01:16 pm
تحریک تحفظ ناموس رسالت ۖ ؐ فیصلہ اور عمرانی حکومت کا کارنامہ

تحریک تحفظ ناموس رسالت ۖ ؐ فیصلہ اور عمرانی حکومت کا کارنامہ

01:16 pm

(گزشتہ سے پیوستہ) جس میں نامور سکالرز،عالم دین کی جانب سے لکھی گئی قرآن کریم کی تفسیر،مصدقہ اسلامی کتابیں،ختم نبوت ﷺ کے متعلق قوانین،ختم نبوت ﷺ اور ناموس رسالت ﷺ کے متعلق آرٹیکلز اور اعلی عدلیہ کے فیصلوں کو عوام کی آگاہی کے لئے اپلوڈ کرنے کی ہدایت کی گئی تھی۔وفاقی حکومت کو ایک ایسا سرکاری ویب سائٹ پورٹل بھی بنانے کا حکم دیا گیا تھا،جس میں مذہبی سکالرز ختم نبوت ﷺ اور ناموس رسالت ﷺ کے متعلق سوالات کے جوابات دیا کریں۔ (3)لاہور ہائیکورٹ نے اپنے مذکورہ فیصلے میں ہدایات کے پیرا نمبر 3 میں وفاقی حکومت کو(وفاقی وزارت مذہبی امور،داخلہ،آئی ٹی) ایک ایسا پورٹل بھی بنانے کا حکم دیا گیا تھا،جس میں امت مسلمہ کی آگاہی کے لئے تمام مستند اسلامک ویب سائٹس اور پیجز وغیرہ کی نشاندہی کی جائے۔
(4)لاہور ہائیکورٹ نے اپنے مذکورہ فیصلے میں ہدایات کے پیرا نمبر 4 میں قرار دیا گیا تھا کہ ضروری نہیں کہ PTA رولز 2020 کے مطابق کسی بھی خلاف قانون مواد کے سوشل میڈیا پر اپلوڈ ہونے کی صورت میں صرف شکایت موصول ہونے پر ہی PTA کاروائی کرے گی۔بلکہ PTA کی ذمہ داری ہے کہ وہ سوشل میڈیا پر پاکستان کے قوانین کے خلاف کسی بھی ایسے مواد کے اپلوڈ ہونے کی صورت میں ازخود کاروائی کا آغاز کرے،جو مواد Cr.PC کی دفعہ 154 کے تحت کسی بھی قابل دست اندازی جرم کے زمرے میں آتا ہو۔اس حوالے سے عدالت نے متعلقہ رولز میں ترمیم کرنے بھی تجویز دی تھی۔ (5)لاہور ہائیکورٹ نے اپنے مذکورہ فیصلے میں ہدایات کے پیرا نمبر 5 میں وفاقی حکومت (وفاقی وزارت داخلہ،آئی ٹی کو ایک ایسا ویب سائٹ پورٹل بنانے کی بھی ہدایت کی گئی تھی،جس میں اسلام،ختم نبوت ﷺ،ناموس رسالت ﷺ اور ناموس صحابہ ﷺ کی توہین کے خلاف کاروائی کے لئے کسی بھی شکایت پر کاروائی میں ہونے والی پیش رفت کو اپڈیٹ کیا جاتا رہے۔ تاکہ عوام آگاہ رہیں کہ اعلی سطح پر ان کی شکایت پر کاروائی کی جارہی ہے۔ (6)لاہور ہائیکورٹ نے اپنے مذکورہ فیصلے میں ہدایات کے پیرا نمبر 6 میں وفاقی حکومت (وفاقی وزارت تعلیم) ختم نبوت ﷺ کے متعلق مضامین کو اردو اور اسلامیات کی کتابوں میں پرائمری سے لیکر ماسٹر لیول تک کے نصاب میں شامل کرنے کا حکم دیا گیا تھا۔ (7)لاہور ہائیکورٹ نے اپنے مذکورہ فیصلے میں ہدایات کے پیرا نمبر 7 میں مذکورہ احکامات کی روشنی میں بنائے جانے والے ویب سائٹس پورٹل سے آگاہی کے لئے میڈیا پر مہم چلانے اور اس متعلق تعلیمی اداروں سمیت دیگر اداروں کے نوٹس بورڈز پر نوٹس آویزاں کرنے کی ہدایت کی گئی تھی....