12:06 pm
شہباز حکومت …چیلنجز 

شہباز حکومت …چیلنجز 

12:06 pm

 موجودہ حکومت کو بے شمار چیلنجز کا سامنا ہے۔شہباز شریف اور مرکزی کابینہ کے مسلم لیگی وزراء  نواز شریف سے مشاورت بر وزن ہدایات کا مرحلہ
 موجودہ حکومت کو بے شمار چیلنجز کا سامنا ہے۔شہباز شریف اور مرکزی کابینہ کے مسلم لیگی وزراء  نواز شریف سے مشاورت بر وزن ہدایات کا مرحلہ مکمل کرکے وطن واپس آچکے ہیں۔ موجودہ حکومت اتحادیوں سے مشاورت کے بعد اعلان کرنے جا رہی ہے۔ان ممکنہ اہم اعلانات کا تعلق موجودہ حکومت کو درپیش چند مخمصوں سے ہے۔-1  اتحادی حکومت کو برقرار رکھنے   کیلئے اس کے جواز کو تلاش کرنا اور پاکستان کے عوام کو مطمئن کرنا ۔-2  موجودہ حکومت کی مدت کتنی ہوگی۔ چار ماہ ‘ سات ماہ 14 ماہ مکمل آئینی مدت محسوس یہ ہو رہا ہے بحث چار ماہ اور چودہ ماہ پر ہو رہی ہے۔ اگر یہ حکومت صرف چار ماہ باقی رہتی ہے تو سابقہ حکومت کے چھوڑے ہوئے اثاثوں کی ذمہ داری سے بچ سکتی ہے ۔3  معیشت کو ڈی فالٹ سے بچانے کیلئے آئی ایم ایف سے معاہدہ کرنا حالات کی مجبوری ہے  البتہ اس کا بوجھ نگران حکومت کے سر پر ڈالا جا سکتا ہے۔  شہباز شریف کی موجودہ حکومت اگر چودہ ماہ تک طویل ہوتی ہے تو حکومت کیلئے سخت فیصلے کرنے پڑیں گے‘ عوام پر بجٹ خسارے کا بوجھ پہلے سے زیادہ ڈالنا پڑے گا۔ ایسی صورتحال میں مہنگائی کا جن طوفان بن کر عمران کی آزادی کی تحریک کو کافی بارود فراہم کر دے گا۔ حب الوطنی کا تقاضا یہ ہے کہ اعلیٰ کارکردگی اور مالیاتی نظم‘ گڈ گورننس سے معاشی حالات کو استحکام کی طرف لے جایا جا سکتا ہے  اور دوسال کے اندر اندر معاشی بحران پر قابو پایا جا سکتا ہے۔ 
جو موجودہ حکومت کے دورانیہ کو 14 ماہ تک گھسیٹنا  چاہتے ہیں ان کو ناکامی ہو گی۔اگر حکومتی دورانیہ چار ماہ اور سات ماہ سے طویل ہو گا  تو حالات قابو سے باہر ہو جائیں گے۔ موجودہ بگڑتے ہو ئے حالات سے بچنے کا ایک ہی آسان‘قابل قبول راستہ ہے الیکشن کی تاریخ کا فی الفور اعلان کردیا جائے۔  تحریک انصاف کی طرف سے یہ عندیہ دیا گیا ہے اگرجلد الیکشن کا اعلان کرنے پر حکومت رضامندی کا اظہار کرتی ہے تو تحریک انصاف مذاکرات کیلئے تیار ہے۔-4  مالیاتی دیوالیہ پن سے بچنے کیلئے آئی  ایم ایف پروگرام کو بحال کیا جائے یا نیا معاہدہ کیا جائے لیکن ہر صورت میں شرائط تو آئی ایم ایف کی ہی ہونی ہیں۔عمران حکومت کے آئی ایم ایف سے کئے گئے معا ہدے تو موجودہ حکومت نے ہی نبھانے ہیں ۔افراط زر اور روپے کی تیزی سے گرتی ہو ئی ساکھ ‘ناقابل برداشت اندرونی اور بیرونی خسارے اور قرضوں کا دیو ہیکل بوجھ گزشتہ تین حکومتوں کا ملبہ ہے ۔ مختصر مدت 4 ماہ کیلئے حکومت کو برقرار رکھنا ہے تو نرم شرائط کے ساتھ معاہدہ کیا جا سکتا ہے۔سخت ترین فیصلوں کا بوجھ عبوری حکومت کے سر مونڈھا جا سکتا ہے حکومت  اگر  سات ماہ تک بر قرار رکھنا ہے تو آئی ایم ایف کی سخت شرائط کا بوجھ برداشت کرنا پڑے گا ۔ اس ناقابل برداشت بوجھ کو تین چار سال پر منقسم کیا جا سکتا ہے۔-5 شہباز حکومت کی کارکردگی اور آئندہ منتخب ہونے والی حکومت کار کردگی کی بنا پر پاکستان کے مستقبل کا تعین ہو گا ‘ بادی النظر بحران کی اصل جڑ مالی یا مالیاتی خسارہ نہیں ہے بلکہ ایک کمزور ‘نحیف و دست نگر معیشت پر  بالائی حکومتی اشرافیہ کا ناقابل برداشت بوجھ ہے اور ریاستی اہل حل و عقد اور امرائے وطن کی اسرافی سوچ ہے۔معاشرتی ارتقا کا تقاضا  ہے کہ ہر جانب امرا کی حاکمیت کو ختم کیاجائے اور معیشت کا پائیدار ترقی دیتے ہوئے عوامی شمولیت کو یقینی بنایا جائے اور بھاری بھرکم ریاستی اداروں کے بوجھ کو اتنا ہلکا کیا جائے جس کو پاکستان کے عوام آسانی سے برداشت کر سکیں۔اس کا تعلق معیشت سے نہیں ہے بلکہ اس کاتعلق سیاسی معیشت اور مملکت کے طاقتی ڈھانچے سے ہے‘بدقسمتی یہ ہے کہ ملک کے بااختیار لوگ اور امرا جس سے کنارہ کشی کیلئے تیار نہیں ہیں‘ اصل میں یہ سماجی کایا پلٹ کا سوال ہے جسے ہماری تینوں بڑی سیاسی جماعتیں اپنے طبقاتی کردار کے وصف حل کرنے کی صلاحیت سے عاری ہیں۔  موجودہ حکومت سے زیادہ توقعات وابستہ کرنا نادانی ہو گی لیکن بحران کا چشمہ اپنی جگہ برقرار رہے گا۔-6  مختصر مدت کی  مخلوط حکومت کا مقابلہ ایک بڑے خوفناک بحران سے ہے جسے یہ اگر حل کرنا چاہے گی تو سیاسی خود کشی کرے گی اگر صرف نظر کرے گی تو مستقبل قریب میں آنے والی حکومت کیلئے وبال جان بن جائے گی۔یہ بات قومی سطح پر انتہائی احسن شمار کی جائے گی کہ اگر حکومت میں شامل جماعتیں باہمی اتفاق رائے سے میثاق جمہوریت‘میثاق معیشت‘ میثاق سول ملِٹری تعلقات اور میثاق علاقائی تعاون اور باہمی رواداری کا اعلان کریں اور علاقائی معاشی زون بنانے کی طرف پیش رفت کریں ۔-7 انتخابات کی تاریخ کا اعلان کرنے کے بعد باہمی مشاورت سے انتخابی اصلاحات کو روبہ عمل لایا جائے اور منصفانہ انتخابات کی راہ ہموار ہو سکے۔عمران خان نے جلسے سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ میں نے اپنا بیان ریکارڈ کروا دیا ہے اور اس کو انتہائی محفوظ مقام تک پہنچا دیا ہے اس بیان شدہ ریکارڈ میں عمران خان نے  اپنے قتل کی  سازش کرنے والوں کو بے نقاب کیا ہے ۔ کیا یہ بات بہتر نہ ہوتی عمران اپنا بیان کسی اعلیٰ عدالتی فورم کے سامنے پیش کرتے ۔
 

