدود رکھا گیا یعنی جن کی  وجہ سے پانچ درجن انسان زندہ جل مرے۔ انہیں فقط ’’معطل‘‘ کرکے جان چھڑالی گئی، کیا جزاء و سزا کا یہ طریقہ درست ہے؟ مجھے چیف جسٹس کے وہ الفاظ آج بھی یاد ہیں کہ جو انہوں نے ریلوے خسارہ کیس کی سماعت کے دوران شیخ رشید پر سخت برہمی کا اظہار کرتے ہوئے ادا کئے تھے۔ انہوں نے کہا تھا کہ ’’بتائو ستر مسافروں کے مرنے کا حساب آپ سے کیوں نہ لیا جائے؟ ریل میں آگ کے واقعہ پر تو آپ کو استعفیٰ دے دینا چاہیے تھا‘‘ الحمدللہ ریلوے میں اعلیٰ ترین اسی کارکردگی کی بنیاد پر شیخ رشید کو وزیر داخلہ کا منصب عطا کر دیا گیا، آج اعظم سواتی ریلوے کے وزیر ہیں دیکھتے ہیں کہ اس حادثے کے بعد ریلوے میں اعلیٰ ترین کارکردگی کی بنیاد پر انہیں ڈپٹی پرائم منسٹر کب تک بنایا جاتا ہے؟ (وماتوفیقی الاباللہ)

تازہ ترین خبریں

بھارت کو ایک ماہ کے لیے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی صدارت کی ذمہ داری۔۔۔دفتر خارجہ کا ردعمل سامنے آگیا

بھارت کو ایک ماہ کے لیے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی صدارت کی ذمہ داری۔۔۔دفتر خارجہ کا ردعمل سامنے آگیا

بلاول بھٹو زرداری اور ایمل ولی خان کی ملاقات۔۔۔۔۔سیاسی صورت حال پر تبادلہ خیال

بلاول بھٹو زرداری اور ایمل ولی خان کی ملاقات۔۔۔۔۔سیاسی صورت حال پر تبادلہ خیال

 پاکستان نے ویسٹ انڈیز کو جیت کیلئے 158 رنز کا ہدف دیدیا۔

پاکستان نے ویسٹ انڈیز کو جیت کیلئے 158 رنز کا ہدف دیدیا۔

وزیراعظم عمران خان کل عوام سے براہ راست مخاطب ہونگے 

وزیراعظم عمران خان کل عوام سے براہ راست مخاطب ہونگے 

موت تعاقب میں تھی ، پاکستان کے اہم شہر میں امتحان دینے نکلی نویں جماعت کی طالبہ کی افسوسناک موت

موت تعاقب میں تھی ، پاکستان کے اہم شہر میں امتحان دینے نکلی نویں جماعت کی طالبہ کی افسوسناک موت

پاکستان کے اس شہر کے عوام سپر احتیاط کریں، ہفتے کے روز ہونے والی موسلادھار بارش صرف شروعات تھی

پاکستان کے اس شہر کے عوام سپر احتیاط کریں، ہفتے کے روز ہونے والی موسلادھار بارش صرف شروعات تھی

مسٹر زرداری آپ کیا چاہتے ہیں لاک ڈاؤن، لاک ڈاؤن، لاک ڈاؤن۔اسد عمر کا بلاول کو جواب

مسٹر زرداری آپ کیا چاہتے ہیں لاک ڈاؤن، لاک ڈاؤن، لاک ڈاؤن۔اسد عمر کا بلاول کو جواب

پاکستان ٹیم کے نام ایک اور عزاز ۔۔۔۔محمد رضوان نے ٹی ٹوئنٹی میں ورلڈ ریکارڈ بنادیا

پاکستان ٹیم کے نام ایک اور عزاز ۔۔۔۔محمد رضوان نے ٹی ٹوئنٹی میں ورلڈ ریکارڈ بنادیا

 تحریک انصاف کے رکن اسمبلی نذیرچوہان کے پروڈکشن آرڈرز۔۔۔ ن لیگ نے بھی سپیکر اسمبلی پرویزالٰہی کی حمایت کافیصلہ کرلیا

 تحریک انصاف کے رکن اسمبلی نذیرچوہان کے پروڈکشن آرڈرز۔۔۔ ن لیگ نے بھی سپیکر اسمبلی پرویزالٰہی کی حمایت کافیصلہ کرلیا

افغانستان سے علاج کیلئے آنے والی خاتون کی ٹانگ سے ایسی چیز برآمد کہ بارڈر پر موجود سیکیورٹی اہلکار بھی ہکا بکا رہ گئے

افغانستان سے علاج کیلئے آنے والی خاتون کی ٹانگ سے ایسی چیز برآمد کہ بارڈر پر موجود سیکیورٹی اہلکار بھی ہکا بکا رہ گئے

پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں اضافہ ۔۔۔ وزارت خزانہ کی جانب سے نوٹیفیکشن جاری

پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں اضافہ ۔۔۔ وزارت خزانہ کی جانب سے نوٹیفیکشن جاری

 کراچی میں بھارت جیسی صورتحال ہوئی تو وزیراعظم اور ان کے وزرا ذمہ دار ہوں گے۔بلاول بھٹو 

 کراچی میں بھارت جیسی صورتحال ہوئی تو وزیراعظم اور ان کے وزرا ذمہ دار ہوں گے۔بلاول بھٹو 

اوگرانے اگست کیلئے ایل پی جی کی قیمت میں اضافہ کر دیا۔

اوگرانے اگست کیلئے ایل پی جی کی قیمت میں اضافہ کر دیا۔

بھارت میں مون سون بارشوں نے تباہی مچادی، 230 سے زائد افراد ہلاک ہوگئے 

بھارت میں مون سون بارشوں نے تباہی مچادی، 230 سے زائد افراد ہلاک ہوگئے