12:32 pm
خاتم النبیینﷺ کا پیغام امن

خاتم النبیینﷺ کا پیغام امن

12:32 pm

گردن گویا چاندی کی صفائی لئے ہوئے گڑیا کی گردن تھی...پلکیں طویل‘ داڑھی گھنی‘ پیشانی کشادہ‘ ابرو پیوستہ اور ایک دوسرے سے الگ ‘ ناک اونچی‘ رخسار
(گزشتہ سےپیوستہ)
گردن گویا چاندی کی صفائی لئے ہوئے گڑیا کی گردن تھی...پلکیں طویل‘ داڑھی گھنی‘ پیشانی کشادہ‘ ابرو پیوستہ اور ایک دوسرے سے الگ ‘ ناک اونچی‘ رخسار ہلکے‘ لبہ سے ناف تک چھڑی کی طرح دوڑا ہوا بال او اسکے سواشکم اور سینے پر کہیں بال نہیں‘ البتہ بازو اور مونڈھوں پر بال تھے…شکم اور سینہ برابر‘ سینہ مسطح اور کشادہ کلائیاں‘  بڑی بڑی ہتھیلیاں کشادہ‘ قدرے کھڑا‘ تلوے خالی‘ اعضا‘ بڑے بڑے جب چلتے تو جھٹکے کے ساتھ چلتے‘ قدرے جھکائو کے ساتھ آگے بڑھتے اورسہل رفتار چلتے…حضرت انسؓ فرماتے ہیں کہ میں نے کوئی حریرو دیبا نہیں چھوا جو رسول اللہﷺ کی ہتھیلی سے زیادہ نرم رہا ہو اور نہ کبھی کوئی عنبر یا مشک یا کوئی ایسی خوشبو سونگھی جو رسول اللہﷺ کی خوشبو سے بہتر رہی ہو۔
حضرت ابوحجیفہؓ کہتے ہیں کہ میں نے آپﷺ کا ہاتھ اپنے چہرہ پر رکھا تو وہ برف سے زیادہ ٹھنڈا اور مشک سے زیادہ خوشبودار تھا…حضرت جابربن سمرہؓ جو بچے تھے‘ کہتے کہ آپﷺ نے میرے رخسار پر ہاتھ پھیرا تو میں نے آپﷺ کے ہاتھ میں ایسی ٹھنڈک اور خوشبو محسوس کی…گویا آپﷺ نے اسے عطار کے عطردان سے نکالا ہے…حضرت انسؓ کا بیان ہے کہ آپﷺ کا پسینہ گویا موتی ہوتا تھا اور حضرت ام سلیمؓ کہتی ہیں کہ یہ پسینہ ہی سب سے عمدہ خوشبو ہوا کرتی تھی…حضرت جابرؓ کہتے ہیں کہ آپﷺ کسی راستے سے تشریف لے جاتے اور آپﷺ کے بعد کوئی اور گزرتا تو آپﷺ کے جسم یا پسینہ کی خوشبو کی وجہ سے جان جاتا کہ آپﷺ یہاں سے تشریف لے گئے ہیں…آپﷺ کے دونوں کندھوں کے درمیان مہر نبوتﷺ تھی جو کبوتر کے انڈے جیسی اور جسم مبارک ہی کے مشابہ تھی… یہ بائیں کندھے کی کری (نرم ہڈی) کے پاس تھی، اس پر مسوں کی طرح تلوں کا جمگھٹ تھا۔
نبیﷺ فصاحت و بلاغت میں ممتاز تھے۔ آپﷺ طبیعت کی روانی‘ لفظوں کے نکھار‘ فقروں کی جزالت‘ معانی کی صحت اور تکلیف سے دوری کے ساتھ ساتھ جوامع الکلم (جامع باتوں) سے نوازے گئے تھے، آپﷺ کو نادر حکمتوں اور عرب کی تمام زبانوں کا  علم عطا ہوا تھا…چنانچہ آپﷺ ہر قبیلے سے اس کی زبان اور محاوروں میں گفتگو فرماتے تھے‘ آپﷺ میں بدویوں کا زور بیان اور قوت تخاطب اور شہریوں کی شستگی الفاظ اور شفتگی و شائستگی جمع تھی اور وحی پر مبنی تائیدر بانی الگ ہے۔
بردباری‘ قوت برداشت‘ قدرت پاکر درگزر اور مشکلات پر صبر ایسے اوصاف تھے جن کے ذریعہ اللہ تعالیٰ نے آپﷺ کی تربیت کی تھی‘ ہر حلیم و بردبار کی کوئی نہ کوئی لغزش اور کوئی نہ کوئی ہفوات جانی جاتی ہے مگر نبیﷺ کی بلندی کردار کا یہ عالم تھا کہ آپﷺ کے خلاف دشمنوں کی ایذارسانی اور عرب بدمعاشوں کی خود سری و زیادتی جس قدر بڑھتی گئی‘ آپﷺ کے صبر و حلم میں اسی قدر اضافہ ہوتا گیا…حضرت عائشہؓ فرماتی ہیں کہ رسول اللہﷺ کو جب بھی دو کاموں کے درمیان اختیار دیا جاتا تو آپﷺ وہی کام اختیار فرماتے جو آسان ہوتا ‘ جب تک کہ وہ گناہ کا کام نہ ہوتا‘ اگرگناہ کا کام ہوتا تو آپﷺ سب سے بڑھ کر اس سے دور رہتے… آپﷺ نے کبھی اپنے نفس کے لئے انتقام نہ لیا، البتہ اگر اللہ کی حرمت چاک کی جاتی تو آپﷺ اللہ کے  لئے انتقام لیتے… آپﷺ سب سے بڑھ کر غیظ و غضب سے دور تھے‘ سب