12:15 pm
 حزب اختلاف کیوں ہاری؟

 حزب اختلاف کیوں ہاری؟

12:15 pm

پاکستان کی سیاسی تاریخ میں 17نومبر 2021ء بدھ کا دن بڑی اہمیت کاحامل تھا۔ اس دوران حکومت نے حزب اختلاف کوچیلنج کیاتھا کہ وہ انتخابی اصلاحات لاتے ہوئے مشین کے ذریعے ووٹ کے بل کو منظور کرالے گی (اپنی عددی اکثریت کے ذریعہ) اس کے علاوہ دیگر 30سے زائد دیگر بل بھی منظور کرالئے گئے جبکہ حزب اختلاف دیکھتی رہ گئی۔ قومی اسمبلی کے مشترکہ اجلاس سے قبل(سینیٹ اور قومی اسمبلی کے ارکان پرمشتمل) حزب اختلاف  نے دعویٰ کیاتھا کہ حکومت کی جانب سے پیش کردہ بل منظور نہیںہونے دیںگے۔ ان کا یہ بھی دعویٰ تھا کہ عددی اکثریت ان کے پاس ہے۔ اس لئے کوئی بھی بل پاس نہیں ہوسکے گا۔ لیکن جب بھی بلز ایوان میں پیش کئے گئے تو حزب اختلاف کی تمام تدابیریں الٹی ہوگئیں‘ انہیں امیدنہیں تھی کہ حکومت کے پاس 222 ارکان کی حمایت حاصل ہوسکے گی۔ جبکہ حزب اختلاف مشکل سے 203 ارکان کو ایوان میں لاسکی‘ اس طرح انہیں کو شکست کاسامنا کرنا پڑا۔ 
 دراصل اس حقیقت سے کوئی انکار نہیں کرسکتا کہ پاکستان میں جمہوریت وہ نہیں ہے جس کا تفابل ہم تصور مغربی ممالک سے کرتے ہیں ‘ حالانکہ اس وقت پاکستان میں جو سیاسی نظام چل رہاہے وہ بھی برطانیہ کی دین ہے‘ ہم اس کی پیروی کررہے ہیں‘ حالانکہ برطانوی جمہوریت کو جمہوریت بننے میںچار سو سال کاعرصہ لگاتھا تب جاکر وہاں جمہور کی آواز اور ان کی معاشی وسماجی ضروریات پر عملی طور پر دھیان دیاگیا اور پورا بھی کیا گیا ۔ پاکستانیوں نے برطانوی سیاسی نظام کو تواپنا لیاہے‘ لیکن کیونکہ ان کے اذہان تعلیم و تربیت سے آراستہ  نہیں ہیں‘ اس لئے یہ عناصر تبدیلی کو قبول کرنے میں شدید نوعیت کی مزاحمت پیش کرتے ہیں۔ دوسری ناقابل تردید حقیقت یہ ہے کہ پاکستانی معاشرہ ابھی تک جاگیرداروں‘ ابھرتے ہوئے سرمایہ داروں‘ پیروں اور فقیروں کی گرفت  سے آزاد نہیں ہوسکاہے‘ یہی وجہ ہے کہ معاشرے کے طاقتور عناصر کی اکثریت ہی سیاست میں آتی ہے اورآکر جوگل کھلاتی ہے‘ اس پرتبصرہ کرنا لاحاصل ہے۔
 تاہم یہ بات یادرکھنی چاہیے کہ جب تک معاشرے میں تعلیم عام نہیں ہوگی‘ کسی بھی قسم کی بنیادی تبدیلی لانا جوئے شیر لانے کے مترادف ہوگا‘ مشین کے ذریعے ووٹ کابل کافی دنوں سے عوام اور خواص میں زیربحث تھا۔خود صدرمملکت  عارف علوی نے دو ماہ قبل گورنرہائوس میں مشین کے ذریعہ ووٹ سے متعلق کراچی کے صحافیوں کو اپنے خیالات سے آگاہ کیاتھا۔ بلکہ Demonstration کیا گیاتھا ۔ چنانچہ وہاں موجود  بیشتر صحافیوں کاخیال تھا کہ مشین کے ذریعہ ووٹ کا استعمال موجودہ حکومت کی ترجیح میں شامل ہے‘ کیونکہ ماضی میں پاکستان میں جتنے بھی انتخابات ہوئے ہیں‘ ان کے نتائج کومن وعن تسلیم نہیں کیا گیاہے‘ بلکہ جیتنے والی سیاسی جماعت پر مسلسل دھاندلی کاالزام لگایا جاتارہاہے ‘ موجودہ حکومت سے متعلق بھی حزب اختلاف کابیانیہ بھی یہی ہے۔ اس لئے حکومت نے کافی غور وخوص کے بعد یہ طے کیا ہے کہ انتخابات سے متعلق دھاندلی کے الزامات کو روکنے کے لئے مشین کے ذریعہ ووٹ کا استعمال کیاجاناچاہیے۔ جیسا کہ ترقی یافتہ ممالک میں ہوتاہے۔
