12:36 pm
الٹی ہوگئیں سب تدبیریں کچھ  نہ عقل نے کام کیا ! 

الٹی ہوگئیں سب تدبیریں کچھ  نہ عقل نے کام کیا ! 

12:36 pm

 پنجاب کے گورنر عمر سرفراز چیمہ کا کہنا ہے کہ پولیس کے ذریعے غنڈوں نے پنجاب ہاؤس پرقبضہ کرلیا،پنجاب میں آئینی بحران کے حوالے سے گورنر
 پنجاب کے گورنر عمر سرفراز چیمہ کا کہنا ہے کہ پولیس کے ذریعے غنڈوں نے پنجاب ہاؤس پرقبضہ کرلیا،پنجاب میں آئینی بحران کے حوالے سے گورنرعمرسرفراز چیمہ نے صدرمملکت سے رابطہ کرکے انہیں صورتحال سے آگاہ کیا جبکہ گورنرپنجاب کا کہنا تھا کہ گورنرہاؤس پرپولیس کے ذریعے غنڈوں نے قبضہ کرلیا۔ گورنرکی اجازت کے بغیرگورنر ہاؤس میں پولیس کو اتارا گیا ہے۔ گورنر ہاؤس پر انتظامی طورپر آئین شکنی کی گئی ہے۔ گورنرہاؤس میں ہونے والی کسی سرگرمی کو گورنر کی اجازت حاصل نہیں ہے۔ نومنتخب وزیر اعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز نے عہدے کا حلف اٹھا لیا، اسپیکر قومی اسمبلی راجا پرویز اشرف نے وزیر اعلیٰ پنجاب سے حلف لیا۔وزیر اعلیٰ کی تقریب حلف برداری میں مریم نواز سمیت مسلم لیگ (ن) کےدیگر رہنما بھی شریک ہوئے، اس سلسلے میں گورنرہاؤس میں سیکورٹی کے سخت اقدامات کیے گئے۔حلف برداری کی تقریب جب جاری تھی تو گورنر پنجاب عمر چیمہ نے چیف جسٹس سے مطالبہ کیا تھا کہ وہ گورنر ہاؤس میں ہونے والی غنڈہ گردی کا نوٹس لیں، انہوں نے یہ بھی کہا کہ غیر آئینی طریقے سے جعلی وزیراعلیٰ کا ڈراما رچایا جارہا ہے ۔ لاہور ہائی کورٹ نے اسپیکر قومی اسمبلی کو حمزہ شہباز سے وزیر اعلیٰ کے عہدے پر حلف لینے کا حکم جاری کیا تھا، چیف سیکریٹری پنجاب کی جانب سے حمزہ شہباز کے عہدے کا چارج سنبھالنے کا اعلامیہ بھی جاری ہوگیا اورنوٹیفکیشن میں چیف سیکریٹری نے کہا کہ سردار عثمان بزدار اب وزیر اعلیٰ پنجاب نہیں رہے ہیں ہیں اس لئے عثمان بزدار کو وزیر اعلیٰ کا آفس استعمال کرنے سے فوری طور پر روک دیا گیا دوسری طرف حمزہ شہباز شریف نے بطور وزیر اعلی پنجاب اپنے آفس کا چارج سنبھال لیا وہ حلف برداری کے بعد اپنے دفتر ایٹ کلب پہنچے جہاں انہیں پنجاب پولیس کے دستے نے گارڈ آف آنر پیش کیا۔ اگرچہ حمزہ شہباز 16 اپریل کو 197 ووٹس کے ساتھ وزیر اعلیٰ منتخب ہوئے تھے تاہم گورنر پنجاب عمر سرفرازچیمہ نے ان سے حلف لینے سے انکار کرتے ہوئے کہا تھا کہ وزیر اعلیٰ عثمان بزدارنے وزیر اعظم کو استعفیٰ دیا تھا ،گورنر کو نہیں اس وجہ سے یہ استعفیٰ منظور نہیں کیا جاسکتا کیونکہ یہ غیر آئینی تھا۔
