02:04 pm
لڑائی بھڑائی، مارا ماری، گالم گلوچ پر مبنی ٹاک شو

لڑائی بھڑائی، مارا ماری، گالم گلوچ پر مبنی ٹاک شو

02:04 pm

یہ ہیں ہمارے پڑھے لکھے اور نویں نکور سیاست دان … ان کے کندھوں پر22کروڑ عوام کی خدمت کا بوجھ لدا ہوا ہوتا ہے … صوبائی ترجمان فردوس عاشق اعوان اور پیپلز پارٹی کے ’’نویں نکور‘‘ ایم این اے قادر مندو خیل کے درمیان ایک ٹی وی ٹاک شو میں جو گالم گلوچ اور مار کٹائی کے مناظر عوام نے دیکھے ، اس کے بعد یقینا بہت سے سوالات نے جنم لیا ہے، مثلاً یہ کہ ایسے انتہا پسندوں کا لیڈر کہلوانا کس حد تک درست ہے؟ یہ انتہا پسند جہالت کی کن  فیکٹریوں سے پڑھ لکھ کر اس مقام تک پہنچے ہیں؟ یہ شدت جذبات سے اس حد تک مغلوب کیوں تھے کہ انہوں نے ایک دوسرے کی جنس کا بھی دھیان نہ رکھا  اور ایک دوسرے کو گالیاں دینے میں نہ کسی قسم کی ہچکچاہٹ محسوس کی اور نہ ہی شرم … ایک دوسرے کا احترام تو گیا تیل لینے … انہوں نے تو اس بات کا خیال بھی نہ رکھا کہ ان کا پروگرام پاکستان میں لائیو دیکھا جارہا ہے … ممکن ہے ان کے پروگرا م کو  عورتیں اور بچے بھی دیکھ رہے ہوں… کیا اس طرح کے منہ پھٹ اور ہاتھ چھٹ خواتین  و حضرات کو قوم کا لیڈر کہلوانے کا حق دیا جاسکتاہے؟ اس موقع پر پروگرام کے اینکر کے ریٹنگ بڑھانے والے شاطرانہ انداز کو دیکھ کر اسے ’’ماسی مصیبتے‘‘ اور ’’پھپھا کٹنی‘‘ عورت کا کردار قرار دے جاسکتا ہے۔
ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان کی گالیاں تو ساری قوم نے لائیو سنیں، لیکن انہیں شکوہ یہ ہے کہ قادر مندو خیل کی گالیاں  ٹی وی پروگرام والوں نے قوم کو نہیں سنوائیں… فردوس عاشق اور قادر مندو خیل کی مار کٹائی، گالم گلوچ اور بیہودگی کو دیکھ اور سن کر عوام پوچھتے ہیں کہ اس نصاب تعلیم کو تبدیل کرنا ضروری کیوں نہیں ہے کہ جس  نصاب تعلیم نے انہیں عورت اور مرد کی تمیزبھلا کر اس لائیو بیہودہ گوئی پر مجبور کیا … یہ قوم کے وہ راہنما ہیں کہ جنہیں منبر و محراب سے کی جانے والی تقریروں سے ہمیشہ فرقہ واریت کی ہی بو آتی ہے … یہ قوم کے درد میں مبتلا وہ لیڈر ہیں کہ جو دینی مدارس سے یہ مطالبے کرتے ہیں کہ دینی مدارس ڈاکٹراور ا نجینئر کیوں تیار نہیں کرتے؟ شکر ہے کہ دینی مدارس میں ایسے ’’ڈاکٹر‘‘ تیار نہیں ہوتے … ورنہ قوم کو لگ پتہ جاتا ، اب میرا سوال ٹی وی چینلز میں موجود صاحبان عقل و دانش سے ہے  کہ وہ روز ایسے خواتین و حضرات کو ٹی وی شوز کے ذریعے قوم کے ذہنوں پر مسلط ہی کیوں کرتے ہیں کہ جن کی نہ زبان قابو میں رہتی ہے اور نہ ہاتھ … اگر فرقہ ورانہ گفتگو کرکے قوم کو لڑانے والے مولوی پر پابندی ضروری ہے، فرقہ ورانہ گفتگو کرنے والے مولوی کے خلاف مقدمہ بن سکتا ہے، فرقہ ورانہ گفتگو کرنے والے شخص  کی میزبانی کرنے والے کے خلاف مقدمہ بن سکتا ہے تو  ٹی وی ٹاک شو میں بیٹھ کر گالیاں بکنے والوں،ایک دوسرے کے لیڈروں پر الزامات لگاکر قوم کو تقسیم کرنے والے، وزیر ، مشیر، ایم این اے ، ایم پی اے کے خلاف مقدمہ کیوں نہیں بن سکتا؟ اس ’’ا ینکر‘‘ پر ایف آئی آر درج کیوں نہیں ہوسکتی کہ جس کی ’’دیا سلائی‘‘ او ر ’’لگائی بجھائی‘‘ کی  بدولت عورت، مرد ایک دوسرے پر جانوروں کی طرح پل پڑتے ہیں … د نیا چاند پر پہنچ گئی اور ہمارے لنڈے کے لبرلز ٹی وی سٹوڈیوز میں گالم گلوچ اور بیہودہ گوئی میں ہی مصروف ہیں۔
یہ وہ لنڈے کے ’’لبرلز‘‘ ہیں کہ جو مسلمانوں کو مشورے دیتے ہیں کہ اگر شان رسالتؐ میں کہیں توہین کا واقعہ ہو بھی جائے تو اسے برداشت کیا جائے … صبروتحمل پر مبنی ردعمل دیا جائے، لیکن خود ان کی حالت زار یہ ہے کہ اپنی اور اپنے گناہوں میں ڈوبے ہوئے لیڈر یا قائد کی ذات کا مسئلہ آئے تو یہ کاٹ کھانے کو دوڑتے ہیں … ایک دوسرے کو مرنے مارنے پر تیار ہو جاتے ہیں، ان لنڈے کے لبرلز کے یہی وہ متضاد رویئے ہیں کہ جو نہ صرف قوم میں انتشار کا سبب بنتے ہیں … بلکہ ان کی وجہ سے نوجوانوں کی اخلاقیات بھی تباہ ہوکر رہ گئی ہے۔
سمجھ میں نہیں آتا کہ پاکستان میں کس اتھارٹی سے مطالبہ کیا جائے کہ وہ ایسے وزیروں، مشیروں، ایم این اے ، ایم پی اے اور خود ساختہ لیڈروں اور ’’لیڈرنیوں‘‘ پر پابندی عائد کر دے کہ جو اپنی ذات اور پارٹی لیڈر کو ’’پاکستان‘‘ سے بڑھ کر سمجھتے ہیں… اگر قادر مندو خیل نے بدزبانی یا گالم گلوچ میں پہل کی تھی تو فردوس عاشق اعوان کو چاہیے تھا کہ وہ صبر سے کام لیتیں، عوام خود ہی قادر مندو خیل کا حساب چکا دیتے … لیکن جو چیز دیکھی جارہی  ہے وہ تو یہ ہے کہ ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان، نہ صرف گالی بک رہی ہیں بلکہ قادر مندوخیل سے گتھم گتھا ہونے کی کوشش بھی کررہی ہیں اور آخر میں اسے ادھورا سا تھپڑ بھی جڑ رہی ہیں … یہ مسئلہ مفتیان عظام ہی بتاسکتے ہیں  کہ اگر پاکستان میں عملاً اسلامی نظام نافذ ہوتا تو اس اینکر اور اس کے لڑاکا میزبانوں کی سزا کیا ہوتی؟
اللہ ہم سب کو عقل سلیم عطا فرمائے۔ (آمین)

