12:43 pm
ہزیمتوں کا خوگر امریکہ

ہزیمتوں کا خوگر امریکہ

12:43 pm

سنتے آئے ہیں کہ ہزیمتوں کے زخم بہت کاری ہوتے ہیں ،جوبھولنے والے نہیں ہوتے ،مگر جن رگوں میں بے حسی رچی ہوئی ہو وہ یہ زخم بھی بھول جاتے ہیں ۔
امریکہ ایک ایسا ہی ملک ہے جس نے  چھوٹے سے ملک ویت نام سے ہزیمت کا چرکہ کھایا تو لگا اس شرمندگی ہی سے سر اٹھا نہیں پائے گا۔ مگر وہ جو ٹائن بی نے امریکہ کے بارے میں کہا تھا کہ’’دوسرے علاقوں سے واسطہ پڑنے کی صورت میں امریکہ نے ہمیشہ انسانوں کو نظر انداز کیا ہے ۔اس کی بنیاد امریکہ کے مخصوص جغرافیائی اور تاریخی حالات میں ہے ۔براعظم شمالی امریکہ کو انہوں نے ایک ایسا ویران خطہ تصور کیا جہاں پر وحشی درندوں ،جنگلات اور صحرائوں کے سوا کچھ نہ ہواور وہاں کے مقامی باشندوں کو جغرافیائی ماحول کا حصہ سمجھنے کے اورکوئی اہمیت نہ دی۔اس سرحدی روح کو امریکہ نے ویت نام کے معاملے میں پالیسی کے طور پر اختیار کیا۔یہ دریافت کہ ویت نامی باشندے نباتات و جمادات نہیں ہیں بلکہ امریکہ کے شہریوں کی طرح انسان ہیں امریکیوں کے لئے پریشان کن تھی۔ویتنام میں امریکی شکست یقینا اخلاقی تھی اور امید ہے کہ امریکہ اس سبق کویاد رکھے گا‘‘ ۔
مگر نصف صدی سے زیادہ عرصہ بیت جانے کے باوجود بھی امریکہ کو یہ سبق یاد نہیں کہ امریکہ عراق کی اینٹ سے اینٹ بجا دینے کے باوجود بھی کوئی ایسے نتائج دنیا کے سامنے پیش نہیں کرسکا جن سے ثابت ہو کہ وہ عراق کی تباہی و بربادی کا کوئی جواز اپنے پاس رکھتا تھا۔
پھر امریکہ نے افغانستان کی طرف رخ کیا اس کے کہساروں کو لرزا کے رکھ دیا اس کی آبادی پر قیامت سے پہلے ایک قیامت مسلط کی ،لاشوں کے ڈھیروں پر کھڑا ہوکر رقص وحشت و بربریت کا جشن مانتا رہا ،افغان مردوں عورتوں ،نوجوانوں اورعمر رسیدہ شہریوں   ہی کو نہیں شیر خوار بچوں تک کو بہیمیت کا شکار کیا۔ یہ کہانی اب ڈھکی چھپی نہیں رہی کہ امریکہ نے ایسا کیوں کیا ؟ یہ اشتراکیت کے خلاف نفرت کا شاخسانہ تھا کہ امریکی دولت مند اسے داخلی سطح پر ایک خطرہ ہی گردانتے رہے ہیں اس لئے روس کے سیاسی کردار کو کبھی تسلیم ہی نہیں کیا جبکہ جرمنی سے دو اور جاپان سے ایک عالمگیر مبارزت کے باوجود ان کے خلاف کبھی جارحانہ رویہ نہیں رکھا ۔
بین الاقوامی سیاست میں امریکہ کا کردار ہمیشہ متنازع رہا ہے اس نے   Monroe Doctrine  کے اصولوں کی توقیر کو ہر لحاظ سے پامال کیا اور اس کے اصولوں کی دھجیاں بکھیرنے میں کوئی کسر اٹھا نہ رکھی، یہاں تک کہ دوسری عالمی جنگ کے آغاز میں امریکی کانگریس میں منظور کئے جانے والے غیر جانبداری ایکٹ کوبھی پس پشت ڈال دیا اس کی وجہ یہ ہے کہ وہ دنیا کی سپر پاور ہونے کے خواب سے کبھی نکلا ہی نہیں اور اسی کی تعبیر کے حصول کے لئے ہمیشہ چھوٹے ممالک پر چڑھ دوڑنے کے چکر میں رہا ہے ۔
نائن الیون کی برپا کی ہوئی بربادی کے بعد اس نے افغانستان میں ربع صدی قدم جمانے کی سعی بد میں گزارے مگر ایک دن بھی ایسا نہیں جس میں اسے اپنی کار کردگی میں اطمینان دکھائی دیا ہو ،اس دوران آنے والی تمام تر حکومتوں نے جبر کے ماحول کو قائم رکھا مگر ایک پل کو بھی  اپنی و دیگر ممالک کی افواج کو آسودگی مہیا کرنے میں ناکام نامراد رہا اور آخر کار رات کے اندھیرے میں اپنا سب مال ومتاع چھوڑتا ہوا بھاگ گیا۔
ایک سپر پاور کے لئے اس سے بڑی سبکی اور ہزیمت کیا ہوگی ؟ ہاں مگر وہ افغانستان کو بدامنی کے ایک ایسے الا کی نذر کرگیا ہے جس سے نکلنے کے لئیافغانستان کو ایک عمر لگ جائے گی۔طالبان جنہوں نے پہلے بھی افغانستان پر ایک مثالی اسلامی حکومت کی دنیا کو ہر لحاظ سے ایک امن پسند نظام زندگی کا پیغام دیا ،جرائم کی روک تھام کا جو نظام انہوں نے قائم کیا اور جزاء  وسزاکے جو  پیمانے مقرر کئے وہ سب دنیا پر یہ اجاگر کرنے کے لئے کافی تھے کہ اسلام ہی سلامتی کا راستہ ہے، اسی میں دائمی فلاح ہے ۔
افغانستان میں طالبان کی بڑھتی ہوئی پیش رفت کوزمینی حقائق کے اعتبار سے  اب کوئی روکنے والا نہیں ہے ۔بھارت یا دیگر ممالک کی مداخلت سے طالبان کی بڑھتی ہوئی قوت ماند پڑنے والی نہیں ،اس صورت میں پاکستان کے حالات بھی بہتری کی طرف جائیں کے ،دہشت گردی کے واقعات تھمنے کے امکانات روشن ہوں گے تو ترقی کا پہیہ بھی بہتر طور پر چل سکے گا۔
کسے معلوم ہزیمت کے خوگر بدطینت امریکہ کا اگلا شکار کون ہو ،تاہم امریکہ کی پشت پر کھڑے  انخلا میں پہل کرنے والے ممالک کو اب یہ یقین ہوجانا چاہیئے کہ امریکہ ایک امن پسند ملک کبھی نہیں رہا اس کی یہ جبلت بن چکی ہے چھوٹے ملکوں میں مداخلت کرکے اپنی سرحدی روح کا چولا تار تار کرواتا رہے ۔اسی کھیل کھیل میں ایک دن وہ اپنا آپ گنوا بیٹھے گا ۔ان شااللہ