حزب اختلاف کی جانب سے مشین کے ذریعہ ووٹ کے بل کو منظور نہیں کیا گیا بلکہ ایوان کے اندر خوب شور وغل مچایا گیا یہاں تک کہ اسپیکر کے ڈائس کے قریب پہنچ کر نعرے بازی کرتے ہوئے بلز کی کاپیاں پھاڑ کر اسپیکر کی جانب پھینک دی گئیں جوانتہائی غیر مہذب طریقہ کار تھا‘ یہاں تک کہ پیپلزپارٹی کے جوان رہنما  بلاول زرداری نے اعلان کیا کہ وہ اس بل کو مسترد کرتے ہیں بلکہ آئندہ الیکشن کو بھی مسترد کرتے ہیں‘کیونکہ آئندہ الیکشن کی ووٹنگ مشین کے ذریعہ ہو گی۔ اس صورتحال کو دیکھتے ہوئے یہ کہاجاسکتاہے کہ حزب اختلاف کے آئندہ عزائم ٹھیک نہیں ہیں‘ وہ سڑکوں کے ذریعے عوام کے جذبا ت کو بھڑکاکر معاشرہ کے حالات کو خراب کرنے پر تلی ہوئی ہے۔ حالانکہ اصل مسئلہ مہنگائی کا ہے‘جس سے ایک عام آدمی کی کمرٹوٹ گئی ۔ جبکہ حزب اختلاف نے  مہنگائی کو کم کرنے کے سلسلے میں کسی بھی قسم کی تجاویز عوام کوپیش نہیں کی ہیں۔ بلکہ حقیقت تو یہ حے کہ ان کے پاس ماسوائے مہنگائی کے خلاف نعرے بازی کرنے اور عوام کے جذبات کو مشتعل کرنے کے علاوہ کوئی کام نہیں ہے۔ عوام کی اکثریت ان سے بھی بیزار ہے ۔یہ عناصر مفادات کی سیاست کررہے ہیں۔
چنانچہ مشین کے ذریعہ ووٹ کے بل پاس ہونے کے بعد74سالہ ووٹ کا طریقہ اب ختم ہوچکاہے‘ اور پاکستان کے عوام اس انتخابی اصلاحات کے ضمن میں ایک نئے دور میںداخل ہوگئے ہیں۔ تاہم یہ بات لکھنا ضروری ہے کہ حزب اختلاف اسمبلی کے مشترکہ اجلاس میں شکست کھانے کے بعد آئندہ جوطریقہ کار اختیار کرنے جارہی ہے وہ ڈھیلی ڈھالی جمہوریت کے خلاف ہوگی اور پاکستان کی معیشت کی ترقی کے حوالے سے بھی اس لئے حالات کا تقاضا ہے کہ صبروتحمل کامظاہرہ کیا جائے اور ایسی صورتحال پیدا کی جائے جو عوام کو مہنگائی کے حوالے سے مزید اندھیرے میں دھکیل دیاجائے ‘ اسمبلی کے مشترکہ اجلاس میں نمبروں کا کھیل تھا‘ جس کے پاس اکثریت تھی وہ کامیاب وکامران ثابت ہوئی جس کے پاس اکثریت نہیں تھی۔ وہ ناکام ہوگئی اس لئے اس میں بپھرنے یاچیخ وپکار کرنے کی کیا ضرورت ہے۔ ؟مزیدبرآں شہبازشریف نے کہا ہے کہ وہ اس بل کے خلاف عدالتوں میں جائیں گے ‘ حالانکہ آئین کی روشنی میں عدالتیں(ہائی کورٹ یا سپریم کورٹ) اسمبلی کے مشترکہ اجلاس کے فیصلوں پر اثراندازنہیں ہواکرتی ہیں۔ عدالتوں کے دائرکار سے یہ مسئلہ باہر ہے۔
اسمبلی کے اس مشترکہ اجلاس میں کراچی کی آبادی سے متعلق بھی بل پاس ہوا ہے‘ اس بل کے تحت کراچی کی آبادی کا ازسرنو سروے کیاجائے گا۔ ماضی میں 2017ء میں کراچی کی آبادی کو بہت کم دکھایا تھا جس پر ایم کیو ایم کے علاوہ ملک کی بیشتر سیاسی جماعتوں نے احتجاج کرتے ہوئے دوبارہ آبادی کاسروے کرانے کی ضرورت پرزور دیاتھا۔ اس بل کی منظوری دراصل کراچی کے عوام کی فتح ہے۔


