01:32 pm
اک نئی چال’’آئی ٹویوٹو‘‘

اک نئی چال’’آئی ٹویوٹو‘‘

01:32 pm

جوبائیڈن آئندہ ماہ،12سے16 جولائی تک  مغربی ایشیاکے دورے پرایک ورچوئل کانفرنس میں شریک ہوں گے جس میں انڈیا، اسرائیل،  متحدہ عرب امارات موجود ہوں گے۔ امریکی
جوبائیڈن آئندہ ماہ،12سے16 جولائی تک  مغربی ایشیاکے دورے پرایک ورچوئل کانفرنس میں شریک ہوں گے جس میں انڈیا، اسرائیل،  متحدہ عرب امارات موجود ہوں گے۔ امریکی انتظامیہ کے ایک سینئر اہلکارکے مطابق چارممالک کے اس نئے اتحادکانام آئی ٹویوٹو ہوگا۔ اس گروپ میں ’’آئی ٹو‘‘ انڈیااوراسرائیل کیلئے اور’’یوٹو‘‘امریکا اور یواے ای کیلئے ہے۔ان چاروں ممالک کے وزرائے خارجہ کی میٹنگ اکتوبر 2021ء میں ہوئی تھی۔انڈین وزیرخارجہ ایس جے شنکراس میٹنگ میں شرکت کیلئے اسرائیل گئے تھے۔ اس وقت چارممالک کے اس گروپ کا نام’’انٹرنیشنل فورم فاراکنامک کو آپریشن‘‘ تھا۔اب چاروں ممالک کے سربراہ اس اجلاس میں شریک ہوں گے۔صدربننے کے بعد بائیڈن کاپہلا سعودی عرب اوراسرائیل کادورہ ہوگا۔ امریکی عہدیدارکے مطابق چاروں ملک کے سربراہ سرجوڑ کرمشرقِ وسطیٰ کے مزیدممالک کوبھی شامل کرنے کافیصلہ کیاجائے گا۔
صدر بائیڈن اسرائیل کے دورے کے بعد مقبوضہ غربِ اردن جائیں گے جہاں وہ فلسطینی حکام کے ساتھ مذاکرات کریں گے۔اس کے بعدوہ سعودی عرب جائیں گے۔ یہاں بائیڈن خلیجی تعاون کونسل کی کانفرنس میں شریک ہوں گے جہاں مصر، عراق اوراردن سمیت نوممالک کے سربراہان اس اجلاس میں شرکت کریں گے۔ امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان نیڈپرائس نے کہا کہ  انڈیا صارفین کی ایک بہت بڑی مارکیٹ ہے۔ ساتھ ہی ساتھ یہ جدیدٹیکنالوجی اورانتہائی مطلوب پراڈکٹس کا تیارکنندہ بھی ہے۔کئی شعبے ہیں جہاں یہ ممالک مل کرکام کرسکتے ہیں چاہے وہ ٹیکنالوجی ہو، کاروبار، ماحولیات،کووڈ19اورسکیورٹی۔جب نیڈ پرائس سے پوچھاگیاکہ اس گروپ کا مقصد کیا ہے توانہوں نے کہا کہ وہ اتحاداور شراکت دار جوپہلے موجودتھے ان کی صلاحیتوں سے بھرپور فائدہ نہیں اٹھایاگیاہے۔اکتوبر2021ء میں جب پہلی مرتبہ انڈیا ،اسرائیل،امریکااورمتحدہ عرب امارات  پرمبنی اس گروپ کے وزرائے خارجہ اجلاس  ہوا  تھا تو بحری سلامتی، انفراسٹرکچر، ٹیکنالوجی  اور ٹرانسپورٹ جیسے اہم معاملات پربات کی گئی تھی۔ 
