12:44 pm
دیکھیں اورسیکھیں

دیکھیں اورسیکھیں

12:44 pm

چین کے انتہائی پسماندہ علاقے میں51 سالہ گونگ وانپنگ صبح پانچ بجے اٹھتی ہے اور کنویں سے پانی نکال کرپہلے اپنامنہ ہاتھ اورپھربیٹے کابھی منہ ہاتھ دھلاتی ہے۔وہ خودتو اسکول کی تعلیم مکمل
چین کے انتہائی پسماندہ علاقے میں51 سالہ گونگ وانپنگ صبح پانچ بجے اٹھتی ہے اور کنویں سے پانی نکال کرپہلے اپنامنہ ہاتھ اورپھربیٹے کابھی منہ ہاتھ دھلاتی ہے۔وہ خودتو اسکول کی تعلیم مکمل نہ کرسکی مگراس کا17سالہ بیٹالی کوئی شائی جدیدتعلیم حاصل کررہاہے۔وہ ہرسال امتحان میں بہترین نمبروں سے پاس ہوتاہے اوریہ بات پورے یقین سے کہی جا سکتی ہے کہ اس کی زندگی اچھی گزرے گی۔وہ ٹیکنیکل ایگزیکٹیو بننا چاہتا ہے۔گونگ وانپنگ اوردوسرے کروڑوں غریب حکمراں کمیونسٹ پارٹی سے ایک غیرتحریری معاہدہ کرچکے ہیں ۔حکمراں جماعت کاوعدہ ہے کہ اگر ملک بھرکے کروڑوں عوام اوربالخصوص کسان سیاست سے دوررہیں توانہیں معقول حدتک پرسکون اورقابلِ رشک زندگی بسرکرنے کیلئے درکار  تمام سہولتیں دی جائیں گی۔ عوام نے یہ بات سمجھ لی ہے کہ سیاست میں کچھ نہیں رکھا اور اِس سے دوررہ کراچھی زندگی بسرکی جاسکتی ہے، توسودا مہنگا نہیں بلکہ فائدے کاہے۔آج چین میں کروڑوں عوام سیاست سے برائے نام بھی تعلق نہیں رکھتے۔حکومتی پالیسیوں سے اختلاف رکھنے والوں کازیادہ ساتھ نہیں دیاجاتا۔عام چینی جب دنیا بھرکے حالات کا جائزہ لے کر اِس نتیجے تک پہنچاہے کہ سیاست سے دور رہنے ہی میں عافیت ہے۔
کئی عشروں تک مغرب کے تجزیہ کاراس خیال کے حامل رہے کہ چین میں کروڑوں افراد ایک پارٹی کی حکومت اس وقت تک برداشت کریں گے جب تک ملک ترقی نہیں کرجاتا ۔ جب ملک ترقی کرے گا تو شخصی آزادیاں بھی آئیں گی۔ آج اجتماعی ہی نہیں، انفرادی آمدنی کی سطح بھی  قابلِ رشک حدتک بلند ہونے کے بعدان کی یہ رائے غلط ثابت ہوچکی ہے اورملک کے تمام معاملات پرکمیونسٹ پارٹی کی گرفت مزیدمضبوط ہوئی ہے۔ایسادکھائی دے رہاہے کہ صدرشی جن پنگ تاحیات حکمران رہیں گے۔گویایہ خیال بھی غلط ثابت ہوا ہے کہ جب کسی بھی معاشرے میں زیادہ خوشحالی آتی ہے توجمہوری اقداربھی پروان چڑھتی ہیں۔چین میں ایساکچھ بھی ہوتادکھائی نہیں دے رہا۔ ایسالگتاہے کہ حکمراں جماعت اور کروڑوں غریب چینیوں کے درمیان جوغیرتحریری خاموش معاہدہ ہے وہ اس سے کہیں زیادہ پیچیدہ ہے جیسا دکھائی دیتاہے۔ ایک صدی قبل چینی معاشرے کوجس بنیادی سوال کا سامناتھاوہی سوال اب تک ذہنوں میں کلبلارہاہے یہ کہ مغرب نے اس  قدرترقی کیسے کی اورچین اس قدرپیچھے کیسے رہ گیا؟
ایک صدی قبل یہ تصورعام تھاکہ تعلیمی نظام میں پائی جانے والی ایک بنیادی خرابی نے چین کوپیچھے رکھاہے۔یہ کہ کنفیوشس کی تعلیمات پر زیادہ زوردیاجاتاہے اورفطری علوم بالخصوص ریاضی میں آگے بڑھنے پرزیادہ توجہ نہیں دی جاتی اور  یہ کہ ریاستی سطح پرجدیدتعلیم کوترجیح کادرجہ بھی حاصل نہیں۔پھریہ ہواکہ مارکسسٹ انقلاب آیا۔  ماوزئے تنگ کی قیادت میں ملک نے بھرپور کروٹ بدلی۔ملک کی سیاست،معیشت،ثقافت سبھی کچھ بدل گیا۔تعلیم کے شعبے میں بھی انقلاب آیا۔ فطری علوم وفنون کو اہمیت دینے کاسلسلہ شروع ہوا مگریہ تجربہ زیادہ کامیاب نہیں رہا۔چینی قیادت آج بھی اس بات کیلئے کوشاں ہے کہ جدید دورکے تمام تقاضوں کونبھانے کے ساتھ ساتھ روایات کو بھی ساتھ لے کرچلاجائے۔ کنفیوشس اور دیگر بڑی عظیم چینی شخصیات کی تعلیم  کو یکسر نظرانداز کرنے کی پالیسی نہیں اپنائی گئی۔کوشش کی گئی کہ بہت کچھ تبدیل ہو مگر روایات کی بھرپورحفاظت کی جائے۔
