02:01 pm
میگا مہنگائی اور اس کے اثرات

میگا مہنگائی اور اس کے اثرات

02:01 pm

ہمارے نصیب میں کتنے بے حس حکمران لکھے ہو ئے ہیں جن کی ہر ادا ہمیں تکلیف پہنچا رہی ہے لیکن ریلیف سے کوسوں دور ہیں،یہ حکمران طبقہ سفاکیت اور بربریت کا مظاہرہ کرتے ہوئے 22 کروڑ عوام پر آتش فشاں گرا رہا ہے،کھکھلاتے اور ہنستے مسکراتے چہروں کے ساتھ بغیر کسی پشیمانی اور تاسف کے عوام کو مہنگائی کے خنجر سے ذبح کئے جا رہے ہیں۔ایک درجن سے زیادہ سیاسی جماعتوں کا ملغوبہ،مختلف علاقوں کی نمائندگی کا دعویدار ر،مختلف زبانیں بولنے والے اور مختلف قبیلوں اور نسلوں سے تعلق رکھنے،وطن کے سارے امیر زادے اور شہزادے،سارے اُونچے شملوں والے ، سارے نجیب الطرفیں ،سارے اشراف جو غلاموں کی جلو میں،زمین پر قدم رکھتے ہیں۔ان امیر زادوں کے آبائو اجداد نے صدیوں سے اپنے محکوم لوگوں کو غلامی اور بے بسی کی زنجیر پہنا کر تہذیب و تمدن سے دور رکھا ہے۔ یہ لوگ زندگی کی آسائشوں سے دور ایک دن اریڑیاں رگڑ رگڑ کر موت کے گھاٹ اتر جاتے ہیں ۔
غربا ء ہمیشہ امرا کے دست نگر رہے ہیں۔اقتدار کے ایوان ہوں ،یا نوکر شاہی کی اعلیٰ پرت یامراعات یافتہ عدلیہ اور خاکی وردی میں ملبوس مقتدرہ لوگ اپنی مراعات کے بھنور رقصاں رہتے ہیں۔ان کی بستیاں،ہسپتال،تعلیمی ادارے، محفلیں،بود وباش منفرد،تہذیب و تمدن،کلچر،ثقافت الگ ایک قوم کے اندر رہتے ہوئے کسی دوسری جنت کے باسی لگتے ہیں۔اقتدار ان کی چھوکٹ پر سجدہ ریز،عدل و انصاف کے اعلیٰ ایوان ان کے ہمرکاب ،مقتدرہ کی ساری قوتیں ان کی پشتی بان ،بعد از ریٹائرمنٹ مغربی ممالک بمع مسکنوں کے ان کے منتظر،بچوں کی تعلیم بیرون ممالک، علاج و معالجہ بدیسی ،بس پاکستان ان کے لئے مال وزر جمع کرنے کی چراگاہ ہے ۔ہمارے ملک کے غریبوں کے نصیب فرائض ادائیگی لکھی گئی ہے جب حقوق کا سوال جنم لیتا ہے تو مقدر کا خانہ خالی نظر آتاہے۔غرباء کی زندگی اجیرن اور سانس لینا مشکل ہے دوسری انتہا پر امراخوشحالی کے جزیروں مستیاں کر رہے ہیں۔یہ بات بالکل درست ہے کہ پوری دنیا کومہنگائی نے گھیر رکھا ہے۔تیل کی قیمتیں آسمانوں کو چھو رہی ہیں دوسرے غیر ترقی یافتہ ممالک بھی غریب کش فیصلے کر رہے ہیں،جب کسی ملک پر آئی ایم ایف اور دوسرے عالمی مالیاتی ادارے دبا ئوڈالتے ہیں قومیں مشکلات پر قابو پانے کے لئے متبادل راستے تلاش کرتی ہیں اور مہنگائی کے بوجھ کو عقل و دانش کو استعمال کرتے ہوئے بانٹی ہیں . اور سارا مہنگائی کا ملبہ 90 فیصد غریب غرباء لوگوں پرمنتقل نہیںکردیتی ہیں۔پٹرول کی ہوش ربا گرانی اور کمر توڑ مہنگائی کا حل پبلک ٹرانسپورٹ کے ذریعے کیاجاسکتا ہے۔پاکستان کے تمام شہروں کے لئے ہنگامی بنیادوں بسوں اور ویگنوں کا وسیع پیمانے پر بندوبست کیا جانا چاہیے۔حکومتی سطح پر عوام الناس کو سہولت فراہم کرنے کے لئے ایسی کوئی منصوبہ بندی کہیں نظر نہیں آ رہی ہے، انٹر سٹی سروس کا آغاز ہو جائے تو لوگ مہنگائی کے ستائے ہوئے اپنی اپنی چھوٹی بڑی سواریوں کو گھروں میں چھوڑ کر پبلک ٹرانسپورٹ کو ترجیح دیں گے۔اس طرح ہم پٹرول اور ڈیزل کی بچت کرسکتے ہیں ۔ماس ٹرانزٹ کے لئے بڑی آبادی کی نقل و حرکت کے لئے ہمیں فی الفور فیصلے کرنے کی اشد ضرورت ہے۔