کہنے کو تو یہ بات درست ہے کہ پنجاب میں ایک ایسا وزارتی بحران پیدا ہوچکا ہے جہاں ایک وقت میں دو وزراءاعلیٰ ہیں ۔ وجہ صاف ظاہر ہے کہ عثمان بزدار نے استعفیٰ ہی غلط پتے پر بھیج دیا تھا ڈاک خانہ تو گورنر ہاؤس تھا۔ انہوں نے وزیر اعظم ہاؤس کے پتے پر چھٹی لکھ دی،ایسے میں یہ معاملہ تو بگڑنا ہی تھا ۔ اب یہ سابق وزیر اعظم کی ذمہ داری تو بنتی نہیں تھی کہ وہ کچھ کرسکتے، ہاں گورنر پنجاب نے اپنا اختیار استعمال کیا اور اس کی مشاورت کرکے بات بتادی کہ معاملہ درست نہیں ہے اور قانونی طور پر تو عثمان بزدار ہی وزیر اعلیٰ پنجاب ہیں ایسی صورت حال میں قانون اور آئین کیا کہتا ہے اس کو دیکھنا چاہئے تھا۔نئے وزیر اعلیٰ کا انتخاب جن حالات میں اور جس طریقے سے ہو اہے وہ شرمناک ہیں اسے بڑھ کر اب ایک بار پھر بچے کی ضد پوری کرنے کیلئے اسے سب کے ہاتھ پاؤں باندھ کر اسے من پسند کھلونا اچک کر تھما دیا گیا ہے ،اسپیکر بھی چیخ رہے ہیں ،گورنر بھی۔ پنجاب ہاؤس جانے والے راستوں پر پولیس کے کڑے پہرے بٹھا کر حلف برداری کروادی گئی ، شام تک عثمان بزدار کا پروٹوکول بھی واپس ہوگیا ۔ معاملہ ٹائیں ٹائیں فش ۔
گورنر پنجاب عمر سرفراز چیمہ نے 28مارچ کو صوبائی چیف ایگزیکٹو کے عہدے سے استعفیٰ دینے والے عثمان بزدار کا استعفیٰ مسترد کرتے ہوئے ہفتے کو اعلان کیا ہےکہ یہ آئینی طور پر درست نہیں ہے۔یہ پیش رفت ایک ایسے موقع پر سامنے آئی جب پنجاب کے نو منتخب وزیر اعلیٰ حمزہ شہباز گورنرہاؤس میں صبح عثمان بزدار کے جانشین کے طور پر حلف اٹھانے والے تھے کیونکہ گزشتہ شام لاہور ہائی کورٹ نے قومی اسمبلی کے اسپیکر کو ان سے حلف لینے کی ہدایت کی تھی۔عدالت کے احکامات کے باوجود حلف لینے سے انکار کرنے والے گورنر نے اس تازہ پیشرفت کے حوالے سے پنجاب اسمبلی کے اسپیکر پرویز الٰہی کو ایک خط میں اپنے فیصلے سے آگاہ کیا۔سابق وزیر اعلیٰ نے استعفیٰ مسترد ہونے کے بعد پنجاب اسمبلی میں کابینہ کے اجلاس کی صدارت کی اور وزرا کو اپنے اپنے عہدے واپس سنبھالنے کی ہدایت کی ہے۔اسپیکر کو لکھے گئے خط میں عمر چیمہ نے موقف اختیار کیا ہے کہ حالیہ پیش رفت اور اس کے نتیجے میں پیدا ہونے والے آئینی بحران کی روشنی میں مجھے لگتا ہے کہ گورنر کے عہدےپررہنا نامناسب ہو گا۔ وزیراعلیٰ سردار عثمان بزدار کے مبینہ استعفیٰ سے متعلق سچ اور درست حقائق آپ کے علم میں نہ لانے تک استعفیٰ منظور کروں۔