سے جلد راضی ہو جاتے تھے‘ جو دو کرم کا وصف ایسا تھا کہ اس کا اندازہ ہی نہیں کیا جاسکتا... آپﷺ اس شخص کی طرح بخشش و نوازش فرماتے تھے جسے فقر کا اندیشہ ہی نہ ہو… ابن عباسؓ کا بیان ہے کہ نبیﷺسب سے بڑھ کر پیکر جو دوسخا تھے اور آپﷺ کا دریائے سخاوت رمضان المبارک میں اس وقت زیادہ جوش پر ہوتا جب جبرئیل علیہ اسلام آپﷺ سے ملاقات فرماتے اور حضرت جبرئیل علیہ السلام رمضان میں آپﷺ سے ہر رات ملاقات فرماتے اور قرآن مجید کا دور کراتے… پس رسول اللہﷺ خیر کی سخاوت میں (خزائن رحمت سے مالا مال کرکے) بھیجی ہوئی ہوا سے بھی زیادہ پیش پیش ہوتے تھے…حضرت جابرؓ کا ارشاد ہے کہ ایسا کبھی نہ ہوا کہ آپﷺ سے کوئی چیز مانگی گئی ہو اور آپﷺ نے نہیں کہہ دیا ہو۔
شجاعت‘ بہادری اور دلیری میں بھی آپﷺ کا مقام سب سے بلند اور معروف تھا آپﷺ سب سے زیادہ دلیر تھے۔ نہایت کٹھن اور مشکل مواقع پر جب کہ اچھے اچھے جانبازوں اور بہادروں کے پائوں اکھڑ گئے آپﷺ اپنی جگہ برقرار رہے تھے اور پیچھے ہٹنے کے بجائے آگے ہی بڑھتے گئے… پائے ثبات میں ذرالغزش نہ آئی‘ بڑے بڑے بہادر بھی کبھی نہ کبھی بھاگے اور پسپا ہوئے ہیں‘ مگر آپﷺ میں یہ بات کبھی نہیں پائی گئی‘ حضرت علیؓ کا بیان ہے کہ جب زورکارن پڑتا اور جنگ کے شعلے خوب بھڑک اٹھتے تو ہم رسول اللہﷺ کی آڑ لیا کرتے تھے۔
آپؐ امن و سلامتی کے سب سے بڑے علمبردار تھے ‘آج یہودی اور صلیبی دانشور دنیا میں بدامنی پھیلانے کا الزام مسلمانوں پر دھرتے ہیں ‘ حالانکہ یہ الزام ہر لحاظ سے جھوٹا اور دروغ گوئی پر مبنی ہوتا ہے۔
یہ بات یاد رکھنے کے قابل ہے کہ تین حروف کے اس چھوٹے سے لفظ ’’امن‘‘ کے معنی میں چاشنی ‘ مٹھاس ‘ سکون اور حسن پیدا ہی اس وقت ہوا جب رسول مدنیﷺ نے سلامتی والے مذہب اسلام کی تبلیغ شروع کی ‘ جس مذہب  اسلام کا مطلب ہی سلامتی ہو … جس مذہب کی سب سے مقدس کتاب قرآن حکیم کا ایک ایک لفظ ‘‘امن‘‘ کا پیامبر ہو … جس قرآن پاک کی ایک ایک سطر سے امن و سکون کے دریا بہتے ہوں … جو قرآن مقدس بے سکون دلوں کے لئے راحت کا انتظام فرماتا ہو… اس اسلام اور قرآن کے ماننے والے بھلا امن کے دشمن کیسے ہوسکے ہیں؟
  آج دنیا حیران و پریشان ہے ظلم و تشدد کی اس آگ کو کیسے بجھا جائے؟ ان دگرگوں حالا ت پر کیسے قابو پایا جائے؟ اور شاہین امن کو زیر دام کیسے لایا جائے؟ اس مقصد کے حصول کے لئے بار بار کوششیں کی جا چکی ہیں اور تاحال ہو رہی ہیں۔ کئی ادارے معرض وجود میں آئے۔ انجمنیں تشکیل دی گئیں۔ کمیٹیاں بنائی گئیں۔ دلچسپ تھیوریاں اور خوش کن فلسفے پیش کئے گئے۔ نت نئے نظریے اور نعرے  ایجاد ہوئے۔ انفرادی طورپر  بھی یہ سب کوششیں کی گئیں اور اجتماعی طورپر بھی ، علاقائی سطح پر بھی ہوئیں اور عالمی سطح پر بھی۔ اقوام متحدہ کی تشکیل بھی صرف اس لئے  ہوئی کہ دنیا امن کا گہوارہ بن جائے ، مگر ان تمام کوششوں ، تحریکوں اور اداروں کے قیام کا جو مقصد سوچا گیا تھا وہ پھر بھی حاصل نہ ہوا۔
اس سوال کا جواب پانے کے لئے تاریخ اٹھائیے،ورق کھولیے اور نگاہ ڈالیے ایک عرب نے امن کا بول بالا کردیا… جی ہاں وہ محمد عربیﷺ ہی کا راستہ ہے جس پر چل کر  یہی وہ سانچہ ہے جس میں ڈھل کر اور یہی وہ طریقہ ہے جسے اپنا کر دنیا میں امن و امان اور محبت و اخوت کا گلستان پیداکرنا ممکن ہے… یہ محض ادیبانہ ترنگ نہیں، بلکہ اس دعوے کی پشت پر تاریخ کی مدلل اساس موجود ہے۔ (جاری ہے)
 

