مقام عبرت اور قانون کی لگام؟

مقام عبرت اور قانون کی لگام؟

20 minutes ago.

انسان بڑا ناشکرا بھی ہے جلد باز بھی اور مسلمان؟ اگر وینٹی لیٹر کی کثرت سے کورونا وائرس کے عذاب سے نجات مل سکتی تو آج اٹلی میں 15ہزار کے لگ بھگ انسانوں کی لاشوں کے ڈھیر نہ لگتے‘ امریکہ میں مرنے والوں کی تعداد ہزاروں اور کورونا وائرس سے متاثر ہونے والوں کی تعداد لاکھوں تک نہ پہنچتی۔ کورونا وائرس سے لڑائی کا دعویٰ کرنے والوں کو کوئی بتائے کہ اٹلی والوں کے پاس تو تقریباً بیس‘ اکیس ہزار وینٹی لیٹر ہیں‘ امریکہ ہو‘ فرانس ہو یا لندن وہاں تو جدید میڈیکل سہولتوں سے مزین ہسپتال ہیں۔ ان کے تو ڈاکٹرز بھی بڑے اعلیٰ تعلیم یافتہ ہیں۔ وہاں تو ’’حسن نثاروں‘‘ کی سائنس اور سائنسدانوں کا بھی بڑا غلغلہ ہے۔ ان سب کے ہوتے ہوئے بھی اگر کورونا وائرس نے وہاں تباہی پھیلانے میں کسی بخل سے کام نہیں لیا۔ تو پھر آئو لوٹ آئو اللہ کے پسندیدہ دین اسلام کی طرف اب بھی وقت ہے حکومت کے پاس کہ وہ قوم کے ساتھ مل کر حکومتی سطح پر اجتماعی توبہ و استغفار کا اعلان کرے‘ عمران خان اللہ کی خوشنودی کی خاطر سود سے پاک معیشت کا اعلان کریں۔ پاکستان میں زناء کے اڈوں‘ شراب خانوں‘ جوا خانوں‘ بے حیائی‘ فحاشی و عریانی کو عام کرنے والے افراد ہوں‘ ادارے ہوں یا آلات ان سب پر فی الفور پابندی عائد کر دیں۔