12:58 pm
’’ساری دنیا عمران خان کی مرید ہونی چاہئے‘‘ صدر 

’’ساری دنیا عمران خان کی مرید ہونی چاہئے‘‘ صدر 

12:58 pm

٭’’ساری دنیا کو عمران خاں کا مرید ہونا چاہئے‘‘ صدر عارف علوی کی تقریر، عمران خاں کا اظہار تحسینO کنٹونمنٹ بورڈز کے حیران کن انتخابات! ہارنے والی پارٹیاں بھی دھمال ڈال رہی ہیںO ملک بھر کے ڈاک خانوں میں لاکھوں افراد کے سیونگ اور ڈیپازٹ اکائونٹ منجمد، عوام پریشانOہر چیز کی قیمت میں اضافہ کے ساتھ ارکان اسمبلی کی تنخواہوں میں بھی بھاری اضافہ!O صحافیوں کا قومی اسمبلی کے ایوان میں داخلہ بندO وزیراعظم لاہور میں، آمد سے پہلے اعلیٰ افسروں کے تبادلےO صوابی یونیورسٹی جعلی ڈگریوں کا مرکز 65 پکڑی گئیںO سندھ: وزیراعلیٰ دو ماہ میں تیسری بار امریکہ میں، بلاول دوسری بار جا رہے ہیںO میٹرک، انٹرمیڈیٹ، تمام طلبا پاس!Oکابل، امریکی فوج درجنوں کتے چھوڑ گئی!O سینئر صحافی طارق اسماعیل ساگر انتقال کر گئے، اِنّا لِلّٰہ و اِنا الیہ راجعون۔
٭خبریں بہت سی مگر سب سے پہلے عوام کی ایک خبر: آزاد کشمیر کے بلوچ علاقہ کے ایک شہری خالد محمود (03425614750) نے عجیب بات سنائی ہے کہ ملک بھر میں چھ ماہ سے ڈاک خانوں میں سیونگ اور ڈیپازٹ اکائونٹ رکھنے والے تقریباً چار پانچ لاکھ افراد کے کروڑوں کے فنڈز منجمد کر دیئے گئے ہیں۔ دوبارہ پڑھئے کہ حکومت نے چھ ماہ سے لاکھوں غریب افراد کے کروڑوں کے اکائونٹس منجمد کر رکھے ہیں۔ یہ لوگ بار بارڈاک خانوں میں جاتے ہیں اور جواب ملتا ہے کہ فنڈز نہیں ہیں! اپنی ہی رقم نہ مل سکنے سے لاکھوں افراد کی حالت زار کا اندازہ لگانا تو بعد کی بات ہے۔ پہلے یہ خبر بھی سن لیجئے کہ حکومت نے ’انسانی ہمدردی‘ کے نام پر قومی اسمبلی اور سینٹ کے ارکان کی تنخواہوں میں بھاری اضافہ کی سفارشات منظور کر لی ہیں، انتخابات میں دس دس کروڑ خرچ کرنے والے بے چارے ’غریب، مفلس‘ ارکان اسمبلی! کوئی تعلیم، تجربہ، اہلیت یا تربیت، کچھ نہیں، صرف ایوان میں ہنگامے، گالم گلوچ کا مَیرٹ! جب چاہتے ہیں، حکومت کے گلے پر انگوٹھا رکھ کر تنخواہیں بڑھا لیتے ہیں۔ ظاہر ہے ان ’غریب‘ لوگوں کی تنخواہوں میں اضافہ کے لئے بھاری فنڈز چاہئیں، اس کے لئے ڈاک خانوں کے لاکھوں واقعی غریب اکائونٹ ہولڈروں کے فنڈز استعمال کرنا ضروری ہو گیا ہے! استغفراللہ!
میں براہ راست ملک کے صدر، وزیراعظم، وزیرخزانہ اور وزیر ڈاک خانہ سے مخاطب ہوں کہ اگر یہ خبر درست ہے تو یہ فنڈز کیوں روکے گئے؟ یہ سرکاری بیت المال میں عوام کی امانت ہیں۔ کسی بھی بڑے سے بڑے سرکاری یا دوسرے شخص کو اس امانت میں ایک پیسے کی بھی خوردبرد کی اجازت نہیں دی جا سکتی۔ یہ قانونی اور شرعی لحاظ سے بھی بہت سخت جرم ہے! یہ فنڈ کیوں روکے گئے ہیں؟ لاکھوں غریب لوگوں کے چُولہے ٹھنڈے ہو رہے ہیں اور کروڑ پتی ارکان اسمبلی کی تنخواہوں میں بھاری اضافہ!  استغفار! ڈرو اللہ تعالیٰ کی بے آواز لاٹھی ہے!!
