01:15 pm
مہنگائی کا ماتم کرنے والے کہاں ہیں...؟

مہنگائی کا ماتم کرنے والے کہاں ہیں...؟

01:15 pm

سابق حزب اختلاف کے بہت سے رہنما جن میں فضل الرحمن‘ مریم صفدر‘ احسن اقبال‘ شہباز شریف ‘ بلاول زرداری‘ مہنگائی کے خلاف سخت احتجاج کیاکرتے تھے اور کہا کرتے تھے کہ یہ مہنگائی عمران خان کی وجہ سے ہورہی ہے۔ ان رہنمائوں نے عوام کو یقین دلایاتھا کہ اگر ہمیں اقتدار ملا تو نہ صرف مہنگائی کم ہوجائے گی بلکہ عوام کو مطمئن کرنے والا ریلیف بھی مل جائے گا۔ تاہم میں نے اپنے کالموں میں لکھاتھا کہ سابق حزب اختلاف رہنما مہنگائی کے سلسلے میں جو آواز بلند کررہے ہیں‘ اس کا مقصد صرف عوام کو عمران خان کی حکومت کے خلاف ایک محاذ تشکیل دینا مقصود ہے۔ نیز یہ عناصر عوام کا جذباتی اورسماجی استحصال کررہے ہیں‘ کیونکہ مہنگائی کو کم کرنا عمران خان کی حکومت کے بس کی بات نہیں تھی‘ یہ کووڑ19- کے بعد ایک عالمی مسئلہ بن کر ابھراتھا‘ جس نے ساری دنیا کی معیشت کو ہلاکر رکھ دیاتھا‘ مزید برآں فضل الرحمن لندن سے نواز شریف کے اکسانے پر باقاعدہ جلوس لے کر اسلام آباد بھی پہنچ گئے تھے تاکہ خان صاحب کی حکومت کو تحلیل کیاجاسکے۔ لیکن وہ کامیاب نہیں ہوسکے اور اپنا لائو لشکر لے کر واپس مدرسوں میں روپوش ہوگئے۔ اس ناکامی کے بعد انہوں نے پی ڈی ایم کے پلیٹ فارم سے دوبارہ عمرا ن خان حکومت ہٹائو مہم کا آغاز کیا بلکہ اسٹیبلشمنٹ کو یہ تاثر دیا گیا کہ خان صاحب کی حکومت عوام میں غیر مقبول ہوگئی ہے‘ عوام اس سے بیزار نظرآرہے ہیں۔ جبکہ مہنگائی کی وجہ سے غریبوں کا زندہ رہنا مشکل ہوگیاہے۔
 
