12:45 pm
برطانیہ اورحادثاتی وزیراعظم

برطانیہ اورحادثاتی وزیراعظم

12:45 pm

رواں سال کنزرویٹو پارٹی کی سربراہی کی  دوڑ میں رشی سوناک کولزٹرس سے شکست ہوگئی تھی تاہم اب وہ برطانیہ کے نئے وزیراعظم بن چکے ہیں
رواں سال کنزرویٹو پارٹی کی سربراہی کی  دوڑ میں رشی سوناک کولزٹرس سے شکست ہوگئی تھی تاہم اب وہ برطانیہ کے نئے وزیراعظم بن چکے ہیں۔اس امرنے نے برطانیہ کی سیاست میں رنگ ونسل اورمذہب پرنئی بحث چھیڑدی ہے۔ برطانیہ کے پہلے ہندواورغیرسفیدفام وزیراعظم ہونے کی حیثیت سے رشی سوناک دنیابھرکی توجہ کے  مرکزبن گئے ہیں ۔ ان کاموازنہ امریکاکے پہلے سیاہ فام صدرباراک اوباماسے کیاجائے تو ان دونوں کے درمیان مماثلت کم اورفرق زیادہ نظر آتا ہے۔کینیاسے تعلق رکھنے والے اوباماکے والدان کی زندگی میں کم ہی رہے اوراوباماکوان سفیدفام امریکی والدہ نے پالا۔مخلوط نسل کے اوباما سفید فام اورسیاہ فام لوگوں سے یکساں تعلق رکھ سکتے ہیں اورسیاہ فاموں کے ساتھ ان کاتعلق ان کی اہلیہ مشعل اوباما کی وجہ سے مزیدمضبوط ہواجن کا تعلق  امریکی سیاہ فام برادری سے ہے۔
ایک وکیل اورکمیونٹی آرگنائزرکی حیثیت سے ڈیموکریٹ پارٹی میں اوباماکے ابھرنے اور  انتخابات میں جیت کے بعد8سال تک صدارت کے عہدے پرفائزرہنے کوان کی ذاتی کشش اور شخصیت کااثرقراردیاجاسکتاہے۔ دوسرے جانب رشی  سوناک کی بات کی جائے توان کے بارے میں اویناش پالیوال نے’’انڈین ایکسپریس‘‘میں لکھا ہے کہ وہ اک  ’’حادثاتی وزیراعظم‘‘ہیں۔ان کی پارٹی نے چند ماہ قبل انہیں پارٹی لیڈرکے طور پر مسترد کردیاتھاکیونکہ ان کی ذاتی مقبولیت کم تھی اور کنزرویٹو پارٹی کی روایات کے مطابق رشی سوناک کی ذات اورمذہب کی وجہ سے ان کی سربراہی میں کنزرویٹو پارٹی کیلئے انتخابات جیتنا مزید   مشکل ہوجاتا۔اس کے باوجودلزٹرس نے بطور وزیراعظم غیرتسلی بخش کارکردگی کا مظاہرہ کیا اور انہیں45دن بعدہی وزیراعظم کاعہدہ چھوڑنا پڑا تو رشی سوناک کوایک اورموقع مل گیا۔
اب تارکین وطن کی مخالف پارٹی کو مشرقی  افریقاسے تعلق رکھنے والے تارکین وطن کا بیٹا چلارہاہے۔اوباماکی طرح،رشی سوناک کے والد بھی کینیا میں پیداہوئے۔ رشی سوناک کا تعلق  ہند ومذہب سے ہے۔ان کی اہلیہ اکشتامورتی بھارتی شہری ہیں جن کے پاس برطانوی شہریت نہیں ہے چونکہ وہ ایک ارب پتی باپ کی بیٹی ہیں،اس لئے انہیں برطانوی شہریت نہ لینے سے برطانیہ میں ٹیکسوں کی ادائیگی سے بچنے میں مددملی۔