04:39 pm
دوائیاں بنانے والی مشہور ترین کمپنی کو 57كروڑ ڈالر کا جرمانہ ہو گیا

دوائیاں بنانے والی مشہور ترین کمپنی کو 57كروڑ ڈالر کا جرمانہ ہو گیا

04:39 pm

اوکلو ہاما(آئی این پی)امریکی ریاست اوکلو ہاماکے جج نے جونسن اینڈ جونسن اور اس کی ذیلی کمپنیوں کو ریاست میں اوپی آئیڈ بحران کو بڑھانے میں مدد کرنے کا مجرم ٹھہرایا اور کمپنی پر 57 کروڑ 20 لاکھ ڈالر جرمانہ عائد کردیا جو دیگر ادویہ ساز کمپنیوں کی جانب سے سیٹلمنٹ کے لیے دی گئی رقم سے دوگنا ہے۔بین الاقوامی خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق کلیولینڈ کے کانٹی ڈسٹرکٹ جج تھاڈ بالکمن کا نشہ آور دوا اوپی آئیڈ،
جس میں ہیروئن بھی شامل ہوتی ہے، کے حوالے سے فیصلہ پہلے ریاستی کیس ٹرائل کے بعد سامنے آیا، جس سے اسی طرح کے مقامی و قبائلی حکومتوں کی جانب سے 1500 مزید کیسز پر بحث کے مواقع بڑھ گئے ہیں۔جج تھاڈ بالکمن نے فیصلہ سنانے سے قبل ریمارکس دیے کہ 'اوپی آئیڈ بحران نے اوکلاہوما ریاست کو اپنی لپیٹ میں لے لیا ہے، اس کو فوری روکنا ہوگا'۔دوسری جانب کمپنیوں کے وکیل نے فیصلے کو اوکلاہوما کی سپریم کورٹ میں چیلنج کرنے کا فیصلہ کر لیا۔28 مئی کو اوکلاہوما کی عدالت میں ٹرائل کے آغاز سے قبل ریاست کی دیگر دو ادویہ ساز کمپنیوں کے ساتھ بھی سیٹلمنٹ ہوئی تھی جس میں اوکسی کونٹن بنانے والے پرڈیو فارما سے 27 کروڑ ڈالر اور اسرائیل کی ملکیت والی تیوا فارماسیوٹیکل انڈسٹریز لمیٹڈ سے 8 کروڑ 50 لاکھ ڈالر کی سیٹلمنٹ ہوئی ہے۔