12:48 pm
نصف اچھا، نِصف بُرا کالم!

نصف اچھا، نِصف بُرا کالم!

12:48 pm

٭افغان صدر اشرف غنی کے پاکستان پر10 ہزار دہشت گرد بھیجنے کا مضحکہ خیز الزام، عمران خاں کی سخت تردید، اسلام آباد میں افغانستان کانفرنس ملتوی! O آزاد کشمیر: وزیراعظم عمران خاں، فریال تالپور، آصف زرداری اور مریم نواز کے بیک وقت جلسےO وفاقی وزیر علی امین گنڈا پور کو آزاد کشمیر سے نکل جانے کا حکمO یورپ، جرمنی، بلجیم، ہالینڈ، سوئٹیزر لینڈ، فرانس، لکسمبرگ میں طوفانی بارشیں، شدید سیلاب، متعدد افراد ہلاک، درجنوں عمارتیں تباہ، گاڑیاں بہہ گئیںO تاشقند: عمران خاں نے بھارتی وزیرخارجہ سے ہاتھ نہ ملایاO پورٹ قاسم، چھ کھرب (600 ارب) کا سکینڈل! نیب کی تحقیقات شروعO قندھار، طالبان کی فائرنگ سے بھارتی صحافی ہلاکO پاکستان نے انگلینڈ کے خلاف ٹی20 میچ جیت لیا، پاکستانیوں کا ڈھول کی تھاپ پر رقص!!
٭قارئین کرام! گزشتہ کالم میں وعدہ کیا تھا کہ اگلے روز اچھا کالم لکھوں گا، اس کالم کو پڑھئے اور داد دیجئے۔ کینیڈا سے برادرم طارق انوار نے کوئٹہ کا 1973ء کا ایک روح افزا واقعہ بھیجا ہے۔ میں اس وقت کوئٹہ میں ہی موجود تھا اور یہ واقعہ روزنامہ مشرق میں شائع بھی کیا تھا۔ اتنے عرصے کے بعد ذہن سے اتر گیا۔ طارق انوار صاحب نے پھر یاد دلا دیا ہے۔ واقعہ بلوچستان یونیورسٹی کے وائس چانسلر ممتاز ماہر تعلیم پروفیسر کرار حسین کے بارے میں ہے۔ انہیں بلوچستان کے گورنر غوث بخش بزنجو (مرحوم) نے بلوچستان کی پہلی اور نئی یونیورسٹی کا وائس چانسلر مقرر کیا تھا۔ انہوں نے آگرہ یونیورسٹی سے اُردو اور انگریزی میں ایم اے کئے۔ بھارت میں مختلف اداروں میں پڑھایا، جمیل جالبی، انتظار حسین، حسن عسکری اور سلیم احمد ان کے شاگردوں میں شامل تھے۔ پاکستان میں بھی متعدد اداروں میں پروفیسر، پرنسپل رہے۔ پروفیسر صاحب نے فلسفہ التعلیم، مذہب اور ثقافتی علوم پر اہم کتابیں لکھیں۔ اب انہی کی زبانی ایک واقعہ پڑھئے: پروفیسر کرار حسین لکھتے ہیں کہ…’’مجھے بلوچستان کے گورنر غوث محمد بزنجو نے بلوچستان کی نئی یونیورسٹی کا وائس چانسلر بننے کی پیش کش کی۔ میں نے قبول کر لی۔ کراچی سے میں کوئٹہ کے لئے طیارے میں سوار ہوا۔ اسی طیارے میں بلوچستان کے وزیراعلیٰ عطاء اللہ مینگل بھی سفر کر رہے تھے۔ طیارہ کوئٹہ کے ہوائی اڈے پر اترا تو اس کے اندر گورنر کا پروٹوکول کا دستہ داخل ہو گیا۔ میں سمجھا کہ وزیراعلیٰ کولینے آیا ہے۔ مگر یہ دستہ وزیراعلیٰ کے پاس سے گزر کر میرے پاس آ گیا اور بتایا کہ وہ لوگ مجھے لینے کے لئے آئے ہیں۔ پروٹوکول والوں نے مجھے گورنر کی گاڑی میں بٹھایا اور گورنر ہائوس پہنچا دیا۔ گورنر ہائوس کے گیٹ پر گورنر غوث محمد بزنجو کھڑے تھے۔ انہوں نے جھک کر بڑے ادب کے ساتھ مجھے سلام کیا اور میرے انکار کے باوجود میرے ہاتھوں سے میرا بیگ لے کر میرے پیچھے چلنے لگے۔ میں نے کہا کہ آپ گورنر ہیں، آگے آئیں۔ بزنجو بولے کہ نہیں جناب! استاد کا مرتبہ گورنر سے بڑا ہوتاہے۔ گورنری تو عارضی چیز ہے، استاد تو آخری سانس تک ہمیشہ استاد رہتاہے۔‘‘ پھر یہ واقعہ چھپنے کے بعد میں نے اخبار کے لئے پروفیسر کرار حسین صاحب کا انٹرویو کیا۔ کہنے لگے کہ میں تو سوچ کر آیا تھا کہ تھوڑی دیر کام کر کے اور یونیورسٹی کو مستحکم کر کے واپس چلا جائوں گا، مگر استاد کی اس بے پناہ عزت نے قدم باندھ دیئے ہیں۔ وہ طویل عرصہ وائس چانسلر رہے… اور…اور قارئین کرام…استاد کا بے مثال احترام کرنے والے اس گورنر کو… دل تھام کر پڑھئے…ذوالفقار علی بھٹو نے حیدرآباد سازش کیس میں جیل میں ڈال دیا تھا…کیا لکھوں، قلم لرز جاتا ہے!!
٭نصف کالم اچھا لکھ دیا۔ اب نِصف بُرا کالم پڑھئے: آزادکشمیر میں انتخابات کے نام پر جو دھماچوکڑی مچی ہوئی ہے، اس کا ذکر کرنے پر شرم آ رہی ہے، دو سابق حکمران پارٹیوں ن لیگ اور پیپلزپارٹی اور نئی تحریک انصاف کے مقررین میں ایک دوسرے کو گالی گلوچ کا طوفان بدتمیزی مچا ہوا ہے۔ کیا مرد کیا عورتیں زبان درازی میں سب ایک دوسرے سے آگے بھاگ رہے ہیں۔ مریم نواز  تو تقریر نوازشریف کے نام سے شروع اور نوازشریف کے نام پر ختم کرتی ہیں، بیچ میں عمران خاں کودوچار گالیاں اور مجمع کی تالیوں سے سرشار ہو جاتی ہیں۔ پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول زرداری نے پہلے جلسے میں عمران خاں کے خلاف مصرع طرح اٹھایا، پھر چند جلسوں کے بعد امریکہ کی پراسرار رنگین فضائوں میں گم! کشمیر وہیں رہ گیا! اب والد صاحب نے دو خواتین فریال تالپور اور آصفہ زرداری کو خلا پورا کرنے کے لئے آزاد کشمیر بھیج دیا ہے۔ فریال تالپور نے پہلا نعرہ لگایا ہے کہ ’’کشمیر میں ہم حکومت بنائیں گے!‘‘ اسی لمحے ایک اور جگہ سے مریم نواز کی آواز ابھری کہ ’’حکومت ہم بنائیں گے!‘‘ تحریک انصاف نے ان انتخابات پر خاص توجہ نہ دی۔ وفاقی کابینہ کے ایک دو وزیر بھیج دیئے۔ ایک وزیر نے مہذبانہ رویہ اختیار کیا تو علی امین کو بھیج دیا۔ اس نے آتے ہی ’’بھٹو غدار ہے‘‘ کا نعرہ لگایا اور اس پر اصرار بھی شروع کر دیا۔ نتیجہ میں پیپلزپارٹی کے ارکان کا پتھروں اور انڈوں کا چھڑکائو!! دلچسپ بات یہ کہ چند روز کے لئے مزید وزیراعظم راجہ فاروق حیدر کا دُکھ کا اظہار کہ پیپلزپارٹی کے چند مشتعل بچوں نے جوش میں آ کر علی امین پر چند انڈے پھینک دیئے تھے تو کیا قیامت آ گئی تھی کہ اس کے جواب میں علی امین کے گارڈ نے ہوائی فائرنگ کر دی؟ (ایک اطلاع: انڈے 154 روپے درجن)؟