ان دونوں کی  مجموعی آمدنی80 کروڑڈالرہے جوانہیں برطانیہ کے بادشاہ چارلس سے بھی زیادہ  ہے لیکن کوئی چیز بھی  رشی سوناک کونسل پرستوں کیلئے قابل قبول نہیں  بناتی۔سوشل میڈیاپروائرل ہونے والے ایل بی سی  پوڈوکاسٹ کے ایک کلپ نے اس بات کو کافی حدتک واضح کردیا ہے۔
اس کلپ میں جیری نامی کالر،جوکہ کنزرویٹو پارٹی کے بورس جانسن کے حامی تھے،نے افسوس کے ساتھ کہاکہ’’کوئی بھی مجھے پاکستان یا سعودی عرب کاوزیراعظم نہیں بنائے گاپھر کیوں رشی سوناک جیسے اس قدرمختلف شخص کوبرطانیہ چلانے کی اجازت دی جارہی ہے؟‘‘  پوڈکاسٹ کی میزبان سنگیتامسکانے اصرارکیاکہ چونکہ رشی سوناک برطانیہ میں پیداہوئے ہیں اس لئے انہیں وزیراعظم بننے کاپوراحق حاصل ہے لیکن جیری نے اس بات سے اتفاق نہیں کیااورکہاکہ اس سے کوئی فرق نہیں پڑتاکہ آپ کہاں پیداہوئے ہیں۔ جیری نے اپنے ساتھی کاذکربھی کیاجویوگنڈامیں پیدا ہوالیکن وہ اسی طرح کاانگریزہے اوراس کی جیری کے ساتھ فوج میں بھی اپنی خدمات انجام دی ہیں۔ اس کے بعدسنگیتانے جیری کی حب الوطنی کو صرف سفیدفاموں کیلئے مخصوص کر دینے کے خیال  پرسوال کیاجس پرجیری نے کوئی تکرارنہیں کی۔
یقینی طورپرجیری جیسے لوگ ہرجگہ موجود ہیں۔ امریکامیں انہوں نے ہی دوسری نسل کے لوگوں سے نفرت کی تحریک’’میک امریکاگریٹ اگین‘‘ کوہوادی۔جس کی قیادت ٹرمپ کر رہے تھے۔اس تحریک کوبارک اوباماکے دونوں ادوار حکومت کے بعدان حلقوں میں پیداہونے والے تعصب نے ہوادی۔لیکن یقین جانئے کہ جیری اوراس جیسے دیگرلوگ ہاری ہوئی لڑائی جیتنے کی  کوشش کر رہے ہیں۔تارکین وطن افرادنے مغربی ممالک کی معیشت میں کلیدی کردار ادا کیا ہے۔ جومہاجرجتنانیاہوگا،وہ اتنی ہی محنت سے کام کرے گا۔دائیں بازو کی جانب سے امیگریشن کو ہزاروںکی تعدادتک محدودکرنے کے مطالبے کے باوجودکسی حکومت کیلئے ایساکرناممکن نہیں ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ کاروبارچلانے کیلئے تارکین وطن پرانحصارکیاجاتاہے۔برطانیہ کو بیرون ملک سے ہزاروں لاکھوں مزدوروں کی ضرورت ہے۔