مہنگائی میں اضافہ کرنے کا اعلان کرنے کے لئے بس ایک چیختی چنگاڑتی پریس کانفرنس کی ضرورت ہے ۔ہمارے وزرا ء مہنگائی اضافے کا اعلان کرتے ہوئے بھی خوشی و مسرت کا اظہار کر رہے ہوتے ہیں۔موجودہ برسراقتدار طبقہ جب اپوزیشن میں تھا تو ان کے رنگ اور ڈھنگ نرالے تھے دو روپے پٹرول مہنگا ہونے پرجلسے جلوسوں کااہتمام کر لیتے تھے اب اپنی حکومت 60 , 70 روپے کی فی لٹر مہنگائی ان کے لئے ہنسی مذا ق کا کھیل ہے ،موجودہ جان لیوا مہنگائی معمولی نوعیت کی نہیں ہے بلکہ کایا پلٹ مہنگائی ہے ۔ 90 فیصد آبادی کا اپنے موجودہ آمدن میں زندہ رہنامحال و مشکل ہو گیا ہے۔معاشی تنگدستی کی وجہ روز مرہ کے معمولات بدلنے پڑ رہے ہیں۔ خوردونوش کی مہنگائی نے انسانوں کو بری طرح متاثر کیاہے،ٹرانسپورٹ کے کرائے انسان بساط سے باہر ہو گئے ہیں ،دو وقت روٹی کے لئے انسان دربدر ہو رہا ہے ،بچیوں کی شادیوں میں مشکلات کا سامنا ہے۔کرایہ داروں کے لئے ماہانہ کرایہ دینا مشکل ہو رہا ہے،گھروں میں ضرویات پوری نہ ہونے پر دنگہ فساد برپا ہے۔ادویات کی قیمتوں میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے بیمار لوگوں کے لئے دوائی خریدنا ناممکن ہو رہا ہے بچوں کی فیسوں کی بھاری ادائیگی کا بوجھ لوگوں کو خود کشیوں پر آمادہ کر رہا ہے ۔موجودہ مہنگائی غیر معمولی مہنگائی ہے قوم اس کی اذیت سے پہلی مرتبہ آشنا ہوئی ہے،ہر طبقے کے معیار زندگی میں کمی دیکھنے کو ملے گی۔ تقدیر کا قاضی ببانگ دہل اعلان کر رہا ہے کہ اگر حکمرانوں اور اشرافیہ کے چال چلن ،رہن سہن میں بدلا نہیں آتا ہے۔حکمران اور اشرافیہ بڑی بڑی گاڑیوں پر فراٹے بھرتے رہیں گے اور ان کے محل روشنیوں سے بقعہ نور رہیں گے تو محروم طبقات جذبہ انتقام سے لبریز ہو کر سب کو خس و خاشاک کی طرح بہا کر لے جائیں۔ حکمرانوں اور مال دار اشرافیہ نے مقدمات کی بارودی سرنگیں ناکارہ کرنے کے لئے ایسے قوانین منظور کر لئے ہیں جس نے نیب کی احتسابی طاقت کو فلوج کر دیا ہے احتساب کا سانپ باقی ہے لیکن احتسابی زہر نکال لیا گیا ہے۔موجودہ نیب زدہ حکومت نے پارلیمان کا مشترکہ اجلاس بلوا کر اپنی بے ایمانی اور کرپشن کی تحقیقات کو کوڑے دان میں ڈال دیا ہے اس کے علی الرغم آنے والی پارلیمان آپ کی مفادات پر مبنی قانون سازی کو تبدیل کردے گی،جب طوفان باد وباراں اور سیلاب و طغیانی آتی ہے تو ہر چیز کو بہا کر لے جاتی ہے۔اب یہ وہ زمانہ ہے جس میں صدیوں کی جدوجہد کو لمحوں میں مقید کیاجا سکتا 21 ویں صدی کی تیسری دہائی ہے۔وقت قیامت کی چال چل رہا ہے،انسانی حقوق کا داعیہ شعور کی منزل تک پہنچ چکا ہے ۔ہدید مواصلاتی نظام نے معلومات کو ہر فرد تک پہنچا دیا ہے ،سمارٹ فون نے فاصلوں کو مٹا دیا ہے . نا انصافیوں،ناہمواریوں،حقوق شکنی کے خلاف احتجاج اور غم و غصہ کا اظہار موبائل فونز کی سکرینوں پر ہو رہا ہے دنیا کا خطہ خطہ موبائل فون کی رسائی میںواشنگٹن،بلجیم،فرانس ،جنوبی افریقہ ،سعودی عرب، یو اے ای، اس کی دسترس میں ہیں۔دنیا بھر کے مظلوم، مجبور،بھوکے ننگے،مقہور و بیزار لوگوں کے دلوں نفرت کے الا ایک ساتھ چل رہے ہیں۔موجودہ حکومت میں کوئی تو اہل درد صاحب اولاد ہو گا جس کے بچے اس کو غریب بستیوں میں پلنے والوں کی داستان غم سناتے ہوں گے۔