 لیکن اب کیا ہو رہاہے۔مہنگائی کا ماتم کرنے والے اب خاموش کیوں ہیں؟۔ وہ آگے بڑھ کر عوام کو مہنگائی کے عفریت سے نجات کیوں نہیں دلوارہے ہیں؟ لیکن یہ عوام کا سامنا نہیں کرسکیں گے اور نہ ہی ان کے پاس کوئی مثالی منشور ہے جس کی مدد سے یہ مہنگائی کو کم کرسکیں گے۔ چنانچہ عوام اب سرپکڑ کر بیٹھ گئے ہیں کہ ان کے ساتھ دھوکہ ہوا ہے ۔ عمران خان کے دور میں مہنگائی‘ ضرور تھی‘ لیکن اتنی نہیں تھی جتنی اب ہے۔ موجودہ حکومت کے پاس اس کا کوئی جواب نہیں ہے‘ بلکہ وہ کیا جواب دے سکتے ہیں؟ جو غیر جمہوری انداز سے اقتدار میں آئے ہیںان کے لئے اب سب سے بڑا مسئلہ اپنی حکومت بچاناہے۔ لیکن حالات بتارہے ہیں کہ یہ حکومت زیادہ عرصہ تک نہیں چل سکتی ہے۔ کیونکہ اس کو عوام کی اکثریت کی حمایت حاصل نہیں ہے اور نہ ہی یہ عناصر یہ براہ راست عام انتخابات کے ذریعہ اقتدار میں آئے ہیں ۔موجودہ حکومت اپنا بھرم قائم رکھنے کے لئے عمران خان کے خلاف الزام تراشی کررہی ہے اوران کو مختلف الزامات عائد کرکے بدنام بھی کررہی ہے یہاں تک کہ مریم صفدر کی تقریر عمران خان سے شروع ہوکر عمران خان پر ہی ختم ہوجاتی ہے۔ انتہائی بے ہودہ گفتگو جس کا نہ کوئی سر ہوتاہے نہ ہی پیر۔یہی حال مریم اورنگزیب کا ہے۔ اس کے ذہن میں عمران فوبیاں سمایا ہوا ہے۔ ہر الزام عمران خان پر لگاکر وہ سمجھتی ہیں کہ اس نے عوام کے دل جیت لئے ہیں۔ لیکن حقیقت اس کے برعکس ہے۔ نیز عمران خان کے خلاف موجودہ غیر عوامی سیٹ اپ انتہائی نازیبا اور نامناسب الزام تراشی کررہاہے جس کے سبب عمران خان عوام میں اتنا ہی مقبول ہورہاہے۔ عوام ان کو سنناچاہتے ہیں اور یہ سمجھ چکے ہیں کہ ان کے ساتھ زیادتی ہوئی ہے۔ اس زیادتی کاازالہ صرف جلد عام انتخابات کے انعقاد میں مضمر ہے۔ اس ہی قسم کامطالبہ بیرونی ممالک میں آباد پاکستانیوں کا بھی ہے۔ وہ بھی اپنے پیغامات میں یہی کہہ رہے ہیں کہ خان صاحب کے ساتھ زیادتی ہوئی ہے۔ اور انہیں ایک سازش یا مداخلت( جو بھی نام دے لیں) کے ذریعہ حکومت سے فارغ کیا گیا ہے۔چنانچہ اس وقت مملکت خداداد میں جوصورتحال بن رہی ہے ‘ سیاسی ومعاشی دونوں) وہ مملکت کے استحکام کے پس منظر میں انتہائی خراب اور خستہ ہے۔ ایسا محسوس ہورہاہے کہ یہ سب کچھ چند افراد نے باہم مل کرہی کیاہے۔ شائد انہیں اس بات کاادراک نہیں تھا کہ معاشرتی تقسیم اتنی گہری ہوجائے گی کہ مملکت کااستحکام اور اس کی سالمیت خطرے میں پڑ جائے گی۔ موجودہ صورتحال کے پیش نظر وہ طاقتیں بھرپور فائدہ اٹھارہی ہیں جن کو پاکستان کااستحکام اور وجود ایک آنکھ نہیں بہارہاہے۔ یہی وجہ ہے کہ سیاسی تنائو کو ایک حکمت عملی کے تحت اتنا ابھارا جارہاہے کہ عوام کے مابین اتحاد کو ناممکن بنادیا جائے۔ اس ہی قسم کی صورتحال سابق مشرقی پاکستان میں بھی پیدا کی گئی تھی جس میں بھارت کا اہم کردارتھا‘ اس وقت بھی بھارت نواز عناصر مختلف شکلوں میں خاصے متحرک نظر آرہے ہیں ۔ اس لئے اگر مختلف اسٹیک ہولڈرز نے باہم مل کر ان حالات کو تبدیل کرنے کی کوشش نہیں کی تو پھر ہماری داستان بھی نہیں ہوگی داستانوں میں ۔ بقول علامہ اقبالؒ
وہی ہے صاحب امروز جس نے اپنی ہمت
زمانے کے سمندر سے نکلا گوہر فردا