28 مارچ کو عثمان بزدار کی جانب سے استعفیٰ پیش کرنے کے بعد پیدا ہونے والی صورتحال پر عمر چیمہ نے نشاندہی کی کہ جس کمیونیکیشن کو استعفے کا نام دیا گیا تھا، وہ وزیر اعظم کے نام ایک پرنٹ شدہ خط تھا۔ آئین کے آرٹیکل 130 (8) کے تحت کمیونیکیشن کو استعفیٰ کے خط کواستعفی تصور نہیں کیاجا سکتا کیونکہ مذکورہ شق کے مطابق استعفے کا خط درست ہونے کے لیے اسے ہاتھ سے لکھا جانا اور گورنر کو مخاطب کرنا ہوتا ہے۔ ایسا لگتا ہے کہ بزدار کو اس معاملے پر ٹھیک سے مشورہ نہیں دیا گیا یا ان غلطیوں کی کئی اور وجوہات ہو سکتی ہیں لیکن یہ ان وجوہات کے بارے میں وہ خود سب سے بہتر جانتے ہیں۔ جب بزدار نے استعفیٰ دیا تھا، تو اس وقت کے گورنر پنجاب چوہدری محمد سرور نے آرٹیکل 130(8) کے مضمرات کو مدنظر نہیں رکھا تھا۔ چوہدری سرور کی جگہ گورنر پنجاب کا عہدہ سنبھالنے کے بعد انہوں نے عثمان بزدار کے استعفے پر ایڈووکیٹ جنرل پنجاب سے مشورہ طلب کیا تھا۔کہ ایڈووکیٹ جنرل نے 18 اپریل کو انہیں ایک خط لکھا تھا،جس میں ایک رائے کا اظہار کیا گیا تھا جوحیران کن تھی۔خط کے مطابق ایڈووکیٹ جنرل کے مطابق عثمان بزدار کا استعفیٰ جسے استعفیٰ سمجھا گیا اور اس کے مطابق نوٹیفائی کیا گیا جو سراسر غیر آئینی تھا۔انہوں نے اس معاملے پر لاہور ہائی کورٹ کے احکامات کا حوالہ دیتے ہوئے پھر کہا کہ لاہور ہائی کورٹ نے اب قومی اسمبلی کے اسپیکر راجہ پرویز اشرف کو ہدایت کی ہے کہ وہ حمزہ سے حلف لیں جن کا انتخاب افراتفری اور ہنگامہ آرائی کی نذر ہوا اور مکمل طور پر مشکوک ہے۔اس کے بعد عثمان بزدار نے پنجاب اسمبلی میں کابینہ کے اجلاس کی صدارت کی۔وزیر اعلیٰ نے استعفیٰ مسترد ہونے کے بعد پنجاب اسمبلی میں کابینہ کے اجلاس کی صدارت کی اور وزرا کو اپنے اپنے عہدے واپس سنبھالنے کی ہدایت کی۔
دوسری طرف لاہور ہائی کورٹ کے حکم پر قومی اسمبلی کے اسپیکر نے اکیسیویں وزیر اعلیٰ کے طور پر حمزہ شہبازشریف سے وزیر اعلیٰ پنجاب کے عہدے کا حلف اٹھوا کر عدالتی حکم کی بلا چون و چراںتعمیل کردی ۔ اس معاملے کا سپریم کورٹ کو از خود نوٹس لے کر معاملات کو آئینی شکل دینی چا ہئے اور جو ابہام پیدا ہوا ہے اسے دور کرنا چاہئے تاکہ آئندہ کیلئے رہنماءخطوط واضح ہوجائیں اور ایسی کیس بھی صورتھال کا حل نکالا جاسکے اگر عثماب بزدار کا استعفیٰ غلط تھا تو نئے وزیر اعلیٰ کا انتخاب کس کھاتے میں جائے گا ایک صوبے کے دو وزیر اعلی تو نہیں ہوسکتے دراصل یہ ایک منفرد بحران پیدا کیاگیا ہے جسے ملک کی اعلیٰ عدالت ہی حل کرسکتی ہے۔
 