تازہ ترین خبریں

شادی کے چند گھنٹے بعد ہی معروف گلوکار و موسیقار کی پراسرار موت ۔۔۔مداح شاک کی حالت میں

شادی کے چند گھنٹے بعد ہی معروف گلوکار و موسیقار کی پراسرار موت ۔۔۔مداح شاک کی حالت میں

گوگل ایپلیکیشن کی بندش سے پریشان لوگوں کیلئے بڑی خوشخبری ۔۔۔وزارت خزانہ گوگل کو ادائیگی پر راضی۔۔۔گوگل ایپس بند نہ ہوں گی

گوگل ایپلیکیشن کی بندش سے پریشان لوگوں کیلئے بڑی خوشخبری ۔۔۔وزارت خزانہ گوگل کو ادائیگی پر راضی۔۔۔گوگل ایپس بند نہ ہوں گی

اسحاق ڈارکا بہت بڑا یو ٹرن ۔۔۔ ڈالر 200 روپے سے نیچے لانے کے بیان سے پیچھے ہٹ گئے۔۔۔جواز بھی پیش کر دیا

اسحاق ڈارکا بہت بڑا یو ٹرن ۔۔۔ ڈالر 200 روپے سے نیچے لانے کے بیان سے پیچھے ہٹ گئے۔۔۔جواز بھی پیش کر دیا

پاک انگلینڈ کرکٹ ٹیسٹ میچ کا پہلا سیشن ۔۔۔انگلش اوپنرز نے پاکستانی بولرز چھکے چھڑا دئیے۔۔۔حیران کن سکور کر دیا

پاک انگلینڈ کرکٹ ٹیسٹ میچ کا پہلا سیشن ۔۔۔انگلش اوپنرز نے پاکستانی بولرز چھکے چھڑا دئیے۔۔۔حیران کن سکور کر دیا