تازہ ترین خبریں

حلقہ این اے 118 میں عمران خان کے کاغذات نامزدگی چیلنج

حلقہ این اے 118 میں عمران خان کے کاغذات نامزدگی چیلنج

کپتان نے شہباز گل کے حوالے سے کیاکہاتھااورکس اہم ترین وزیرنےا ن کی بات کی تردیدکردی

کپتان نے شہباز گل کے حوالے سے کیاکہاتھااورکس اہم ترین وزیرنےا ن کی بات کی تردیدکردی

جشن آزادی کی تقریب  میں ایسی بے حیائی ہوئی کہ میں نے ٹوپی اتار کر آنکھوں پر ہاتھ رکھ لی

جشن آزادی کی تقریب میں ایسی بے حیائی ہوئی کہ میں نے ٹوپی اتار کر آنکھوں پر ہاتھ رکھ لی

عمران  کے کراچی آنے سےپیپلز پارٹی کی کا نپیں ٹانگناشروع ہوگئیں ،زرداری صاحب اب آپ نے گھبرانانہیں ،فواد چوہدری

عمران کے کراچی آنے سےپیپلز پارٹی کی کا نپیں ٹانگناشروع ہوگئیں ،زرداری صاحب اب آپ نے گھبرانانہیں ،فواد چوہدری

 کینسر سے انتقال کرنے والے ہاشم رضا نے موت سے چند دن پہلے معافی مانگتے ہوئے کیا خواہش کی تھی؟

کینسر سے انتقال کرنے والے ہاشم رضا نے موت سے چند دن پہلے معافی مانگتے ہوئے کیا خواہش کی تھی؟

اگر حکومت کی کوئی مجبوری ہے تومیں اس فیصلے میں شامل نہیں ،نواز شریف کی پیٹرول کی قیمت میں اضافے کے فیصلے کی سخت مخالفت

اگر حکومت کی کوئی مجبوری ہے تومیں اس فیصلے میں شامل نہیں ،نواز شریف کی پیٹرول کی قیمت میں اضافے کے فیصلے کی سخت مخالفت

۔۔ یہ کس مشہور شخصیت کی تصویر ہے جسے ان کے قریبی لوگ بھی نہیں پہچان پاتے؟

۔۔ یہ کس مشہور شخصیت کی تصویر ہے جسے ان کے قریبی لوگ بھی نہیں پہچان پاتے؟

۔ شادی کے 2 سال بعد بیوی کو نظر آنا بند ہوا تو شوہر نے شریک حیات ساتھ کیا سلوک کیا؟

۔ شادی کے 2 سال بعد بیوی کو نظر آنا بند ہوا تو شوہر نے شریک حیات ساتھ کیا سلوک کیا؟

پنجاب اسمبلی میں نجی قرض پر سود کی پابندی کا بل منظور

پنجاب اسمبلی میں نجی قرض پر سود کی پابندی کا بل منظور

سوناایک مرتبہ پھرمہنگا،فی تولہ قیمت میں کتنااضافہ ہوگیا،شادی کاارادہ کرنے والے افرادکے لیے بری خبرآگئی

سوناایک مرتبہ پھرمہنگا،فی تولہ قیمت میں کتنااضافہ ہوگیا،شادی کاارادہ کرنے والے افرادکے لیے بری خبرآگئی

افسران کی موجیں ختم۔۔۔پنجاب حکومت نے بڑافیصلہ کرلیا

افسران کی موجیں ختم۔۔۔پنجاب حکومت نے بڑافیصلہ کرلیا

’’شہبازگل کو ننگا کرکے مارا گیا‘‘ عمران خان اور پرویز الٰہی آمنے سامنے

’’شہبازگل کو ننگا کرکے مارا گیا‘‘ عمران خان اور پرویز الٰہی آمنے سامنے

روہڑی بائی پاس پر کوچ اُلٹ گئی، خواتین و بچوں سمیت کتنے مسافر جاں بحق ہوگئے ،انتہائی افسوسناک خبرآگئی

روہڑی بائی پاس پر کوچ اُلٹ گئی، خواتین و بچوں سمیت کتنے مسافر جاں بحق ہوگئے ،انتہائی افسوسناک خبرآگئی

ستمبر یا اکتوبر میں وطن واپسی،سابق وزیراعظم میاں نواز شریف لاہورکے بجائے کس شہرکواپنامسکن بنائیں گے

ستمبر یا اکتوبر میں وطن واپسی،سابق وزیراعظم میاں نواز شریف لاہورکے بجائے کس شہرکواپنامسکن بنائیں گے