07:37 am
بیوٹی پارلر

بیوٹی پارلر

07:37 am

   جزبیہ شیریں
مردوں، خاص طور پر شوہروں اور والدین کی جیب پر حملہ آور, بیوٹی پارلرز کی کرونا واہرس کی طرح بڑے شہروں کے فیشن زدہ علاقوں میں حشر برپا کرنے کے بعد رفتہ رفتہ چھوٹے شہروں سے ہوتی ہوئی اب قصبوں اور دیہاتوں تک بھی آپہنچی ہے۔  یہ اک ایسا کاروبار ہے جو کبھی کسی موسم میں ماند نہیں پڑتا۔ دل لگتی بات تو یہ ہے کہ بیوٹی پارلر کو میک اپ پارلر کہنا چاہیے کیونکہ اکثر بیوٹی پارلرز میں خواتین و حضرات کے ساتھ جس واردات کا ارتکاب کیا جاتا ہے اسکے نتیجے میں بیوٹی تو کہیں نہیں دکھائی دیتی البتہ چہرے کے زاویے ضرور بدل جاتے ہیں اور اصل نین نقش کہیں چھپ جاتے ہیں۔  بقول شاعر
جب بھی چاہیں اک نئ صورت بنا لیتے ہیں لوگ اک چہرے پر کئ چہرے سجا لیتے ہیں
ہر محکمے کی طرح اچھی اور بری طرز کے حامل بیوٹی پارلرز بھی ہوتے ہیں۔  اگر بیوٹیشن ماہر مصنوعات بھی معیاری ھوں تو ایسی ہستیاں بھی قابلِ دید ھو جاتی ہیں جنہیں نارمل روٹین میں حسن پرست مافیا کی طرف سے "نہ منہ نہ متھا, جن پہاڑ وں لتھا" جیسی پھبتیوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔  
سرفراز شاہد نے کسی ایسے ہی ماہر بیوٹیشن کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے فرمایا ہے۔ 
بیوٹی پارلر جانے سے پہلے
 
