01:51 pm
امام اعظم ابوحنیفہؒ کی سیرت کے چند حسین گوشے

امام اعظم ابوحنیفہؒ کی سیرت کے چند حسین گوشے

01:51 pm

امام ابو حنیفہؒ حدیث کی طرف متوجہ ہوئے تو کوفہ میں شاید ہی کوئی ایسا محدث ہو جس کی امام صاحبؒ نے شاگردی نہ اختیار کی ہو‘ آپؒ کے اساتذہ میں امام شعبیؒ ابو اسحٰق شعبیؒ حضرت سماکؒ اور حضرت قتادہؒ شامل ہیں…اس کے بعد امام ابو حنیفہؒ حرمین شریفین تشریف لے گئے مکہ مکرمہ میں حضرت عطاء بنؒ ابی رباح کا حلقہ درس قائم تھا اس میں شریک ہوگئے۔ آپؒ نے حضرت عبداللہ بن عباسؓ کے غلام حضرت عکرمہؒ، شام کے امام المذہب مکحولؒ شامی اور امام اوزاعیؒ سے مکہ میں تعارف حاصل کیا اور حدیث کی سند لی‘ آپؒ کے اساتذہ کی تعداد چار ہزار بیان کی گئی ہے… امام ابو حنیفہؒ کی شہرت کا اب یہ حال تھا کہ حرمین شریفین کے سفر کا ارادہ کرتے تو شور مچ جاتا کہ فقیہ عراق عرب جا رہے ہیں۔
ایک دفعہ مکہ مکرمہ تشریف لے گئے۔ اتنا ہجوم تھا کہ ایک پر ایک گرا پڑتا تھا‘ آپؒ نے کہا ’’کاش ہمارے میزبان سے کوئی کہتا کہ اس ہجوم کا انتظام کرے‘‘ ابو عاصم نبیل نے کہا’’ میں جاتا ہوں لیکن چند مسئلے دریافت کرنے رہ گئے۔‘‘ امام صاحبؒ نے مسئلے توجہ سے سنے اس میں میزبان کا خیال جاتا رہا، ابو عاصم سے فارغ ہوئے تو دیگر طالب علموں نے مسائل پوچھنے شروع کر دیئے۔ کچھ دیر بعد پھر خیال آیا تو دریافت کیا ’’کسی شخص نے میزبان کے پاس جانے کیلئے کہا تھا۔‘‘ ابو عاصم کہنے لگے ’’جی ہاں میں نے عرض کیا تھا‘‘ آپؒ نے پوچھا ’’پھر تم گئے نہیں؟‘‘ ابو عاصم نے شوخی سے کہنے لگے‘ ’’میں نے یہ تو نہیں کہا تھا کہ ابھی جاتا ہوں، جب فرصت ہو گی تب جاؤں گا۔‘‘ امام صاحبؒ نے ابو عاصم کی بات پر فوراً گرفت کی اور فرمایا۔ ’’عام بول چال میں ان احتمالات کا موقع نہیں، ان لفظوں کے معنی وہی لئے جائیں گے جو عوام کی غرض ہوتی ہے۔‘‘ امام صاحبؒ میانہ قد، خوش رو اور موزوں اندام تھے‘ گفتگو بلند اور صاف لہجے میں کرتے تھے‘مزاج میں تکلف تھا‘اچھا لباس پہنتے تھے۔ وظیفہ خوری کے مخالف تھے اس لئے آپؒ کو حق گوئی میں کبھی باک نہ ہوا۔ لاکھوں کی تجارت کرتے تھے، اکثر شہروں میں آپؒ کے نمائندے مقرر تھے… ایک بار حفص بن عبدالرحمن کے پاس کپڑے کے تھان بھیجے، ساتھ ہی پیغام دیا کہ فلاں فلاں تھان میں خرابی خریدار کو بتا دینا‘ حفص کو یاد نہ رہا اور خریدار کے بتائے بغیر ہی تھان فروخت کر دیئے…امام صاحبؒ کو معلوم ہوا تو نہایت رنج ہوا، آپؒ نے تمام تھانوں کی قیمت، تیس ہزار درہم خیرات کر دی، آپؒ نے یہ گوارا نہ کیا کہ اس رقم میں سے ایک درہم بھی اپنے پاس رکھیں۔ ایک بار کسی بیمار کی عیادت کے لئے جا رہے تھے‘ راستے میں ایک شخص ملا اس نے چاہا کہ کترا کر نکل جائے… اسے امام صاحبؒ نے بلا لیا اور پوچھا کہ راستہ کاٹ کر کیوں نکل رہے تھے؟ اس نے کہا ’’امام صاحبؒ میں آپ کا دس ہزار کا مقروض ہوں اسی شرم سے آنکھ نہیں ملا سکتا۔‘‘ امام صاحبؒ اس شخص کی غیرت پر حیران ہوئے فرمایا ’’جاؤ میں نے سب معاف کر دیا۔‘‘ قاضی ابو یوسفؒ فرماتے ہیں‘ امام ابو حنیفہؒ لوگوں کو پچاس پچاس اشرفیاں یا اس سے بھی زائذ رقم دے دیتے لیکن جب کبھی کوئی شخص لوگوں کے سامنے شکریہ ادا کرتا تو آپؒ کو اس سے تکلیف ہوتی، فرماتے: میاں! اللہ نے یہ روزی تم تک پہنچائی ہے، میں توصرف خزانچی ہوں جہاں حکم دیا جاتا ہے وہاں رکھ دیتا ہوں۔