قدرتی طورپرتارک وطن،آبادیاتی تبدیلیوں کاسبب بنتاہے اورجمہوریت کی خوبصورتی یہ  ہے کہ وہ سب کونمائندگی کی اجازت دیتی ہے۔  اگرچہ رشی سوناک کے پاس عام انتخابات میں کھڑے ہونے کیلئے کوئی حلقہ نہیں ہوگالیکن تارکین وطن کی کئی اولادیں ہوں گی جواپنے حلقوں کی نمائندگی کریں گی اوراعلیٰ عہدوں پر فائز ہوں گی۔کینیڈاکے وزیراعظم جسٹن ٹرڈوکی کابینہ میں مسلمان اور سکھ دونوں موجود ہیں۔ برطانیہ میں پاکستانی تارکین وطن کے بیٹے صادق خان2016 ء سے لندن کے میئرہیں۔اس کے علاوہ ساجد جاویدہوم سیکرٹری اورخزانے کے چانسلر رہے  ہیں بلکہ ابتداتوپاکستانی نژادسعیدہ وارثی کے انتخاب سے ہوئی جوپہلی نہ صرف ایشین بلکہ مسلمان خاتون تھی جوبرطانیہ کی تاریخ میں پہلی مرتبہ کابینہ کی وزیر بنی بلکہ کنزرویٹیو پارٹی کی بھی سربراہ بنی۔
مسلمان تارکین وطن کی بیٹی رشیدہ داتی نے فرانس میں وزیرانصاف کے طورپرکام کیا۔ احمد ابوطالب جومراکش کے چھوٹے سے گائوں میں واقع مسجدکے امام کے بیٹے ہیں اور15 سال کی عمرمیں نیندرلینڈہجرت کرگئے تھے،اس وقت روٹر ڈیم  کے میئرکے طور پرخدمات سرانجام دے رہے ہیں۔ آبادیاتی تبدیلیوں کامطلب یہ ہے کہ مسلمانوں کیلئے سیاسی عہدوں کے حصول کیلئے انتخابات لڑنا آسان ہوجائے گا اورایساامریکاسے کہیں زیادہ یورپ میں ہوگا۔مثال کے طور پر برسلزکی 25فیصدآبادی مسلمان ہے،فرانس کے کچھ حصے ڈینس میں یہ تناسب45فیصد تک ہے۔ لندن میں 14فیصدجبکہ بریڈفورڈمیں یہ تناسب25 فیصد ہے۔
یہاں اس بات کاتذکرہ بڑاضروری ہے کہ پاکستانی سیاست نے یہاں بھی ہماری کمیونٹی کو تقسیم کررکھاہے اوراب تویہ معاملہ اس قدرآگے بڑھ گیاہے کہ یہاں کی آبادی بھی اس کا سخت ناپسندیدہ نگاہوں سے تنقیدکررہی ہے جبکہ پڑوسی ملک کی سیاسی جماعتوں کے بارے میں یہ شکائت نظرنہیں آتی۔اس کیلئے ضروری ہے کہ ہم نے اور ہماری اولادوں نے اب ہمیشہ کیلئے اگریہاں رہنا ہے تویہاں کی مقامی سیاست میں اپنا کردار ادا کرتے ہوئے اپنے سیاسی حقوق کے حصول کیلئے خودکومضبوط کریں۔اس میں شک نہیںکہ اس وقت برطانوی پارلیمنٹ،ہائوس آف لارڈز اور بلدیاتی اداروں میں پاکستانی نژادافرادکی تعداد دن بدن بڑھ رہی ہے لیکن اس قدرحوصلہ افزا نہیں جتنا ہماری آبادی کاتناسب ہے۔ خدارا یہاں پاکستانی سیاست کی بنا پربڑھتی ہوئی خلیج کو بڑھنے سے روکنے کیلئے اپنامثبت کرداراداکریں۔ یقینابرطانیہ میں یہ آبادیاتی تبدیلی کچھ لوگوں کوپسندنہیں آئے گی اورشائد اس بنیادپرنسلی تعصب میں اضافہ بھی ہولیکن اس طویل مدتی دوڑمیں تارکین وطن ہی جیتیں گے۔
 