متاکہ زیادہ سے زیادہ لوگ مذکورہ ویب سائٹ،پورٹل سے مستفید ہو سکیں۔ (8) لاہور ہائیکورٹ نے اپنے مذکورہ فیصلے میں ہدایات کے پیرا نمبر 8 میں وفاقی حکومت(وفاقی وزارت داخلہ،وفاقی وزارت آئی ٹی) کو سوشل میڈیا پلیٹ فارمز کو اپنے ذیلی دفاتر پاکستان میں کھولنے کے لئے مجبور کرنے کی بھی ہدایت کی گئی تھی....متاکہ اسلام اور پاکستان کے آئین و قانون کے خلاف کسی بھی سرگرمی کی صورت میں ان پلیٹ فارمز سے آسانی سے رابطہ کیا جاسکے اور اسلام اور پاکستان کے آئین و قانون کے خلاف کسی بھی سرگرمی میں بالواسطہ یا بلاواسطہ ملوث پائے جانے کی صورت میں پاکستانی اداروں کے لئے مذکورہ سوشل میڈیا پلیٹ فارم کے خلاف کاروائی کرنا آسان ہو۔ مندرجہ بالا ہدایات وہ ہدایات ہیں کہ جو لاہور ہائیکورٹ نے اپنے مذکورہ فیصلے میں وفاقی حکومت کو جاری کی تھیں....مذکورہ ہدایات میں کون سی ہدایت ایسی ہے کہ جو آئین پاکستان بالخصوص قرآن و سنت کے خلاف ہو؟کیا جواز تھا پاکستان تحریک انصاف کے دورحکومت میں وفاقی حکومت کے پاس کہ اس نے تحفظ ناموس رسالتﷺ کے متعلق لاہور ہائیکورٹ کے مذکورہ تاریخی فیصلے کو کالعدم قرار دینے کے لئے سپریم کورٹ میں اپیلیں دائر کیں؟ ہمارا بڑا واضح اور دو ٹوک موقف ہے کہ پاکستان تحریک انصاف کے دور حکومت میں وفاقی حکومت کی جانب سے لاہور ہائیکورٹ کے تحفظ ناموس رسالت ﷺ کے متعلق مذکورہ سنہرے فیصلے کو کالعدم قرار دینے کے لئے سپریم کورٹ میں اپیل دائر کرنا ناموس رسالت ﷺ پر براہ راست حملہ ہے،جسے کسی بھی صورت برداشت نہیں کیا جاسکتا۔ پاکستان تحریک انصاف کے دور حکومت میں وفاقی حکومت نے تحفظ ناموس رسالت ﷺ کے متعلق لاہور ہائیکورٹ کے مذکورہ فیصلے کے خلاف سپریم کورٹ میں اپیلیں دائر کرکے ناموس رسالت ﷺ پر حملہ کیا ہے،نعوذباللہ۔لیکن چونکہ مذکورہ اپیلیں پاکستان تحریک انصاف کے دور حکومت میں وفاقی حکومت کی جانب سے دائر کی گئی تھیں،مذکورہ اپیلیں وفاقی حکومت کی جانب سے اس وقت بھی سپریم کورٹ میں موجود ہیں،لہٰذا موجودہ وفاقی حکومت کی ذمہ داری ہے کہ وہ لاہور ہائیکورٹ کے تحفظ ناموس رسالت ﷺ کے متعلق مذکورہ فیصلے کے خلاف دائر کی گئیں مذکورہ تینوں اپیلیں بلاتاخیر واپس لیتے ہوئے لاہور ہائیکورٹ کے مذکورہ فیصلے پر من و عن عملدرآمد کرے.... اگر موجودہ وفاقی حکومت نے اس معاملے میں غفلت برتی اور سپریم کورٹ نے وفاقی حکومت کی جانب سے دائر کی گئیں اپیلوں کو منظور کرتے ہوئے تحفظ ناموس رسالت ﷺ کے متعلق لاہور ہائیکورٹ کے مذکورہ تاریخی فیصلے کو کالعدم قرار دے دیا تو موجودہ وفاقی حکومت بھی شریک جرم تصور ہو گی۔