تازہ ترین خبریں

جنرل باجوہ نے مجھے کہا کہ ہم چار جرنیل پی ٹی آئی پر قربان ہوگئے،عاصمہ شیرازی کے دعوے پرسوشل میڈیاصارفین نے کیاکہا؟جانیں

جنرل باجوہ نے مجھے کہا کہ ہم چار جرنیل پی ٹی آئی پر قربان ہوگئے،عاصمہ شیرازی کے دعوے پرسوشل میڈیاصارفین نے کیاکہا؟جانیں

روپےکے دن گئے، اب صرف ڈیجیٹل کرنسی چلےگی،حکومت کا بڑا اعلان،

روپےکے دن گئے، اب صرف ڈیجیٹل کرنسی چلےگی،حکومت کا بڑا اعلان،

سونے کی فی تولہ قیمت میں حیر ن کن تبدیلی،سستاہوایامہنگا۔۔تفصیلات جانیں اس خبرمیں

سونے کی فی تولہ قیمت میں حیر ن کن تبدیلی،سستاہوایامہنگا۔۔تفصیلات جانیں اس خبرمیں

میرے بیٹے پیارے ہیں کیونکہ میں اصلی گھی والی روٹی کھاتی ہوں۔۔ کرینہ کپور نے روٹی پر گھی لگا کر کھانے کے کون سے حیرت انگیز فائدے بتائے؟