آرمی چیف جنرل عاصم منیرکاان خان سے فون پر بات کرنے سے انکار۔۔۔سینئر صحافی نے دھماکہ خیز انکشاف کر دیا 

آرمی چیف جنرل عاصم منیرکاان خان سے فون پر بات کرنے سے انکار۔۔۔سینئر صحافی نے دھماکہ خیز انکشاف کر دیا 

ہم زیادہ کرپٹ ہیں اسلئیے ۔۔۔!!!رہنما مسلم لیگ ن وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی احسن اقبال کا بہت بڑا اعتراف

ہم زیادہ کرپٹ ہیں اسلئیے ۔۔۔!!!رہنما مسلم لیگ ن وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی احسن اقبال کا بہت بڑا اعتراف

عوام نہ ادھر کے رہے نہ ادھر کے۔۔۔گیس کی لوڈ شیڈنگ تو ایک طرف ایل پی جی قیمتوںمیں بھی بہت بڑا اضافہ کر دیا گیا

عوام نہ ادھر کے رہے نہ ادھر کے۔۔۔گیس کی لوڈ شیڈنگ تو ایک طرف ایل پی جی قیمتوںمیں بھی بہت بڑا اضافہ کر دیا گیا

حارث رؤف کاٹیسٹ ڈیبیو۔۔۔لاہور قلندرز کی حارث رؤف کو ڈھیروں مبارکباد

حارث رؤف کاٹیسٹ ڈیبیو۔۔۔لاہور قلندرز کی حارث رؤف کو ڈھیروں مبارکباد

مریم نواز والد کے پلیٹ لیٹس پورے کرنےکیساتھ ساتھ دماغ کیلئے بھی معالج رکھیں۔۔۔مریم نواز کے بیان پر شیری مزاری کا کراراساجوابی وار

مریم نواز والد کے پلیٹ لیٹس پورے کرنےکیساتھ ساتھ دماغ کیلئے بھی معالج رکھیں۔۔۔مریم نواز کے بیان پر شیری مزاری کا کراراساجوابی وار

توہین عدالت کیس ۔۔۔عمران خان مشکل میں۔۔۔سپریم کورٹ میں کی جانب سے اہم پیشرفت

توہین عدالت کیس ۔۔۔عمران خان مشکل میں۔۔۔سپریم کورٹ میں کی جانب سے اہم پیشرفت

میں معافی نہیں مانگوں گا۔۔۔ ہرجانے کے نوٹس پرشاہزیب خانزادہ بھی فرح گوگی کےسامنے ڈٹ گئے

میں معافی نہیں مانگوں گا۔۔۔ ہرجانے کے نوٹس پرشاہزیب خانزادہ بھی فرح گوگی کےسامنے ڈٹ گئے

ن لیگ پنجاب اسمبلی کو بچانے کیلئے کون سے 2آپشنز استعمال کرنے والی ہے۔۔۔؟بڑا انکشاف ہو گیا 

ن لیگ پنجاب اسمبلی کو بچانے کیلئے کون سے 2آپشنز استعمال کرنے والی ہے۔۔۔؟بڑا انکشاف ہو گیا 

راولپنڈی کرکٹ گراؤنڈ میںپاک انگلینڈ ٹیسٹ سیریزکی ٹرافی کی رونمائی کر دی گئی۔۔۔دیکھیں خبر میں

راولپنڈی کرکٹ گراؤنڈ میںپاک انگلینڈ ٹیسٹ سیریزکی ٹرافی کی رونمائی کر دی گئی۔۔۔دیکھیں خبر میں

راجہ جی پنڈی جلساں تے میچ تکساں۔۔۔خوبصورت اور دلچسپ اردو میں پیغام کے بعد برطانوی ہائی کمشنر رکشے میں سوار میچ دیکھنے کیلئے نکل پڑے

راجہ جی پنڈی جلساں تے میچ تکساں۔۔۔خوبصورت اور دلچسپ اردو میں پیغام کے بعد برطانوی ہائی کمشنر رکشے میں سوار میچ دیکھنے کیلئے نکل پڑے