تازہ ترین خبریں

ضمنی الیکشن سے قبل پنجاب میں عمران خان کو بڑی کامیابی مل گئی

ضمنی الیکشن سے قبل پنجاب میں عمران خان کو بڑی کامیابی مل گئی

عید الاضحی کے موقع پر قومی ائیرلائن نے مسافروں کو بڑی خوشخبری سنا دی

عید الاضحی کے موقع پر قومی ائیرلائن نے مسافروں کو بڑی خوشخبری سنا دی

عوام کیلئے بجلی کا ایک اور زوردار جھٹکا، فی یونٹ قیمت میں ہوشربا اضافے کی منظوری دیدی گئی

عوام کیلئے بجلی کا ایک اور زوردار جھٹکا، فی یونٹ قیمت میں ہوشربا اضافے کی منظوری دیدی گئی

بنی گالہ میں عمران خان کی رہاشگاہ میں فائرنگ، کس کو گرفتارکر لیا گیا؟ ہلچل مچ گئی

بنی گالہ میں عمران خان کی رہاشگاہ میں فائرنگ، کس کو گرفتارکر لیا گیا؟ ہلچل مچ گئی

مریم نواز کے بعدآصفہ زرداری کو بھی میدان میں اتارنے کا فیصلہ ، بڑی خبر آگئی

مریم نواز کے بعدآصفہ زرداری کو بھی میدان میں اتارنے کا فیصلہ ، بڑی خبر آگئی

آگئی وہ خبر جس کا انتظارتھا،وزیرخزانہ مفتاح اسماعیل نے پوری قوم کو بڑی خوشخبری سنا دی

آگئی وہ خبر جس کا انتظارتھا،وزیرخزانہ مفتاح اسماعیل نے پوری قوم کو بڑی خوشخبری سنا دی

خام تیل کتنا سستا ہونیوالا ہے؟ ماہرین کی پیشنگوئی نے ہلچل مچا دی

خام تیل کتنا سستا ہونیوالا ہے؟ ماہرین کی پیشنگوئی نے ہلچل مچا دی

5مخصوص نشستیں ملتے ہی تحریک انصاف کوبڑا جھٹکا لگ گیا

5مخصوص نشستیں ملتے ہی تحریک انصاف کوبڑا جھٹکا لگ گیا

دعا زہرہ کیس، عدالت نے نکاح خواں اور گواہ کو بڑا جھٹکادیدیا

دعا زہرہ کیس، عدالت نے نکاح خواں اور گواہ کو بڑا جھٹکادیدیا

برطانوی وزیراعظم مستعفی ؟ سیاسی صورتحال مزید کشیدہ ہو گئی

برطانوی وزیراعظم مستعفی ؟ سیاسی صورتحال مزید کشیدہ ہو گئی

مون سون بارشوں کا طاقتور سلسلہ ،محکمہ موسمیات نے ہلکی تیز بارشوں کی پیشنگوئی کر دی

مون سون بارشوں کا طاقتور سلسلہ ،محکمہ موسمیات نے ہلکی تیز بارشوں کی پیشنگوئی کر دی

26مئی کو عمران خان کو کنٹینر پر کیا پیغام ملا کہ عمران خان ڈی چوک کی بجائے بنی گالہ چلے گئے ؟رانا ثنا اللہ کا تہلکہ خیز دعویٰ

26مئی کو عمران خان کو کنٹینر پر کیا پیغام ملا کہ عمران خان ڈی چوک کی بجائے بنی گالہ چلے گئے ؟رانا ثنا اللہ کا تہلکہ خیز دعویٰ

عید الاضحی سے قبل بڑے شہر میں د ھ م ا ک ہ ، جانی نقصان ہو گیا، انتہائی افسوسناک خبرآگئی

عید الاضحی سے قبل بڑے شہر میں د ھ م ا ک ہ ، جانی نقصان ہو گیا، انتہائی افسوسناک خبرآگئی

عمران ریاض نے میرے ساتھ یہ گھٹیا حرکت کی ، خاتون صحافی ناجیہ اشعر نے سنگین الزام عائد کر دیا

عمران ریاض نے میرے ساتھ یہ گھٹیا حرکت کی ، خاتون صحافی ناجیہ اشعر نے سنگین الزام عائد کر دیا