تازہ ترین خبریں

شیخ رشید گرفتاری،صرف قانون پر عمل ہوا ہے پسلیاں تونہیں تڑوائیں, وفاقی وزیر داخلہ

شیخ رشید گرفتاری،صرف قانون پر عمل ہوا ہے پسلیاں تونہیں تڑوائیں, وفاقی وزیر داخلہ

پنجاب میں آٹے کا بحران، چکی آٹے کی قیمت میں اضافے کے تمام ریکارڈ ٹوٹ گئے

پنجاب میں آٹے کا بحران، چکی آٹے کی قیمت میں اضافے کے تمام ریکارڈ ٹوٹ گئے

چین کےجنگی خطرات سے نمٹنے کیلئے ایشیائی ملک امریکہ کو اڈے دینے کیلئے تیار

چین کےجنگی خطرات سے نمٹنے کیلئے ایشیائی ملک امریکہ کو اڈے دینے کیلئے تیار

تمام سرکاری افسران کے اثاثے ، جائیدادیں ضبط، آئی ایم ایف کا بڑا مطالبہ سامنے آگیا

تمام سرکاری افسران کے اثاثے ، جائیدادیں ضبط، آئی ایم ایف کا بڑا مطالبہ سامنے آگیا

مسلم لیگ ق کے لیگل ایڈوائزر پرویز الٰہی سے ملاقات کیلئے جاتے ہوئے اغوا

مسلم لیگ ق کے لیگل ایڈوائزر پرویز الٰہی سے ملاقات کیلئے جاتے ہوئے اغوا

عظمیٰ بخاری کوبڑا جھٹکا ، عظمیٰ کاردار کو مسلم لیگ ن میں اہم ذمہ داریاں مل گئیں

عظمیٰ بخاری کوبڑا جھٹکا ، عظمیٰ کاردار کو مسلم لیگ ن میں اہم ذمہ داریاں مل گئیں

شیخ رشید کی گرفتاری پر عمران خان برہم، الیکشن کمیشن کے کردار پر سوال اٹھادیا

شیخ رشید کی گرفتاری پر عمران خان برہم، الیکشن کمیشن کے کردار پر سوال اٹھادیا

شیخ رشید تھانہ سیکرٹریٹ منتقل، گرفتاری کے بعد اہم بیان سامنےآگیا

شیخ رشید تھانہ سیکرٹریٹ منتقل، گرفتاری کے بعد اہم بیان سامنےآگیا

عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید احمد کو گرفتار کر لیا گیا

عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید احمد کو گرفتار کر لیا گیا

الیکشن کمیشن کو دھمکانے کا کیس، فواد چوہدری کی ضمانت منظور

الیکشن کمیشن کو دھمکانے کا کیس، فواد چوہدری کی ضمانت منظور

خود کش حملہ آور پولیس لائنز میں کیسے داخل ہوا؟حیران کن انکشافات سامنے آگئے

خود کش حملہ آور پولیس لائنز میں کیسے داخل ہوا؟حیران کن انکشافات سامنے آگئے

متحدہ عرب امارات  کو پاکستان کے 5 سرکاری اداروں کے شیئرز خریدنےکی پیشکش

متحدہ عرب امارات کو پاکستان کے 5 سرکاری اداروں کے شیئرز خریدنےکی پیشکش

سپریم کورٹ کا بڑا ایکشن، نیب ترامیم کے ذریعے ختم کئے جانیوالے کیسز کا ریکارڈ طلب

سپریم کورٹ کا بڑا ایکشن، نیب ترامیم کے ذریعے ختم کئے جانیوالے کیسز کا ریکارڈ طلب

ترجمان کی شاہدخاقان عباسی کے استعفے کی خبروں کی تردید

ترجمان کی شاہدخاقان عباسی کے استعفے کی خبروں کی تردید