٭اور اب وزیراعظم عمران خاں کی بے حد و حساب تعریف و ستائش میں بہت دور آگے جانے والے صدر مملکت کی پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں تقریر!! ایک مملکت کا صدر اپنے ماتحت وزیراعظم کا ماتحت افسر تعلقات عامہ بن جائے تو حیرت ہو سکتی ہے مگر مجھے کوئی حیرت نہیں ہوئی! محترم صدر صاحب کی پچھلی تقریریں اٹھا کر دیکھ لیں، ہر تقریر میں وزیراعظم کی شان میں تالیاں بجتی سنائی دیتی ہیں!! پیر کے روزوالی صدر کی تقریر مکمل طور پر یک طرفہ طور پر سیاسی اور جانبدارانہ تھی! تحریک انصاف کی تین سال کی ’عظیم، بے مثال‘ کامیابیوں اور کارناموں کی بے پناہ خوبیاں وزیراعظم کا ایک عام پبلک ریلشنز افسر بھی شائد اتنی خوشامدانہ تقریر جاری نہ کر سکتا! ویسے یہ بات ناقابل فہم ہے کہ آئین میں صدر کی تقریر کی گنجائش کیوں رکھی گئی ہے؟ یہ باتیں تو ایک عام پریس ریلیز سے بھی جاری کی جا سکتی ہیں۔ میں پوری تقریر میں ڈھونڈ رہا ہوں کہ صدر مملکت کو ملک میں گھی، چینی، دالوں، سبزیوں، انڈوں(180 روپے درجن) کی قیمتوں میں اضافہ کی کوئی جھلک دکھائی دے جائے!! میں زیادہ بات نہیں کرتا صرف آخری بات کہ جناب عارف علوی صاحب! آپ نے اپنے منصب (ملک میں سب سے زیادہ سرکاری تنخواہ) سے بہت نیچے آ کرجملہ بولا ہے ’’کہ ساری دنیا کو عمران خاں کی مریدی کرنی چاہئے‘‘ مجھے افسوس ہو رہا ہے صدر صاحب!
٭اب دوسری باتیں! کنٹونمنٹ بورڈز کے انتخابات کے عجیب نتائج کہ جیتنے والوں نے تو اچھل کود کرنی ہی ہوتی ہے مگر یہاں ہارنے والی پارٹیاں بھی دھمال ڈال رہی ہیں۔ جو پارٹیاں بالکل صاف ہو گئیں انہیں تو چھوڑیئے محض چند ارکان کی کامیابی پر مٹھائیاں بانٹنے کی چند مثالیں: ملک میں 42 کنٹونمنٹ بورڈوں کی 113 نشستیں تھیں، کہیں زیادہ کہیں کم، بلوچستان کے تین بورڈوں میں صرف 9 نشستیں! باقی بات چھوڑیں، صرف چار نام، تحریک انصاف (62) اول، ن لیگ (59) دوم، آزاد امیدوار (52) تیسرے نمبر پر اور پیپلزپارٹی صرف 17 نشستوں پر کامیاب!! اب ذرا تالیاں دیکھیں!! تحریک انصاف کو صرف تین نشستوں کی (بعض اطلاعات کے مطابق صرف ایک نشست) برتری حاصل ہوئی ہے اور اس کے ترجمان بھونپو چلا رہے ہیں کہ تحریک ملک کی سب سے بڑی وفاقی پارٹی بن کر ابھری ہے۔ صرف تین بلکہ ’ایک‘ عدد کی اکثریت! ن لیگ بلوچستان سے بالکل صفایا اور شہباز شریف صرف لاہور اور راولپنڈی کے نتائج پر سربسجود! مگر سب سے زیادہ دلچسپ بات پیپلزپارٹی کی ہے۔ پنجاب، بلوچستان میں مکمل صفایا، پختونخوا میں صرف تین اور سندھ میں بھی آگے نہ آ سکی، تحریک انصاف کے برابر صرف 14 نشستیں! پیپلزپارٹی اتنی سُکڑ گئی، سندھ میں بھی تقریباً صاف! اور وزیر سعید غنی کا بیان کہ عوام نے دل کھول کر پیپلزپارٹی کا ساتھ دیا ہے! چلیں وزیر نے تو حق نمک ادا کرنا تھا کر دیا مجھے توہمدردی سی ہو رہی ہے کہ بلاول اس بِرتے پر کس طرح وزیراعظم بن سکے گا؟ جنوبی پنجاب کے لوگ کس طرح جلسوں میں نعرے لگا رہے تھے اور ووٹ دوسرے لوگوں کو ڈال آئے!! صد افسوس! اتنی بے وفائی!
٭پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں اپوزیشن کے ہنگامے، ہلڑ بازی اور واک آئوٹ نئی بات نہیں۔ عام طور پر ہر صدر کی تقریر پراپوزیشن یہی کچھ کرتی ہے۔ پرانی بات ہے۔ میں بھی اسمبلی میں موجود تھا۔ صدر غلام اسحاق خاں تقریر کرنے آئے۔ ابھی ایک لفظ نہیں بولا تھا کہ اپوزیشن لیڈر بے نظیر بھٹو نے کھڑے ہو کر نعرہ لگایا ’’گو بابا گو!‘‘ ساتھ ہی پوری پیپلزپارٹی نے قوالی کے انداز میں کورس کی شکل میں ’گانا‘ شروع کیا، ’’گو بابا گو!‘‘ غلام اسحاق خاں پر کوئی اثر نہ ہوا، زبردست شور شرابا میں بڑے اطمینان کے ساتھ تقریر پوری کر کے چھوڑی! اگلی بار پیپلزپارٹی کی حکومت تھی۔ صدر فاروق لغاری کی تقریر پر مسلم لیگ اٹھ کھڑی ہوئی اور وہی ’’قوالی‘‘ گو بابا گو‘‘ فاروق لغاری پر بھی کوئی اثر نہ ہوا۔
٭وزیراعظم ہر ہفتہ شروع ہونے پرلاہور میں (آخر میں نتھیا گلی!!) اب تک روائت تھی کہ ان کی لاہور آمد کے نتیجے میں وزیراعلیٰ چیف سیکرٹری، آئی جی سمیت اعلیٰ افسروںکی معطلیوں اور تبادلوں کے کُشتوں کے پشتے لگا دیتے تھے۔ اس بار وزیراعظم کے آنے میں ایک آدھ دن کی دیر ہو گئی تو وزیراعلیٰ نے خود ہی یہ فریضہ ادا کر دیا۔ خاتون ایڈیشنل چیف سیکرٹری اِرم بخاری (میرا خاندان!) کو کھڈے لائن، دو بڑے افسر اسلام آباد روانہ، باقی وزیراعظم کے جانے کے بعد، کالم چھپنے تک نئی اکھاڑ پچھاڑ سامنے آ چکی ہو گی!!
٭ایک دلچسپ خبر: ملتان میں انتخابات جیتنے کی خوشی میں آزاد امیدوار وحید قریشی نے پی ٹی آئی کے ہارنے والے امیدوار سعید احمد مونی کی پٹائی کر دی!! کیسی ’’روح افزا‘‘ خبر ہے۔
٭سندھ کے وزیراعلیٰ مراد علی شاہ دو ماہ میں تیسری بار10 دن کے لئے امریکہ چلے گئے۔ بلاول بھی ایک بار امریکہ یاترا کر چکے ہیں، اب دوسری بار جانا ہے۔ میں نے پیپلزپارٹی کے ایک دوست رہنما سے پوچھا کہ یہ دونوں بار بار امریکہ کیوںجاتے ہیں؟ وہ ہنسا کہ یہاں کوئی کام تو ہے نہیں، وفاقی حکومت نالے صاف کر رہی ہے، بسیںچلا رہی ہے، سڑکیں ٹھیک کر رہی ہے، سرکلر ریلوے بھی بنا رہی ہے، سندھ حکومت کے پاس کوئی کام ہی نہیں تو چلیں امریکہ گھوم پھر آئیں۔ شائد کوئی فائدہ مل جائے!!!
 