اس وقت اجلاس کاایک اہم نکتہ اسرائیل اور متحدہ عرب امارات کے درمیان تعلقات کاقیام تھا۔ انڈیامیں عرب امارات کے اس وقت کے سفیرنے اس اتحادکو’’مغربی ایشیا کاکواڈ‘‘ قرار دیا تھا۔ بائیڈن انتظامیہ نے جنوری2021ء میں حکومت  میں آنے کے بعدسے کئی گروپس کے قیام کا  اعلان کیاتھاجن میں آسٹریلیا، امریکا اور برطانیہ (آکس) ،اور پاکستان افغانستان اورازبکستان کے ساتھ چارفریقی مذاکرات شامل ہیں۔اس سے قبل بائیڈن نے گذشتہ ماہ جاپان کے دورے میں انڈوپیسفک اکنامک فریم ورک(آئی پیف)کابھی اعلان کیاتھاجس میں انڈیاسمیت13ممالک امریکا، آسٹریلیا، برونائی، انڈیا،انڈونیشیا،جاپان،جنوبی کوریا، ملائیشیا، نیوزی لینڈ،فلپائن،سنگاپور،تھائی لینڈاورویتنام شامل ہیں ۔  بائیڈن نے سب سے پہلے اکتوبر 2021ء میں آئی پیف کاتذکرہ کرتے ہوئے کہا تھا کہ ’’امریکا اپنے اتحادیوں کے ساتھ مل کراس انڈوپیسفک اکنامک فریم ورک کی تشکیل کی کوشش کرے گا۔اس کے ذریعے ہم تجارت میں آسانی، ڈیجیٹل ٹیکنالوجی کی سٹینڈرڈائزیشن،سپلائی  اورچین کے معاملات میں بہتری لائیں گے۔ہم امریکاکی مضبوطی،کاربن کے اخراج میں کمی، اور صاف توانائی سے متعلق کاروبارکے فروغ کے اپنے مشترکہ مقاصدکے حصول کیلئے کوشش کریں گے   جن میں انفراسٹرکچر، لیبراورقانون سازی بھی شامل ہیں ۔یہ بھی کہاگیاکہ آئی پیف آزادانہ تجارت کے روایتی معاہدوں سے مختلف ہوگا کیونکہ  ایسے معاہدے کافی وقت لے لیتے ہیں اور ان  پرشریک ممالک کے دستخط چاہے ہوتے ہیں۔ 
ادھرجوبائیڈن اس دورے سے ایک اورتاریخ رقم کریں گے۔وہ پہلی مرتبہ اسرائیل سے براہِ راست ریاض جائیں گے۔سعودی عرب اوراسرائیل کے درمیان سفارتی تعلقات نہیں ہیں۔سعودی عرب نے حال ہی میں متحدہ عرب امارات جانے والی اسرائیلی پروازوں کواپنی حدود استعمال کرنے کی اجازت دی ہے۔بائیڈن اب سے 50برس قبل پہلی مرتبہ اسرائیل گئے تھے جب وہ سینیٹرتھے۔
انڈیااورامریکاکواڈگروپ کے بھی رکن ہیں۔ امریکا،انڈیا،جاپان اورآسٹریلیاپرمشتمل کواڈریلیٹرل  سکیورٹی ڈائیلاگ یاکواڈنامی اس گروپ کی تجویز 2007میں جاپانی وزیرِاعظم شنزوآبے نے دی تھی جس کی حمایت باقی ممالک نے کی۔اسی برس جاپان میں ان ممالک کااجلاس ہوا۔اس گروپ کے بنیادی مقاصدمیں سے ایک انڈوپیسفک خطے میں چین کے مقابلے کیلئے آزادانہ تجارت کوفروغ دیناظاہرکیاتھا۔ اس کے علاوہ انڈیامتحدہ عرب امارات کے ساتھ بھی ایک آزدانہ تجارت کا معاہدہ کرنے والاہے اورکہاجا رہا ہے کہ اگلے ماہ  مودی بھی متحدہ عرب امارات کا دورہ کرسکتے ہیں۔