چینی قیادت نے جدید دورکے تقاضوں سے ہم آہنگ نظام تعلیم اپنانے کی بھرپورکوشش کی ہے اوراس میں بہت حدتک کامیاب بھی رہی ہے۔کنفیوشس کی تعلیم اورمارکسسٹ مشینری بہت حدتک تاجرطبقے کے خلاف تھی۔انفرادی سطح پر معاشی جدوجہدکو زیادہ اچھانہیں سمجھا جاتا تھا۔ اب انفرادی سطح پرمعاشی جدوجہدکوغیرمعمولی اہمیت دی جارہی ہے۔عام چینی بھی اس بات کو سمجھتا ہے کہ اگرآگے بڑھناہے تولازم ہے کہ جدید دورکے تقاضوں سے ہم آہنگ تعلیم حاصل کی جائے۔دنیابھرمیں یہی ہورہاہے۔ جوکچھ دنیا میں چلتاہے وہی کچھ چین میں بھی اپنانیکی کوشش کی جارہی ہے۔یہ سب کچھ اِتنے بڑے پیمانے پر اور اِس قدرنمایاں اندازسے کیاجارہاہے کہ محسوس ہوئے بغیرنہیں رہاجاسکتا۔ریاستی سطح پریہ کوشش بھی کی جارہی ہے کہ جدیددورکے تقاضوں سے ہم آہنگ تعلیم حاصل کرنے کے عمل میں ملک کی تاریخی عظمت داوپرنہ لگے۔آج کی چینی نسل کو بتایا جارہاہے کہ چین کم وبیش3ہزارسال سے بہت کچھ کرتاآیاہے۔چینی دانش وحکمت کو دنیا تسلیم کرتی رہی ہے۔بہت سے علوم وفنون میں چینیوں کی مہارت کالوہاماناجاتارہاہے۔ریاستی سطح پر بھرپورکوشش کی جارہی ہے کہ نئی نسل کے ذہنوں سے یہ بات حذف نہ ہوکہ کنفیوشس اور دیگراہلِ علم نے دنیاکوبہت کچھ دیاہے۔
چینی معاشرے میں ایک خاص حدتک بے چینی ضرورپائی جاتی ہے۔جن غریبوں کوحکمراں جماعت سے بہت کچھ چاہیے وہ اچھی طرح جانتے ہیں کہ وعدے کے مطابق سب کچھ نہیں دیا گیا مگرساتھ ہی ساتھ وہ یہ بھی جانتے ہیں کہ اگر حکمراں جماعت سے تصادم کی راہ پرچلنے کی کوشش کی گئی تب بھی کچھ خاص حاصل نہ ہوسکے گا۔ چندایک نسلی اورمذہبی اقلیتوں کواس بات کا شکوہ ہے کہ حکمراں جماعت کی جابرانہ پالیسیوں نے ہزاروں گھرانوں کیلئے اپنے نسلی اورثقافتی تناظرکیساتھ جینا ناممکن بنادیاہے۔
چینیوں کی اکثریت اب بھی بہت سے معاملات میں اندرہی اندرالجھی ہوئی ہے۔ اگر حکومتی پالیسی سے کوئی اختلاف ہوبھی تووہ منظرعام پراس لیے نہیں آتاکہ عام چینی جانتاہے کہ ملک کی آبادی بہت زیادہ ہے۔اِتنی بڑی آبادی کیلئے تمام بنیادی سہولتوں کا بندوبست کرناآسان کام نہیں۔ملک کئی بارقحط کے دورسے گزراہے۔خانہ جنگی بھی ہوتی رہی ہے۔عام چینی جانتاہے کہ اگر سیاست میں دلچسپی لینے کاسلسلہ چل نکلااورانحراف کی آوازیں بلندہونے لگیں توبہت کچھ داوپرلگ جائیگا۔کروڑوں چینیوں کو مختلف النوع خدشات چپ کرا دیتے ہیں۔ماضی کی تلخ یادیں ان سے کہتی ہیں کہ سیاست میں حصہ مت لو،کوئی سوال مت پوچھو اورخاموشی کے ساتھ زندگی بسرکرتے رہو۔ کروڑوں چینیوں میںفرسٹریشن پائی جاتی ہے۔ وہ پریشان ہیں کہ اپنامعیارِزندگی کس طور بلند کریں،مگرساتھ ہی ساتھ انہیں اس بات پر بھی  فخرہے کہ ملک ترقی کررہاہے اورعالمی سطح پر بہت کچھ کرنے کی پوزیشن میں آچکاہے۔
(جاری ہے)
 