تازہ ترین خبریں

حکومت کی موثر اقتصادی پالیسیوں کے باعث ملکی معیشت استحکام کی جانب گامزن ہے، شفقت محمود

حکومت کی موثر اقتصادی پالیسیوں کے باعث ملکی معیشت استحکام کی جانب گامزن ہے، شفقت محمود

 حاملہ خواتین بھی کورونا ویکسین لگواسکتی ہیں۔ڈاکٹر فیصل سلطان

حاملہ خواتین بھی کورونا ویکسین لگواسکتی ہیں۔ڈاکٹر فیصل سلطان

انسداد دہشتگردی عدالت نے رکن قومی اسمبلی  علی وزیر پر فرد جرم عائد کردی۔

انسداد دہشتگردی عدالت نے رکن قومی اسمبلی  علی وزیر پر فرد جرم عائد کردی۔

انگلینڈ کا دورہ پاکستان کے انکار پر دکھ ہوا. چئیرمین پی سی بی رمیز راجہ 

انگلینڈ کا دورہ پاکستان کے انکار پر دکھ ہوا. چئیرمین پی سی بی رمیز راجہ 

 ملکی سربراہ کو ملنے والے تحائف ماضی کی طرح غائب نہیں ہوتےبلکہ توشہ خانہ میں جمع کروائے جاتے ہیں۔ شہباز گل

ملکی سربراہ کو ملنے والے تحائف ماضی کی طرح غائب نہیں ہوتےبلکہ توشہ خانہ میں جمع کروائے جاتے ہیں۔ شہباز گل

چہلم امام حسینؓ کے موقع پر موبائل فون سروس بند کرنے کا فیصلہ

چہلم امام حسینؓ کے موقع پر موبائل فون سروس بند کرنے کا فیصلہ

قومی کرکٹ ٹیم  کے کھلاڑی 23 ستمبر سے نیشنل ٹی ٹوئنٹی کپ میں جلوہ گر ہوں گے

قومی کرکٹ ٹیم کے کھلاڑی 23 ستمبر سے نیشنل ٹی ٹوئنٹی کپ میں جلوہ گر ہوں گے

پی ٹی آئی،مسلم لیگ ن اورپاکستان پیپلز پارٹی کاتصادم صرف دکھاوے کی سیاست ہے۔سراج الحق 

پی ٹی آئی،مسلم لیگ ن اورپاکستان پیپلز پارٹی کاتصادم صرف دکھاوے کی سیاست ہے۔سراج الحق 

ڈرائیونگ لائسنس بنوانے والوں کیلئے ایک اور سہولت کا اعلان

ڈرائیونگ لائسنس بنوانے والوں کیلئے ایک اور سہولت کا اعلان

 سواتی صاحب الیکشن کمشنر کس کی گھڑی کس کی چھڑی ہے اس سے ہمیں مطلب نہیں۔ ناصر حسین شاہ

سواتی صاحب الیکشن کمشنر کس کی گھڑی کس کی چھڑی ہے اس سے ہمیں مطلب نہیں۔ ناصر حسین شاہ

ملک کے مختلف شہروں میں تیز بارش ۔۔۔۔ بجلی فراہم کرنے والے متعدد فیڈرز پر فالٹ اور ٹرپنگ جاری

ملک کے مختلف شہروں میں تیز بارش ۔۔۔۔ بجلی فراہم کرنے والے متعدد فیڈرز پر فالٹ اور ٹرپنگ جاری

 اپوزیشن جماعتیں صرف ذاتی مفادات کا تحفظ چاہتی ہیں۔عثمان بزدار

اپوزیشن جماعتیں صرف ذاتی مفادات کا تحفظ چاہتی ہیں۔عثمان بزدار

مریم نواز نے جاتی امرااراضی انتقال منسوخی کیس میں دوبارہ فریق بنانے کی درخواست دائر کردی

مریم نواز نے جاتی امرااراضی انتقال منسوخی کیس میں دوبارہ فریق بنانے کی درخواست دائر کردی

 بی آر ٹی میں سفر کرونا ویکسینیشن سرٹیفکیٹ سے مشروط کر دیا گیا ہے۔

بی آر ٹی میں سفر کرونا ویکسینیشن سرٹیفکیٹ سے مشروط کر دیا گیا ہے۔