میرپور کے شہری دوبار آبی دہشت گردی کا نشانہ بنے
  12  جولائی  2018     |      کشمیر

میرپور(بیورورپورٹ) سوئی گیس کے حصول ، پانی کی بند ش اور بجلی کی لوڈشیڈنگ سمیت شہر ی سہولیات کی بازیابی کے لیے تحفظ حقوق کمیٹی میرپور کے زیر اہتمام 36واں ہفت روزہ احتجاجی کیمپ چوک شہیداں میں لگایا گیا ۔ احتجاج کیمپ سے خطاب کر تے ہوئے تحفظ حقوق کمیٹی میرپور کے رہنماؤں مرکزی صدر جموں کشمیر ورکرز پارٹی رضوان کرامت ، عثمان شوکت ، حسیب حید ر سمیت دیگر نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ شہریوں کے تمام بنیادی حقوق جو قانونی طو پر تسلیم شدہ ہیں جب تک حکومت اور انتظامیہ مہیا نہیں کرتی احتجاج جاری رہے گا ۔ میرپور کے شہری دوبار آبی دہشت گردی کا نشانہ بنے ۔ دوبار شہریوں کی تہذیب وثقافت جبراً ڈیم بروکی گئی ۔ آباؤاجداد کی قبروں پر پانی چڑھایا گیا ۔ دو بار باشعور شہریوں نے اس ظلم وجبر کے خلاف شدید احتجاج کیے مختلف سیاسی وسماجی رہنماؤں کو جیلوں میں ڈالا گیا اور موجودہ شہر کی بنیاد رکھی گئی ۔ اس دن سے شہری بنیادی سہولیات سے محروم چلے آرہے ہیں ۔ آج کئی کئی دنوں تک پانی نہیں آتا ۔ PWDکے ذمہ داران عزر لیتے ہیں کہ موٹریں خراب ہیں ۔ پانی کی طلب زیادہ ہے اور رسد کم ہے ماضی کے ذمہ داران نے آبادی میں اضافے کے ساتھ ساتھ پانی کی مقدار میں اضافہ نہیں کیا اگر ادارے کے شہریوں کو

سہولیات دینے میں ناکام ہیں اور شہریوں کو وافر مقدار میں پانی نہیں دے سکتے تو ایسے اداروں کو فی الفور بند کر دینا چاہیے اور جتنے بھی ذمہ داران افسران ہیں جن کی نالائقی کی وجہ سے بوند بوند کو ترس رہے ہیں ۔ ان کے خلاف کارروائی عمل میں لائی جائے انھوں نے کہا کہ آج شہریوں کو اپنے حقوق کی بازیابی کے لیے عملی طو ر پر خود کو طویل جدوجہد کے لیے تیار کرنا ہوگا ۔ اور جن افراد کی لاپروائی کی وجہ سے شہریوں کے مسائل میں دن بدن اضافہ ہو رہا ہے ۔ ان کی نشاندہی کر کے ان کے خلاف آواز بلند کر نا ہوگی ۔


اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 


 سب سے زیادہ پڑھی جانے والی مقبول خبریں





  اوصاف سپیشل

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

آج کا مکمل اخبار پڑھیں

دنیا

کالم /بلاگ


     
     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ روزنامہ اوصاف محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Daily Ausaf. All Rights Reserved