تازہ ترین خبریں

امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے چیف الیکشن کمشنر سے قوم سے معافی مانگنے اور مستعفی ہونے کا مطالبہ کردیا

امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے چیف الیکشن کمشنر سے قوم سے معافی مانگنے اور مستعفی ہونے کا مطالبہ کردیا

اڈیالہ جیل میں قیدی کے قتل سے متعلق جیل حکام کیجانب سے بیان جاری 

اڈیالہ جیل میں قیدی کے قتل سے متعلق جیل حکام کیجانب سے بیان جاری 

 وکرم سنگھ پرپاکستان کے لیے جاسوسی کا الزام ، بھارتی فوج نے گرفتار کر لیا

 وکرم سنگھ پرپاکستان کے لیے جاسوسی کا الزام ، بھارتی فوج نے گرفتار کر لیا

عمران خان اسمبلی پہنچ گئے؟سوشل میڈیا پر وائرل ویڈیوز نے تہلکہ مچا دیا ،دیکھیں

عمران خان اسمبلی پہنچ گئے؟سوشل میڈیا پر وائرل ویڈیوز نے تہلکہ مچا دیا ،دیکھیں

سی ڈی اے کی جانب سے دارالحکومت میں پانی کی قلت کو پورا کرنے کے لیے کام تیز 

سی ڈی اے کی جانب سے دارالحکومت میں پانی کی قلت کو پورا کرنے کے لیے کام تیز 

بلوچستان اسمبلی، عبدالخالق اچکزئی اسپیکر اور غزالہ گولہ ڈپٹی اسپیکر منتخب ہوگئے

بلوچستان اسمبلی، عبدالخالق اچکزئی اسپیکر اور غزالہ گولہ ڈپٹی اسپیکر منتخب ہوگئے

مسلم لیگ ن اور جے یو آئی کےسینیٹر ز سینیٹ نشستوں سےمستعفیٰ 

مسلم لیگ ن اور جے یو آئی کےسینیٹر ز سینیٹ نشستوں سےمستعفیٰ 

یوسف رضا گیلانی نے سینیٹ کی نشست سے استعفیٰ دے دیا

یوسف رضا گیلانی نے سینیٹ کی نشست سے استعفیٰ دے دیا

صدر نے منتخب ایم این ایز کی حلف برداری سے چند گھنٹے قبل قومی اسمبلی کا اجلاس طلب کر لیا 

صدر نے منتخب ایم این ایز کی حلف برداری سے چند گھنٹے قبل قومی اسمبلی کا اجلاس طلب کر لیا 

  کسی بھی  احتجاج کی اجازت نہیں، وفاقی دارالحکومت میں دفعہ 144 نافذ العمل، سیکیورٹی الرٹ جاری

کسی بھی احتجاج کی اجازت نہیں، وفاقی دارالحکومت میں دفعہ 144 نافذ العمل، سیکیورٹی الرٹ جاری

اسپیکر و ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی کے الیکشن کا شیڈول تبدیل، کب ہو گا ؟ دیکھیں خبر میں

اسپیکر و ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی کے الیکشن کا شیڈول تبدیل، کب ہو گا ؟ دیکھیں خبر میں

 جعلی مشروبات تیارکرنے والی مشہور برانڈ کی فیکٹری پر چھاپہ،خوفناک انکشافات

 جعلی مشروبات تیارکرنے والی مشہور برانڈ کی فیکٹری پر چھاپہ،خوفناک انکشافات

58 فیصد پاکستانیوں کیجانب سے 8 فروری کا  پولنگ کاعمل کو شفاف قرار، سروے رپورٹ دیکھیں

58 فیصد پاکستانیوں کیجانب سے 8 فروری کا  پولنگ کاعمل کو شفاف قرار، سروے رپورٹ دیکھیں

پاور ڈویژن نے بجلی ترسیل کیلئے ترکی کا ماڈل اپنانے کا فیصلہ کر لیا 

پاور ڈویژن نے بجلی ترسیل کیلئے ترکی کا ماڈل اپنانے کا فیصلہ کر لیا