ادھرانڈیانے امریکاکی جانب سے چین کا پلڑا برابرکرنے کیلئے کواڈ گروپ میں شمولیت اختیارتو کرلی ہے مگراسے چین کے ساتھ دوطرفہ سطح پرنمٹنے کیلئے سخت چیلنجزکاسامناہے۔ مشرقی لداخ میں انڈین فوجی تعیناتیوں کے جواب میں لائن آف ایکچوئل کنٹرول(ایل اے سی)پرچین نے اپنی طرف بلندی پرموجوداگلے مورچوں میں سپاہیوں کیلئے پختہ اور مستقل شیلٹرزتیارکرکے اپنے مکمل قبضے کااشارہ دے دیاہے۔اس معاملے پرنئی دہلی کے عوامی بیانات میں بمشکل ہی کوئی ربط دیکھنے میں آیا ہے،دوجون2017کومودی نے روس کے سینٹ پیٹرزبرگ انٹرنیشنل اکنامک فورم میں کہاتھاکہ چین اوربھارت میں سرحدی تنازع کے باوجود پچھلے چالیس سال میں دونوں ممالک کے درمیان ایک بھی گولی نہیں چلی جبکہ سال پہلے مودی نے یہ بھی کہاتھاکہ چین کی جانب سے کوئی دخل اندازی نہیں ہوئی ہے اورنہ ہی’’ایک انچ‘‘انڈین زمین پراس نے کنٹرول حاصل کیاہے لیکن اس بیان کے بعد اب صورتحال یہ ہے کہ سرحد پرنہ صرف بھرپور فائرنگ ہوئی بلکہ درجنوں بھارتی فوجی ہلاک بھی ہوئے۔اب مودی یہ بات دوبارہ نہیں کہہ سکتے۔کیا مودی کوعلم نہیں تھا کہ چین بھارت کی طرح انتخابات کوذہن میں رکھتے ہوئے اگلے پانچ سال کیلئے پالیسیاں نہیں بناتا بلکہ وہ اگلے پچاس سال کی منصوبہ بندی اورحکمت عملی پرکام کرتاہے اوراسے انجام تک پہنچاتاہے۔
لیکن دورہ ماسکوکے بعدبھارتی وزیردفاع راج ناتھ سنگھ نے لوک سبھامیں بتایاکہ مشرقی لداخ میں بھارت کوایک بڑے چیلنج کا سامنا ہے۔ انہوں نے اعتراف کیاکہ چین غیرقانونی طور پر لداخ کے38 ہزارمربع کلومیٹرکے علاقے پر قابض ہے۔اس کے ساتھ ساتھ چین اروناچل پردیش  میں ہندچین سرحد کے مشرقی حصے میں90 ہزار مربع کلومیٹرعلاقے پر دعویٰ کررہاہے۔چین بھلے ہی ملاقاتیں اورمذاکرات کررہاہے لیکن وہ بھارت کودھمکی بھی دے رہا ہے۔ چین نے یہاں تک کہہ دیاہے کہ پورااروناچل پردیش اس کا ہے کیونکہ اس نے اسے کبھی بھارت کاحصہ تسلیم ہی  نہیں کیا۔یوں بھارت کی قومی سلامتی کو لاحق خطرات مسلسل بڑھتے جارہے ہیں۔بھارتی اخبارات  کاکہنا ہے کہ بھارت نے مشرقی لداخ میں عملاًینی بالادستی تسلیم کرلی ہے۔ چین نے بھی کمپنی شین جھیک انفوٹیک اورشنہواانفوٹیک کے ذریعے پورے بھارت پرنظررکھی ہوئی ہے جہاں بھارتی وزارت داخلہ،خارجہ اوردفاع کے حکام کی ڈیجیٹل مانیٹرنگ ہورہی ہے جس کے تدارک کیلئے بھارت ابھی تک بے بس دکھائی دیتاہے ۔
 