وہ اک معصوم بڑھیا لگ رہی تھی ،مگر میک اپ کر کےجب وہ نکلی ،بڑی آفت کی پڑیا لگ رہی تھی ارینج میرج کرنے والے حضرات سب سے زیادہ انکے مظالم کا شکار مخلوق ہیں شادی کی صبح بیچارے پہچان ہی نہیں پاتے کہ یہ وھی لڑکی ہے جو کل کرشمہ کپور لگ رہی تھی اور آج دیکھ کے ہارٹ اٹیک آ رہا ہے۔ شوبز کی دنیا کا تو بیوٹی پارلرز کے بغیر گزارہ ہی نہیں۔ بلاشبہ یہ داد کے مستحق ہیں جو پچپن سال کے بوڑھے کو کالج کا طالب علم اور پچاس سالہ ادھیڑ عمر خاتون کو بےبی بنا دیتے ہیں۔ لیکن یہ سب کرشمات وقتی ہوتے ہیں۔ خصوصاً اگر کوئی بارش میں نکلنے کی غلطی کر بیٹھے تو بیوٹی گدھے کے سر سے سینگ کی طرح غاۂب ھو جاتی ہے۔ اور اگر بارش نہ ھو پر مصنو عات ناقص اور بیوٹیشن ناتجربہ کار ھو تو بھی میک اپ پگھل کر عجیب نطارہ پیش کرنے لگتا ھے۔ خواتین تو خواتین آجکل تو مرد حضرات بھی بیوٹی پارلرز میں چہرے کی نوک پلک سنوارنے جاتے ہیں مگر بیوٹی پارلرز کی آمدنی کا اصل وسیلہ ہماری خواتین ھی ھیں۔ وہ خواتین جو ریڑھی والے سے فروٹ لیتے ہوئے دو روپے کیے لیے ۱۵ سے ۲۰ بحث میں لگا دیتی ہیں مگر ہزاروں روپے بیوٹی پارلر میں بخوشی جھونک آتی ہیں۔ یہ اک ایسا کاروبار ھے جسمیں کوئی کنٹرول پراۂس نہیں۔ شادیوں کا سیزن ہو تب تو ان کی چاندی ہو جاتی ہے براہیڈل میک اپ کے نام پر لاکھوں کی کمائی ہوتی ہے پیڈی کیور مینی کیور اور فیشل جیسی چیزوں کے نام پر۔ ان کی ایک خاصیت یہ بھی ھے کہ جو کوئی بھی چلا جائے اسکے بالوں اور چہرے میں سو نقص نکالتے ہیں کہ خراب کٹنگ کی ہوئی ہے بھوؤں کی شیپ ہی بگڑ ی ہوئ ھے وغیرہ وغیرہ۔ غرضیکہ دوسرے پارلر کی برائی اور اپنا مستقل گاہک بنانا مقصود ہوتا ھے۔ جس طرح اچھے برے لوگ معاشرے میں ہر جگہ پاۓ جاتے ہیں اسی طرح اصلی نقلی بیوٹی پارلرز کی بھی بھرمار ھے۔ ہر گلی محلے میں دو چار تو لازماً نظر آ جائیں گے کئ کے نام بھی ایسے ہوتے ہیں کہ بندہ متاثر ہو کے نہ چاہتے ہوۓ بھی چلا جاتا ہے۔ عام سے چہرے کو چندے ماہتاب بنانے والے بیوٹی پارلرز کی تعداد آٹے میں نمک کے برابر ھوتی ھے۔ بیوٹی پارلر کے نام پر بہروپئے کثیر تعداد میں ملتے ہیں۔ اکثر کے پاس کوئی ٹریننگ بھی نہیں ھوتی۔ یہ بہروپئے اپنے نرغے میں پھنسے گاہک کے اچھے خاصے کو بھی ایسے بگاڑ دیتے ہیں بدقسمت چہرہ بھی آہینہ دیکھتے ہی بیوٹی پارلر اور اسکے اناڑی بیوٹیشن کو مخاطب کرتے ہوئے زبان حال سے پکار اٹھتا ہے۔۔۔ مجھ پہ احسان جو یہ نہ کرتے تو یہ احسان ہوتا۔ بعض اوقات ایسے میک اپ پارلرز کی وجہ سے لوگ شادی پر بھی کہہ اٹھتے ہیں کہ رشتے کے وقت تو آپ نے کوئی اور لڑکی دکھائی تھی اب رخصتی کسی اور کے ساتھ کر دی ہے۔ چہروں کو چندے ماہتاب بنانے, نوک پلک سنوارنے اور بگاڑنے کے علاوہ بھی بیوٹی پارلرز کا ایک وصف ہے اور وہ ہے عمر چھپانا۔ کہا جاتا ہے مرد سے اسکی سیلری اور ءورت سے اس کی عمر پوچھنا بے کار ھے کہ ہمیشہ غلط بیانی سے کام لیں گے۔ خواتین بیوٹی پارلرز کی وجہ سے اپنی عمر کے بارے میں جھوٹ بہت پر اعتماد انداز میں بول لیتی ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ شوبز کی اداکارائیں کئ عشروں تک بیسویں سالگرہ ہی مناتی رہتی ہیں۔ جب ھم میٹرک میں تھے تو اک اداکارہ ھماری بڑی فیورٹ ہوا کرتی تھی تب وہ ۲۵ برس کی تھی اور آج ہم پی ایچ ڈی میں پہنچ چکے ہیں اور وہ ۲۷ سال کی ہیں۔ سچ ہے کہ: یہ اکیسویں صدی ہے اور وہ ۲۱ سال کی ہے۔۔ باۂیس کی وہ ھو گی باۂیسویں صدی میں۔ بہرحال خوبصورتی دیکھنے والے کی آنکھ میں ھوتی ھے اور ہر چہرہ کسی کا محبوب ھوتا ھے چاہے وہ حسن پرستوں کی نظر میں بھدا کیوں نہ ہو۔ بطور انسان ہمیں یقین ہونا چاہیے کہ ہر ایک چیز میں خدا کی قدرت ھے۔ ﷲ پاک کا فرمان ھے کہ ہم نے انسان کو بہترین صورت میں پیدا فرمایا۔ سر ہمیں چاہیے کہ دوسروں کی شکل میں عیوب تلاش کر کےﷲ کے غضب کو دعوت نہ دیں اور نہ ہی اپنے طرز عمل سے خلق خدا میں احساس کمتری پیدا کرنے کا باعث بن کے نام نہاد بیوٹی پارلرز کی آمدنی میں اضافہ کرنے کا سامان پیدا کر کے ان کے ایجنٹ ہونے کا تاثر دیں۔ ہمیں لگتا ہے کہ ہم خواتین خصوصاً بیوٹیشنز کے غضب کو دعوت دے رہے ہیں سو آخر میں ہم یہ کہنا چاہیں گے کہ زیب وزینت, بناؤ سنگھار خواتین کا حق ہے جسکے لیے بیوٹی پارلر ضروری ہیں بس یہ آپ پر منحصر ھے کہ آپ کی ماہر بیوٹیشن کا انتخاب کرتے ہیں یا کسی بہروپئے کا۔