٭قارئین نے نادان دوستوں کے بہت سے قصے پڑھے اور سُنے ہوں گے۔ ایک قصہ بہت مشہور ہوا کہ ایک بندر کا مالک گہری نیند سو رہا تھا، بندر اسے پنکھا جھل رہا تھا۔ کہیں سے ایک مکھی مالک کی ناک پر آ بیٹھی، بندر نے اڑائی، وہ پھر آ بیٹھی، بار بار اڑاتا وہ آ بیٹھتی۔ بندر کوغصہ آ گیا، قریب سے ڈنڈا پکڑا، زور سے ناک پر بیٹھی مکھی پر مار دیا…!!…اب ذرا دیکھئے، ملک کے سر پر بیٹھے نادان لوگ کیا کر رہے ہیں۔ آزاد کشمیر میں مسافر بس دریا میں گر گئی، 9 چینی انجینئر اور تین مقامی شہری ہلاک ہو گئے۔ چین بہت ناراض ہوا۔ پاکستان کے وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے تاشقند میں اس حادثہ پر دکھ کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ یہ حادثہ کسی ٹیکنیکل خرابی کے باعث پیش آیا ہے۔ اور پاکستان میں ہر معاملہ میں عقل کل وزیراطلاعات فواد چودھری نے بغیر سوچے سمجھے بیان دے دیا کہ گاڑی میں بارودی مواد دریافت ہوا ہے۔ اس کا واضح مطلب تھا کہ دہشت گردی ہوئی ہے، مزید یہ کہ بس کی سکیورٹی میں نااہلی کا مظاہرہ ہوا ہے۔ اس ’اعتراف جرم‘ پر چین بھڑک اٹھا۔ اس کی اربوں کھربوں کی سرمایہ کاری خطرے میں پڑ رہی تھی! اس نے سخت پریشانی اور تشویش کا اظہار کرتے ہوئے فوراً چینی ماہرین کی ایک ٹیم آزاد کشمیر بھیج دی ہے۔ جو گزشتہ روز جائے حادثہ پر پہنچ چکی تھی۔ اس پر بندر کے ہاتھ میں ڈنڈا یاد آ گیا تو کیا عجب!!
٭انسان حواس باختہ ہو کر کوئی غلط حرکت کرے تو سزا کم ہو جاتی ہے، پاگل انسان کوئی بڑی واردات کرے تو اس پر رحم کھا کر سزا ختم کر دی جاتی ہے۔ میں افغانستان کے بے بس، بے کس نام نہاد صدر اشرف غنی پر کوئی فرد جرم عائد کرنے کی بجائے اس کے پاگل پن پر ترس کھا رہا ہوں۔ کہتا ہے کہ پاکستان نے 10 ہزار دہشت گرد افغانستان بھیج دیئے ہیں جو اشرف غنی کی حکومت کا تختہ الٹنے کے لئے طالبان کا ساتھ دے رہے ہیں۔ مجھے یہ بات سن کر غصہ آنا چاہئے تھا مگر ہنسی آ گئی۔ کچھ افیمیوں کی باتیں یاد آ گئیں۔ ایک افیمی نے مچھر کو آتے دیکھ کر شور مچا دیا کہ شیر آ رہا ہے مجھے بچائو۔ دوسرا قصہ زیادہ دلچسپ ہے۔ ایک افیمی نے دوسرے افیمی سے کہا کہ اگر تم یہ بتا دو کہ میری بند مُٹھی میں کیا ہے تو سارے کا سارا ریلوے انجن تمہارا! دوسرے نے کہا کہ کچھ نشانیاں بتائو! اس نے کہا کہ کالا رنگ ہے، دھواں دیتا ہے۔ دوسرا بولا، میں سمجھ گیا، تم نے مُٹھی میں کالی نسوار والا سگریٹ چھپا رکھا ہے! ایک اور واقعہ: ایک افیمی نے دوسرے سے پوچھا کہ میری مُٹھی میں کیا ہے؟ دوسرے نے کہا کہ ریلوے انجن ہے! پہلے نے کہا کہ دیکھ لیا ہو گا! ایک واقعہ تو عام ہے کہ ایک وزیراعظم اپنے ایک عزیز کا حال دیکھنے پاگل خانے گیا۔ ایک پاگل نے اسے پوچھا کہ تم کون ہو؟۔ اس نے کہا کہ میں وزیراعظم ہوں! پاگل بولا کہ میں جب پاگل خانے میں آیا تھا تو میں بھی وزیراعظم ہی تھا کوئی بات نہیں پریشان نہ ہو، یہاں بہت اچھا علاج ہوتا ہے، جلد ٹھیک ہو جائو گے!‘‘ ’’پس چہ بائد کرو اے اشرف غنی!‘‘ جلد ٹھیک ہو جائو گے!‘‘