‘‘ ایک بار کسی حاجی نے آپؒ کی خدمت میں جوتوں کے ایک ہزار جوڑے تحفہ کے طور پر پیش کئے۔ ایک دو دن کے بعد آپؒ اپنے بیٹے کے لئے بازار میں جوتا خریدتے دکھائی دئیے‘آپؒ کے شاگرد حضرت یوسفؒ بن خالد نے دریافت کیا کہ ابھی تو آپؒ کے پاس ہزار جوڑے جوتے آئے تھے…آپؒ نے فرمایا ’’میرا قاعدہ یہی ہے کہ تحائف اپنے شاگردوں میںتقسیم کر دیتا ہوں۔‘‘ موصول ہونے والے تحائف تو آپؒ دوسروں میں تقسیم کر دیا کرتے تھے اور خود آپؒ کا حال یہ تھا کہ دوسروں کو زیادہ سے زیادہ تحفے دیا کرتے تھے‘ حضرت سفیان بن عینیہؒ فرماتے ہیں کہ میرے پاس امام ابو حنیفہؒ کی طرف سے اس قدر تحفوں کی بھرمار ہوئی کہ میں گھبرا اٹھا‘ ایک شخص نے امام ابو حنیفہؒ کو تین درہم کی چیز تحفے کے طور پر پیش کی آپؒ نے اس کو پچاس درہم مالیت کا خز (کپڑے) کا ٹکڑا جوابی تحفہ کے طور پر پیش کیا۔ آپؒ اپنے طلبہ کے لئے جمعہ کے روز طرح طرح کے کھانے پکواتے لیکن کھانے میں خود شریک نہ ہوتے، پوچھنے پر فرماتے ’’اس طرح تم لوگوں کی بے تکلفی جاتی رہے گی‘‘ اس سے امام صاحبؒ کی حلم اور حکمت کا اندازہ ہوتا ہے وہ جانتے تھے کہ نوجوانوں کو کسی بزرگ کی موجودگی میں سنجیدہ ہو کر بیٹھنا پڑے گا اور وہ آپس میں ہنسی مذاق نہ کر سکیں گے۔ کوفہ کے گورنر ابن ہیرہ نے جب امام صاحبؒ کو میر مفتی مقرر کرنا چاہا تو آپؒ نے انکار کر دیا۔ اس پر اس نے امام صاحبؒ کو درے لگوائے جس کا امام صاحبؒ کی والدہ کو بڑا صدمہ ہوا‘ امام صاحبؒ فرماتے ہیں۔ مجھے اپنی تکلیف کا چنداں خیال نہ تھا، البتہ یہ رنج تھا کہ میری تکلیف کی وجہ سے والدہ کے دل کو صدمہ پہنچا۔‘‘ امام صاحبؒ کی دیانت کا اندازہ اس واقعہ سے بھی لگایا جا سکتا ہے کہ جس زمانہ میں گورنر کی طرف سے آپؒ کے فتویٰ دینے پر پابندی تھی، ایک دن گھر میں بیٹھے تھے کہ آپؒ کی لڑکی نے آکر مسئلہ پوچھا ’’میرا روزہ ہے، دانتوں سے خون بہ نکلا اور تھوک کے ساتھ گلے سے اتر گیا…روزہ ہے یا جاتا رہا؟‘‘ امام صاحبؒ چاہتے تو جواب دے سکتے تھے، گھر کے اندر گورنر کے کارندے جانچ پڑتال کے لئے نہیں آئے تھے، لیکن آپؒ نے کہا ’’ جان پدر! اپنے بھائی حماد سے پوچھ لو، مجھے فتویٰ دینے سے روک دیا گیا ہے۔‘‘ مؤرخ ابن خلکان کہتے ہیں کہ چند روزبعد گورنر کو بعض فقہی مسائل کا سامنا کرنا پڑا۔ چنانچہ اس نے امام ابو حنیفہؒ سے رجوع کیا‘ اس طرح امام صاحبؒ کو پھر فتویٰ دینے کی اجازت مل گئی۔ خلیفہ منصور نے ایک بار امام صاحبؒ کے پاس کچھ رقم بھیجی۔ آپؒ نے لینے سے انکار کر دیا، لوگوں نے کہا ’’لے کر خیرات ہی کر دیجئے۔‘‘ آپؒ نے پوچھا ’’کیا ان لوگوں کے پاس حلال بھی کچھ ہے؟ کیا ان کے پاس حلال بھی کچھ ہے۔؟‘‘ امام صاحبؒ کا کوفہ میں ایک قسم کے کپڑے ’’خز‘‘ کا بڑا کارخانہ تھا۔ شہر میں ایک بڑی دکان بھی تھی۔ آپؒ کے صاحبزادے اور شاگرد دکان پر کام کرتے تھے۔آپؒ نے دکان پر مختلف قسم کے کپڑوں کی قیمتیں متعین کر دی تھیں۔ ایک دن امام صاحبؒ دکان پر موجود نہ تھے۔ ایک شاگرد نے کسی گاہک کو مقررہ دام سے زیادہ قیمت پر کپڑا دے دیا۔ (جاری ہے)