تازہ ترین خبریں

ایک ساتھ 3چھٹیاں۔۔23،24 اور25 ستمبر کو پورے ملک بھر میں چھٹی کا اعلان۔پرائیویٹ اور سرکاری ملازمین کی موجیں ، تعلیمی ادارے بھی بند،شاندار خبر

ایک ساتھ 3چھٹیاں۔۔23،24 اور25 ستمبر کو پورے ملک بھر میں چھٹی کا اعلان۔پرائیویٹ اور سرکاری ملازمین کی موجیں ، تعلیمی ادارے بھی بند،شاندار خبر

پاکستان اور بھارت کے درمیان ثالثی کے لیے تیار ہیں:سعودی عرب

پاکستان اور بھارت کے درمیان ثالثی کے لیے تیار ہیں:سعودی عرب

حکومت کی موثر اقتصادی پالیسیوں کے باعث ملکی معیشت استحکام کی جانب گامزن ہے، شفقت محمود

حکومت کی موثر اقتصادی پالیسیوں کے باعث ملکی معیشت استحکام کی جانب گامزن ہے، شفقت محمود

 حاملہ خواتین بھی کورونا ویکسین لگواسکتی ہیں۔ڈاکٹر فیصل سلطان

حاملہ خواتین بھی کورونا ویکسین لگواسکتی ہیں۔ڈاکٹر فیصل سلطان

انسداد دہشتگردی عدالت نے رکن قومی اسمبلی  علی وزیر پر فرد جرم عائد کردی۔

انسداد دہشتگردی عدالت نے رکن قومی اسمبلی  علی وزیر پر فرد جرم عائد کردی۔

انگلینڈ کا دورہ پاکستان کے انکار پر دکھ ہوا. چئیرمین پی سی بی رمیز راجہ 

انگلینڈ کا دورہ پاکستان کے انکار پر دکھ ہوا. چئیرمین پی سی بی رمیز راجہ 

 ملکی سربراہ کو ملنے والے تحائف ماضی کی طرح غائب نہیں ہوتےبلکہ توشہ خانہ میں جمع کروائے جاتے ہیں۔ شہباز گل

ملکی سربراہ کو ملنے والے تحائف ماضی کی طرح غائب نہیں ہوتےبلکہ توشہ خانہ میں جمع کروائے جاتے ہیں۔ شہباز گل

چہلم امام حسینؓ کے موقع پر موبائل فون سروس بند کرنے کا فیصلہ

چہلم امام حسینؓ کے موقع پر موبائل فون سروس بند کرنے کا فیصلہ

قومی کرکٹ ٹیم  کے کھلاڑی 23 ستمبر سے نیشنل ٹی ٹوئنٹی کپ میں جلوہ گر ہوں گے

قومی کرکٹ ٹیم کے کھلاڑی 23 ستمبر سے نیشنل ٹی ٹوئنٹی کپ میں جلوہ گر ہوں گے

پی ٹی آئی،مسلم لیگ ن اورپاکستان پیپلز پارٹی کاتصادم صرف دکھاوے کی سیاست ہے۔سراج الحق 

پی ٹی آئی،مسلم لیگ ن اورپاکستان پیپلز پارٹی کاتصادم صرف دکھاوے کی سیاست ہے۔سراج الحق 

ڈرائیونگ لائسنس بنوانے والوں کیلئے ایک اور سہولت کا اعلان

ڈرائیونگ لائسنس بنوانے والوں کیلئے ایک اور سہولت کا اعلان

 سواتی صاحب الیکشن کمشنر کس کی گھڑی کس کی چھڑی ہے اس سے ہمیں مطلب نہیں۔ ناصر حسین شاہ

سواتی صاحب الیکشن کمشنر کس کی گھڑی کس کی چھڑی ہے اس سے ہمیں مطلب نہیں۔ ناصر حسین شاہ

ملک کے مختلف شہروں میں تیز بارش ۔۔۔۔ بجلی فراہم کرنے والے متعدد فیڈرز پر فالٹ اور ٹرپنگ جاری

ملک کے مختلف شہروں میں تیز بارش ۔۔۔۔ بجلی فراہم کرنے والے متعدد فیڈرز پر فالٹ اور ٹرپنگ جاری

 اپوزیشن جماعتیں صرف ذاتی مفادات کا تحفظ چاہتی ہیں۔عثمان بزدار

اپوزیشن جماعتیں صرف ذاتی مفادات کا تحفظ چاہتی ہیں۔عثمان بزدار