تازہ ترین خبریں

شادی کی تقریب غم میں تبدیل ہو گئی ، کرنٹ لگنے سے 3 مزدورجاں بحق

شادی کی تقریب غم میں تبدیل ہو گئی ، کرنٹ لگنے سے 3 مزدورجاں بحق

شادی کی تقریب غم میں تبدیل ہو گئی ، کرنٹ لگنے سے 3 مزدورجاں بحق

شادی کی تقریب غم میں تبدیل ہو گئی ، کرنٹ لگنے سے 3 مزدورجاں بحق

اسمبلیوں سے استعفوں پر اپوزیشن اتحاد میں اتفاق۔۔۔۔ نوازشریف اور مریم نواز کے ترجمان نے بڑا اعلان کردیا

اسمبلیوں سے استعفوں پر اپوزیشن اتحاد میں اتفاق۔۔۔۔ نوازشریف اور مریم نواز کے ترجمان نے بڑا اعلان کردیا

 کے ایم سی ملازم شہزاد کو بوسہ مہنگا پڑ گیا، شوکاز نوٹس جاری کرکے 7 دنوں کے اندر جواب طلب

کے ایم سی ملازم شہزاد کو بوسہ مہنگا پڑ گیا، شوکاز نوٹس جاری کرکے 7 دنوں کے اندر جواب طلب

 جمہوریت کے نام پر نام نہاد سیاسی پارٹیاں سماج اور جمہور کا مذاق اڑا رہی ہیں۔سینیٹر سراج الحق

جمہوریت کے نام پر نام نہاد سیاسی پارٹیاں سماج اور جمہور کا مذاق اڑا رہی ہیں۔سینیٹر سراج الحق

ملتان جلسہ سے قبل کارکنان کی گرفتاریوں اور تشدد کے خلاف جےیوآئی سمیت پی ڈی ایم کےملک بھر میں مظاہرے

ملتان جلسہ سے قبل کارکنان کی گرفتاریوں اور تشدد کے خلاف جےیوآئی سمیت پی ڈی ایم کےملک بھر میں مظاہرے

 موجودہ نااہل، سلیکٹیڈ اور مسلط کردہ حکمرانوں سے چھٹکارے کا وقت آگیا ہے،8 اکتوبر کوبڑے فیصلے متوقع ہیں ، ترجمان پی ڈی ایم میاں افتخار حسین

موجودہ نااہل، سلیکٹیڈ اور مسلط کردہ حکمرانوں سے چھٹکارے کا وقت آگیا ہے،8 اکتوبر کوبڑے فیصلے متوقع ہیں ، ترجمان پی ڈی ایم میاں افتخار حسین

کلبھوشن کیس۔ پاکستان نے بھارتی دعویٰ بے بنیاد قرار دے دیا

کلبھوشن کیس۔ پاکستان نے بھارتی دعویٰ بے بنیاد قرار دے دیا

خیبرپختونخوا میں کورونا کیسز کی مجموعی تعداد 48 ہزار683 ہوگئی،24 گھنٹوں کے دورن 10 افراد لقمہ اجل بن گئے

خیبرپختونخوا میں کورونا کیسز کی مجموعی تعداد 48 ہزار683 ہوگئی،24 گھنٹوں کے دورن 10 افراد لقمہ اجل بن گئے

پی ڈی ایم کی تحریک کسی کو ہٹانے کی نہیں، عوام کی مشکلات کم کرنےکی جدوجہد ہے،شاہد خاقان عباسی

پی ڈی ایم کی تحریک کسی کو ہٹانے کی نہیں، عوام کی مشکلات کم کرنےکی جدوجہد ہے،شاہد خاقان عباسی

حکومت کوروناکےپیچھےجتناچھپ جائے،قوم اب نہیں چھوڑےگی ، رانا ثنااللہ

حکومت کوروناکےپیچھےجتناچھپ جائے،قوم اب نہیں چھوڑےگی ، رانا ثنااللہ

حکومت کوروناکےپیچھےجتناچھپ جائے،قوم اب نہیں چھوڑےگی ، رانا ثنااللہ

حکومت کوروناکےپیچھےجتناچھپ جائے،قوم اب نہیں چھوڑےگی ، رانا ثنااللہ

سیٹیزن پورٹل کی دو سالہ کارکردگی ، نادرا بازی لے گیا

سیٹیزن پورٹل کی دو سالہ کارکردگی ، نادرا بازی لے گیا

ریڈیو اسکول اور ایجوکیشن پورٹل کا آغاز ، وزیراعظم عمران خان کااظہار خیال

ریڈیو اسکول اور ایجوکیشن پورٹل کا آغاز ، وزیراعظم عمران خان کااظہار خیال