تازہ ترین خبریں

سائنسدان2 ہزار  سال پرانی  نباتی خاتون کا چہربنانے میں کامیاب ہوگئے

سائنسدان2 ہزار سال پرانی نباتی خاتون کا چہربنانے میں کامیاب ہوگئے

ہزاروں لوگوں نے رجسٹریشن کرائی،ہم جیل بھرو تحریک شروع کر چکے ہیں، فواد چوہدری

ہزاروں لوگوں نے رجسٹریشن کرائی،ہم جیل بھرو تحریک شروع کر چکے ہیں، فواد چوہدری

شیخ رشیدکی درخواست ضمانت مستردکردی گئی

شیخ رشیدکی درخواست ضمانت مستردکردی گئی

الیکشن ایک ساتھ ہونے چاہیں،بار بار انتخابات سے ملک انتشار کا شکار ہوگا،خواجہ سعد رفیق

الیکشن ایک ساتھ ہونے چاہیں،بار بار انتخابات سے ملک انتشار کا شکار ہوگا،خواجہ سعد رفیق

ترکی ،شام تباہ کن زلزلے سے ہونے والی ہلاکتیں اور مناظر دماغ کو سن کر رہے ہیں، شہباز شریف

ترکی ،شام تباہ کن زلزلے سے ہونے والی ہلاکتیں اور مناظر دماغ کو سن کر رہے ہیں، شہباز شریف

ملک کے بالائی علاقوں میں مزید برفباری کا امکان

ملک کے بالائی علاقوں میں مزید برفباری کا امکان

پنجاب اور خیبرپختونخوا اسمبلیوں کے انتخابات، اہم فیصلہ آج ہو گا

پنجاب اور خیبرپختونخوا اسمبلیوں کے انتخابات، اہم فیصلہ آج ہو گا

توشہ خانہ کیس ، عدالت نے عمران خان   حاضری سے استثنیٰ کی درخواست پر فیصلہ محفوظ کرلیا

توشہ خانہ کیس ، عدالت نے عمران خان حاضری سے استثنیٰ کی درخواست پر فیصلہ محفوظ کرلیا

وزیراعظم شہباز شریف کی زیرصدارت وفاقی کابینہ کا   اجلاس آج  ہوگا

وزیراعظم شہباز شریف کی زیرصدارت وفاقی کابینہ کا اجلاس آج ہوگا

ترکیہ   میں زلزے  نے تباہی مچا دی ،  سات روزہ سوگ کا اعلان

ترکیہ میں زلزے نے تباہی مچا دی ، سات روزہ سوگ کا اعلان

ترکیہ اور شام میں زلزلے سے تباہی، ہلاکتیں 1300 سے زائد، ترکیہ میں ایمرجنسی نافذ

ترکیہ اور شام میں زلزلے سے تباہی، ہلاکتیں 1300 سے زائد، ترکیہ میں ایمرجنسی نافذ

اے پی سی کیلئے پی ٹی آئی کو دعوت نامہ نہیں ملا، فواد چوہدری

اے پی سی کیلئے پی ٹی آئی کو دعوت نامہ نہیں ملا، فواد چوہدری

مشکل وقت میں  درکار  انسانی امداد پیش کرنے کیلئے تیار ہیں، عمران خان  کا  ترکیہ ،شام زلزلے پر افسوس کا اظہار

مشکل وقت میں  درکار  انسانی امداد پیش کرنے کیلئے تیار ہیں، عمران خان  کا  ترکیہ ،شام زلزلے پر افسوس کا اظہار

کل جماعتی کانفرنس کی تاریخ تبدیل کردی گئی ،7 کی بجائے 9فروری کو ہوگئی

کل جماعتی کانفرنس کی تاریخ تبدیل کردی گئی ،7 کی بجائے 9فروری کو ہوگئی