تازہ ترین خبریں

وزیر اعظم کی انتہائی قریبی شخصیت اپنے عہدے سے مستعفی ہوگئی

وزیر اعظم کی انتہائی قریبی شخصیت اپنے عہدے سے مستعفی ہوگئی

حلقہ ایل اے 16باغ تین کے الیکشن میں پاکستان تحریک انصاف نے میدان مار لیا

حلقہ ایل اے 16باغ تین کے الیکشن میں پاکستان تحریک انصاف نے میدان مار لیا

عثمان ڈار نے مسلم لیگ ن کے رہنما عطا تارڑ کے نئے نام کے لیے تجاویز مانگ لیں۔

عثمان ڈار نے مسلم لیگ ن کے رہنما عطا تارڑ کے نئے نام کے لیے تجاویز مانگ لیں۔

 حکومت نے موڈرنا کورونا ویکسین عام شہریوں کو بھی لگانے کا فیصلہ کرلیا 

 حکومت نے موڈرنا کورونا ویکسین عام شہریوں کو بھی لگانے کا فیصلہ کرلیا 

اسلام آباد کے بعد گلگت بلتستان کے ضلع استور میں سیلاب نے تباہی مچادی

اسلام آباد کے بعد گلگت بلتستان کے ضلع استور میں سیلاب نے تباہی مچادی

 ’16 ممالک نے پاکستان کیساتھ کونسا معاہدہ   کرنے کی خواہش ظاہر کر دی ؟ جانیں 

’16 ممالک نے پاکستان کیساتھ کونسا معاہدہ کرنے کی خواہش ظاہر کر دی ؟ جانیں 

بیوی کا طلاق لینا شوہر کو برداشت نہ ہوا ، پاکستان کے اہم شہرمیں ایک شخص نے اپنی زندگی کا خاتمہ کر لیا

بیوی کا طلاق لینا شوہر کو برداشت نہ ہوا ، پاکستان کے اہم شہرمیں ایک شخص نے اپنی زندگی کا خاتمہ کر لیا

ہمیں آزاد کشمیر میں 16 نشستیں دینے کا کہہ کر 11 دیں گئیں 

ہمیں آزاد کشمیر میں 16 نشستیں دینے کا کہہ کر 11 دیں گئیں 

پی ٹی آئی کے پی میں غربت اور پسماندگی ختم کر نے میں مکمل ناکام ہوگئی ،صرف دعوؤں اور وعدوں پر ڈنگ ٹپاؤ پالیسی جاری ہے۔ سراج الحق 

پی ٹی آئی کے پی میں غربت اور پسماندگی ختم کر نے میں مکمل ناکام ہوگئی ،صرف دعوؤں اور وعدوں پر ڈنگ ٹپاؤ پالیسی جاری ہے۔ سراج الحق 

نیوزی لینڈ کرکٹ ٹیم کا دورہ پاکستان۔۔۔۔ سیکورٹی ماہرین کی ٹیم آئندہ ماہ دورہ کرے گی

نیوزی لینڈ کرکٹ ٹیم کا دورہ پاکستان۔۔۔۔ سیکورٹی ماہرین کی ٹیم آئندہ ماہ دورہ کرے گی

 چائنیزپیپلزلبریشن آرمی اور پاک ‏فوج مشکل وقت کے بھائی ہیں باہمی مفادات کےتحفظ کے لیے ہمارےتعلقات مسلسل مضبوط ہو ‏رہے ۔آرمی چیف

چائنیزپیپلزلبریشن آرمی اور پاک ‏فوج مشکل وقت کے بھائی ہیں باہمی مفادات کےتحفظ کے لیے ہمارےتعلقات مسلسل مضبوط ہو ‏رہے ۔آرمی چیف

مولانا عبد الخبیر آزاد اور وزیر اعظم آمنے سامنے ، عمران خان نے ایسا کیا حکم دیا تھا  

مولانا عبد الخبیر آزاد اور وزیر اعظم آمنے سامنے ، عمران خان نے ایسا کیا حکم دیا تھا  

آزاد کشمیر کے دھاندلی زدہ الیکشن اور سیالکوٹ کے متنازعہ ضمنی انتخابات نے مسلم لیگ ن کے اصولی موقف کی تائید کر دی ہے۔ احسن اقبال 

آزاد کشمیر کے دھاندلی زدہ الیکشن اور سیالکوٹ کے متنازعہ ضمنی انتخابات نے مسلم لیگ ن کے اصولی موقف کی تائید کر دی ہے۔ احسن اقبال 

آزا دکشمیر کے حلقہ ایل اے 16باغ کےالیکشن کا نتیجہ قریب

آزا دکشمیر کے حلقہ ایل اے 16باغ کےالیکشن کا نتیجہ قریب