تازہ ترین خبریں

ڈالر کی قدر بڑھنے سے  ملک میں مہنگائی کا طوفان  آئے گا ، شوکت ترین

ڈالر کی قدر بڑھنے سے ملک میں مہنگائی کا طوفان آئے گا ، شوکت ترین

ملک کو تباہ کرنے والوں کا محاسبہ انتہائی ضروری ہے ، اسحاق ڈار نے تجویز دیدی

ملک کو تباہ کرنے والوں کا محاسبہ انتہائی ضروری ہے ، اسحاق ڈار نے تجویز دیدی

صوبے، پاکستان ریلوے کی زمین  واپس کریں،خواجہ سعد رفیق کی اپیل

صوبے، پاکستان ریلوے کی زمین واپس کریں،خواجہ سعد رفیق کی اپیل

فواد کی پیشی پر پولیس اہلکاروں سے کوئی تکرار نہیں ہوئی ،حبہ چوہدری کا بیان آگیا

فواد کی پیشی پر پولیس اہلکاروں سے کوئی تکرار نہیں ہوئی ،حبہ چوہدری کا بیان آگیا

بھارتی اداکار انو کپور کو سینے میں شدید تکلیف ، اسپتال داخل

بھارتی اداکار انو کپور کو سینے میں شدید تکلیف ، اسپتال داخل

آئی ایم ایف  معاہدہ  اسی ہفتے طے پا جائے گا، جلد  مشکل حالات سے باہر نکلیں گے، شہباز شریف

آئی ایم ایف معاہدہ اسی ہفتے طے پا جائے گا، جلد مشکل حالات سے باہر نکلیں گے، شہباز شریف

پرویز الٰہی کا فیصل چوہدری کوفون، فواد کی گرفتاری سے متعلق بیان پر معذرت کرلی

پرویز الٰہی کا فیصل چوہدری کوفون، فواد کی گرفتاری سے متعلق بیان پر معذرت کرلی

وزیراعظم شہبازشریف نے گرین لائن ٹرین سروس کا افتتاح کردیا

وزیراعظم شہبازشریف نے گرین لائن ٹرین سروس کا افتتاح کردیا

مفتاح اسماعیل نے بھی فواد چوہدری گرفتاری کی مخالفت کردی

مفتاح اسماعیل نے بھی فواد چوہدری گرفتاری کی مخالفت کردی

لال حویلی کو آج ہی واگزار کرایا جائے گا،ڈپٹی ایڈمنسٹریٹر وقف املاک بورڈ

لال حویلی کو آج ہی واگزار کرایا جائے گا،ڈپٹی ایڈمنسٹریٹر وقف املاک بورڈ

آصف  زرداری نے عمران خان کو قتل کرنے کی سازش کر رکھی ہے ،ثبوت موجود ہیں، شیخ رشید

آصف زرداری نے عمران خان کو قتل کرنے کی سازش کر رکھی ہے ،ثبوت موجود ہیں، شیخ رشید

نگراں وزیراعلیٰ پنجاب کو  کام سے روکا جائے ، پی ٹی آئی نے تعیناتی سپریم کورٹ میں چیلنج  کردی

نگراں وزیراعلیٰ پنجاب کو کام سے روکا جائے ، پی ٹی آئی نے تعیناتی سپریم کورٹ میں چیلنج کردی

فرخ حبیب کیخلاف مقدمہ درج، ایف آئی آر کو بہت ہی ماٹھی کہانی  قرار دیدیا

فرخ حبیب کیخلاف مقدمہ درج، ایف آئی آر کو بہت ہی ماٹھی کہانی قرار دیدیا

بتائیں کس قانون کے تحت عمران خان کو گرفتار کیا جائے گا؟  اسد عمر 

بتائیں کس قانون کے تحت عمران خان کو گرفتار کیا جائے گا؟  اسد عمر