تازہ ترین خبریں

ممنوعہ فنڈنگ کیس، عمران خان نے بڑا قدم اٹھا لیا، مخالفین کی نیند یں حرام

ممنوعہ فنڈنگ کیس، عمران خان نے بڑا قدم اٹھا لیا، مخالفین کی نیند یں حرام

حکومت کے آئی ایم ایف کو راضی کرنے کیلئے ترلے، وفاقی ترقیاتی بجٹ میں بڑی کٹوتی کا امکان

حکومت کے آئی ایم ایف کو راضی کرنے کیلئے ترلے، وفاقی ترقیاتی بجٹ میں بڑی کٹوتی کا امکان

پاکستان میں 42 فیصد بچے اسٹنٹنگ کا شکار ،اقوام متحدہ نے خطرے کی گھنٹی بجادی

پاکستان میں 42 فیصد بچے اسٹنٹنگ کا شکار ،اقوام متحدہ نے خطرے کی گھنٹی بجادی

فیس بک پر گاڑی برائے فروخت کے اشتہار نے پاکستانی پولیس افسر کی زندگی چھین لی

فیس بک پر گاڑی برائے فروخت کے اشتہار نے پاکستانی پولیس افسر کی زندگی چھین لی

سپیکر میری مانیں تو اپوزیشن لیڈر بدل لیں ، فواد چوہدری کا پرویز اشرف کو مشورہ

سپیکر میری مانیں تو اپوزیشن لیڈر بدل لیں ، فواد چوہدری کا پرویز اشرف کو مشورہ

ساڑھے 5 سال بعد سابق وزیراعظم بینظیر بھٹو قتل کیس کی اپیلیں سماعت کیلئے مقرر

ساڑھے 5 سال بعد سابق وزیراعظم بینظیر بھٹو قتل کیس کی اپیلیں سماعت کیلئے مقرر

آل پارٹیز کانفرنس کیلئے حکومتی سنجیدگی حیران کن ، شاہ محمود قریشی

آل پارٹیز کانفرنس کیلئے حکومتی سنجیدگی حیران کن ، شاہ محمود قریشی

ضمنی الیکشن،چوہدری نثار کا اپنے بیٹےتیمور علی خان کو میدان میں اتار نے کا فیصلہ

ضمنی الیکشن،چوہدری نثار کا اپنے بیٹےتیمور علی خان کو میدان میں اتار نے کا فیصلہ

میگا ایونٹ میں شریک ٹیموں ،آفیشلز کو اسٹیٹ گیسٹ کا درجہ مل گیا،غیر ملکی کمنٹیٹرز ، مبصرین وی آئی پی قرار

میگا ایونٹ میں شریک ٹیموں ،آفیشلز کو اسٹیٹ گیسٹ کا درجہ مل گیا،غیر ملکی کمنٹیٹرز ، مبصرین وی آئی پی قرار

سابق چیئرمین نیب جاوید اقبال کے گریبان پرہاتھ ڈالیں گے، شاہدخاقان عباسی کی دھمکی

سابق چیئرمین نیب جاوید اقبال کے گریبان پرہاتھ ڈالیں گے، شاہدخاقان عباسی کی دھمکی

بھارتی اداکارہ راکھی ساونت کے شوہر عادل درانی گرفتار

بھارتی اداکارہ راکھی ساونت کے شوہر عادل درانی گرفتار

لاہور ہائیکورٹ کا بڑا فیصلہ،  43پی ٹی آئی ا یم این ایز کے استعفےمنظور کرنے کا حکم معطل

لاہور ہائیکورٹ کا بڑا فیصلہ، 43پی ٹی آئی ا یم این ایز کے استعفےمنظور کرنے کا حکم معطل

ترکیہ اور شام میں تباہ کن زلزلہ، اموات آٹھ ہزار کے قریب ، بارش کے باعث امدادی سرگرمیوں میں مشکلات کا سامنا

ترکیہ اور شام میں تباہ کن زلزلہ، اموات آٹھ ہزار کے قریب ، بارش کے باعث امدادی سرگرمیوں میں مشکلات کا سامنا

آئی ایم ایف اور پی ڈی ایم حکمرانوں نے پاکستانی عوام کے حقوق پامال کرنے کی تیاری کرلی، ہیومن رائٹس واچ کا انکشاف

آئی ایم ایف اور پی ڈی ایم حکمرانوں نے پاکستانی عوام کے حقوق پامال کرنے کی تیاری کرلی، ہیومن رائٹس واچ کا انکشاف