میرے بیٹے پیارے ہیں کیونکہ میں اصلی گھی والی روٹی کھاتی ہوں۔۔ کرینہ کپور نے روٹی پر گھی لگا کر کھانے کے کون سے حیرت انگیز فائدے بتائے؟

ایک وقت میں 60 روٹیاں کھالیتا ہوں ۔۔ جانیں اس شخص کے زیادہ کھانا کھانے کی وجہ سے بہنیں اسے اپنے گھر نہیں بلاتیں

ایک وقت میں 60 روٹیاں کھالیتا ہوں ۔۔ جانیں اس شخص کے زیادہ کھانا کھانے کی وجہ سے بہنیں اسے اپنے گھر نہیں بلاتیں

عام انتخابات،الیکشن کمیشن کےلیے کتنے ارب روپے کی گرانٹ منظور ہوگئی ،شہراقتدار سے بڑی خبرآگئی

عام انتخابات،الیکشن کمیشن کےلیے کتنے ارب روپے کی گرانٹ منظور ہوگئی ،شہراقتدار سے بڑی خبرآگئی

علاقے میں مسجد بنوائی، ابو کے اسکول میں ہی پڑھائی کی ۔۔ آرمی چیف عاصم منیر کا چھوٹا سا گھر کیسا دکھتا ہے؟

علاقے میں مسجد بنوائی، ابو کے اسکول میں ہی پڑھائی کی ۔۔ آرمی چیف عاصم منیر کا چھوٹا سا گھر کیسا دکھتا ہے؟

معروف پاکستانی اداکارہ کے گھرخوشیاں ہی خوشیاں ،ہرطرف سے مبارکبادوں کاسلسلہ جاری

معروف پاکستانی اداکارہ کے گھرخوشیاں ہی خوشیاں ،ہرطرف سے مبارکبادوں کاسلسلہ جاری

معروف بھارتی ہدایتکار کا بالی وُڈ سے متعلق چونکا دینے والا انکشاف؛ بھارت میں نیا ہنگامہ کھڑا ہوگیا

معروف بھارتی ہدایتکار کا بالی وُڈ سے متعلق چونکا دینے والا انکشاف؛ بھارت میں نیا ہنگامہ کھڑا ہوگیا

تصویر میں سے اپنا پسندیدہ کیک منتخب کرکے اپنی شخصیت سے متعلق اہم راز جانیں

تصویر میں سے اپنا پسندیدہ کیک منتخب کرکے اپنی شخصیت سے متعلق اہم راز جانیں

گاڑی پر انجیکشن اور گولیاں سجا کر بارات لے جائیں گے۔۔ ڈاکٹر دولہا کی عجیب و غریب کار ! ویڈیو وائرل

گاڑی پر انجیکشن اور گولیاں سجا کر بارات لے جائیں گے۔۔ ڈاکٹر دولہا کی عجیب و غریب کار ! ویڈیو وائرل

کمان کی تبدیلی لیکن اس وقت سابق آرمی چیف جنرل (ر) اشفاق پرویز کیانی کہاں تھے؟

کمان کی تبدیلی لیکن اس وقت سابق آرمی چیف جنرل (ر) اشفاق پرویز کیانی کہاں تھے؟

ان کی پوری فیملی عجیب حرکتیں کرتی ہے ۔۔ جویریہ سعود کی بیٹی جنت کی بھنویں چھیدوانے کی ویڈیو پر صارفین غصہ ہوگئے

ان کی پوری فیملی عجیب حرکتیں کرتی ہے ۔۔ جویریہ سعود کی بیٹی جنت کی بھنویں چھیدوانے کی ویڈیو پر صارفین غصہ ہوگئے

’گورنرراج لگ سکتا ہے نہ ہی تحریک عدم اعتماد آسکتی ہے‘

’گورنرراج لگ سکتا ہے نہ ہی تحریک عدم اعتماد آسکتی ہے‘