تازہ ترین خبریں

محکمہ موسمیات نے گرمی سےپریشان شہریو ں کو مزیدبارشوں کی نوید سنا دی

محکمہ موسمیات نے گرمی سےپریشان شہریو ں کو مزیدبارشوں کی نوید سنا دی

کامن ویلتھ گیمز میں گولڈ میڈل جیتنے کے بعد ارشد ندیم کیلئے 50لاکھ روپے انعام کا اعلان

کامن ویلتھ گیمز میں گولڈ میڈل جیتنے کے بعد ارشد ندیم کیلئے 50لاکھ روپے انعام کا اعلان

پرویز الٰہی تو چوہدری شجاعت کا نہ ہو سکا آپکا کیا ہو گا،کس نے عمران خان پر طنز کر دیا؟

پرویز الٰہی تو چوہدری شجاعت کا نہ ہو سکا آپکا کیا ہو گا،کس نے عمران خان پر طنز کر دیا؟

پاک فوج کیخلاف ہرزہ سرائی ، وزیر دفاع خواجہ آصف سے استعفیٰ طلب

پاک فوج کیخلاف ہرزہ سرائی ، وزیر دفاع خواجہ آصف سے استعفیٰ طلب

پنجاب میں احساس راشن پروگرام شروع کرنیکی منظوری،ماہانہ کتنے پیسے ملیں گے ،غریبوں کے لیے خوشی کی خبرآگئی

پنجاب میں احساس راشن پروگرام شروع کرنیکی منظوری،ماہانہ کتنے پیسے ملیں گے ،غریبوں کے لیے خوشی کی خبرآگئی

ارب پتی تاجرکی نئی سستی ایئر لائن نے سروس کا آغاز کر دیا

ارب پتی تاجرکی نئی سستی ایئر لائن نے سروس کا آغاز کر دیا

دلہن کے لباس میں اس پیاری بچی کو پہچان سکتے ہیں؟ 99 فیصد چاہنے والے بھی اس معصوم بچی کو پہچان نہیں سکیں گے

دلہن کے لباس میں اس پیاری بچی کو پہچان سکتے ہیں؟ 99 فیصد چاہنے والے بھی اس معصوم بچی کو پہچان نہیں سکیں گے

سابق وزیراعظم میاں نواز شریف کاملکی حالات کے متعلق بڑادعویٰ

سابق وزیراعظم میاں نواز شریف کاملکی حالات کے متعلق بڑادعویٰ

مہنگائی کے ستائے عوام کیلئے ایک اور بری خبر

مہنگائی کے ستائے عوام کیلئے ایک اور بری خبر

پیپلزپارٹی کا فواد چودھری کے الزامات پر ردعمل ، بڑا چیلنج دیدیا

پیپلزپارٹی کا فواد چودھری کے الزامات پر ردعمل ، بڑا چیلنج دیدیا

شہرقائد میں بادل ایک مرتبہ پھربرس پڑے ،کیامزیدبارش کاامکان ہے ،محکمہ موسمیات نے بتادیا

شہرقائد میں بادل ایک مرتبہ پھربرس پڑے ،کیامزیدبارش کاامکان ہے ،محکمہ موسمیات نے بتادیا

حکومت پی ٹی آئی کے خلاف اقدامات کیوں اٹھارہی ہے ،فواد چوہدری نے وجہ بتادی

حکومت پی ٹی آئی کے خلاف اقدامات کیوں اٹھارہی ہے ،فواد چوہدری نے وجہ بتادی

کامن ویلتھ گیمز، کس ملک کے 9 ایتھلیٹ اور منیجر روپوش ہوگئے ،کھیل کے میدان سے بڑی خبرآگئی

کامن ویلتھ گیمز، کس ملک کے 9 ایتھلیٹ اور منیجر روپوش ہوگئے ،کھیل کے میدان سے بڑی خبرآگئی

عمران خان توشہ خانہ سےکچھ تحائف مفت میں بھی لےگئے تھے، الیکشن کمیشن میں دائر ریفرنس میںبڑا دعویٰ کردیاگیا

عمران خان توشہ خانہ سےکچھ تحائف مفت میں بھی لےگئے تھے، الیکشن کمیشن میں دائر ریفرنس میںبڑا دعویٰ کردیاگیا