تازہ ترین خبریں

عوام کو اب بجلی کا بل نہیں دینا پڑے گا، حکومتی پلان بے نقاب، خبر پڑھ کر آپ بھی وزیراعظم کو داد دیئے بغیر نہ رہ سکیں گے

عوام کو اب بجلی کا بل نہیں دینا پڑے گا، حکومتی پلان بے نقاب، خبر پڑھ کر آپ بھی وزیراعظم کو داد دیئے بغیر نہ رہ سکیں گے

 ملوث ملزم زخمی حالت میں گرفتار،سنسنی خیز انکشافات ، معاملہ کیاہے؟خبر پڑھ کر آپ افسردہ ہوجائینگے

ملوث ملزم زخمی حالت میں گرفتار،سنسنی خیز انکشافات ، معاملہ کیاہے؟خبر پڑھ کر آپ افسردہ ہوجائینگے

بڑی پیشکش: کورونا ویکسین لگوائیں، 14 لاکھ ڈالر مالیت کا فلیٹ‌ حاصل کریں

بڑی پیشکش: کورونا ویکسین لگوائیں، 14 لاکھ ڈالر مالیت کا فلیٹ‌ حاصل کریں

عدالتوں میں گرمیوں کی چھٹیوں کا شیڈول جاری

عدالتوں میں گرمیوں کی چھٹیوں کا شیڈول جاری

فلور ملز ایسوسی ایشن نے آٹا مہنگا کرنے کا عندیہ دے دیا

فلور ملز ایسوسی ایشن نے آٹا مہنگا کرنے کا عندیہ دے دیا

محکمہ موسمیات نے دل خوش کردینے والی پیشگوئی کردی

محکمہ موسمیات نے دل خوش کردینے والی پیشگوئی کردی

گالی دینا پنجاب کی ثقافت نہیں بلکہ ن لیگ کے رہنماؤں کا کلچر ہے: عثمان بزدار

گالی دینا پنجاب کی ثقافت نہیں بلکہ ن لیگ کے رہنماؤں کا کلچر ہے: عثمان بزدار

مسلم فٹبالر نے پریس کانفرنس میں سامنے رکھی بیئرکی بوتل ہٹادی،خبر پڑھ کر آپ بھی داد دیئے بغیر نہ رہ سکیں گے

مسلم فٹبالر نے پریس کانفرنس میں سامنے رکھی بیئرکی بوتل ہٹادی،خبر پڑھ کر آپ بھی داد دیئے بغیر نہ رہ سکیں گے

کراچی: گلشن معمار میں فائرنگ، پی ٹی آئی رہنما اور اہلیہ زخمی

کراچی: گلشن معمار میں فائرنگ، پی ٹی آئی رہنما اور اہلیہ زخمی

کچلنے کی کوشش  یا کچھ اور۔۔ ن لیگی رہنما نے پی ٹی آئی رہنما کی گاڑی کو ٹکر مار دی،کتنا جانی مالی نقصان ہوا؟جانیے تفصیل

کچلنے کی کوشش یا کچھ اور۔۔ ن لیگی رہنما نے پی ٹی آئی رہنما کی گاڑی کو ٹکر مار دی،کتنا جانی مالی نقصان ہوا؟جانیے تفصیل

جوبائیڈن اور ولادی میر پیوٹن نے ملاقات کر ڈالی

جوبائیڈن اور ولادی میر پیوٹن نے ملاقات کر ڈالی

معاملات سلجھ بھی سکتے ہیں اور بگڑ بھی سکتے ہیں۔ آئندہ چند ہفتے و مہینے نہایت اہم ہیں۔ شاہ محمود قریشی

معاملات سلجھ بھی سکتے ہیں اور بگڑ بھی سکتے ہیں۔ آئندہ چند ہفتے و مہینے نہایت اہم ہیں۔ شاہ محمود قریشی

قومی اسمبلی میں بجٹ بحث کے دوران اراکین پارلیمنٹ کی طرف سے مقدس کلمات کی توہین۔۔۔۔تھانہ سیکرٹریٹ میں مقدمہ کی درخواست

قومی اسمبلی میں بجٹ بحث کے دوران اراکین پارلیمنٹ کی طرف سے مقدس کلمات کی توہین۔۔۔۔تھانہ سیکرٹریٹ میں مقدمہ کی درخواست

قومی اسمبلی میں ہنگامہ آرائی اور ڈپٹی سپیکر کے خلاف تحریک عدم اعتماد کا معاملہ۔ پروزیراعظم عمران خان نے پارلیمانی پارٹی کا اجلاس طلب کر لیا

قومی اسمبلی میں ہنگامہ آرائی اور ڈپٹی سپیکر کے خلاف تحریک عدم اعتماد کا معاملہ۔ پروزیراعظم عمران خان نے پارلیمانی پارٹی کا اجلاس طلب کر لیا