تازہ ترین خبریں

وہ نوجوان لڑکی جس نے وراثت میں ملنے والی 7ہزار کروڑ مالیت کی فرم چلانے سے ہی انکار کردیا

وہ نوجوان لڑکی جس نے وراثت میں ملنے والی 7ہزار کروڑ مالیت کی فرم چلانے سے ہی انکار کردیا

پڑوسی ملک میں انتہائی حیران کن چوری کی واردات، چور سرنگ کھود کر ٹرین کا انجن ہی چرا لے گئے

پڑوسی ملک میں انتہائی حیران کن چوری کی واردات، چور سرنگ کھود کر ٹرین کا انجن ہی چرا لے گئے

دلہن کی انتہائی معصومانہ خواہش جسے پورا کرنے کے لیے پولیس کو بلانا پڑگیا

دلہن کی انتہائی معصومانہ خواہش جسے پورا کرنے کے لیے پولیس کو بلانا پڑگیا

بورہونے کی وجہ سے کمپنی نے اپنے ملازم کو نکال دیا، عدالت کا دروازہ کھٹکھٹایا تو کیا فیصلہ ہوا؟ جانیں

بورہونے کی وجہ سے کمپنی نے اپنے ملازم کو نکال دیا، عدالت کا دروازہ کھٹکھٹایا تو کیا فیصلہ ہوا؟ جانیں

مدینہ سے آئے تو قرآن پاک کا ترجمہ کر لیا ۔۔ کوریا کے اس لیکچرار کے ساتھ کیا ہوا جو یہ دین اسلام کی ہی خدمت میں مصررف ہو گئے

مدینہ سے آئے تو قرآن پاک کا ترجمہ کر لیا ۔۔ کوریا کے اس لیکچرار کے ساتھ کیا ہوا جو یہ دین اسلام کی ہی خدمت میں مصررف ہو گئے

خاتون جج کو آن لائن میٹنگ کے دوران سگریٹ نوشی مہنگی پڑگئی، بڑی سزا مل گئی

خاتون جج کو آن لائن میٹنگ کے دوران سگریٹ نوشی مہنگی پڑگئی، بڑی سزا مل گئی

اسمبلیوں سے استعفوں کا معاملہ ، پی ٹی آئی کے اہم رہنما کا پارٹی چھوڑنے کا عندیہ

اسمبلیوں سے استعفوں کا معاملہ ، پی ٹی آئی کے اہم رہنما کا پارٹی چھوڑنے کا عندیہ

بینکوں میں رقوم رکھوانے والوں کیلئے بڑی خوشخبری آگئی

بینکوں میں رقوم رکھوانے والوں کیلئے بڑی خوشخبری آگئی

یکم سے چاردسمبرتک چھٹیاں۔۔سرکاری ملازمین کی توموجیں لگ گئیں

یکم سے چاردسمبرتک چھٹیاں۔۔سرکاری ملازمین کی توموجیں لگ گئیں

حکمراں اتحاد کےلیے بری خبر۔۔پی ٹی آئی نے پنجاب اور کے پی اسمبلی تحلیل کرنے کی توثیق کردی

حکمراں اتحاد کےلیے بری خبر۔۔پی ٹی آئی نے پنجاب اور کے پی اسمبلی تحلیل کرنے کی توثیق کردی

کریتی سینن بالی وڈ کے کس معروف اداکار کو ڈیٹ کر رہی ہیں؟ ورون دھون نے بتا دیا

کریتی سینن بالی وڈ کے کس معروف اداکار کو ڈیٹ کر رہی ہیں؟ ورون دھون نے بتا دیا

’تحریک عدم اعتماد کا جسے شوق وہ لے آئے‘

’تحریک عدم اعتماد کا جسے شوق وہ لے آئے‘

ہم آخری حد تک جائیں گے ،اسمبلیاں تحلیل کرنے کے کپتان کے اعلان کے بعد ن لیگ بھی میدان میں آگئی

ہم آخری حد تک جائیں گے ،اسمبلیاں تحلیل کرنے کے کپتان کے اعلان کے بعد ن لیگ بھی میدان میں آگئی

سیلاب متاثرین سے متعلق بین اسٹوکس کے اعلان پر وزیراعظم شہباز شریف بھی بول پڑے،کیاکہا،جانیں

سیلاب متاثرین سے متعلق بین اسٹوکس کے اعلان پر وزیراعظم شہباز شریف بھی بول پڑے،کیاکہا،جانیں