09:17 am
شامی وزیر کی بیٹی کی شادی پر ہوشربا اخراجات

شامی وزیر کی بیٹی کی شادی پر ہوشربا اخراجات

09:17 am

لاہور ۔ماضی میں امرا اور رئیس اپنے بیٹوں ا ور بیٹیوں کی شادیوں پر اتنے پیسے اڑایا کرتے تھے کہ اس کے قصے آج بھی سنائی دیتے ہیں۔تاہم آج بھی کئی ممالک میں ہونے والی شادیوں پر روپے پیسے کا اصراف ملکی معیشت اور ان لوگوں کی ذرائع آمدن پرسوال اٹھا جاتا ہے۔زیادہ نہیں سال بھر پہلے انڈیا میں انجام پانے والی امبانی کی بیٹی کی شادی بھی مہینہ بھر خبروں کی زینت بنی رہی تھی اور اب ملک شام میں ایک وزیر کی بیٹی کی دھوم ہر طرف مچی ہوئی ہے۔اس شادی پر اتنے پیسے خرچ کیے گئے ہیں
کہ یقین نہیں آتا کہ شام جیسے ملک میں بھی اس قسم کی خرافات اور پیسے کے اصراف کا تصور کیا جا سکتا ہے۔عرب میڈیا کے مطابق شامی حکومت کے وزیر منصور عزام کی بیٹی سالی عزام کی شادی زین العابدین عباس کے ساتھ انجام پائی۔زین العابدین بھارت میں شامی حکومت کے سفیر ریاض عباس کا بیٹا ہے۔ یہ پُرتعیش تقریب دمشق کے ایک تفریحی مقام یعفور میں منعقد ہوئی۔تقریب میں شامی حکومت کے سینئر ذمے داروں کے ساتھ ساتھ بڑی کاروباری شخصیات نے شرکت کی۔اس شاہانہ تقریب پر 20 لاکھ ڈالر سے زیادہ کی رقم اڑا دی گئی۔ دلہن کے عروسی لباس کی قیمت ایک لاکھ امریکی ڈالر کے قریب تھی۔ یہ لباس لبنان کے معروف ڈیزائنر زہیر مراد نے تیار کیا۔ تقریب میں لبنان کے 6 فنکاروں، رقاصاؤں اور روسی طائفے نے اپنے فن کا مظاہرہ کیا۔اس موقع پر طعام اور مشروبات کا انتظام لبنان کے مہنگے ترین ریستورانوں کی جانب سے کیا گیا تھا۔ اس کے علاوہ 20 سے زیادہ اقسام کے کیوبا کے مہنگے ترین سیگار اور درآمد شدہ مشروبات بھی پیش کیے گئے۔شادی کی اس انتہائی پُرتعیش تقریب نے بشارالاسد حکومت کے ہمنواؤں کو سیخ پا کر دیا، وہ یہ سوال اٹھا رہے ہیں کہ تقریب میں خرچ کی جانے والی رقم کا ذریعہ کیا تھا؟ بالخصوص جب شامی ریاست کے کسی بھی سرکاری ملازم کی زیادہ سے زیادہ تنخواہ ماہانہ 100 سے 150 ڈالر کے درمیان ہے۔

تازہ ترین خبریں